امریکی خفیہ ایجنسی سی آئی اے کے سربراہ مائیک پومپیو کا پاکستان پرالزام

واشنگٹن: امریکی خفیہ ایجنسی سی آئی اے کے سربراہ مائیک پومپیو نے کہا ہے کہ پاکستان دہشتگردوں کو محفوظ پناہ گاہیں فراہم کر رہا ہے اور ہم نے امداد بند کر کے اسلام آباد کو ایک موقع دیا ہے۔

معروف امریکی پروگرام ’فیس دی نیشن‘ میں پاکستان سے متعلق پوچھے گئے سوال کے جواب میں سی آئی اے کے سربراہ مائیک پومپیو کا کہنا تھا کہ میں پاکستان کے حوالے سے امریکہ کی پالیسی پر تو گفتگو نہیں کروں گا لیکن انٹیلی جنس چیف کی حیثیت سے اس حوالے سے ضرور بات کروں گا۔مائیک پومپیو کا کہنا تھا کہ ہم دیکھ رہے ہیں کہ پاکستان مسلسل ان دہشتگردوں کو محفوظ پناہ گاہیں فراہم کر رہا ہے جو امریکہ کے لیے خطرہ ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے پاکستان کو آگاہ کر دیا ہے کہ اب یہ سب قابل قبول نہیں ہوگا۔پاکستانی امداد کی کٹوتی کے حوالے سے بات کرتے ہوئے مائیک پومپیو کا کہنا تھا کہ ایسا کر کے ہم نے پاکستان کو ایک موقع فراہم کیا ہے، اگر اسلام آباد نے مسائل پر قابو پالیا تو ہمیں ان کے ساتھ تعلقات کو آگے لے کر چلنے میں خوشی ہو گی اور اگر پاکستان نے ایسا نہیں کیا تو ہم امریکہ کا تحفظ کریں گے۔

سی آئی اے چیف نے مزید کہا کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ واضح طور پر کہہ چکے ہیں کہ وہ چاہتے ہیں پاکستان ان دہشت گردوں کی پناہ گاہوں کا خاتمہ کرے جو امریکہ کے لیے خطرہ ہیں۔رواں برس کے آغاز پر امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے پاکستان مخالف ٹوئٹ کرتے ہوئے کہا تھا کہ امریکہ نے پاکستان کو 15 برسوں میں 33 ارب ڈالر امداد دے کر حماقت کی۔ڈونلڈ ٹرمپ کا یہ بھی کہنا تھا کہ ہم نے پاکستان کو امداد دی جبکہ پاکستان نے ہمیں جھوٹ اور دھوکے کے سوا کچھ نہیں دیا۔پاکستان کی سول اور عسکری قیادت نے امریکی صدر کے الزامات کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ اس طرح کے بیانات سے دونوں ممالک کے مشترکہ مقاصد کے حصول کی کوششیں متاثر ہوں گی۔

بعد ازاں امریکی محکمہ خارجہ کی ترجمان نے پاکستان کی سیکیورٹی امداد کی معطلی کی تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ دہشتگردوں کے خلاف فیصلہ کن اقدامات کی صورت میں امداد بحال ہو سکتی ہے۔ایک سینئر امریکی عہدیدار نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا تھا کہ امریکا پاکستان کی لگ بھگ دو ارب ڈالر امداد روک سکتا ہے۔دوسری جانب پاکستان کی سیاسی و عسکری قیادت نے امریکی الزامات کو یکسر مسترد کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان نے دہشت گردی کے خلاف جنگ اپنے وسائل سے لڑی اور اس میں کامیابی بھی حاصل کی جبکہ امریکا افغانستان میں اپنی شکست کا غصہ پاکستان پر اتار رہا ہے۔

وزیر خارجہ خواجہ آصف نے کہا کہ امریکی صدر کے بیان اور سیکیورٹی امداد کی معطلی پر رعمل دیتے ہوئے کہا تھا کہ ہم امریکا کے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں ہماری زمینی اور فضائی سروسز کی مد میں 9 ارب ڈالر دینے ہیں


اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.