اہم خبرِیں
یوم آزادی تقریب،184 شخصیات کیلئے پاکستان سول ایوارڈزکا اعلان حکومت کا اقتصادی راہداری کا دائرہ بڑھانے کا فیصلہ کورونا وائرس، ویکسین کے ابتدائی تجربات کامیاب یوم آزادی کے موقع پرمسلح افواج کے نغمے جاری ساؤتھمپٹن ٹیسٹ، پاکستان نے 8 وکٹ کے نقصان پر 202 رنز بنالیے اسرائیل اوریو اے ای معاہدہ، مسلم ممالک کی کڑی تنقید یوم آزادی مناتے ہوئے کشمیریوں کونہیں بھولنا چاہئے، صدر مملکت وزیر اعظم عمران خان کا یوم آزادی پر قوم کو پیغام سید علی گیلانی کو نشان پاکستان سے نواز دیا گیا بی آر ٹی کے پہلے روز ہی سیکیورٹی اہلکاروں کی پٹائی پاکستان کا 73واں جشن آزادی، ملک بھر میں چودہ اگست کا شاندار ا... بھارت نے امن کوداؤ پرلگادیا، ڈی جی آئی ایس پی کے الیکٹرک خریدار کی جانچ پڑتال کی جائے، چیف جسٹس آج بھارت میں ایک ہندو اسٹیٹ جنم لے رہی ہے، شاہ محمود قریشی ترکی اورفرانس کی افواج آمنے سامنے، فوجی جھڑپ کا خطرہ خیبرپختونخوا اور پنجاب کو بجٹ خسارے کا سامنا یوٹیوب نے ای میل سروس بند کردی ڈاکٹروں کی طرح سوچنے والا "اے آئی سسٹم" تیار نازیہ حسن کو مداحوں سے بچھڑے 20 برس بیت گئے پاکستان انگلینڈ دوسرا ٹیسٹ، آج ساؤتھمپٹن میں شروع ہو گا

اسپیکر قومی اسمبلی کی کورونا کو شکست ،لیکن کیسے؟

کورونا کو شکست دینے والے اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر نے کورونا بیماری کو اپنی زندگی کا بڑا امتحان قرار دیا ہے۔

30 اپریل کو اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر میں کورونا وائرس کی تشخیص ہوئی تھی جس کے بعد انہوں نے دو ہفتے تک گھر میں قرنطینہ اختیار کیا اور پھر 12 مئی کو کورونا سے صحت یاب ہونے کی تصدیق کی۔

گفتگو کرتے ہوئے اسد قیصر نے بتایا کہ کورونا بیماری میری زندگی کا بڑا امتحان تھا، اس دوران قرنطینہ میری زندگی کا غیر معمولی واقعہ تھا۔

انہوں نے بتایا کہ جب میں اسپتال میں تھا وہ لمحات میرے لیے کافی مشکل تھے، میں نے شروع میں احتیاط نہیں کی جو مجھے کرنی چاہیے تھی۔

انہوں نے اپنی خوراک سے متعلق بتایا کہ بیماری کے دوران متوازن غذا لی اور ادرک، پودینےکا استعمال بھی کیا۔

اسپیکر قومی اسمبلی کا کہنا تھا کہ کورونا کو عام بیماری نہ سمجھا جائے، اگر کسی کو سینے میں تکلیف ہو تو فوری چیک اپ کرائے، عوام سے درخواست ہے کہ اس بیماری کو سنجیدہ لیں۔

انہوں نے کورونا کی روک تھام کے لیے حکومت کے اسمارٹ لاک ڈاؤن کو بھی مناسب قرار دیا۔

اسمبلی معاملات سے متعلق ان کا کہنا تھا کہ اسمبلی کو جس طرح چلارہا ہوں، بلاول اور خواجہ آصف بھی اس کے معترف ہیں، چاہتا ہوں اسمبلی میں اپوزیشن اور حکومت کی ملکی معاملات پر مثبت بحث ہو۔


Get real time updates directly on you device, subscribe now.

اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.