زرداری کہتے ہیں سی پیک میں نے بنایا تو منصوبوں کا سنگ بنیاد کیوں نہ رکھا؟، شہبازشریف

لاہور:  وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہبازشریف نے گزشتہ روزضلع منڈی بہاوالدین کا دورہ کیا اورملکوال میں 23ارب روپے کے ترقیاتی منصوبوں کا افتتاح اورسنگ بنیاد رکھا۔وزیراعلیٰ نے ڈنگہ منڈی بہاوالدین سڑک کی تعمیر  اوررسول کے ٹیکنیکل کالج کو یورنیورسٹی بنانے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ میں جلد دوبارہ یہاں آوںگا اور اس یونیورسٹی کی تعمیر کا سنگ بنیاد رکھوں گا۔وزیراعلیٰ نے ترقیاتی منصوبوں کے افتتاح اورسنگ بنیاد رکھنے کے بعد ملکوال میں ایک بڑے عوامی اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ عوام کا ٹھاٹیں مارتا ہوا سمندر اس بات کی گواہی دے رہا ہے کہ2018ءکے انتخابات میں پاکستان مسلم لےگ(ن) دوبارہ کامیاب ہوگی۔پرسوں دورہ لیہ کے دوران میں نے وہاں کے عوام کو موبائل ہسپتال کا تحفہ دیا اور آج منڈی بہاوالدین کے عوام کےلئے موبائل ہسپتال کا تحفہ لایا ہوں ۔یہ موبائل ہسپتال منڈی بہاوالدین کے دوردراز اورپسماندہ علاقوں کے لوگوں کو ان کے گھر وں کی دہلیز پر علاج اورتشخیص کی جدید سہولتیں دن رات مہےا کرے گا،جس پر میں منڈی بہاوالدین کے عوام کو مبارکباد دیتا ہوں ۔یقینا یہ ہسپتال ماں،بیٹی،بزرگ ،بچوں کو علاج معالجہ فراہم کرے گا۔علاقے کے عوام کواب علاج کےلئے دورنہیں جانا پڑے گا بلکہ انہیں ےہ سہولت اپنے گھر کی دہلیز پر ہی ملے گی۔ملکوال میں نیا ہسپتال بنایا گیاہے جبکہ ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال منڈی بہاوالدین میں بھی تعمیر و مرمت کا کام تیزی سے جاری ہے ۔انہوںنے کہاکہ گجرات سالم انٹرچینج تک دورویہ سڑک بنی ہے جبکہ اس علاقے میں خادم پنجاب دیہی روڈ زپروگرام ”پکیاں سڑکاں سوکھے پینڈے“کے تحت اربوں روپے کی لاگت سے ہزاروں کلو میٹر دےہی سڑکیں بنائی گئی ہیں۔انہوں نے کہا کہ میں 2013ءمیں انتخابات کے موقع پر یہاں آیا تھا اوروعدہ کیا تھا کہ محمد نوازشریف کی قیادت میں پیپلز پارٹی کے بجلی کے پھےلائے ہوئے اندھےروں کو ختم کریں گے۔آج دوبارہ یہاں آیا ہوں ،ساڑھے چار سال میں ملک سے بجلی کے اندھیرے دور کردیئے ہیں۔پاکستان روشن ہے ملک ترقی کررہا ہے ،زراعت اورصنعت فروغ پارہی ہے۔انہوں نے کہا کہ15سال بجلی نہ ہونے کی بنا پر قومی معیشت کو بے حد نقصان ہوا،ملک کی صنعت اورزراعت تباہ ہوئی۔سندھ،خبیرپختونخواہ اوربلوچستان کے پاس تو گیس موجود تھی لیکن پنجاب کے پاس نہ بجلی تھی اورنہ ہی گیس،جس کی بنا پر پنجاب کی صنعتیں تباہ ہوئیں،لوگوں کے گھر اندھیروں میں ڈوبے ہوئے تھے،زرعی ٹیوب ویلوں کےلئے بجلی نہیں تھی۔