سڑکیں اور پل بنانے سے ملک و قوم ترقی نہیں کرتے، عمران خان

پشاور میں خیبرپختونخوا انفارمیشن ٹیکنالوجی بورڈ کی تقریب تقسیم اسناد سے خطاب کرتے ہوئے عمران خان کا کہنا تھا کہ سب سے بڑی غلامی ذہنی غلامی ہے جبکہ آزاد ذہن بڑے بڑے کام کرتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ملک کے تعلیمی نظام پر پورا زور لگانا ہے، کے پی کے کی حکومت نے جو کچھ حاصل کیا وہ کسی اور صوبے نے حاصل نہیں کیا جبکہ ہری پور میں بھی بین الاقوامی معیار کی یونیورسٹی بنا رہے ہیں۔عمران خان کا کہنا تھا کہ پورے پاکستان میں خیبر پختونخوا کے تعلیمی نتائج بہترین ہیں اور خیبر پختونخوا میں جو کچھ حاصل کیا وہ کسی صوبے نے نہیں کیا۔انہوں نے کہا کہ خیبر پختونخوا میں پولیس کا بہترین نظام ہے، صوبے میں 5 ہزار پولیس والوں کو ڈسپلن کی خلاف ورزی پر نکالا گیا کیونکہ ادارے وہاں مضبوط ہوتے ہیں جہاں میرٹ ہوتی ہے۔چیئرمین تحریک انصاف کا کہنا تھا کہ شریف برادارن 19 سال سے پنجاب میں حکومت کر رہے ہیں لیکن وہاں کی پولیس پر عوام کو اعتماد نہیں ہے، قصور میں جو ہوا لوگوں نے پولیس اور حکمرانوں کی بجائے آرمی چیف اور چیف جسٹس سے مدد مانگی۔عمران خان کا کہنا تھا کہ سسٹم کے بغیر ملک ترقی نہیں کرسکتا، کہتے ہیں کہ بیورو کریسی کام نہیں کرتی لیکن اگر اسے متحرک کردیں تو یہی بیوروکریسی وہ کام کر سکتی ہے جو نجی ادارے نہیں کر سکتے۔ان کا کہنا تھا کہ گدھے پر لکیریں ڈالنے سے وہ گھوڑا نہیں بنتا اور نا ہی اشتہارات پر سڑکیں بنانے سے ملک اور قوم بنتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ عوام کو روزگار فراہم کرنا ریاست کی اولین ذمہ داری ہے، بے روزگاری کی وجہ سے پاکستانیوں کی ایک بڑی تعداد دیار غیر میں مقیم ہے،


اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.