اقوام متحدہ کشمیریوں سے کیا وعدہ پورا کرے، شاہ محمود قریشی

اسلام آباد: وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا ہے کہ اقوام متحدہ کشمیریوں سے کیا وعدہ پورا کر کے استصواب رائے کرائے۔

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے مقبوضہ جموں و کشمیر میں آبادی کے تناسب میں تبدیلی کی سازش پر توجہ مبذول کرانے کے لیے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کو خط لکھا ہے۔ وزیر خارجہ نے اپنے خط میں کہا ہے کہ بھارت نے خطے کے امن و سلامتی کو شدید خطرات سے دوچار کردیا ہے، بھارت مقبوضہ علاقے میں آبادی کے تناسب میں تبدیلی کی سازش کر رہا ہے، بھارت اقوام متحدہ چارٹر، بین الاقوامی قانون اور جنیوا کنونشن کی خلاف ورزیاں کر رہا ہے، بھارت کشمیری نسل کشی اورکشمیر میں اکثریت کو اقلیت میں بدل رہا ہے، کشمیریوں کی اراضی چھینی اور غیر کشمیریوں کو لا کر آباد کیا جا رہا ہے،بھارت کے غاصبانہ اقدامات سے کشمیری اپنی سیاسی اور ثقافتی شناخت کھو رہے ہیں۔

خط میں کہا گیا ہے کہ بھارت مسئلہ کشمیر سے دنیا کی توجہ ہٹانے کے لئے ایل او سی پر اشتعال انگیزی کر رہا ہے،بھارت رواں سال ایل او سی پر 2700 خلاف ورزیاں، 25 شہری شہید، 200 زخمی کر چکا، اقوام متحدہ چارٹر اور قراردادوں کے تحت سلامتی کونسل کی کچھ اہم ذمہ داریاں ہیں،ھارت کو مجرمانہ نوآبادیاتی منصوبے سے روکنا بھی سلامتی کونسل کی ذمہ داری ہے،کشمیریوں کو انکا کا حق خودارادیت دیا جائے، اقوام متحدہ کشمیریوں سے کیا وعدہ پورا کر کے استصواب رائے کرائے۔

دوسری جانب وزیرخارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی نے نائجرمیں منعقد ہونے والی اوآئی سی کونسل آف فارن منسٹرز (CFM) کے سہ روزہ اجلاس میں شرکت کے حوالے سے اہم ویڈیو پیغام میں کہا کہ اوآئی سی کے وزرائے خارجہ کے اس سہ روزہ اجلاس میں شرکت کے ساتھ ساتھ، مجھے بہت سے ہم منصبوں کے ساتھ دو طرفہ ملاقاتیں کرنے اوراہم امورپرپاکستان کا موقف پیش کرنے کا موقع بھی میسرآئے گا۔ پاکستان نے کچھ قراردادیں مرتب کی ہیں جنہیں اس اجلاس میں پیش کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ مجھے اس سہ روزہ کانفرنس میں مسئلہ کشمیراورفلسطین کی صورتحال کے حوالے سے دیگروزرائے خارجہ کے ساتھ تبادلہ خیال کا موقع میسرآئے گا۔ میں اوآئی سی کے انسانی حقوق کمیشن کا شکرگزارہوں، مقبوضہ کشمیرمیں جاری انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں پران کا بھی بہت واضح موقف سامنے آتا رہا ہے۔ مقبوضہ جموں وکشمیر کے حوالے سے او آئی سی کی بہت سی قراردادیں موجود ہیں۔ انہیں کشمیرکی تازہ صورتحال سے آگاہ کرنا، میرے فرائض میں شامل ہے۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ میں سمجھتا ہوں کہ مقبوضہ کشمیرمیں جاری ظلم و بربریت کے حوالے سے آواز اٹھانے کیلئے یہ ایک مناسب فورم ہے، جس طرح کہ مقبوضہ کشمیرمیں بھارت کی جانب سے انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں کا سلسلہ بڑھتا چلا جا رہا ہے اس حوالے سے ہم ، پچھلے دنوں ٹھوس شواہد پرمشتمل ایک ڈوزئیربھی پیش کرچکے ہیں کہ کس طرح ہندوستان دہشت گردی کی پشت پناہی کررہا ہے۔

اسلاموفوبیا کے حوالے سے پاکستان سمیت پوری دنیا کے مسلمان تذبذب کا شکارہیں، پاکستان کا اس حوالے سے بہت واضح اور ٹھوس موقف رہا ہے۔ اس اجلاس میں امریکا اورمشرق وسطیٰ سمیت عالمی منظر نامے میں وقوع پذیر ہونے والی تبدیلیوں کے حوالے سے گفتگو کرنے اورپاکستان کا موقف پیش کرنے کا موقع میسرآئے گا۔


اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.