شاہ رچرڈ سوم کے دورکا سکہ 40 ہزارپوںڈ میں نیلام

برطانیہ میں ایک مقامی نیلام گھر نے اب سے تقریبا500سال پرانا سکہ 40ہزار پونڈ میں نیلام کردیا جس کے بارے میں یہ کہا جارہا ہے کہ یہ سکہ امکانی طور پر شاہ رچرڈ سوم کے ان فوجیوں میں سے کسی نے گرا دیا تھا جو باسورتھ کے میدان جنگ سے فرار ہورہے تھے۔

یہ سکہ شاہ رچرڈ سوم کے زمانے میں ڈھالا گیا تھا تاہم ڈھالے گئے سکوں کی تعداد بہت ہی کم تھی جب نیلامی شروع ہوئی تو عام خیال تھا کہ اس کی زیادہ سے زیادہ قیمت 10ہزار پونڈ لگ سکتی ہے مگر دیکھتے ہی دیکھتے بولی بڑھنے لگی اور آخری بولی 40ہزار پونڈ پر ختم ہوئی کہا جاتا ہے کہ یہ سکہ گزشتہ سال ستمبر میں فلاحی مقصد کیلئے منعقدہ ایک دوڑ کے دوران بلیک پول سے تعلق رکھنے والی مشل وال کو ملا تھا جس کے بعد سے اس کی حقیقت جاننے کی کوششیں کی جارہی تھیں۔

واضح ہو کہ بوسورتھ کا میدان جنگ اس اعتبار سے بھی مشہور ہے کہ یہاں جاری جنگ تقریبا30سال رہی تھی اور بعض وجوہ کی بنا پر اسے گلابوں کی جنگ بھی کہا جاتا تھا یہ سکہ سونے کا ہے اور اپنی تاریخی حیثیت کے اعتبار سے بہت اہم ہے ایسے پرانے سکے اس وقت کم ہی نظر آتے ہیں۔

خیال ہے کہ جس فوجی نے یہ سکہ گرایا تھا وہ 1485میں میدان جنگ سے بھاگتے وقت اس سکے کو گرا بیٹھا تھا واضح ہو کہ اس جنگ میں رچرڈ سوم ہلاک کردیئے گئے تھے اور اس کے بعد ان کے مخالف ہنری ٹیوڈور نے تاج و تخت پر قبضہ کرلیا تھا جس کے بعد ٹیوڈور خاندان کا آغاز ہوا۔جسے یہ سکہ ملا تھا اسے دھاتوں کا پتہ لگانے والے آلے سے تقریبا ڈھائی گھنٹے تک میدان میں جدوجہد کرنا پڑی تھی۔


اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.