زینب کے قاتل کو پکڑنے کیلئے پولیس اہلکار روپ بدل بدل کر کیا کام کرتے رہے

قصور کی معصوم کلی زینب کے قاتل کو تلاش کرنے کے لئے تمام تحقیقات روایاتی طریقوں سے ہٹ کر کی گئیں ، ایک جانب اداروں نے جدید تیکنیک استعمال کی تو دوسری جانب پنجاب پولیس کے جوانوں نے بھی انتہائی جانفشانی کا مظاہر ہ کیا ، اب پنجاب پولیس کی ان گمنام اہلکاروں کی تصویریں بھی سامنے آگئی ہیں جو اس کیس کی تحقیقات میں مصروف رہے۔ پنجاب پولیس نے زینب کے قاتل کو تلاش کرنے کے لئے روایتی طریقہ کار کو چھوڑ کر انتہائی دلچسپ انداز بھی اپنایا،پولیس اہلکاروں نے بھیس بدل کر قصور کی گلیوں میں زینب کی قاتل کی تلاش جاری رکھی ، ایک پولیس اہلکار کی تصویر سامنے آئی ہے، جس میں پولیس اہلکار ایک گلی میں کینو کی ریڑھی لگائے ، کینو فروخت کر رہا ہے ، دراصل پولیس اہلکار محلے میں ہرآنے جانے والے فرد پر نظر رکھ رہا تھا ۔اسی طرح ایک اور پولیس اہلکار موبائل فون کے سمز فروخت کررہا ہے ، ایک مصروف چوراہے پر موبائل فون کمپنی کے نمائندے کے بھیس میں اہلکار کا مقصد مختلف افراد پر کڑی نگاہ رکھنا تھا۔


اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.