Daily Taqat

سانحہ ماڈل ٹاؤن کیس میں پولیس افسران کو ہٹایا گیا، امید ہے بڑوں کے ساتھ بھی یہی ہوگا

میں چیف جسٹس سے ماڈل ٹاؤن واقعے کا نوٹس لینے کی اپیل کرتا ہوں

تحریک منہاج القرآن کے سربراہ ڈاکٹر طاہرالقادری نے کہا ہے کہ سانحہ ماڈل ٹاؤن کیس میں پولیس افسران کو او ایس ڈی بنا دیا گیا، امید ہے بڑوں کے ساتھ بھی ایسا ہوگا۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے لاہور میں تحریک منہاج القرآن کے قیام کے 38 سال مکمل ہونے کی تقریب سے ویڈیو لنک کے ذریعے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

ڈاکٹر طاہرالقادری نے کہا کہ آج تحریک منہاج القرآن کے قیام کے 38 سال مکمل ہوگئے ہیں۔ 37 سال میں 13 جون 2014 جیسا مشکل وقت نہیں آیا، ہمارے کارکن شہید و زخمی ہوئے، ان ہی کو قاتل بنا کر جیل میں ڈالا گیا۔ کارکنوں پر 56 ایف آئی آرز کاٹی گئیں، 300 سے زائد پیشیاں بھگتیں، کل 56 کارکنان راولپنڈی میں انسداد دہشت گردی کی عدالت سے باعزت بری ہوئے ہیں۔

ڈاکٹر طاہرالقادری نے سانحہ ماڈل ٹاؤن کیس میں 116 پولیس اہلکار و افسران کو ہٹانے پر اپنے رد عمل میں کہا کہ پولیس افسران کو او ایس ڈی بنایا گیا، امید ہے بڑوں کے ساتھ بھی ایسا ہوگا۔ پنجاب حکومت کے اس اقدام کی تعریف کرتا ہوں، وزیر اعظم عمران خان نے مجھ سے انصاف کی فراہمی کا وعدہ کیا تھا۔

انہوں نے کہا کہ شہباز شریف کے بیان پر بات کرنا گوارہ نہیں کرتا، شہباز شریف اس سے بدتر سلوک کے حقدار ہیں، وہ اپنے انجام کو ضرور پہنچیں گے۔

طاہرالقادری کا مزید کہنا تھا کہ چیف جسٹس نے زینب قتل کیس کا نوٹس لیا، اس کیس میں تیزی سے انصاف ہوا اور آج وہ وحشی درندہ اپنے انجام کو پہنچا، میں چیف جسٹس سے ماڈل ٹاؤن واقعے میں ہونے والی درندگی کا نوٹس لینے کی اپیل کرتا ہوں۔ طاہرالقادری نے کہا کہ مہنگائی کے مسائل ہیں تو قوم خود لانگ مارچ کرے، قوم اپنے حق کیلئے اٹھے گی تو اس کے مسائل حل ہوں گے۔ ہمارے کارکنوں نے قوم کا ٹھیکہ نہیں اٹھا رکھا کہ ہر بار وہ ہی قربانی دیں۔


Get real time updates directly on you device, subscribe now.

اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

Translate »