Daily Taqat

ایران ایٹمی معاہدے پر دیگر اقوام کا ردّ عمل سامنے آگیا

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے ایران کے ساتھ ہونے والے جوہری معاہدے سے علیحدگی کے اعلان کے بعد دیگر اقوام کا ردّ عمل بھی سامنے آگیا۔

روس کا کہنا ہے کہ ایران جوہری ڈیل نےبھرپورکارکردگی دکھائی،امریکاعالمی توانائی ایجنسی پربین الاقوامی اعتمادکونقصان پہنچارہاہے، تہران کےساتھ دوطرفہ تعلقات جاری رہیں گے۔

جاپان نے کہا کہ امریکا کی ایران ڈیل سےدستبرداری افسوسناک ہے۔

آسٹریلیا نے ردّ عمل دیتے ہوئے کہا کہ ڈیل کے تمام فریقین کے درمیان اتفاق کے لئے کوشاں رہے، آسٹریلوی وزیراعظم میلکوم ٹرن بُل کا کہنا ہے کہ امریکا کی دستبرداری سے حیرت نہیں ہوئی، پھر بھی افسوس ہوا ہے۔

سعودی عرب کا کہنا ہے کہ ایران نے پابندیاں ہٹانے پر معاشی فوائد حاصل کئے، خطے میں استحکام کو نقصان پہنچایا۔

سعودی دار الحکومت ریاض میں جاری کردہ ایک سرکاری بیان میں کہا گیا ہے کہ ’’ سعودی عرب نے ماضی میں ایران اور چھے بڑی طاقتوں کے درمیان سمجھوتے کی حمایت کی تھی اور اس کی جانب سے حمایت اس پختہ اعتقاد کی بنا پر تھی کہ اس سے مشرق وسطیٰ اور دنیا میں وسیع پیمانے پر تباہی پھیلانے والے ہتھیاروں کے پھیلاؤ کو محدود کرنے میں مدد ملے گی‘‘۔

سعودی عرب نے مزید کہا لیکن ایران نے اس سمجھوتے کو خطے میں اپنی تخریبی سرگرمیوں بالخصوص بیلسٹک میزائلوں کی تیاری جاری رکھنے کے لیے استعمال کیا۔اس نے حزب اللہ اور حوثی ملیشیا سمیت خطے میں دہشت گرد گروپوں کی حمایت کی ۔

فرانس کا کہنا ہے کہ ایران جوہری معاہدے ختم نہیں ہوا،معاملے پر فرانسیسی صدر میکروں آج ایرانی صدر سے بات کریں گے اور جوہری معاہدہ برقرار رکھنے پر زوردیں گے۔

فرانسیسی وزیر خارجہ کا کہناتھا کہ عالمی اٹامک انرجی نےتصدیق کی ہے کہ ایران جوہری معاہدے کی پاسداری کررہا ہے،ایرانی بلیسٹک میزائلوں اور دیگر معاملات پر لازمی بات کی جانی چاہیئے لیکن جوہری معاہدہ برقرار رہنا چاہئے۔


Get real time updates directly on you device, subscribe now.

اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

Translate »