Daily Taqat

نجی اسکولوں میں کمائی کے نئے طریقے

آپ نے سنا تو ہوگا ہی کہ ’’علم بڑی دولت ہے‘‘ اس جملے کا مطلب طلبا سمجھے یا نہیں، لیکن کاروباری حضرات نے اسے خوب سمجھا اور پھر اس علم سے واقعی بہت دولت کمائی۔

نجی اسکول پہلے صر ف من مانی فیس وصول کرتے تھے لیکن اب انہوں نے پیسے بٹورنے کے نئے نئے طریقے ایجاد کرلیے ہیں۔

اسکول کی فیس سے مراد ہوتی ہے ٹیوشن فیس لیکن اب والدین سے سال بھر وقفے وقفے سے سیکورٹی ، اسپورٹس،جنریٹر فیس ،لیب فیس و دیگر کی مد میں بھی اچھی خاصی رقم وصول کی جارہی ہے، اور تو اور اسکولوں کو اپنی آمدنی پر جو ٹیکس حکومت کو ادا کرنا ہے اب وہ ٹیکس بھی طلباسے ہی وصول کیا جاتا ہے۔

مزید یہ کہ والدین ان سب کا بوجھ برداشت کر بھی لیں تو کبھی کلرز ڈے، فروٹس ڈے، اسپورٹس ڈے ، پکنک ڈے سمیت دیگر ایونٹس کے نام پر بھی والدین کی جیب خالی کرائی جاتی ہے۔

دوسری جانب متعلقہ ادارے کو اسکول مالکان صرف ٹیوشن فیس وصول کرنے سے متعلق آگاہ کرتے ہیں۔

محکمہ تعلیم کی جانب سے فیس وصول کرنے سے متعلق قوانین پر عمل در آمد کو یقینی بنانا نہایت ضروری ہے تاکہ والدین ان اضافی فیسوں کے بوجھ سے آزاد ہوسکیں۔


Get real time updates directly on you device, subscribe now.

اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

Translate »