پنجاب گرلز ویٹ لفٹنگ چمپین شپ

لاہور : ویٹ لفٹنگ  کومردوں کا کھیل سمجھا جاتا ہے لیکن اب  عورتیں بھی اس کا حصہ بننے سے پیچھے نہیں ہٹیں اور عورتوں نے یہ تاثر غلط ثابت کر دکھایاکہ مردوں کی طرح عورتیں بھی ایسے جسمانی کھیلوں میں اپنا لوہا منوا سکتیں ہیں۔  پنجاب گرلز ویٹ لفٹنگ نے اپنی صلاحیتوں کو بروئے کار لاتے ہوئےآخر کار اپنی صلاحیتوں کا لوہا منوایا۔نیشنل کوچنگ سنٹرمیں ہونے والے ویٹ لفٹنگ مقابلے میں مردوں کا ٹائٹل لاہور ڈویژن نے جیتا تو خواتین کا ٹائٹل گوجرانوالہ کے نام رہا۔پنجاب کا شہر گوجرانوالہ جو پہلوانوں کے شہر کے نام سے مشہور ہے وہاں کی خواتین نے بھی ثابت کر دیا ہے کہ ہم بھی ان سے پیچھے نہیں۔ پنجاب ویٹ لفٹنگ چیمپیئن شپ کے مقابلوں میں مردوں کی7 اور خواتین کی3 ڈویژنز کی ٹیموں نے شرکت کی۔لڑکیوں میں آمنہ گجر، حافظہ اقراء اورفاطمہ شاہد جبکہ مردوں میں حسن علی، عبداللہ بٹ، محمد نعیم اور شکیب بٹ نے گولڈ میڈل جیتے۔ خواتین کھلاڑیوں کا کہنا ہےکہ حکومت کرکٹ کی طرح ویٹ لفٹرز کی بھی سرپرستی کرے تو انٹرنیشنل مقابلوں میں انفرادی میڈلز جیت کر اپنا اور ملک کا نام روشن کرسکتی ہیں۔

اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.