پریس کانفرنس سے پہلے رانا ثنااللہ زینب کے والد کو کس بات پر مجبو کر رہے تھے ؟

لاہور: پنجا ب پولیس نے دیگر اداروں کے ساتھ مل کر زینب کو قتل اور زیادتی کا نشانہ بنانے والے وحشی درندے عمران کو گرفتار کر لیاہے جس کے بعد وزیراعلیٰ شہبازشریف نے آج شام پریس کانفرنس کر کے قوم کو یہ خوشخبری سنائی اور اس موقع پر زینب کے والد بھی وزیراعلیٰ کے ہمراہ پریس کانفرنس میں شریک ہوئے ۔
تفصیلات کے مطابق پریس کانفرنس شروع ہو نے سے قبل رانا ثنااللہ اور زینب کے والد کے درمیان گفتگو کی ویڈیو سوشل میڈیا سمیت ٹی وی چینلز پر گردش کر رہی ہے جس میں رانا ثناللہ زینب کے والد کو گفتگو کرتے ہوئے بتاتے ہیں کہ ’مجھے نہیں پتا کہ آپ نے کیا مطالبات لکھے ہوئے ہیں ،لیکن اس وقت آپ ملزم کی سزا کے حوالے سے ہی مطالبہ کیجے گا باقی چیزیں ہم آپ سے علیحدہ بیٹھ کر طے کر لیں گے اور جس طرح کی آپ مدد چاہیں گے آپ کو فراہم کی جائے گی ۔‘
اس پریس کانفرنس کے بعد زینب کے والد نے کہا کہ مجھے پوری بات کرنے کا موقع نہیں دیا اور میرا مائیک بند کردیا گیا۔ پولیس کو شاباشی دینے کیلئے تالیاں بجائی گئیں جبکہ میں تالیاں بجانے اور قہقہے لگانے کی بات سے متفق ہوں لیکن یہ تالیاں بجانے کا موقع نہیں تھا۔


اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.