پاکستان فرانسیسی شعبہ زراعت اور شعبہ حیوانات کی مہارت سے استفادہ حاصل کر سکتا ہے:معین الحق

پیرس: جناب معین الحق سفیر پاکستان برائے فرانس نے کہا ہے کہ پاکستان فرانس کے جدید کاشتکاری طریقوں کو بروئے کار لا کر اپنی زرعت کی پیداوار، شعبہ حیوانات اور ڈیری مصنوعات میں خاطر خواہ اضافہ کرسکتا ہے۔سفیر پاکستان نے یہ بات فرانس کے جنوبی علاقہ برگندی میں تازہ زرعی اجناس، شعبہ حیوانات اور اورڈیری مصنوعات سے تعلق  رکنے والی مختلف تنصیبات کے ایک روزہ دورے کے دوران کہی۔ یہ تنصیبات فرانس کے دیہی علاقوں میں چھوٹے پیمانے پر زراعت، کاشتکاری اور شعبہ حیوانات کی مصنوعات سے تعلق رکھنے والے کاشکارووں کو اپنی مدد آپ کے تحت ترقی کرنے کے موقعے فراہم کرتا ہے۔اس دورے کا اہتمام جناب الائن ریکریکس، فرانس میں پاکستان کے سابق عزازی قونصلر برائے سرمایہ کاری و ماہر زراعت نے کیا تھا۔  اس دورے کے دوران سفیر پاکستان نے مقامی کسانوں، شعبہ حیوانات اور مقامی شعبہ زراعت کے اراکین سے ملاقاتیں بھی کیں۔مقامی میئر نے سفیر پاکستان کو جنگلات اور درخت لگانے کے منصوبوں کے بارے میں آگاہ کیا جو سیاحوں کو راغب کرنے کے علاوہ مقامی لوگوں کے روزگار کا بھی ذریعہ ہے۔ سفیر پاکستان نے کہا کہ پاکستان اپنے دس ارب شجرکاری مہم کو مزید کامیاب بنانے کیلئے فرانس کے تجربات سے فائدہ اٹھا سکتاہے۔گفتگو کے دوران انہوں نے زراعت کے شعبہ کی ترقی اور جدید طریقہ کار کیلئے حکومت پاکستان کی ترجیحات پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا کہ پاکستان کی جی ڈی پی میں زراعت کا 18.5 فیصد حصہ ہے اور 38.5 فیصد ملازمتیں بھی زراعت کے شعبہ سے ہی منسلک ہیں اور ملک میں غربت کے خاتمہ کیلئے زراعت کا ایک کلیدی کردار ہے۔سفیر پاکستان نے کہا کہ سفارت خانہ پاکستان فرانسیسی حکام کے ساتھ مل کر پاکستانی کاشتکاروں کیلئے خصوصی تربیتی پروگرام کے اجراءپر تبادلہ خیال کر رہاہے۔ پاکستان میں زرعی پیداوار کو ذخیرہ کرنے اور فروخت کرنے کیلئے فرانسیسی کمپنیوں کے ساتھ پاکستان میں  ایک جدید ترین مارکیٹ کے قیام کرنے پر بھی بات چیت جاری ہے۔فرانس یورپ کا ترقی یافتہ ملک ہے اور یورپی یونین کی کل زرعی پیداوار میں اس کا 22 فیصد حصہ ہے اور دنیا کی بہترین پیداوار جن میں گندم، اناج، دودھ، گوشت، چینی اوربیج جن سے تیل حاصل کیا جاتا ہے وہ فرانس میں پیدا ہوتے ہیں۔

 


اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.