بھارت کے ایٹمی اثاثے کس کس مقام پر ہیں؟ فہرست پاکستان کو مل گئی

پاکستان اور بھارت کے درمیان ایٹمی تنصیبات اور حساس مقامات سے متعلق معلومات پر مشتمل فہرستوں کا تبادلہ کیا گیا ہے۔ یہ تبادلہ دونوں ممالک کے درمیان ایسے مقامات پر حملے نہ کرنے سے متعلق ایک معاہدے کے تحت کیا گیا ہے۔بھارتی وزارت برائے امور خارجہ کی جانب سے جاری بیان میں بتایا گیا ہے کہ یہ تبادلہ پاکستان اور بھارت کے درمیان سفارتی بنیادوں پر ہوا۔ وزارت برائے امور خارجہ کے مطابق یہ لگاتار 27 ویں مرتبہ اس طرح کی فہرست کا تبادلہ ہوا ہے۔پاکستان اور بھارت کے درمیان ایٹمی تنصیبات پر حملوں کی ممانعت اور فہرست کے تبادلے کا معاہدہ 31 دسمبر 1988ءکو ہوا تھا جس پر 27 جنوری 1991ءسے عملدرآمد شروع کیا گیا۔ معاہدے کے تحت اس بات کو یقینی بنایا گیا کہ دونوں ممالک ہرو سال اپنی ایٹمی تنصیبات اور معاہدے کی روح میں آنے والے حساس مقامات کی فہرست کا تبادلہ کریں گے۔


اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.