تجزیہ کارڈاکٹر شاہد مسعود اوروزیر قانون پنجاب رانا ثنا اللہ کے درمیان ٹی وی پروگرام کے دوران شدید تو تکرار

لاہور :  معروف تجزیہ کار ڈاکٹر شاہد مسعود اور وزیر قانون پنجاب رانا ثنا اللہ خان  کے درمیان  ٹی وی پروگرام کے دوران شدید تو تکرار ہوئی ہے۔ ڈاکٹر شاہد مسعود نے زینب قتل کیس کے مرکزی ملزم عمران کے سرپرست وفاقی وزیر کا نام بتانے سے انکار کیا تو رانا ثنا اللہ نے انہیں تجزیہ کار کا خاتمہ قرار دے دیا۔
نجی ٹی وی کے پروگرام میں ڈاکٹر شاہد مسعود اور رانا ثنا اللہ آمنے سامنے آئے ۔ وزیر قانون پنجاب نے ڈاکٹر شاہد مسعود کے زینب قتل کیس کے مرکزی ملزم عمران سے متعلق انکشافات کو قوم کو گمراہ کرنے کی کوشش قرار دیا اور کہا کہ ڈاکٹر شاہد مسعود نے اپنے دعویٰ کے ذریعے پوری قوم کو پریشان کرنے کی کوشش کی ہے ۔ ڈاکٹر شاہد مسعود سستی شہرت حاصل کرنے کیلئے یہ سب کام کر رہے ہیں ، انہوں نے کیس میں شکوک و شبہات پیدا کرنے کی کوشش کی، انہیں یہ یاد رکھنا چاہیے کہ یہی بات ان کا خاتمہ ثابت ہوگی۔
پروگرام کے دوران ڈاکٹر شاہد مسعود نے رانا ثنا اللہ کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ وہ انہیں جے آئی ٹی اور عدالت میں مجرم قرار نہ دیں، ’آپ نے جے آئی ٹی کو ’ واڑ‘ دیا ہے اور آپ اس پر اثر انداز ہورہے ہیں، یہ معاملہ سپریم کورٹ میں بھی اٹھاﺅں گا ‘۔
رانا ثنا اللہ کی جانب سے بینک اکاﺅنٹس کی تفصیلات اور وفاقی وزیر کانام مانگے جانے پر ڈاکٹر شاہد مسعود نے انہیں معلومات فراہم کرنے سے انکار کردیا اور کہا کہ وہ ان کے گھر کے ملازم نہیں ہیں اور یہ معلومات صرف جے آئی ٹی کو دیں گے۔’ میں آپ کو نام نہیں دوں گا، بعد میں پتہ چلے کہ آپ کا نام نکل آئے، ویسے اللہ نہ کرے کہ آپ کا نام ہو، آپ کا نام نہیں ہے‘۔
ڈاکٹر شاہد مسعود کی اس بات نے رانا ثنااللہ کو مشتعل کردیا، انہوں نے کہا ’ یہ یاد رکھو کہ جو تم نے سالہا سال سے چکر چلایا ہوا ہے ،یہ تمہارا خاتمہ ہوگا، تمہارے جیسا آدمی سستی شہرت کیلئے یہ سب کچھ کر رہا ہے‘۔
رانا ثنااللہ کی اس بات پر ڈاکٹر شاہد مسعود کا کہنا تھا ’رانا صاحب نے میرا انکاﺅنٹر کردیا ہے، یہ قاتل کو بچانے کی کوشش کر رہے ہیں‘۔


اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.