بھارت کے وزیر جنگلات کو بھی کرپشن کا سامنا کرنا پڑا

بھوپال: بھارتی ریاست مدھیہ پردیش میں شیو راج کابینہ کے سب سے سینئر ممبر اور سات مرتبہ رکن پارلیمنٹ منتخب ہونے والے وزیر جنگلات ڈاکٹر گوری شنکر ایک ایسا’’ جرم ‘‘ کر کے بڑی مصیبت میں پھنس گئے ہیں جو ہمارے ہاں ’’ جرم ‘‘ ہی تصور نہیں ہوتا ،بھارتی وزیر جنگلات کو اپنی بیوی اور سالی کو سرکاری خرچ پر قریبی ریاست کرناٹک کے تفریحی مقامات پر سیر کرانے کے جرم میں تحقیقات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے جبکہ اس بات کی بھی تحقیق کی جا رہی ہے کہ کرناٹک حکومت نے انہیں ’’مہمان ‘‘ کا درجہ کیو ں دیا تھا ؟۔

ہندوستان کی اہم ریاست مدھیہ پردیش میں شیوراج کابینہ کے سب سے سینئر وزیر پر بدعنوانی کے الزامات لگے ہیں، جنگلات کے وزیر ڈاکٹر گوری شنکر پر سرکاری اخرات پر اپنی اہلیہ اور سالی کو کرناٹک کی سیر کرانے کا الزام ہے،اس الزام کے بعد لوک ایکٹ کے تحت ان کے خلاف تحقیقات شروع ہو گئی ہیں ۔بھارتی وزیر پر الزام ہے کہ ڈاکٹر گوری شنکر نے رواں سال 11 سے 15 فروری تک ایم پی ایکو ٹورازم بورڈ کے اخراجات پر کرناٹک کا سفر کیا تھا جبکہ کرناٹک حکومت نے وزیر موصوف کو ’’خصوصی مہمان‘‘ کا درجہ دیا تھا،ڈاکٹر شنکر کے ہمراہ انکی اہلیہ کرن شیجوار ، سالی ششی ٹھاکر اور ایک ملازم ورشا پریہار بھی کرناٹک کے دورہ پر گئی تھیں۔ الزامات کے مطابق ٹور ازم ڈیپارٹمنٹ نے سبھی قوانین بالائے طاق رکھتے ہوئے وزیر جنگلات کے سفر کے پورے اخراجات کی ادائیگی سرکاری خزانے سے کی تھی ،اس تفریحی دورے پر دو لاکھ روپے سے زیادہ کا خرچ آیا تھاتاہم وزیر موصوف نے بعد میں 68884 روپے 26 اپریل 2017کو سرکاری خزانے میں جمع کروا دیئے تھے۔ ڈاکٹر گوری شنکر نے  اپنے اوپر لگنے والے الزام پر کہا کہ اگر ان کے خلاف الزام لگا ہے تو اس کی تحقیق ہو گی اور وہ اس میں شامل ہوں گے مگر نجی خرچ کا حساب ملنے کے بعد انہوں نے پورے پیسے سرکاری خزانے میں  جمع کروا دیئے تھے۔ دوسری طرف کانگریس نے وزیر جنگلات پر الزام سامنے آنے پر شدید تنقید شروع کر دی ہے ۔


اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.