اہم خبرِیں
پاکستان کا 73واں جشن آزادی، ملک بھر میں چودہ اگست کا شاندار ا... بھارت نے امن کوداؤ پرلگادیا، ڈی جی آئی ایس پی کے الیکٹرک خریدار کی جانچ پڑتال کی جائے، چیف جسٹس آج بھارت میں ایک ہندو اسٹیٹ جنم لے رہی ہے، شاہ محمود قریشی ترکی اورفرانس کی افواج آمنے سامنے، فوجی جھڑپ کا خطرہ خیبرپختونخوا اور پنجاب کو بجٹ خسارے کا سامنا یوٹیوب نے ای میل سروس بند کردی ڈاکٹروں کی طرح سوچنے والا "اے آئی سسٹم" تیار نازیہ حسن کو مداحوں سے بچھڑے 20 برس بیت گئے پاکستان انگلینڈ دوسرا ٹیسٹ، آج ساؤتھمپٹن میں شروع ہو گا خیبرپختونخوا، انسداد پولیومہم شروع کورونا وائرس کے مزید 730 کیسز رپورٹ تین ہزار سال قدیم واٹر سپلائی سسٹم پاکستان میں کہاں موجود ہے؟ سونے کی قیمتوں میں بڑی کمی انگلینڈ کے خلاف دوسرا ٹیسٹ، قومی ٹیم کے اسکواڈ کا اعلان ایران ہتھیاروں کا استعمال بند کرے، امریکا کوئٹہ: دکان پر دستی بم حملہ،بچہ جاں بحق سندھ بھر میں 9 اور 10 محرم کو ڈبل سواری پر پابندی عائد قرضوں کی حد 50 لاکھ سے بڑھا کر ڈھائی کروڑ کردی گئی اونرشپ کے بغیر ہم کامیاب نہیں ہو سکتے، عمران خان

بجٹ 2020-21 میں شعبہ صحت پر خصوصی توجہ دینے کا فیصلہ

اسلام آباد: وفاقی حکومت نے نئے مالی سال 2020 – 21 کے لیے سالانہ ترقیاتی پروگرام کو حتمی شکل دے دی ہے جس میں کورنا وائرس کے پیش نظر عام آدمی کو ریلیف دینے کے لیے صحت کے شعبے پر خصوصی توجہ دی جائے گی۔

ذرائع کے مطابق پبلک سیکٹر پروگرام کا مجموعی حجم 630 ارب روپے رکھنے کی تجویز دی گئی ہے جب کہ صحت، تعلیم، صاف ماحول، صاف پانی کی فراہمی کے منصوبوں پر خصوصی توجہ دینے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

ذرائع کے مطابق معیار زندگی بہتر بنانے کے منصوبوں پر خصوصی توجہ دی جائے گی اور پبلک سیکٹر ڈویلپمنٹ پروگرام کے تحت انفراسٹرکچر کے لیے 59 فیصد فنڈز مختص کرنے کی تجویز دی گئی ہے۔

پی ایس ڈی پی کے تحت 35 فیصد فنڈز سماجی شعبے ے لیے مختص کرنے کی تجویز دی گئی ہے یعنی اگلے مالی سال میں 185 ارب روپے سماجی شعبے کے لیے مختص کرنے کی تجویز زیر غور ہے۔

ٹرانسپورٹ اور مواصلات کے شعبے کے لیے 159 ارب روپے مختص کرنے کی تجویز، توانائی کے شعبے کے لیے 70 ارب روپے مختص کرنے کی تجویز اور پانی کے شعبے کے لیے 64 ارب روپے مختص کرنے کی تجویز دی گئی ہے۔

آئندہ بجٹ میں صحت اور بہبود آبادی کے شعبوں کے لیے 18 ارب روپے مختص کرنے کی تجویز دی گئی ہے، تعلیم بشمول ہائر ایجوکیشن کمیشن کے لیے 34 ارب روپے مختص کرنے کی تجویزجب کہ فزیکل پلاننگ اور ہاؤسنگ کے شعبے کے لیے 19 ارب روپے مختص کرنے کی تجویز دی گئی ہے۔

مالی سال 2020-21 کے بجٹ میں پائیدار ترقی کے اہداف کے لیے 41 ارب روپے مختص کرنے کی تجویز زیر غور ہے۔

آزاد کشمیر اور گلگت بلتستان کے لیے آئندہ بجٹ میں 40 ارب روپے مختص کرنے کی تجویز دی گئی ہے جب کہ سابقہ قبائلی علاقوں کے لیے 40 ارب روپے مختص کرنے کی تجویز زیر غور ہے۔
2020-21 کے بجٹ میں عام آدمی کے معیار زندگی میں بہتری کے لیے 100 ارب روپے مختص کرنے کی تجویز دی گئی ہے۔


Get real time updates directly on you device, subscribe now.

اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.