Daily Taqat

بابری مسجد مقدمے کی سماعت 14 مارچ تک ملتوی

    نئی دہلی: بابری مسجد مقدمے کی سماعت آئندہ 14مارچ تک ملتوی کردی گئی۔ چیف جسٹس دیپک مشرا، اشوک بھوشن اور عبدالنظیرپر مشتمل بنچ نے کہا کہ سبھی فریق اسے متنازعہ اراضی ہی سمجھیں۔مسلمانوں کی طرف سے اعجاز مقبول کی دلیل تھی کہ انہیں کئی کاغذات اب تک موصول نہیں ہوئے،اس پر عدالت نے کہا کہ کیس سے متعلق 4 2کتابوں کے اقتباسات کاانگریزی میں ترجمہ کرکے 2ہفتوں کے اندر جمع کرایا جائے اور اس کی نقل تمام فریقوں کو دی جائے۔سپریم کورٹ نے 7 مارچ تک مقدمہ سے وابستہ ویڈیوز پیش کرنےکی ہدایت دی جو  متنازعہ مقام کی کھدائی کے دوران بنائے گئے تھے۔سپریم کورٹ  نے یہ واضح کر دیا  کہ اب اس مقدمہ میں مزید کوئی فریق شامل نہیں کیا جائے گا۔ اس کا مطلب ہے کہ اب اس مقدمہ میں سنی وقف بورڈ، نرموہی اکھاڑا اور رام للا کے علاوہ کسی اور فریق کی دلیل پر غور نہیں ہوگا۔واضح ہو کہ ایودھیا کے معاملہ پر شری شری روی شنکر کافی دنوں سے ثالثی کرنے کی کوششوں میں مصروف ہیں۔ ان کی کوششوں کو تقریباً تمام فریق پہلے ہی مسترد کر چکے ہیں۔ آج انہوں نے مولانا سید سلمان حسینی ندوی اور ظفر فاروقی سمیت دیگر مسلم دانشوروں کے وفد سے بنگلورو میں ملاقات کی۔

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

Translate »