کلبھوشن سے اہل خانہ کی ملاقات کروا کر پاکستان نے انسانی ہمدردی دکھائی ہے،ترجمان دفتر خارجہ

اسلام آبادمیں ترجمان دفتر خارجہ کا ہفتہ وار بریفنگ دیتے ہوئے کہنا تھا کہ پاکستان نے انسانی ہمدردی دکھائی ہے مہمانوں کو عزت و احترام کےساتھ ٹریٹ کیا گیا۔کلبھوشن سے اہل خانہ کی ملاقات کروانے کا مقصد پورا ہوا ہے ملاقات کروانے کی بنیاد انسانی ہمدردی تھی،ملاقات30 منٹ کی تھی لیکن درخواست پر 10منٹ مزید بڑھائے گئے۔ انہوں نے کہا کہ کلبھوشن سے اہل خانہ کی ملاقات سے متعلق بھارت کے تمام الزامات بے بنیاد ہیں بھارت سراہ نہیں سکتا تو کم از کم پاکستان کے اچھے فعل کو تسلیم کرے۔کلبھوشن جادیو ایک جاسوس اور دہشت گرد ہے، لباس تبدیل کروانے کا مقصد سیکیورٹی چیک تھا،کلبھوشن سے مر اٹھی میں بات کی اجازت نہیں دی جا سکتی تھی ملاقات میں اہلخانہ اور کلبھوشن نے40منٹ انگریزی میں بات کی،ملاقات میں مراٹھی اورہندی میںدعائیہ کلمات کی اجازت دی گئی۔ ترجمان دفتر خارجہ کا کہنا تھا کہ بھارتی ڈپٹی ہائی کمشنر کو موقع پر ہی اعتراض کرنا چاہیے تھا، بھارتی ہائی کمیشن نے میڈیا سے متعلق انتظامات پر کوئی اعتراض نہیں کیا،بھارتی ہائی کمیشن کے اہلکاروں نے 24 دسمبر کو میڈیا کے انتظامات کا جائزہ بھی لیا، میڈیا کو مہمانوں سے دور ایک محفوظ فاصلے پر رکھا گیا ،بھارت کی طرح پاکستان کے میڈیا پر کسی قسم کی کوئی پابندی نہیں تھی ،ملاقات کی کامیابی کلبھوشن کی والدہ کے شکریہ ادا کرنے سے ظاہر ہے۔


اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.