اہم خبرِیں
انوپم کھیر کا خاندان بھی کورونا وائرس کا شکار فیصل واوڈا نے کے الیکٹرک سے متعلق بلاول بھٹو کی رپورٹ کو کرپشن... چین میں طوفانی بارشوں کے باعث بدترین سیلابی صورتحال پیدا گوگل کا بھارت میں 10 ارب ڈالر کی سرمایہ کاری کرنے کا اعلان ’ارطغرل غازی‘ کی حلیمہ سلطان کو کیو موبائل نے اشتہار کیلئے منت... احسن اقبال کی نیب کو وزیر اعظم کے خلاف ریفرنس دائر کرنے کی د... ہوٹل کی7 ویں منزل سے گرنے والے شخص کی بالکونی میں دوسرے شخص سے... اسلام آباد ہائیکورٹ نے آن لائن پب جی گیم پر پابندی کےخلاف درخو... افغانستان سے پاکستان چرس کی بڑی کھیپ کی اسمگلنگ کی کوشش ناکام سیاست سے دور جہانگیر ترین ان دنوں کہاں؟ لاہور سمیت پنجاب کے چھوٹے بڑے شہروں میں بجلی کی آنکھ مچولی جا... حکومت کو شوگر ملز کے خلاف کارروائی کی اجازت، سپریم کورٹ دودھ کی قیمتوں میں مزید اضافے کا عندیہ بن قاسم پاور پلانٹ میں تکنیکی خرابی کا دعویٰ ،کے الیکٹرک 45 سالہ شخص کی 6 سالہ بچی سے زیادتی شوگر ملز ایسوسی ایشن سے جہانگیر ترین گروپ کا خاتمہ کووڈ-19 کی ٹیم کے کپتان کی حیثیت سے خدمات انجام دینے پرپاکستان... سی ٹی ڈی کی کاروائی پر کالعدم تنظیم کے تین دہشت گرد گرفتار پنجاب میں لوڈ شیڈنگ کا سلسلہ جاری یواے ای کا مریخ پرروانہ ہونیوالا مشن ملتوی

لاہور: رکشے میں بم دھماکے سے 10 افراد زخمی

لاہور کے علاقے چوبرجی میں ایک رکشے میں دھماکہ ہوا ہے جس کے نتیجے میں دس افراد زخمی ہوگئے جبکہ تین موٹر سائیکلیں بھی تباہ ہوگئیں۔

دھماکے کے بعد ایس پی سول لائنز دوست محمد، ڈی ایس پی، ایس ایچ او اور متعلقہ پولیس افسران جائے وقوعہ پر پہنچے جبکہ متعلقہ اداروں نے موقع سے شواہد اکٹھا کیے۔

دوست محمد خان نے میڈیا سے گفتگو میں کہا ہے کہ رکشہ ڈرائیور کی شناخت رمضان کے نام سے ہوئی جس نے ایک سواری شیراکوٹ سے بٹھائی اور سمن آباد کے قریب اتارا۔

انہوں نے بتایا کہ مسافر کو اتارنے کے بعد رکشہ ڈرائیور پونچھ روڈ کے قریب رکشہ روک کر نیچے اترا اور اس کے فوری بعد دھماکہ ہوگیا۔

دھماکے کے نتیجے میں رکشہ ڈرائیور اور خاتون سمیت پانچ افراد زخمی ہیں۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ رکشہ ڈرائیور رمضان کی حالت خطرے سے باہر ہے۔

پنجاب سائنس فرانزک لیب، سی ٹی ڈی، بم ڈسپوزل اسکواڈ سمیت تمام متعلقہ ادارے تحقیقات کر رہے

ترجمان محکمہ انسداد دہشت گردی (سی ٹی ڈی) کے مطابق اس موقع پر اسے دہشت گردی کی کارروائی نہیں کہا جا سکتا۔

انہوں نے بتایا کہ محکمہ کی ٹیم موقع پر موجود ہے اور شواہد اکٹھے کیئے جارہے ہیں۔

بم ڈسپوزل ٹیم کے رکن نصیر احمد کے مطابق یہ سیلینڈر دھماکہ بلکہ بم دھماکہ تھا اور اس میں کم از کم ڈیڑھ سے دو کلو بارودی مواد استعمال ہوا۔

انہوں نے بتایا کہ جائے وقوعہ سے مقناطیس بھی برآمد ہوا جسے بم کو پلانٹ کرنے میں استعمال کیا گیا۔ نصیر احمد نے بتایا کہ جائے وقوعہ سے بال بیئرنگ بھی برآمد ہوئے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ بم کو کہاں پلانٹ کرنے کے لیے لے جایا جا رہا تھا ابھی کہنا قبل از وقت ہے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ دھماکہ کے باعث زمین میں گڑھا نہیں بنا کیونکہ بم کم از کم ڈیڑھ سے دو فٹ اونچی جگہ پر تھا۔


Get real time updates directly on you device, subscribe now.

اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.