اسحاق ڈار نواز شریف کے فرنٹ مین ہیں

چیئرمین پاکستان تحریک انصاف عمران خان کہتے ہیں کہ ایک اور این آر او لینے کی کوشش کی جارہی ہے، باپ بیٹی اور ان کے وزیر عدالت پر حملے کررہے ہيں، یا تو ان کے خلاف ایکشن لیا جائے یا پھر توہین عدالت قانون ختم کردیا جائے۔

اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے عمران خان کا کہنا تھا کہ نواز شریف، شہبازشریف اور اسحاق ڈار بڑے منی لانڈر ہیں، امریکا میں سعید شیخ اور قطر میں سیف الرحمان ان کا فرنٹ مین ہے، ہمارا مقابلہ سیاستدان سے نہیں مافیا سے ہورہا ہے، ملتان میٹرو کے فراڈ پر نیب کیوں نہیں دیکھ رہی، حدیبیہ کیس میں بچ نہیں سکتے، سعودی عرب کی بجائے ٹرمپ کے گھٹنے بھی پکڑ لیں پھر بھی شریف خاندان نہیں  بچ سکتا۔

انہوں نے کہا کہ 2007 میں اسحاق ڈار کے اثاثے 91 لاکھ کے دکھائے گئے،اسحاق ڈار کی 11 کمپنیز دبئی میں ہیں،پھر پتا چلا کہ اسحاق ڈار کے بیٹوں کے دبئی میں 2 ٹاور ہیں،1981سے 2002 تک اسحاق ڈار نے انکم ٹیکس ہی نہیں دیا ۔

پی ٹی آئی رہنما نے کہا کہ کہتے ہیں نوازشریف نظریہ ہے،یہ سب کرپشن کےنظریے پراکٹھے ہیں،جب یہ کہتے ہیں جمہوریت بچا رہے ہیں تو انہوں نے چوری بچاناہوتی ۔اسحاق ڈار نواز شریف کے فرنٹ مین ہیں۔

انہوں نے کہا کہ اسحاق ڈار نوازشریف کے فرنٹ مین ہیں،اسحاق ڈار کو یہاں سے نکالنے کیلئے خاقان عباسی کا جہاز دیا گیا ،حکومت نے نیا وزیرخزانہ نہیں بنایا بلکہ ایڈوائزر لگادیا ہے۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ کہا جارہاہے کہ ایل این جی کنٹریکٹ کنفیڈنشل کنٹریکٹ ہے،کیا پبلک کے پیسے پر بھی کوئی کنفیڈنشل کنٹریکٹ ہوتا ہے؟ ایل این جی کا کنٹریکٹ15ارب ڈالر کا ہے۔

عمران خان نے کہا کہ اسحاق ڈار کی ایک کمپنی ایچ ٹی ایس کے دبئی میں 52 ولاز ہیں، ترکی، عمان اور انگلینڈ سے بھی اسحاق ڈار کی کمپنی میں پیسے آرہےہیں، سوئٹزرلینڈ سے60 ملین درہم آرہے ہیں، ان کے پاس ترکی سے لاکھوں درہم کمپنی میں آرہے ہیں، کمپنی میں دیگر ملکوں سے بھی پیسے آرہے ہیں اسکا مطلب دیگر ملکوں میں بھی کمپنیاں ہیں۔

پریس کانفرنس میں عمران خان کا کہنا تھا کہ جو زبان عدلیہ کے خلاف انہوں نے استعمال کی، کسی نے نہیں کی، جس طرح عدلیہ پرحملےہورہےہیں تو توہین عدالت کاقانون ختم کردیں۔ انہیں جسٹس نسیم حسن شاہ جیسے جج پسند ہیں، جج ان کی فون کالز پر فیصلے کیا کرتے تھے۔

چیئرمین تحریک انصاف نے کہا کہ الیکشن کمیشن نے میرے وارنٹ نکال دیے، کوئی بتائے کیوں وارنٹ ایشو ہوئے۔

حدیبیہ پیپرملز پر جے آئی ٹی میں کئی چیزیں نکل آئی ہیں، اگر ثبوت نکل آئے تو کیس دوبارہ کھل جاتا ہے، 20 سال پہلے قوم کے سوا ارب روپے چوری ہوکر ملک سے باہر گئے، معلوم نہیں لاہور اور اسلام آباد کی میٹرو میں سے کتنی چیزیں نکلیں گی، ملتان میٹرو میں پونے 2 ارب روپے کے فراڈ کا پتا چلا ہے، یہ سب آپس میں ملے ہوئے ہیں، انہوں نے ادارے تباہ کردیے۔

عمران خان نے کہا کہ اقامہ منی لانڈرنگ کا ایک طریقہ ہے، اسحاق ڈار پاکستان اور دبئی میں فرنٹ مین تھے، امریکا میں ان کا فرنٹ مین سعید شیخ ہے، محمد صفدراور حسین شریف بھی ان کی کمپنیز کے ملازم ہیں، ان کو ڈر ہے کہ ان کا باقی پیسا جو دیگر ملکوں میں ہے وہ سارا پتا چل جائےگا۔

انہوں نے کہا کہ یہ سعودی عرب کس حیثیت سے گئے ہیں؟ ان سب کے ذہنوں پر ایک چیز سوار ہے وہ ہے کرپشن کیسز، یہ صرف اور صرف پیسا بچانے جارہے ہیں، چوری بچانے کیلئے یہ شہزادوں کے گھٹنے دبائیں گے کہ ہمیں بچالو، نوازشریف کو اپنی پڑی ہوئی ہے۔

عمران خان کا  کہنا تھا کہ موروثی سیاست یہ ہوتی ہے کہ نوازشریف گیا تو شہبازشریف آجائے، یہ اپنی چوری بچانے کیلئے ملک کو تباہ کرنے کو تیار ہیں، انہیں آج اعتراض ہے کہ انہیں بچانے کیلئے فوج نے مددکیوں نہیں کی۔ نوازشریف قوم کو پاگل سمجھتا ہے۔

پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین نےکہا کہ اسٹیٹ ڈپارٹمنٹ کی رپورٹ ہے کہ ملک سےہرسال 10 ارب ڈالر چوری ہوکرباہرجاتےہیں، ہم یہ چوری روکیں گے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ہم طاہر القادری کی ہر طرح سے مدد کریں گے، مجھے عوام پر اعتماد ہے، عوام کو شعور ہے۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ اصل منی ٹریل حدیبیہ پیپر ملز کیس ہے، میں نے40 سال پرانے کنٹریکٹ دکھائے،یہ بھی بتایا کہ فلیٹ کیسے بکا،آج ان کے ولاز ہیں اور میرے پاس لندن کا فلیٹ بھی نہیں ہے۔


اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.