قومی اسمبلی اجلاس میں وزراءکی غیرحاضری پر اپوزیشن کا احتجاج ، واک آﺅٹ، کورم ٹوٹنے پرکاروائی معطل

اسلام آباد: قومی اسمبلی کے اجلاس میں وزراءکی غیر حاضری پر اپوزیشن نے سخت احتجاج کرتے ہوئے واک آﺅٹ کردیا ، کورم ٹوٹنے پر ڈپٹی سپیکر نے اجلاس کی کاروائی معطل کر
دی، پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما سید نوید قمر نے کہا کہ وزراءکا رویہ شرمناک ہے بغیر چھٹی لئے اجلاس سے غیر حاضر ہیں، اس سے اندازہ ہوتا ہے کہ حکومت پارلیمنٹ کو کتنی وقعت دیتی ہے پھر کہا جاتا ہے کہ جمہوریت کےخلاف سازش ہورہی ہے، کیا وزراءخود کو پارلیمنٹ کے سامنے جوابدید نہیں سمجھتے جبکہ تحریک انصاف کی رکن قومی اسمبلی شیری مزاری نے کہا کہ وزراءکی عدم حاضری سے پرائیوٹ ممبرز ڈے کی کاروائی مذاق ہے۔وزراءاجلاس میں حاضر کیا جائے۔منگل کو قومی اسمبلی کا اجلاس ڈپٹی سپیکر مرتضیٰ جاوید عباسی کی صدارت میں 20منٹ تاخیر سے شروع ہوا۔ سید نوید قمر نے کہا کہ آج وزراءکیوں اجلاس میں موجود نہیں ہیں یہ ایک نیا رواج ڈالا ہے کے وزراءبغیر چھٹی کے ایوان سے غائب ہیں پارلیمنٹ کو اتنی وقعت دی جارہی ہیں پھرکہتے ہیں کہ جمہوریت کے خلاف سازش ہورہی ہے۔سینٹ کا اجلاس ہوتا تو ایسانہ ہوتا۔ کیا وزراءآئین کے طریقہ نہیں ہے وہ قومی اسمبلی کے جوابدہ ہیں۔ یہ رویہ شرمناک ہے۔ شیری مزاری نے کہا کہ پرائیوٹ ممبرز ڈے کا کیا فائدہ جب وزراءمذاق بن گیا ہے۔ ایوان سے احتجاج ورک آﺅٹ کرتے ہیں اور اجلاس کا بائیکاٹ کرتے ہیں۔ جس پر اپوزیشن ارکان نے ایوان سے واک آﺅٹ کیا اور سید نوید قمر نے ساتھ ہی کورم کی نشاندہی کردی۔ ڈپٹی سپیکر نے گنتی کرانے کا حکم دیا۔ جس پر کورم پورا نہ نکلا جس پر ڈپٹی سپیکر نے کورم پورا ہونے تک اجلاس کی کاروائی معطل کردی


اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.