نواز شریف کا پاناما میں نام نہیں تھا, لیکن ججوں نے مجرمانہ خاموشی اختیار کیے رکھی:مریم نواز

جڑانوالہ :سابق وزیراعظم نواز شریف کی صاحبزادی مریم نواز نے کہا ہے کہ نواز شریف کی تین نسلوں کا حساب ہوا لیکن جب دس روپے کی بھی کرپشن ثابت نہ ہوئی تو اقامہ پر باہر نکال دیا گیا ۔ان کا کہنا تھا کہ نواز شریف کا پاناما میں نام بھی نہیں تھا پھر بھی مخالفین نے ان کا نام لیا لیکن ججوں نے مجرمانہ خاموشی اختیار کیے رکھی ،نہ صرف خاموشی اختیار کیے رکھی بلکہ عمران خان سے کہا تم نوازشریف کو باہر نہیں نکال سکتے ،اب میرے پاس مقدمہ لے آﺅ ،میں نکالوں گا ۔جڑوالہ میں جلسے سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے عوام سے سوال کیا کہ کیا آپ کو ایسا پاکستان منظور ہے جہاں ستر سالوں میں ایک بھی وزیراعظم اپنی مدت پوری نہ کرسکا ،جہاں منتخب وزیراعظم عدالتوں میں پیش ہوتے ہیں لیکن آئین توڑنے والے مشرف کو کسی عدالت کو بلانے کی جرت نہ ہو ،جسے عوام نے ووٹ دئیے ہوں جب وہ انصاف لینے عدالت میں گیا تو ججوں نے انصاف دینے کے بجائے گالیاں دیں ،گارڈ فادر اور سیسلین مافیہ کہا ۔انہوں نے کہا کہ نواز شریف کی تین نسلوں کا حساب لینے کے بعد اقامہ پر نکالا گیا اور لاڈلا کہتا ہے کی آف شور کمپنی میری ہے لیکن اس کو صداقت کا سرٹیفکیٹ دے دیا جاتا ہے ۔ان کا کہنا تھا کہ کروڑوں ووٹ لے کر آنے والے کے مقدمے میں پانچ ججز درخواست گزار کے وکیل بن جاتے ہیں ،لاڈلے کے خلاف مقدمہ آیا تو لاڈلے کے وکیل بن گئے ۔مریم نواز نے کہا کہ منصفوں سے جب سوال پوچھا جائے تو جواب دینے کے بجائے دن رات ٹی وی پر تقرریں کرتے ہیں اور توہین عدالت کے پیچھے چھپ جاتے ہیں ،توہین عدالت کی سزا ہو لیکن ووٹ کی توہین کرنے کی بھی کوئی سزا ہونی چاہیے ۔


اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.