Daily Taqat

جسٹس میاں ثاقب نثار نے صاف پانی کیس میں وزیراعلی پنجاب شہباز شریف کو ذاتی حیثیت سے طلب کرلیا

لاہور:  چیف جسٹس پاکستان جسٹس میاں ثاقب نثار نے صاف پانی کیس میں وزیر اعلی پنجاب شہباز شریف کو ذاتی حیثیت سے طلب کرلیا‘ لاہور کے تمام سرکاری اسپتالوں کے ایم ایس کو مسائل کی رپورٹ
بھی24 فروری تک عدالت میں پیش کر نے کا حکم جبکہ ہسپتالوں کی حالت زارسے متعلق ازخودنوٹس کی سماعت کے دوران چیف جسٹس ثاقب نثار نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا ہے کہ ریاست کو اپنے ملازمین کیلئے مالک نہیں بننا بلکہ کفالت کرنی ہے، 5 سال میں ایک میڈیکل کا طالب علم اپنی آنکھیں سوجا کر آتا ہے اور اسے معاوضہ نہ ہونے کے برابر دیا جاتا ہے، جب ہمارے معاشرے کے پڑھے لکھے طبقے کو اہمیت نہیں دی جائے گی تو وہ کہاں جائیں گے، چیف سیکرٹری بتائیں کہ کیا آپ 45 ہزار روپے ماہانہ میں گزارا کر سکتے ہیں۔تفصیلات کے مطابق ہفتے کے روز سپر یم کورٹ رجسٹری برانچ لاہور میں سپریم کورٹ لاہور رجسٹری میں چیف جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں صاف پانی کی فراہمی سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی، سماعت کے دوران صاف پانی سے متعلق رپورٹ عدالت میں پیش کی گئی صرف شہر میں 540 ملین گیلن گندہ پانی دریائے راوی میں پھینکنے کے انکشاف پر چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ لاہور تو پنجاب کا دل ہے اور دل پر کیا پھینکا جا رہا ہے۔ وزیراعلی پنجاب وضاحت پیش کریں کہ گندے پانی کی نکاسی کے لیے کیا اقدامات کیے جا رہے ہیں، کراچی میں وزیر اعلی سندھ کو بھی طلب کیا گیا تھا،وزیر اعلی پنجاب شہباز شریف سے پوچھ کر بتائیں کب آسکتے ہیں دریں اثنا عدالت عظمی کے فاضل بنچ نے سرکاری اسپتالوں کی ناقص صورتحال اور نجی میڈیکل کالجز میں زائد فیسوں کی وصولی کے خلاف ازخود نوٹسز کی بھی سماعت کی، عدالتی حکم پر لاہور کے تمام اسپتالوں کے ایم ایس عدالت میں پیش ہوئے چیف جسٹس نے لاہور کے تمام سرکاری اسپتالوں کے ایم ایس سے مسائل کی رپورٹ 24 فروری تک طلب کر تے ہوئے ریمارکس دیئے کہ جس جذبے سے سپریم کورٹ نے ان معاملات کو دیکھا، اسی جذبے سے آپ کو بھی کام کرنا ہو گا، وہ اسپتال جس کو میں نے اپنے بچپن اور جوانی میں دیکھا اس کی حالت بھی بہتر کرنا چاہتا ہوں، تمام سرکاری اسپتالوں میں مجھے بہت اعلی قسم کی ایمرجنسی چاہئیں، جہاں پر اچھا صحت کا نظام موجود ہو،بتایا جائے کس کس سرکاری اسپتال میں بہتری لائی گئی ہے چیف جسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ میوہسپتال کاجب سے دورہ کیاہے تب سے دل پربوجھ لے کے پھررہاہوں،مجھے کسی تنقیدکی پرواہ نہیں، میوہسپتال دوبارہ جاﺅں گا،عدالت نے سیکرٹری پرائمری اینڈسیکنڈری ہیلتھ کیئرکوتفصیلی رپورٹ پیش کرنے کاحکم دے دیاسپریم کورٹ لاہور رجسٹری میں ہسپتالوں کی حالت زارسے متعلق ازخودنوٹس کی سماعت کے دوران چیف جسٹس ثاقب نثار نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا ہے کہ چیف سیکرٹری صاحب ڈاکٹروں کاسروس سٹرکچرکیوں نہیں بنایاگیا؟ ڈاکٹرزجتنی تنخواہ لے رہے ہیں اتنی تو سپریم کورٹ کے ڈرائیورکی ہے،ڈاکٹرراتوں کوجاگ کرپڑھتے اور ڈگری حاصل کرتے ہیں مگرتنخواہ کیادے رہے ہیںچیف جسٹس آف پاکستان نے کہا کہ چیف سیکرٹری صاحب 45ہزارروپے میں گھرکابجٹ بناکردکھائیں،انہوں نے کہا کہ عوام کی خدمت تمام اداروں کی آئینی ذمہ داری ہے،عدلیہ اپنی ذمہ داری پوری کررہی ہے پرائیویٹ میڈیکل کالجز میں زائد فیسوں کی وصولی کیخلاف ازخود نوٹس کیس کی سماعت بھی کی گئی جبکہ اس موقعہ پر ڈاکٹر عاصم سمیت دیگر عدالت میں پیش ہوئے ۔


Get real time updates directly on you device, subscribe now.

اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

Translate »