پاکستان مسلم لےگ(ن) کی حکومت کی دن رات کی محنت سے ہزاروں میگاواٹ بجلی کے منصوبے لگے ہیں۔چائنہ پاکستان اکنامک کوریڈور کے تحت چین نے بھی ہزاروں میگاواٹ بجلی کے منصوبے لگائے ہےںاورچےن نے پاکستان کی تمام اکائیوںمیں اربوں ڈالر کی سرمایہ کاری کی ہے جس سے پاکستان ترقی اورخوشحالی کا سفر تیزی سے طے کررہا ہے ۔وزیراعلیٰ نے کہا کہ چند سال قبل زرداری صاحب نے کہا کہ سی پیک کامنصوبہ میں نے بنایا،قوم جاننا چاہتی ہے کہ اگرآپ نے سی پیک کے منصوبے پر دستخط کیے تھے تو پھر منصوبوں کا سنگ بنیاد کیوں نہ رکھا؟پاکستان مسلم لیگ(ن) کے دورے حکومت میں ہی سی پیک کے منصوبے شروع ہوئے اورپایہ تکمیل کو پہنچ رہے ہیں۔ دوسری جانب عمران خان نیازی صاحب ہیں جو دن رات جھوٹ بولتے ہیں ،الزامات لگاتے ہیں۔2013ءمیں ایک انٹرویو میں اسی نیازی صاحب نے کہا کہ میں کے پی کے کو بجلی میں خود کفیل بنادوں گا اورپاکستان کو بھی بجلی فراہم کروں گا۔کے پی کے پاکستان کا بہت خوبصورت صوبہ ہے ،ےہاں پہاڑ ہیں،آبشاریں ہی ںاورےہاں پانی سے بجلی پیدا کرنے کی بڑی گنجائش موجودہے ۔مگر خان صاحب آج تک یہاں ایک کلو واٹ بجلی بھی پیدا نہ کر سکے۔خان صاحب نے دن رات جھوٹ بولا،الزامات لگائے ،دھرنے دیئے،احتجاج ییے ،لاک ڈاون کیے جبکہ ہم نے دن رات عوام کی خدمت کی اورملک سے بجلی کے اندھیرے ختم کئے ہیں ۔نیازی صاحب نے مجھ پر الزام لگایا کہ میں نے جاوید صادق سے 27ارب روپے رشوت لی اوریہ بھی الزام لگایا کہ میں نے انہیں پاناما کیس میں 10ارب روپے رشوت دی۔میں عدالت میں گیا ، خان صاحب عدالت میں پیش ہونے کی بجائے تاریخ پر تاریخ لیتے رہے۔کبھی یہ الزام لگاتے رہے کہ فلاں شخص نے تین سو ارب روپے کی کرپشن کی۔میں لاہور ہائی کورٹ کے چیف جسٹس سے درخواست کرتا ہوں کہ وہ ہائی کورٹ کا ایک بنچ بنادیں جو چند دنوں میں مجھ پر لگائے گئے الزامات کا فیصلہ کردے۔اگر میں نے رشوت دی یا کھائی تو میں توبہ کر کے گھر چلا جاوں گا اوراگرنیازی صاحب نے جھوٹ بولا ہے تو وہ پھر سیاست چھوڑ دی تاکہ پاکستان کی تقدیر کا فیصلہ ہوجائے۔ اب عوام کو فیصلہ کرنا ہے کہ انہیں جھوٹا،مکاراورقوم کا وقت برباد کرنے والالیڈر منظور ہے ،کیا احتجاج ،لاک ڈاون ،دن رات دھرنے دینے والا،جھوٹ ،منافقت اورالزام تراشی کی سیاست کرنےوالے کو پاکستان کی نمائندگی کا حق حاصل ہے ؟ 2018ءکا انتخابات آنے والا ہے اور عوام نے سوچ سمجھ کر اللہ تعالیٰ سے رجوع کر کے فیصلہ کرنا ہے کہ انہیں خدمت کرنے والی سیاسی قیادت چاہیے یا پھر جھوٹ بولنے والے نیازی صاحب یا لوٹ مار کرنے والے زرداری صاحب چاہئیں۔ انہوں نے کہا کہ سر سے پاوں تک کرپشن میں ڈوبے زرداری صاحب کہتے ہیں کہ میں شریف خاندان کی کرپشن کا حساب لینے آیا ہوں ۔پہلے آپ اپنی کرپشن کا حساب دیں کہ آپ نے کس طرح قومی وسائل کو دونوں ہاتھوں سے لوٹا ہے ۔اس علاقے میں پیپلزپارٹی کا ایک سابق نامورشخص رہتا ہے جس نے ای او بی آئی کے سکینڈل میں اربوں روپے کی خرد برد کی ۔ اسے زرداری صاحب کی پشت پناہی حاصل تھی لیکن آج یہ شخص پی ٹی آئی میں بیٹھا ہے۔انہوں نے کہا کہ موبائل ہسپتال ہو یا سڑکیں،تعلیمی ادارے ہوں یا ہسپتال ہم نے دن رات محنت کر کے عوام کےلئے منصوبے مکمل کیے اورقومی وسائل کو امانت سمجھتے ہوئے عوام کی ترقی و خوشحالی کےلئے ان کے قدموں پر نچھاور کیے۔ملک کی تاریخ میں پہلی بار کسانوں کو آدھی قیمت پر کھادیں دی گئیں ،بجلی کے ٹیوب ویلوں پر اربوں روپے کی سبسڈی دی گئی اورچھوٹے کسانوں کو بلاسود قرضہ فراہم کیے گئے۔تعلیمی فنڈز سے ساڑھے تین لاکھ کم وسیلہ ہونہار بچے اوربچیوں کو وظائف دیئے جارہے ہیں اوران وظائف سے ہزاروں بچے اوربچیاں انجےنئرز،ڈاکٹرز،سائنسدان،بینکرزبن کر ملک وقوم کی خدمت کررہے ہیں ۔دانش سکولوں میں غریب ترین خاندانوں کے بچوں کو تعلیمی سہولتیں مفت فراہم کی جارہی ہیں۔اسی پاکستان کوقائدؒواقبالؒ نے اپنی آنکھوں میں سمایا ہوا تھا ۔ ہم پاکستان کو قائدؒواقبالؒکے تصورات کے مطابق ڈھالنے کےلئے اقدامات کررہے ہیں تو زرداری ،خان صاحب اور طاہر القادری کو تکلیف ہورہی ہے اورمجھ پر حملے کرتے ہےں،میں ان کا بھر پور مقابلہ کروں گا۔انہوں نے کہاکہ چنیوٹ میں 2007ءمیں پنجاب میں پرویز الہٰی کی حکومت جبکہ مرکز میں جنرل مشرف کی حکومت نے چنیوٹ مےں لوہے کے ذخائر پر ڈاکہ زنی کوشش کی ۔مشرف اورپرویزالہٰی کی حکومت نے بغیر ٹینڈر کے ایک پاکستانی امریکی جو جنرل مشرف کے سویلین سےکرٹری کا بھائی تھا اسے ٹھیکہ دے دیا گیا۔2008ءمیں ہماری حکومت آئی تو ہم نے اس ٹھیکے کو کےنسل کیا ،عدالت میں تین سال تک جنگ لڑی ،عدالت نے کہا کہ یہ پنجاب کے خزانے پر ڈاکہ پڑا ہے۔عدالت نے تحقیقات کےلئے کیس نیب میں بھجوا دیا۔آج ہماری حکومت کی کاوشوں سے چنیوٹ میں ساڑھے چار سو ارب ر وپے کے خام لوہے کے ذخائر کی نشاندہی ہوچکی ہے ، جن لوگوں نے اس قومی خزانے پر ڈاکہ ڈالنے کی کوشش کی انہوں نے اس غریب قوم کے ساتھ بڑا ظلم کیا ۔جب اللہ تعالیٰ روزقیامت مجھ سے پوچھے گا کہ شہبازشریف تو نے کیا کیا؟