سانحہ حویلیاں کو ایک برس بیت گیا

حویلیاں: سانحہ حویلیاں کو بیتے ہوئے ایک برس ہو گیا لیکن آج بھی اس سانحہ میں جان بحق ہونے والوں کی یادیں دلوں میں زندہ ہیں حکومت کے ٹھیکیدار اداروں کی بے حسی  اور لاپر واہی نے لواحقین کو دربدر کی ٹھو کریں کھانے پر مجبور کردیا ہے۔

سانحہ حویلیاں کو ایک برس بیت گیا اور اس سانحہ نے 47 خاندانوں کو رلا دیا جب کہ اس المناک حادثے میں جاں بحق ہونے والوں کی یادیں ورثاء کے دلوں میں آج بھی زندہ ہیں۔

لیکن ہماری حکومت کے اداروں کے کانوں میں تو جوں تک نہیں رینگتی اور حویلیاں کے مقام پر تباہ ہونے والے طیارے کو بے یا روممدگار  چھوڑ دیا  گیا ہے  مزید ظلم یہ کہ اپنے پیاروں کی جدائی کےغم میں نڈھال ورثاء دفاتر کے چکر لگا لگا  کر تھک گئے ہیں لیکن اپنوں کو کھونے والے 20خاندانوں کو انشورنس کی رقم  بھی نہیں ملی

متاثرین نے بتایا کہ(پی آئی اے)اور حکومتی اداروں نے داد رسی تو کیا پہلی برسی پر تعزیت وافسوس تک نہیں کیا ابھی تک  سانحہ حویلیاں میں جاں بحق  ہونے والے افراد کی ڈی این اے رپورٹس نہیں دیں  متاثرین نے آج احتجاج کا اعلان کیا ہے۔

واضح رہے کہ گزشتہ سال 7 دسمبر کو چترال سے اسلام آباد آتے ہوئے پی آئی اے کا جہاز حویلیاں کے قریب حادثے کا شکار ہوگیا تھا جس کے نتیجے میں جہاز کے عملے سمیت 47 افراد جاں بحق ہو گئے تھے جن میں جنید جمشید،ان کی اہلیہ، ڈپٹی کمشنر چترال اوران کی فیملی شامل تھی۔


اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.