سپریم کورٹ نے زینب قتل ازخود نوٹس کیس کی مزید سماعت 20 جنوری تک ملتوی کردی

اسلام آباد :  سپریم کورٹ نے لاہور ہائیکورٹ کو زینب قتل از خود نوٹس کیس کی سماعت سے روکتے ہوئے آئندہ سماعت پر مقدمے کی پیشرفت رپورٹ طلب کرلی۔
چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں جسٹس اعجاز الاحسن اور جسٹس عمر عطا بندیال پر مشتمل سپریم کورٹ کے تین رکنی بینچ نے زینب قتل از خود نوٹس کیس کی سماعت کی ۔ دورانِ سماعت ایڈیشنل آئی جی پنجاب عدالت میں پیش ہوئے اور بتایا کہ زینب کا کیس اپنی نوعیت کا پہلا واقعہ ہے۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ زینب قتل کیس میں ابھی تک کوئی پیشرفت نظرنہیں آ رہی ، پوری قوم واقعے پر دکھی ہے، بتایاجائے کیاپیشرفت ہوئی ، پولیس کی ناقص تفتیش سے لوگ بری ہو جاتے ہیں، تحقیقات میں نقائص کے باعث فائدہ ملزم کو ملتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایسا قانون بنایا جائے جس سے ملزمان کو سزائیں مل سکیں، بدقسمتی سے طیبہ اور زینب جیسے واقعات کی روک تھام کاقانون نہیں بنایاگیا، قانون میں نقائص دورکرناہم سب کی ذمہ داری ہے ہم سب نے مل کر یہ کام کرنا ہے۔

سپریم کورٹ نے لاہور ہائیکورٹ کو زینب قتل از خود نوٹس کیس کی سماعت سے روک دیا، چیف جسٹس نے کہا کہ ہائیکورٹ کے پاس از خود نوٹس کا اختیار نہیں ہے، ملزم کی عدم گرفتاری کی ذمہ دار پولیس اور حکومت ہوگی، سپریم کورٹ نے آئندہ سماعت پر مقدمے کی پیشرفت رپورٹ بھی طلب کرلی۔سپریم کورٹ نے زینب قتل از خود نوٹس کیس کی مزید سماعت 20 جنوری تک ملتوی کرتے ہوئے حکم دیا ہے کہ آئندہ سماعت سپریم کورٹ لاہوررجسٹری میں ہوگی۔


اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.