Daily Taqat

خالد مقبول کے ٹکٹ پر کامران ٹیسوری سمیت4امیدواران کے کاغذات نامزدگی منظور

کراچی:  ایم کیو ایم پاکستان کے ڈپٹی کنوینئر کامران ٹیسوری کے سینیٹ کے لیے جمع کروائے گئے کاغذاتِ نامزدگی منظور ہوگئے۔ ایم کیو ایم کے سربراہ ڈاکٹر فاروق ستار نے کہا کہ خالد مقبول صدیقی نے بحیثیت ڈپٹی کنوینئر ٹکٹ دینے کا اختیار استعمال کیا۔تفصیلات کے مطابق اتوار کو صوبائی الیکشن کمیشن میں سینیٹ امیدواران کی اسکروٹنی کے دوران الیکشن کمشنر نے رابطہ کمیٹی کے نامزد کردہ ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی کے نامزد کردہ امیدوران کے کاغذات کی جانچ پڑتال کی۔اس موقع پر الیکشن کمشنر نے پارٹی سربراہ کو بھی صفائی پیش کرنے کے لیے دفتر طلب کیا جہاں ڈاکٹر فاروق ستار نے اپنا مو¿قف پیش کرنے کی کوشش کی تاہم وہ کامیاب نہ ہوسکے۔الیکشن کمشنر آفیسر سے گفتگو کرتے ہوئے ڈاکٹر فاروق ستار نے کہا کہ میں نے اپنے اختیارات ڈپٹی کنویئر کو سونپ دیے جس پر صوبائی الیکشن کمیشن کے نمائندے نے کہا کہ جب آپ نے خالد مقبول صدیقی کو نامزد کردیا تو علیحدہ سے لیٹر کیوں دے رہے ہیں۔ آپ کے اندرونی معاملات سے ہمارا کوئی تعلق نہیں۔ ہم آئین کے مطابق کام کررہے ہیں۔چیف الیکشن کمشنر نے خالد مقبول صدیقی کا امیدوران کو ٹکٹ جاری کرنے کا اختیار تسلیم کرتے ہوئے کہا کہ رابطہ کمیٹی کے دستخط والے ٹکٹ قبول ہوں گے۔ علاوہ ازیں دیگر امیدواران کو آزاد حیثیت میں تسلیم کیا جائے گا۔ڈاکٹر فاروق ستار نے کہا کہ میرے بغیر ہونے والے اجلاسوں کو چیلنج کیا جاسکتا ہے۔ خالد مقبول صدیقی نے ٹکٹ دینے کا اختیار غیر موجودگی میں استعمال کیا جبکہ پارٹی آئین کے مطابق وہ صرف معاونت کرسکتے ہیں۔ایم کیو ایم پاکستان کے سربراہ نے کہا کہ پارٹی آئین کے مطابق اجلاس بلانے کا پہلا اختیار کنوینئر کو ہے۔ ہاں اگر وہ ملک میں موجود نہیں تو ڈپٹی کنوینئر اپنا اختیار استعمال کرسکتا ہے۔صوبائی الیکشن کمیشن نے ڈاکٹر خالد مقبول کے جاری کردہ امیدوران کے کاغذات نامزدگی منظور کرلیے۔ اب تک کشور زہرہ، بیرسٹر فروغ نسیم، امین الحق، کامران ٹیسوری ، احمد چنائے کے کاغذات نامزدگی منظور ہوگئے جبکہ سینیٹ کے امیدوار عامر چشتی کی نامزدگی کو بینک کے واجبات ادا نہ کرنے کی وجہ سے مسترد کردیا گیا۔دوسری جانب ایم کیو ایم کی رابطہ کمیٹی نے ڈاکٹر فاروق ستار کی جانب سے طلب کیے جانے والے اجلاس میں نہ جانے کا فیصلہ کیا ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ آئندہ پارٹی کے فیصلے بہادرآباد سے ہی کیے جائیں گے۔عارضی مرکز کے باہر  ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی سے جب صحافی نے اجلاس میں شرکت کرنے کا سوال کیا تو انہوں نے پوچھا کون سا اجلاس ؟ ساتھ ہی ڈپٹی کنویئر نے یہ بھی وضاحت دی کہ اگر الیکشن کمیشن کو دیا جانے والا خط واپس لیتے تو آج کاغذات جمع نہیں ہوسکتے تھے۔


Get real time updates directly on you device, subscribe now.

اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

Translate »