Latest news

مقبوضہ کشمیر میں کشمیریوں پر پابندیوں کو 72 روز گرز گئے

مقبوضہ کشمیرمیں کرفیو کا آج 72واں روزہے،دکانیں، کاروبار، تعلیمی مراکزبند ہیں اور لوگ گھروں میں محصور ہو کر رہ گئےہیں۔ جنت نظیر وادی میں زندگی سسکنے لگی ہے اور وادی میں نام نہاد سرچ آپریشن جاری ہے،وادی میں خوف کے سائے برقرار ہیں اور قابض بھارتی فوج نے کشمیریوں کی زندگی اجیرن بنادی۔ وادی میں حالات تاحال کشیدہ ہیں جبکہ کشمیری کرفیو توڑ کر سڑکوں پر نکل آئے جبکہ خواتین کی بڑی تعداد نے بھی احتجاج میں حصہ لیا ۔جماعت اسلامی ہند اور سول سوسائٹی کے مشترکہ وفد نے وادی کا دورہ کیا  اور بڑے پیمانے پر کشمیریوں کی گرفتاریوں کا معاملہ اٹھا یا ۔ دوسری جانب کٹھ پتلی انتظامیہ کے جانب سے 72روز سے جاری بندش کے باعث رابطے منقطع ہیں،پابندیوں کے باعث کشمیریوں کی زندگی اجیرن ہو گئی ہے۔قابض بھارتی فوج کی جانب سے پکڑ دھکڑ کا سلسلہ بھی جاری ہے جبکہ ،بھارتی طالبات بھی مودی سرکار کے خلاف میدان میں اتر آئیں اور انہوں نے وادی میں کرفیو ہٹانے کا مطالبہ کر دیا۔ ۔مودی سرکار کشمیریوں کی جدوجہد آزادی کو دبانے میں ناکام ہے اور وادی میں قابض بھارتی فوج کے خلاف مظاہروں کا سلسلہ بھی جاری ہے۔وادی میں موبائل فون،انٹرنیٹ سروس بند اور ٹی وی نشریات تاحال معطل ہیں اور وادی میں خوراک اور ادویات کی شدید قلت برقرارہے۔تاہم پاکستان کی مقبوضہ کشمیر پر سفارتی کوششیں بھی رنگ لانے لگی ہیں۔ کشمیر میں پوسٹ پیڈموبائل فون سروس بھی کل سے سے بحال کردی گئی ۔


اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.