Daily Taqat

چیف جسٹس پاکستان کا سرکاری ہسپتالوں کادورہ، شرجیل میمن کے کمرے سے شراب کی بوتلیں برآمد ،تحقیقات کا حکم

کراچی : چیف جسٹس پاکستان جسٹس میاں ثاقب نثار نے کراچی کے دو ہسپتالوں میں اچانک اور خفیہ دورہ کیا جہاں سے زیر علاج رہنما پیپلز پارٹی شرجیل میمن کے کمرے سے شراب کی بوتلیں اور دیگر ممنوعہ سامان برآمد ہوا ہے ۔تفصیلات کے مطابق چیف جسٹس نے ہفتہ کی صبح سویرے کراچی کے دو اسپتالوں میں علاج کے بہانے زیر علاج سیاسی رہنماوں کے وی وی آئی پی وارڈز کے معائنے کئے۔چیف جسٹس کلفٹن میں واقع ضیاالدین اسپتال کی پہلی منزل پر سب جیل قرار دیے گئے پر تعیش کمرے میں گئے جہاں علاج کے بہانے رہائش  پذیر پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما شرجیل انعام میمن کے کمرے کا معائنہ کیا۔

چیف جسٹس پاکستان سے جیل انعا م میمن کے کمرے میں 3 منٹ تک رہے،اس دوران انہوں نے شرجیل انعام میمن کے علاج اور بیماری کے حوالے سے سوالات کیے۔ذرائع کے مطابق اس دوران کمرے سے شراب کی بوتلیں، سگریٹس اور دیگر ممنوعہ سامان کی موجودگی کے بارے میں استفسار کیا۔ یہ ممنوع اشیا ان کے اسٹاف نے قبضے میں لے کر گاڑی میں منتقل کر دیں۔ذرائع کے مطابق شرجیل انعام میمن کے پرتعیش کمرے میں علاج نام کی کوئی چیز نہیں تھی، کوئی نرس تھی اور نہ کوئی ڈاکٹر تھا۔اس کے بعد چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس ثاقب نثار خفیہ طور پر کراچی کے جناح اسپتال کے شعبہ کارڈیو ویسکولر پہنچے۔ جہاں منی لانڈرنگ کیس میں گرفتار سابق صدر کے فرنٹ مین انور مجید کے کمرے اور ان کے علاج کے ساتھ ساتھ بیماریوں کا جائزہ لیا.

اطلاعات کے مطابق انہوں نے ڈاکٹروں سے سوال جواب کئے۔ چیف جسٹس ثاقب نثار جناح اسپتال کے خصوصی وارڈ گئے جہاں انور مجید کے بیٹے غنی مجید کے مخصوص وارڈ کا بھی معائنہ کیا۔غنی مجید کے کمرے میں نہ ہونے پر چیف جسٹس نے استفسار کیا تو بتایا گیا کہ ملزم کو ایم آر آئی کرانے کے لیے لے جایا گیا ہے۔ اس کے بعد چیف جسٹس آف پاکستان نے وہاں موجود مختلف لوگوں سے بات چیت بھی کی۔اسپتالوں میں چھاپوں کے بعد چیف جسٹس کراچی رجسٹری پہنچے جہاں انہوں نے اٹارنی جنرل آف پاکستان انور منصور کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ آپ نے بہت اچھے کام کیے مگر یہ دیکھیں، ذرا اس طرف بھی توجہ دیں ، شرجیل میمن کے کمرے سے تین شراب کی بوتلیں ملیں، جب شرجیل سے پوچھا تو کہا کہ یہ میری نہیں۔چیف جسٹس کے چھاپے کے بعد ضیاالدین اسپتال میں شرجیل میمن کا کمرہ سیل کردیا گیا ہے، شرجیل میمن کو اسپتال سے جیل منتقل کردیا گیا ہے۔ اس کے علاوہ پولیس نے دو ملزمان کو حراست میں بھی لے لیا ہے جن میں سے ایک ملزم جام محمد نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ میں کسی اور کی ڈیوٹی پر آیا تھا، شرجیل میمن کے کمرے میں شراب کہاں سے آئی مجھے علم نہیں، مجھے نہیں معلوم کہ وہ شراب کی بوتلیں ہیں، ان بوتلوں میں تو شہد تھا۔


Get real time updates directly on you device, subscribe now.

اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

Translate »