Daily Taqat

نااہل نوازشریف سزاﺅں سے بچنے کیلئے تماشے کررہے ہیں، طاہرالقادری

اسلا آباد: پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ ڈاکٹر محمد طاہرالقادری نے کہا ہے کہ نااہل نواز شریف سزاﺅں سے بچنے کیلئے تماشے کررہے ہیں، نااہل شریف کے جھوٹے ہونے پر عدالت نے مہر لگا دی،ان کے کسی الزام کی کوئی حیثیت نہیں،ماڈل ٹاﺅن میں 14 لوگوں کو قتل کرنے کی ایف آئی آر درج کرنے سے انکار پر دھرنا دیا۔شریف برادران سانحہ ماڈل ٹاﺅن کے ماسٹر مائنڈ اور بے گناہ شہریوں کے قاتل بھی ہیں،انہیں پتہ ہے پاناما کے جھوٹ پکڑے جانے کے بعد سانحہ ماڈل ٹاﺅن میں بھی یہ ٹرائل ہونے جارہے ہیں۔ وہ گزشتہ روز عوامی تحریک کے مرکزی سیکرٹریٹ میں وکلاءرہنماﺅں کے ایک اجلاس سے ٹیلیفون پر خطاب کر رہے تھے، ڈاکٹر طاہرالقادری نے کہا کہ اصغر خان کیس ثابت کرنے کیلئے کافی ہے کہ کون کس کا آلہ کار تھا، ایجنسیوں سے پیسے لے کر الیکشن جیتنے والے آج کس منہ سے دوسروں پر الزام لگارہے ہیں۔ایجنسیوں کا کردار ختم کرنے کیلئے اصغر خان کیس کے فیصلے پر من و عن عمل ناگزیر ہے۔سمجھتا ہے فوج کو بدنام کرنے سے غیر ملکی مدد ملے گی مگر یہ ان کی خام خیالی ہے، نااہل کا ٹھکانہ جیل اور انجام عبرتناک رسوائی ہے۔ انہوں نے کہا کہ تین بار وزیراعظم بننے والے اس کرپٹ شخص نے لوٹ مار کی دولت سے لندن میں محلات تعمیر کیے، منی ٹریل کے حوالے سے پارلیمنٹ، قوم سے خطاب اور سپریم کورٹ میں مسلسل غلط بیانی کی، جب ان کے سارے جھوٹ پکڑے گئے اور انہیں جیل نظر آنا شروع ہو گئی تو انکشافات کا سہارا لینا شروع کر دیا۔ جو شخص عدالت سے مستند جھوٹا قرار پا چکا ہے اس کے کسی بیان اور الزام کی کوئی حیثیت نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ استعفیٰ دینے کے پیغام لانے والے کے خلاف بطور وزیراعظم اس وقت کارروائی کیوں نہیں کی؟ جنگ کے بعد یاد آنے والے گھونسے اپنے منہ پر جتنے مرضی ماریں سزاﺅں سے نہیں بچ سکیں گے۔ ڈاکٹر طاہرالقادری نے کہا کہ اپنے ہی ملک کے سلامتی کے حساس اداروں پر تہمتیں لگانا اخلاقی دیوالیہ پن ، وطن دشمنی اور ڈھٹائی کی انتہا ہے۔ڈاکٹر طاہرالقادری نے اگست 2014 ءکے دھرنے کے حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ نواز شریف نے وزیراعظم ہاﺅس میں بیٹھ کر سانحہ ماڈل ٹاﺅن کی قتل و غارت گری کا پلان بنایا اور اس پلان کو اپنے چھوٹے بھائی وزیراعلیٰ شہباز شریف کے ذریعے100 لوگوں کو گولیاں مروا کر پایہ تکمیل تک پہنچایا اور جب ہم سانحہ ماڈل ٹاﺅن کی ایف آئی آر درج کروانے گئے تو ایف آئی آر درج نہ ہونے دی، غیر جانبدار جے آئی ٹی بنانے سے انکار کیا، دس روز تک ماڈل ٹاﺅن کا محاصرہ کیا، شریف برادران کے اس ظلم اور بربریت کے خلاف بطور احتجاج اسلام آباد گئے اور ہمارے احتجاج کے نتیجے میں ہی ایف آئی آر کا اندراج ممکن ہو سکا ورنہ ان ظالموں نے ایف آئی آر کے اندراج کے حوالے سے عدالتی حکم ماننے سے بھی انکار کر دیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ نواز شریف کے عدلیہ، فوج اور ملک دشمن بیانات کی پرزورمذمت کرتا ہوں۔


Get real time updates directly on you device, subscribe now.

اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.

Translate »