اہم خبرِیں
افغان صدر کا وزیراعظم کو فون، امریکا طالبان معاہدے پر گفتگو آکسیجن سلنڈر اور اسٹوریج ٹینک کی درآمد پر سیلز ٹیکس ختم پی آئی اے نے 63 ملازمین کوبرطرف کردیا رام اوردام تحفظات کا تحفظ (سیف سٹی اتھارٹی) تیرا یار میرا یار ۔۔۔ عثمان بزدار پنجاب میں اسمارٹ لاک ڈاؤن ختم افغانستان، جیل پر حملہ، تین افراد ہلاک، متعدد قیدی فرار بینکوں کے معمول کے اوقات کار بحال آدم علیہ السلام کے بعد کعبہ شریف میں عبادت کرنے والی واحد خاتو... امریکی خلا باز زمین پرواپس پہنچ گئے کورونا کیسزگھٹ کر25 ہزار172 رہ گئے عشرئہ ذو الحجہ اورعیدا لاضحی کے فضائل واحکام پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ قوم کشمیریوں کے ساتھ کھڑی ہے، شاہ محمود قریشی ملک میں کورونا کے فعال مریضوں کی تعداد 25 ہزار رہ گئی افغانستان، صوبہ لوگر میں خودکش حملہ، 17 افراد ہلاک حجاجِ کرام آج رمی جمار اور قربانی میں مصروف مریخ کے پہلے راؤنڈ ٹرپ پرخلائی گاڑی "پرسویرینس" روانہ افغان حکومت کے بعد طالبان کا بھی تمام قیدی رہا کرنے کا اعلان

چین میں طوفانی بارشوں کے باعث بدترین سیلابی صورتحال پیدا

بیجنگ: چین میں طوفانی بارشوں کے باعث دریا بھرنے سے بدترین سیلابی صورتحال پیدا ہوگئی۔

غیر معمولی بارشوں سے چین کے 33 دریا اپنی انتہائی سطح سے بھی بھر چکے ہیں جس سے چین کو 30 کے دوران اس بار بدترین سیلابی صورتحال کا سامنا ہے جب کہ محکمہ موسمیات نے مزید بارشوں کا امکان ظاہر کیا ہے۔

چین کے وزیر برائے آبی وسائل نے بتایا کہ 433 دریا اور بڑی جھیلیں اپنی انتہائی گنجائش کے بعد وارننگ لیول سے بھی اوپر جاچکے ہیں جب کہ غیر معمولی بارشوں سے دریاؤں کے بند بھی ٹوٹ چکے ہیں۔

وزیر آبی وسائل کا کہنا تھاکہ سیلابی سیزن کا آغاز جون میں ہوا اور سیلاب تھمنے کا عرصہ جولائی کے آخر یا اگست کے اوائل تک جارہا ہے تب تک جھیلوں میں موجودہ خطرناک صورتحال برقرار ہے۔

انہوں نے کہا کہ شدید بارشوں کے سلسلے نے وسطی چین کو بری طرح متاثر کیا جو شمال کی طرف بھی بڑھے گا۔

وزیر آبی وسائل کا کہنا تھا کہ 1961 میں ریکارڈ بننے کے بعد اس بار اوسطاً سب سے زیادہ بارش ریکارڈ کی گئی ہے جس کے باعث ملک کا سب سے بڑا دریا اپنی گزشتہ سطح 94 فٹ پر واپس آگیا ہے۔

چین کی وزارت ایمرجنسی کے مطابق سیلابی صورتحال سے اب تک 141 افراد ہلاک یا لاپتا ہوچکے ہیں جب کہ تقریباً 8 بلین ڈالر سے زائد کا معاشی نقصان بھی ہوچکا ہے۔

رپورٹس کے مطابق فلڈ کنٹرول اتھارٹی پہلے ہی ژیاننگ، جیوجینگ اور ننچنگ جیسے زیادہ آبادی والے علاقوں کے لیے ریڈ الرٹ جاری کرچکی ہے جب کہ پیانگ جھیل کے لیے بھی ریڈ الارٹ جاری کیا گیا ہے جس میں پانی کی سطح عام سطح سے 3 میٹر اوپر ہے جو ایک ریکارڈ ہے۔


Get real time updates directly on you device, subscribe now.

اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.