Daily Taqat

اگربوتل میں شراب تھی تو اس کی مذمت کرتے ہیں، لیکن اس کی تفتیش ہونی چاہیے، ناصر حسین

پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما ناصر حسین شاہ کا کہنا ہے کہ اگر بوتل میں شراب تھی تو اس کی مذمت کرتے ہیں اور پھر اس کی تفتیش ہونی چاہیے۔ پی پی رہنما کا کہنا تھا کہ چیف جسٹس سپریم کورٹ ہمارے لیے قابل احترام ہیں، میڈیکل رپورٹ میں آجائے گا کہ شرجیل میمن نے شراب نہیں پی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ملازم کے بقول ایک بوتل میں شہد اور دوسری میں تیل ہے جب کہ شرجیل میمن کا کچھ عرصہ قبل آپریشن ہوا ہے۔ لہٰذا ان کے علاج کے معاملے کو انسانی ہمدردی کے طور پر دیکھا جائے۔

ناصر حسین شاہ کا کہنا ہے کہ اگر بوتل میں شراب تھی تو اس کی مذمت کرتے ہیں اور پھر اس معاملے کی تفتیش بھی ہونی چاہیے۔ ان کا کہنا تھا کہ کئی دیگر کیسز بھی زیرالتواء ہیں، جن پر بھی توجہ دینی چاہیے لیکن میں ذاتی طور پر کہتا ہوں کہ وہ اس طرح کے چھاپے مار سکتے ہیں۔

یاد رہے کہ چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس ثاقب نثار نے کلفٹن میں واقع ضیاء الدین اسپتال میں زیرعلاج پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما شرجیل انعام میمن کے کمرے پر چھاپا مارا گیا۔ چھاپے کے دوران وہاں سے شراب کی بوتلیں، سگریٹس اور منشیات برآمد ہوئی۔ جس کے بعد سابق صوبائی وزیر کو سینٹرل جیل منتقل کر کے نجی اسپتال میں ان کا کمرہ سیل کردیا گیا ہے۔

پولیس حکام کے مطابق اسپتال میں شرجیل میمن کے کمرے کی تلاشی لینے کے بعد انہیں جیل منتقل کر دیا گیا۔ جبکہ جیل منتقلی سے قبل شرجیل میمن کے خون کے نمونے بھی لیے گئے ہیں۔ شرجیل میمن کے کمرے سے حراست میں لیے گئے ایک شخص جام محمد نے مؤقف اختیار کیا کہ وہ کسی اور کے ہاں ڈرائیور کی حیثیت سے نوکری کرتا ہے اور صرف 2 دن کے لیے اپنے دوست کی جگہ یہاں آیا تھا، جو کہ چھٹی پر ہے۔ جام محمد نے بتایا کہ اسے نہیں پتہ تھا کہ ان بوتلوں میں کیا تھا، پولیس والوں نے بتایا کہ ان بوتلوں میں شہد اور تیل تھا۔


Get real time updates directly on you device, subscribe now.

اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

Translate »