ضلعی انتظامیہ کی نااہلی کے باعث کراچی میں دودھ کی قیمت 100 روپے فی لیٹر مقرر

ضلعی انتظامیہ کی نااہلی کے باعث کراچی میں دودھ کی فی لیٹر قیمت نے سنچری کرلی۔ ریٹیلرز کا کہنا ہے جب ڈیری فارمرز سرکاری نرخ پر دودھ فراہم نہیں کرتے تو ہم کیسے 85 روپے لیٹر میں دودھ فروخت کریں۔ضلعی انتظامیہ اور ریٹیلرز کے

درمیان دودھ کی نئی قیمت کا تعین نہ ہونا عوام پر بھاری پڑگیا، نئی قیمت کا نوٹیفیکسشن جاری تو نہ ہوسکا مگر گوالوں نے دودھ کی فی لیٹر قیمت 15 روپے تک بڑھا دی ہے جبکہ کئی ریٹیلرز نے دکانیں کھولی ہی نہیں جس سے شہریوں کو پریشانی کا سامنا ہے۔ریٹیلرز کہتے ہیں کہ کمشنر کراچی نے دودھ کی فی لیٹر قیمت 95 روپے کرنے کی یقین دیہانی کرائی تھی مگر اب تک نوٹیفیکشن جاری نہیں ہوا۔ دودھ کی قیمتوں میں اضافے کے خلاف سوشل میڈیا پر 3 دن دودھ کے بائیکاٹ مہم کا آغاز ہوچکا ہے۔ دوسری جانب انتظامیہ نے شہر میں دودھ سرکاری نرخ یعنی 85 روپے لیٹر پر فروخت کو یقینی بنانے کے لئے منافع خوروں کے خلاف کارروائی کا آغاز کر دیا ہے۔


اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.