Daily Taqat

کوئٹہ میں اتائی ڈاکٹروں کا راج برقرار ضلعی انتظامیہ پریشان

کوئٹہ میں اتائی ڈاکٹرمحکمہ صحت کے لیے درد سر بن گئے ہیں ۔ نواحی علاقوں میں تو اتائی ڈاکٹرشہریوں کی جانوں سے کھیل ہی رہےتھے،اب شہر کے وسط میں بھی کلینک کھول لیے ہیں ۔صوبائی دارالحکومت کوئٹہ میں محکمہ صحت کی عین ناک کے نیچے اتائی ڈاکٹروں نے کلینک کھول رکھے ہیں ، ایسے افراد کے پاس نہ ڈپلوما ہے اور نہ کوئی ڈگری لیکن یہ لوگ بڑے بڑے کلینک کھول کر عوام کی زندگیوں سے کھیل رہے ہیں ۔ڈسپنسر وغیرہ جو ڈاکٹربنے بیٹھے ہیں اس سے عوام کی جان کو خطرہ ہے ۔

کوئٹہ شہر میں بدقسمتی سے ایسے لوگ ہیں جو ڈاکٹر بن کر کلینک کھول کربیٹھے ہیں جن کے پاس ڈسپنسری اور میڈیکل ٹیکنیشن کا بھی ڈپلوما نہیں ہے ۔محکمہ صحت کے حکام خود اس بات کا اعتراف کرتے ہیں کہ کوئٹہ میں اتائی ڈاکٹرز کی تعداد سیکڑوں میں ہے ۔حال ہی میں محکمہ صحت کے حکام نے شہر کے مختلف علاقوں نواکلی ، پشتون آباد ، سریاب اور کچلاک میں اتائی ڈاکٹروں کے 60 سے زائد کلینکس سیل کردیے ہیں ۔دلچسپ بات یہ ہے کہ شہر کے بالکل وسط میں واقع لیاقت بازار اور مسجد روڈ پر برس ہا برس سےکام کرنے والے 5 اتائی ڈینٹل کلینکس بھی پکڑے گئے۔اتائی ڈاکٹر معاشرے کے لیے ناسور بن چکے ہیں ، ان کے خلاف مہم چلانا حکومت کا اور ان کی نشاندہی کرنا عوام کا کام ہے ،اس لیے عوام اور حکومت کے باہمی تعاون سے ہی اس مسئلے پر قابو پایا جا سکتا ہے۔


Get real time updates directly on you device, subscribe now.

اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

Translate »