تو میں اللہ تعالیٰ سے درخواست کروں گا کہ یا اللہ مجھے معاف کردے میں نے غریب قوم کا خزانہ کرپٹ افراد کے جبڑوں سے نکال کرغریب قوم کے قدموں پر نچھاور کیا۔وزیراعلیٰ نے کہا کہ 2013ءکے انتخابات میں جس طرح آپ نے نوازشریف کی قیادت پر اعتماد کیااورانہیں ووٹ کی طاقت سے حکومت دی،اسی طرح اگر آپ نے دوبارہ ہمیں خدمت کا میٹنگ لیتا ہوں کل میں نے ایک مل مالک کو گرفتار کرنے کا حکم دیا ہے۔انشاءاللہ کسانوں کو گنے کی مناسب قیمت دلا کر رہوں گا چاہے کچھ بھی ہوجائے ۔کاشتکاروں کا حق چھیننے والا کوئی مل مالک ہو یا مینجر، اسے جیل جانا پڑے گا۔میں ہر قیمت پر کاشتکاروں کے حق کا تحفظ کروں گا۔وزےراعلیٰ نے کہا کہ جو شخص دن کے ایک بجے سو کر اٹھتا ہے اس نے کام کیا کرنا ۔دیر تک سو کر اٹھنے والے نیازی صاحب شام کو جھوٹ اورالزام تراشی شروع کردیتے ہیں ۔دوسری جانب زرداری صاحب ہیں جنہوں نے پاکستان کی دولت لوٹ کر سرمحل بنایا ہے اورسوئٹزر لینڈ میں اس کے چھ ارب روپے پڑے ہوئے ہیں۔اگر عوام نے ہمیں2018ءکے انتخابات میں دوبارہ خدمت کا موقع دیا اورمجھے خادم پاکستان بنایاتواس قوم کی لوٹی ہوئی ایک ایک پائی واپس لاوں گا۔پاکستان کو صحیح معنوں میں قائدؒواقبالؒ کے تصورات کے مطابق فلاحی ریاست بنائیں گے اوراسے دنیا کا عظیم ملک بنائیں گے۔وزیر اعلی نے گجرات سے سالم انٹر چینج براستہ منڈی بہاالدین 94 کلو میٹر طویل سڑک ، پھالیہ تا سیال موڑ انٹر چینج 42 کلو میٹر طویل سڑک ، گوجرہ تا ٹاہلی اڈا، پل نورانیہ تا ٹبہ مانک بوسال اور گوجرہ تا قادر آباد 69 کلومیٹر سڑکوں کا افتتاح کیا-سڑکوں کی تعمیر سے نہ صرف منڈی بہاالدین بلکہ دیگر شہروں کو لاکھوں شہریوں کو آمد و رفت میں سہولت ملے گی۔وزیراعلیٰ نے ملکوال تحصیل ہیڈ کوارٹر ہسپتال کا افتتاح کیااوراس ہسپتال پر 31 کروڑ روپے صرف ہوئے- وزیر اعلی نے ملکوال میںگورنمنٹ ڈگری کالج کے تعمیراتی کاموں کا سنگ بنیاد رکھتے ہوئے کہا کہ تعلیم اور صحت حکومت پنجاب کی ترجیحات میں سرفہرست ہے – وزیراعلیٰ نے دریائے جہلم پر پل کی تعمیر کے منصوبے کا سنگ بنیاد بھی رکھ دیا- دریائے جہلم پر پل کی تعمیر پر ڈیڑھ ارب روپے سے زائد لاگت آئے گی-وزیر اعلی نے امرہ تا شہانہ لوک، آلہ ریلوے سٹیشن تا چوک دادن ، گوجرہ تا کٹھیالہ شیخاں اور نیکے وال تا برج آغرہ سڑکوں کا سنگ بنیاد بھی رکھا-ضلع منڈی بہاالدین میں پل اور چارسڑکوں کی تعمیر کے میگا پراجیکٹس پر 2 ارب 75 کروڑ 89 لاکھ روپے لاگت آئےگی-انہوں نے کہا کہ ضلع منڈی بہاالدین میں ترقیاتی منصوبوں کو اسی سال کے آخر تک پایہ تکمیل کو پہنچایا جائے گا-


اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.