Daily Taqat

ملک سے بدعنوانی کے خاتمہ کیلئے فیس نہیں کیس کو دیکھیں گے، جسٹس(ر) جاوید اقبال

اسلام آباد :  قومی احتساب بیورو کے چیئرمین جسٹس(ر) جاوید اقبال نے کہا ہے کہ ملک سے بدعنوانی کے خاتمہ کیلئے فیس نہیں کیس کو دیکھیں گے، ملک میں بدعنوانی ایک کینسر کی
طرح سرایت کر رہی ہے،ملک اس وقت 84 ارب ڈالرز کا مقروض ہے، نیب کا کسی سیاسی جماعت سے تعلق نہیں اور نہ ہی نیب کسی سے امتیازی سلوک پر یقین رکھتا ہے، ”احتساب سب کیلئے“ کی پالیسی پر زیرو ٹالرنس اور خود احتسابی ہماری اولین ترجیح ہے، ہم نے ڈبل شاہ کو سنگل شاہ بنا دیا، 9 ارب روپے کے فراڈ میں سے 4 ارب روپے متاثرین کو واپس کئے جبکہ ڈبل شاہ کیس کے دوسرے ملزم تصور گیلانی کے ذمہ 1.9 ارب روپے میں سے 1.2 بلین روپے کی رقم متاثرین کو واپس لوٹا دی ہے جبکہ نیب نے ایلیٹ ٹاﺅن سکیم لاہور کے متاثرین کے 10 کروڑ بمعہ منافع/سود کے 36 کروڑ روپے آج متاثرین کو واپس کر دیئے ہیں، ہم نے 4 ماہ قبل جو قوم سے وعدہ کیا تھا کہ نجی ہاﺅسنگ سوسائٹیوں کے متاثرین کی رقوم کی واپسی ہماری اولین ترجیح ہو گی اس پر عملدرآمد جاری ہے اور اب کسی کو مستقبل میں ڈبل شاہ نہیں بننے دیں گے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے لاہور میں ڈبل شاہ کیس اور ایلیٹ ٹاﺅن ہاﺅسنگ سکیم کے متاثرین میں چیکس تقسیم کرنے کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ نجی ہاﺅسنگ سوسائٹیوں کے پرکشش اشتہارات کا ریگولیٹرز کو بخوبی جائزہ لینا چاہئے کہ متعلقہ سوسائٹی نے این او سی یا پھر لے آﺅٹ پلان جمع کرایا ہے اور منظور ہو چکا ہے کہ نہیں، آج کے بعد غیر قانونی ہاﺅسنگ سوسائٹیوں کے علاوہ ریگولیٹرز کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔ انہوں نے عوام سے بھی کہا کہ وہ پورے اطمینان اور تسلی کے بعد صرف اور صرف قانون کے مطابق کام کرنے والی ہاﺅسنگ سوسائٹیوں میں اپنی سرمایہ کاری کریں۔ انہوں نے کہا کہ رزق حلال میں ہمیشہ برکت ہوتی ہے چند دنوں میں کروڑ پتی بننے والوں کو سوچنا چاہئے کہ کفن کی کوئی جیب نہیں ہوتی اور جو بھی لوگ اس دنیا سے گئے ہیں وہ خالی ہاتھ گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ نیب لٹیروں اور ڈاکوﺅں جنہوں نے عوام کی عمر بھر کی جمع پونجی لوٹ کر ان کو نہ پلاٹ دیئے ہیں اور نہ ان کی رقم واپس کی ہے ان کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر اب قانون کے مطابق کارروائی کرے گا اور کسی بھی شخص سے نہ رعایت کرے گا اور نہ ہی کسی کے خلاف بلاجواز انتقامی کارروائی پر یقین رکھتا ہے۔ نیب قانون، میرٹ، شفافت اور ٹھوس شواہد کی بنیاد پر بلاامتیاز احتساب پر یقین رکھتا ہے اور ملک سے بدعنوانی کے خاتمہ کیلئے کسی دباﺅ، سفارش اور دباو کو خاطر میں نہیں لایا جائے گا۔ قبل ازیں ڈی جی نیب لاہور شہزاد سلیم نے اپنے خطاب میں کہا کہ نیب لاہور چیئرمین نیب جسٹس (ر)جاوید اقبال کی قیادت میں عوام کی نجی ہاﺅسنگ سوسائٹیوں کے ہاتھوں لوٹی گئی رقم واپس متاثرین کو دلانے کیلئے دن رات کوشاں ہے اور ہم نے اب تک 18 ارب روپے تقریباً 3 لاکھ متاثرین کو واپس کئے ہیں اور جو پالیسی موجودہ چیئرمین نیب نے دی ہے اس پر سختی سے عملدرآمد جاری ہے اور ہم احتساب سب کیلئے کی پالیسی کو جاری رکھیں گے۔


Get real time updates directly on you device, subscribe now.

اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

Translate »