بھارت نے کلبھوشن کی اہلیہ اور والدہ کی تفصیلات اب تک فراہم نہ کیں

اسلام آباد: بھارتی جاسوس کلبھوشن کی والدہ اور اہلیہ سے ملاقات کے معاملے پر بھارت بوکھلاہٹ کا شکار ہوگیا اور اس حوالے سے تاحال کوئی تفصیل فراہم نہیں کئی گئی۔پاکستان نے گزشتہ ماہ انسانی ہمدردی کی بنیاد پر کلبھوشن یادیو کو اہلیہ سے ملاقات کرنے کی پیشکش کی تھی جس پر بھارت کی جانب سے والدہ سے بھی ملاقات کرانے اور اس دوران ایک بھارتی سفارت کار کی موجودگی کا مطالبہ کیا گیا تھا۔پاکستان نے بھارت کا مطالبہ مانتے ہوئے کلبھوشن کی اہلیہ اور والدہ سے ملاقات کے لیے 25 دسمبر کی تاریخ طے کی ہے جس کے لیے ویزے بھی جاری کردیئے گئے ہیں۔ذرائع کے مطابق بھارت اس معاملے پر بوکھلاہٹ کا شکار ہوگیا ہے اور  کلبھوشن کی والدہ اور اہلیہ کے پاکستان پہنچنے سے متعلق تفصیلات تاخیر کا شکار ہوگئی ہیں۔سفارتی ذرائع کا کہنا ہےکہ دفتر خارجہ نے کلبھوشن کی اہلیہ اور والدہ کی سفری تفصیلات، میڈیا کوریج اور سفارت کار کی تفصیلات پوچھی ہیں لیکن پاکستان کے بارہا پوچھنے پر بھی بھارت نے اب تک جواب نہیں دیا۔ ذرائع کے مطابق بھارت کی جانب سے کلبھوشن کے اہل خانہ کی سفری تفصیلات اور پاکستان میں قیام سے متعلق اب تک کوئی تفصیلسفارتی ذرائع نے بتایا کہ دفترخارجہ کی جانب سے پریس کانفرنس اورمیڈیا کوریج کی کھلی پیشکش کی گئی۔

کلبھوشن کی گرفتاری

واضح رہے کہ کلبھوشن یادیو کو 3 مارچ 2016 کو بلوچستان کے علاقے سے گرفتار کیا گیا تھا، اس پر پاکستان میں دہشت گردی اور جاسوسی کے سنگین الزامات ہیں اور بھارتی جاسوس نے تمام الزامات کا مجسٹریٹ کے سامنے اعتراف بھی کیا۔رواں برس 10 اپریل 2017 کو کلبھوشن یادیو کو جاسوسی، کراچی اور بلوچستان میں تخریبی کارروائیوں میں ملوث ہونے پر سزائے موت سنائی گی۔لیکن بھارت کی جانب سے عالمی عدالت میں معاملہ لے جانے کے سبب کلبھوشن یادیو کی سزا پر عملدرآمد روک دیا گیا ہے۔


اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.