اہم خبرِیں
افغانستان میں تعینات جارجیا کے 28 فوجی کرونا وائرس میں مبتلا ملک میں کورونا وائرس کے 2751 نئے کیسزرپورٹ، 75 مریض جاں بحق بھارت اپنے دفاع پر بے پناہ وسائل خرچ کررہا ہے‘اکرام سہگل سندھ حکومت کی جانب سے پہلی بار باقاعدہ طور پر تھانوں کا بجٹ من... چینی اور کھانے کی دیگر اشیاء کی قیمتوں میں روز بروز اضافہ نیپال نے بھارتی پروپیگنڈا کے رد عمل میں ملک میں تمام بھارتی چی... امریکی محکمہ خارجہ کی جانب سے جاپان کو 23 ارب ڈالر کے 105 ایف ... ڈریکولا اصل میں کون تھا، حقیت یا آفسانہ؟ مولانا فضل الرحمان کی بلاول بھٹو زرداری اور آصف علی زرداری سے ... سشانت سنگھ کے بعد اب ایک اور بھارتی اداکار کی خودکشی میڈیا کو پھانسی دینی چاہیے، نعمان اعجاز کا ڈرامہ انڈسٹری پر غص... معروف کامیڈین اور اداکارہ روبی انعم کو دل کا دورہ، اسپتال منتق... پی سی بی کا سلیم ملک اور سابق لیگ اسپنر دانش کنیریا پر عائد پا... کھلاڑیوں کوخود ہی ایک دوسرے کی حوصلہ افزائی کرنی ہو گی، مشتاق ... ویسٹ انڈیز کے مایہ ناز فاسٹ بولر مائیکل ہولڈنگ نسلی تعصب پر با... اعلیٰ ترک عدالت نے 'آیا صوفیہ' کی میوزیم کی حیثیت ختم کر دی 8 پولیس اہلکاروں کے قتل میں ملوث گینگسٹر انکاؤنٹر میں ہلاک چینی برانڈ 'شین' کی جائے نماز کو سجاوٹی قالین فروخت کرنے پر مع... الیکشن سے پہلے جھاڑو پھر جائے گا، شیخ رشید سینیٹر سرفراز بگٹی کے ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری

چائنہ نے سپرپاور امریکہ کو زہر کی گولی دینے والا ملک قرار دے دیا

بیجنگ :  چینی میڈیا نے کہا ہے کہ امریکہ دنیا کو زہر کی گولی کھلانے کی کوشش کر رہا ہے ،تاہم ایک زہر کی گولی اتنی آسانی سے لی نہیں جا سکتی، امریکہ نے اپنے تجارتی طاقتور ملک ہونے کی حیثیت سے کینیڈا اور میکسکو کی آزادی اور خودمختاری کو چھین لیا ہے۔ چائنہ ریڈیو انٹرنیشنل کے مطابق حال ہی میں امریکہ ، میکسیکو اور کینیڈا کے درمیان طے پانے والے معاہدے کے آرٹیکل 32 کے مطابق اگر معاہدے میں شامل کوئی بھی ملک اگر دوسرے غیرمنڈی معیشت کے حامل ملک کے ساتھ آزاد تجارتی معاہدہ طے کرے گا ، تو دوسرے ممالک 6ماہ کے اندر سہ فریقی معاہدے سے نکل سکتے ہیں۔غالب گمان یہ ہیاس آرٹیکل کا مقصد چین کو نشانہ بناناہے۔امریکی وزیر تجارت ولبر روز نے مذکورہ آرٹیکل کو “زہر کی گولی “قرار دیا ہے اور دوسرے ممالک کیساتھ تجارتی معاہدوں میں اسے شامل کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔تو کیا امریکہ چین کو تنہا کرنے میں کامیاب ہوگا؟۔سی آر آئی کی جانب سے جاری کردہ ایک تبصرے میں کہا گیا ہے کہ یہ معاہدہ ” امریکہ فرسٹ”کے اصول کے مطابق ایک غیرمنصفانہ معاہدہ ہے۔واشنگٹن نے اپنے تجارتی طاقتور ملک ہونے کی حیثیت سے کینیڈا اور میکسکو کی آزادی اور خودمختاری کو چھین لیا ہے۔تاہم ایک زہر کی گولی اتنی آسانی سے لی نہیں جا سکتی ۔حال ہی میں کینیڈا کے وزیر خارجہ نے چینی وزیر خارجہ وانگ ای کو کہا کہ کینیڈا دوسرے ممالک کے ساتھ آزاد تجارتی معاہدے کے مذاکرات کو فروغ دینے کا فیصلہ خود کرے گا اور چین سمیت دیگر ممالک کے ساتھ کثیرالطرفہ تجارتی نظام کو جاری رکھنے کا خواہاں ہے۔


Get real time updates directly on you device, subscribe now.

اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.