Daily Taqat

سپریم کورٹ آف پاکستان کی پاکستانیوں کی بیرون ملک جائیداد اور اکاﺅنٹس سے متعلق کیس کی سماعت

اسلام آباد : سپریم کورٹ آف پاکستان نے پاکستانیوں کی بیرون ملک جائیداد اور اکاﺅنٹس سے متعلق کیس میں ریمارکس دیتے ہوئے کہا ہے کہ متحدہ عرب امارات میں جائیداد خریدنے والے20 دوستوں کو آج بلایا تھا، ہر ایک دوست باری باری آجائے، وکلاکی ضرورت نہیں،لوگ خودپیش ہوں۔تفصیلات کے مطابق چیف جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں بنچ نے پاکستانیوں کی بیرون ملک جائیداداوراکاؤنٹس سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی،چیف جسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ متحدہ عرب امارات میں جائیداد خریدنے والے20 دوستوں کو آج بلایا تھا، ہر ایک دوست باری باری آجائے، وکلاکی ضرورت نہیں،لوگ خودپیش ہوں۔ڈی جی ایف آئی اے نے بتایا کہ 20 میں سے 7 افرادبیرون ملک ہیںجن میں ہمایوں شیر،سینیٹروقار،شیخ طاہر،فیصل امتیازشامل ہیں، چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ کیا یہ لوگ عارضی طور پر ملک سے باہر گئے؟ڈی جی ایف آئی اے نے کہا کہ 5لوگ عدالتی نوٹس پر بھاگ گئے ،چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ کیا واقعی5 افراد بھاگ گئے ہیں؟ ڈی جی ایف اے نے کہا کہ میں حتمی طور پر یہ نہیں کہہ سکتا۔چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ نوشادہارون کی کیاپوزیشن ہے؟نوشاد ہارون نے کہا کہ میری 6 جائیدادیں ہیں مگرایف آئی اے نے 12 لکھ دیں، میں نے اپنی جائیدادایمنسٹی سکیم میں ظاہرکردی ہیں،نمائندہ ایف بی آر نے کہا کہ نوشادہارون نے کچھ جائیدادابھی بھی ظاہرنہیں کیں،چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ ایف بی آرنوشادہارون کونوٹس کرکے انکوائری کرے،انکوائری کر کے 2 ہفتے میں رپورٹ پیش کی جائے۔چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ محمدامین کی کیاپوزیشن ہے؟جسٹس اعجاز الاحسن نے کہا کہ ایف آئی اے،ایف بی آراورجائیدادمالک ایک ساتھ بیٹھیں،عدالت نے کہا کہ تمام لوگ کل ممبرآپریشن ایف بی آرکے دفترمیں ایک بجے پیش ہوں،3 روزمیں انکوائری مکمل کریں اورایک ہفتے میں رپورٹ دیں۔


Get real time updates directly on you device, subscribe now.

اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

Translate »