صادق سنجرانی چئیرمین سینیٹ کے عہدے کیلئے مطلوبٍہ معیار پر پورا نہیں اترتے، درخواست دائر

درخواست گزار کا موقف ہے کہ صادق سنجرانی چئیرمین سینیٹ کے عہدے کیلئے مطلوبٍہ معیار پر پورا نہیں اترتے، ان کی عمر قائم مقام صدر کے عہدے کیلئے کم ہے۔چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی کے انتخاب کے خلاف بلوچستان ہائی کورٹ میں آئینی درخواست ایڈووکیٹ جمیل رمضان کی جانب سے دائر کی گئی ہے جس میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ صادق سنجرانی قائم مقام صدر نہیں بن سکتے کیونکہ آئنیم طور صدرِ مملکت کی عمر پینتالیس سال ہونا لازمی ہے لیکن نومنتخب چیئرمین سینیٹ کی عمر قائم مقام صدر کے عہدے کیلئے کم ہے۔

درخواست گزار کا کہنا ہے کہ صادق سنجرانی کا انتخاب آئین اور قانون کے تقاضوں کے برعکس ہے۔ بلوچستان ہائی کورٹ نے آئینی درخواست کی سماعت کیلئے منطور کر لی گئی ہے جس کی سماعت کل ہو گی۔ایک دوسرے خبرکے مطابق سینیٹ کے اراکین اور چیئرمین کے انتخابات نظریات، جذبات اور ماضی کے کردار پر نہیں صرف سیاسی ضروریات اور مفادات کے تحت لڑے گئے۔ کیا ضروریات اور مفادات پیپلز پارٹی اور تحریک انصاف کو مزید ساتھ رہنے کے لیے مجبور کر سکتے ہیں؟ پاکستان انسٹیٹیوٹ آف لیجسلیٹو ڈویلپمنٹ ٹرانسپرنسی یعنی پلڈاٹ کے سربراہ احمد بلال صوفی کا کہنا ہے کہ تحریک انصاف اور پیپلز پارٹی نے سینیٹ کے چیئرمین کے لیے ایک راستہ نکال لیا لیکن تحریک انصاف کو بعد میں اس کی قیمت چکانی پڑے گی،۔


اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.