ہم واقعہ قصور پر شرمندہ ہیں: ترجمان پنجاب حکومت

ملک احمد خان کا کہناتھا کہ ہم واقعہ قصور پر شرمندہ ہیں ، یہ ایک ایسا واقعہ ہے جس پر وضاحت کے لئے میرے پاس الفاظ نہیں ہیں۔ زینب کے واقعے سے پہلے 6سے 7مقدمات ایسے تھے جن سے معلوم ہوتا تھا کہ سب کا ملزم ایک ہے جبکہ جس طریقے سے ملزمان لاشوں کو پھینکا اس سے معلوم ہو اکہ طریقہ بدلا گیا ہے لیکن لاشوں کے ساتھ جوبرتاو کیا گیا وہ ایک ہی ملزم کی جانب سے اشارہ کرتا ہے۔
انہوں نے کہا کہ بعض ڈی این اے میچ بھی ہوئے ہیں،ملزم کو قرار واقعی سزا ملنی چاہیے ،بیٹیاں سب کی ایک جیسی ہوتی ہیں۔ترجمان پنجاب حکومت کا مزید کہناتھا کہ ڈی پی او قصو ر کو5روز سے واقعے کا علم تھا لیکن پھر بھی انہوں نے توقع کے مطابق کارکردگی کا مظاہرہ نہیں کیا جس وجہ سے انہیں ہٹا یا گیا ۔


اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.