Daily Taqat

بیرون ملک بینکوں میں پڑی پاکستانی دولت بارے ازخود نوٹس کا خیر مقدم:سینیٹر سراج الحق

لاہور:امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے چیف جسٹس کی طرف سے باہر کے بنکوں میں پڑی پاکستانی اشرافیہ کی دولت کے بارے میں ازخود نوٹس کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ ایک تاریخی فیصلہ ہے جس سے ملک سے چرائی گئی قومی دولت واپس آنے کی امید پیدا ہوگئی ہے ،چیف جسٹس نے قومی اداروں کو 15دن کے اندر اس دولت کے بارے میں تفصیلات مہیا کرنے کا حکم دیا ہے جو خوش آئند ہے ,حکومت کی طرف سے جاری کی گئی ایمنسٹی سکیم نیا این آراو ہے جس کے ذریعے سیاہ دھن کو سفید کیا جائے گا,قوم حکمرانوں کے ایسے اقدامات کو قبول نہیں کرے گی,جماعت اسلامی کا دیرینہ موقف ہے کہ بیرون ملک پڑی ہوئی چوری کی دولت کو ملک میں لایا اور لٹیروں کو احتساب کے کٹہرے میں کھڑا کرکے ان کا مکمل آڈٹ کیا جائے ,مجوزہ سکیم ان لوگوں کے ساتھ انتہائی ناانصافی ہے جو ایمانداری سے اپنا ٹیکس دیتے ہیں ,حکومت ٹیکس کی وصولی کے نظام کو بہتر بنائے اور جو لوگ ٹیکس سے بچنے کیلئے اپنی دولت چھپاتے ہیں ان کے خلاف سخت قانونی کاروائی کی جائے, غریبوں سے ٹیکس لے کر امیروں پر خرچ کرنے کی پالیسی اب نہیں چلے گی اور ٹیکسوں سے اکٹھی ہونے والی رقم کسی لٹیرے کی جیب میں نہیں جانے دیں گے ۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے منصورہ میں مرکزی پارلیمانی مشاورتی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔اجلاس میں لیاقت بلو چ،میاں محمد اسلم ،اسد اللہ بھٹو،ڈاکٹر فرید احمد پراچہ ،محمد اصغر اور ملک بھر سے مرکزی مشاورتی کونسل کے ممبران نے شرکت کی۔سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ ماضی میں ڈکٹیٹرمشرف ،پیپلز پارٹی اور مسلم لیگی حکومتوں نے اس طرح کی کئی سکیموں کے ذریعے اپنے اپنے لوگوں کو نوازنے،ٹیکس سے بچنے اور لوٹ کھسوٹ سے بنائی ہوئی دولت کو تحفظ دینے کی کوشش کی، یہ سکیم بھی اسی کا ایک تسلسل ہے جس کے ذریعے چوری کی دولت اورآف شور کمپنیوں کی کمائی کو قانونی تحفظ دینے کی کوشش کی جارہی ہے ۔ اقتدار پر قابض مصنوعی قیادت نے ملک کی آزادی و خود مختاری کو عالمی صیہونی اداروں کے ہاتھ گروی رکھ دیا ہے ،سودی قرضوں کی معیشت نے پاکستان کو خود انحصاری کی منزل سے دور کیا اوردنیا بھر میں پاکستان کی عزت و وقارکو شدید نقصان پہنچایا,عوام کی محرومیوں کے ذمہ دار وہ حکمران ہیں جو ناصرف قومی دولت لوٹ کر بیرونی بنکوں میں منتقل کرتے رہے بلکہ ورلڈ بنک اور آئی ایم ایف سے قرضے لیکر قوم کو غلامی کی زنجیروں میں جکڑ دیا ،دینی قوتیں آئندہ انتخابات میں ایم ایم اے کے پلیٹ فارم سے سیکولر اور لبرل ازم کے حامیوں کا راستہ روکیں گی ،پاکستان کی نظریاتی اور جغرافیائی سرحدوں کا دفاع ہمیں اپنی جان سے زیادہ عزیز ہے ۔70سال سے اقتدار پر قابض مافیا سہانے خواب دکھا کر ایک بار پھرعوام کودھوکہ دینے کی کوشش کررہا ہے ،ملک سے کرپشن کے خاتمہ تک چین سے نہیں بیٹھیں گے ،لوٹی گئی قومی دولت کی پائی پائی وصول کرکے اسے عام آدمی کی تعلیم ،صحت ،روز گار پر خرچ کریں گے ۔
سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ آئندہ انتخابات میں ایم ایم اے ایک متبادل سیاسی قوت کے طور پر سامنے آئے گی،دینی جماعتوں کو متحد کرکے سیاست کے فرعونوں کے مقابلے پر کھڑا کرنا جماعت اسلامی کی جدوجہد اور سیاست کا مرکزی نقطہ ہے،سیاست ،جمہوریت اورریاست کو کرپشن کی دولت کے بل بوتے پر یرغمال بنانے والوں نے ملک و قوم کو محرومیوں اور پریشانیوں کے علاوہ کچھ نہیں دیا ،عوام تعلیم ،صحت ،روز گارحتی کہ پینے کے صاف پانی سے محروم ہیں،عام آدمی اس استحصالی سیاست کا خاتمہ چاہتا ہے،ہماری کوشش ہے کہ ملک میں دین کی سربلندی کیلئے جدوجہد کرنے والی دینی جماعتوں کو ایم ایم اے میں شامل کرکے انہیں سیکولر اور بے دین قوتوں کے مقابلے کھڑا کرنا ہے،انہوں نے کہا کہ دینی قیادت ہی عوام کی نمائندگی کا حق رکھتی ہے اورتمام ملکی مسائل کا حل اسلامی نظام کے نفاذ میں ہے ۔


Get real time updates directly on you device, subscribe now.

اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

Translate »