الیکشن کمیشن میاں نوازشریف کی اسمبلی رکنیت ختم کرنے کا مجاز نہیں تھا،ہائی کورٹ نے درخواست پر جواب مانگ لیا

لاہور ہائیکورٹ نے الیکشن کمیشن کی جانب سے میاں محمدنواز شریف کی قومی اسمبلی کی رکنیت ختم کرنے کا نوٹیفکیشن جاری کرنے کے خلاف دائردرخواست پر وفاقی حکومت ، الیکشن کمیشن، سپیکر قومی اسمبلی اور نواز شریف کو دوبارہ نوٹس جاری کر دیئے ہیں۔جسٹس شاہد کریم نے نواز شریف کی قومی اسمبلی کی رکنیت ختم کرنے کے نوٹیفکیشن کے خلاف مقامی شہری غلام یاسین بھٹی کی درخواست پر سماعت کی جس میں میاں نوازشریف کی قومی اسمبلی کی رکنیت کو ختم کرنے کے نوٹیفکیشن کو چیلنج کیا گیا ہے ،درخواست میں وفاقی حکومت، الیکشن کمیشن، سپیکر قومی اسمبلی اور نواز شریف کو فریق بنایا گیا ہے،درخواست گزار نے نشاندہی کی ہے کہ الیکشن کمیشن نے 28 جولائی کو میاں نواز شریف کی قومی اسمبلی کی رکنیت ختم کرنے کا نوٹیفکیشن جاری کیا ، درخواست گزار کے وکیل کو مطابق آئین کے آرٹیکل 95 (اے )کے تحت وزیر اعظم کو صرف عدم اعتماد کی تحریک کے ذریعے ہی ان کے عہدے سے ہٹایا جا سکتا ہے، میاں نواز شریف کو تحریک عدم اعتماد کے بغیر ہی وزیر اعظم کے منصب سے ہٹانا آئین کے آرٹیکل 95 (اے )کی نفی ہے، درخواست میں استدعا کی گئی ہے کہ نواز شریف کی قومی اسمبلی کی رکنیت ختم کرنے کے لئے الیکشن کمیشن کا نوٹیفکیشن غیر قانونی ہے ،اس لئے اس نوٹیفکیشن کو کالعدم قرار دیا جائے۔


اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.