افغانستان میں امن واستحکام کا قیام پاکستان کی ذمہ داری نہیں ، پاکستانی سفیر

دہشتگردی کےخلاف پاکستانی سفارتخانے کی جانب سے کوششوں کاحقائق نامہ جاری کردیا گیا ہے، جس کے مطابق پاکستان میں دہشت گروں کے خلاف 13فوجی آپریشن کیےگئے جبکہ دہشت گردی کےخلاف جنگ میں 6ہزار 8سو اہلکاروں سمیت21ہزار پاکستانی جاں بحق ہوئے۔

پاکستانی سفارتخانے میں آرمی پبلک اسکول کے شہدا کی یاد میں تقریب سے خطاب میں پاکستانی سفیر اعزاز چوہدری نے کہا ہے کہ پاکستان کی قربانیوں کا انکار کرنا بڑے افسوس کی بات ہے۔

انہوں نے کہا کہ افغانستان میں استحکام کا قیام پاکستان کی ذمہ داری نہیں ہے اور دہشت گردی کےخلاف جنگ ہماری نہیں تھی بلکہ ہم پرمسلط کی گئی تھی۔

ان کا کہنا تھا کہ دہشت گردی کےخلاف جنگ پاکستان کی جنگ بن گئی جبکہ یہ جنگ ابھی ختم نہیں ہوئی تاہم دہشت گردی کامائنڈ سیٹ ختم کرنےکی ضرورت ہے۔

پاکستانی سفیر نے بتایا کہ دنیا کے ہر ملک اور معاشرے میں کچھ انتہا پسند ہوتے ہیں جبکہ دہشت گردی پاکستان اور امریکا کی دشمن ہے، ہمیں اس کے خلاف مل کر لڑنا ہوگا۔

افغانستان کے بارے میں پاکستانی سفیر نے کہا کہ افغانستان میں استحکام پاکستان اور امریکا کے مفاد میں ہے اور دونوں کا مقصد مشترکہ ہے۔


تبصرے بند ہیں.