Daily Taqat

نیوزی لینڈ کا پاکستان آکر کرکٹ کھیلنے کی تجویز پر غور

پاکستان میں انٹرنیشنل کرکٹ کے دروازے تو مارچ 2009 میں بند ہوئے جب لاہور میں سری لنکن ٹیم پر دہشتگرد حملہ ہوا تھا۔ مگر آسٹریلیا وہ واحد ٹیم ہے جو 1998 سے ہی وہاں نہیں کھیلی۔ تب سے دونوں کے درمیان یو اے ای، انگلینڈ اورسری لنکا کے نیوٹرل وینیوز پر مقابلے ہوئے ہیں۔ واضح رہے کہ پاکستان نے یہی درخواست نیوزی لینڈ سے بھی کی ہے۔ کیویز کو نومبر میں پاکستان سے 3 ٹیسٹ، 5 ون ڈے اور 3 ٹوئنٹی 20 انٹرنیشنل کھیلنے ہیں۔ زیادہ امکان یہی ہے کہ یہ عرب امارات میں ہی کھیلے جائیں گے۔ این زیڈ سی کے چیف ایگزیکٹیو ڈیوڈ وائٹ نے تصدیق کی کہ انھیں پی سی بی کے چیئرمین نجم سیٹھی کی جانب سے 2 ہفتے قبل چند ٹوئنٹی 20 میچز پاکستان میں کھیلنے کی درخواست موصول ہوئی ہے۔ پوری سیریز نہیں صرف 2 میچز کیلئے درخواست ہوئی ہے۔ ڈیوڈ وائٹ نے بتایا کہ ہم اس پر غور کررہے ہیں۔ اس حوالے سے سیکیورٹی ماہرین، حکومت اور پلیئرز سے مشاورت کی جائے گی، جب یہ سارا عمل مکمل ہوجائے گا تب ہم اپنے فیصلے سے نہ صرف پاکستان بلکہ سب کو آگاہ کریں گے۔ انھوں نے واضح کیا کہ اس عمل کے دوران نیوزی لینڈ کرکٹ سے کوئی پاکستان نہیں جائے گا۔ ہمارے پاس سیکیورٹی ماہرین ہیں جن کی خدمات ہم پہلے بھی حاصل کرتے رہے ہیں۔ وہ گہرائی سے صورتحال کا جائزہ لیں گے جس کی بنیاد پر ہم پاکستان ٹیم بھیجنے سے متعلق فیصلہ کریں گے۔ یہ ضروری ہے کہ ہم کھلے ذہن کے ساتھ آگے بڑھیں۔ یاد رہے کہ نیوزی لینڈ نے آخری مرتبہ 2003 میں پاکستان کا دورہ کیا تھا۔ ایک سال پہلے کیوی ٹیم کے ہی کراچی میں ہوٹل کے سامنے ایک بم دھماکا بھی ہوا تھا جس کے بعد ٹیم ٹور ادھورا چھوڑ کر واپس چلی گئی تھی۔ پھر اگلے سال اس کی واپسی ہوئی تھی۔ پی سی بی نیوزی لینڈ اور آسٹریلیا سے سیریز کیلئے ملائیشیا سمیت دیگر وینیوز کا بھی جائزہ لے رہا ہے۔ وائٹ نے کہاکہ فی الحال تو ہماری سیریز یو اے ای میں ہی طے ہے، ہمیں پاکستان کی جانب سے کوئی دوسری معلومات حاصل نہیں ہوئی ہیں، میں جانتا ہوں کہ بورڈ اس حوالے سے یو اے ای کے ساتھ بات چیت میں مصروف ہے۔


Get real time updates directly on you device, subscribe now.

اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

Translate »