زینب کیس، 3ہزار افراد شامل تفتیش، 500 افراد کا ڈی این اے ٹیسٹ

پنجاب پولیس زینب کے قاتل کو پکڑنے میں تاحال ناکام ہے، پولیس اب تک 500 افراد کا ڈی این اے کروا چکی ہے جبکہ اس کیس میں 3ہزار افراد کو شامل تفتیش کیاجاچکاہے۔ایک لاکھ 77ہزار فورس رکھنے کے باوجود پولیس معصوم زینب کے قاتلوں تک تاحال نہیں پہنچ سکی۔ڈی این اے کروائے جانے اور حراست میں لیے جانے والے ملزموں کا تعلق قصور کے نواحی علاقوں سے ہے۔ پولیس کی طر ف سے زینب کیساتھ فوٹیج میں نظر آنیوالے شخص کا دوسری دفعہ خاکہ جاری کیا گیا ہے لیکن اس کے باوجود اصل ملزم نہیں مل سکا۔انویسٹی گیشن پولیس کی طرف سے اصل ملزموں تک نہ پہنچ پانے پر اسکو آر پی او شیخوپورہ ذوالفقار حمید اور نئے تعینا ت ہونیوالے ڈی پی او زاہد مروت کی ناکامی تصور کیا جا رہا ہے جبکہ معصوم بچی زینب کے قاتلوں کو پکڑنے کیلئے روزانہ کی بنیاد پر جے آئی ٹی میٹنگز ہو رہی ہیں۔ سوشل میڈیا پر دو افراد کی کال ریکارڈنگ وائرل ہونے کے بعد پولیس اس پر بھی تفتیش کر رہی ہے۔


اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.