Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: Cannot modify header information - headers already sent by (output started at /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function:1) in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/feed-rss2.php on line 8

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
> آج کا اخبار – Daily Taqat https://dailytaqat.com ہمارا عزم ہی ہماری طاقت ہے Wed, 29 Jul 2020 15:05:31 +0000 en-US hourly 1
Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
https://wordpress.org/?v=6.1.1 https://dailytaqat.com/wp-content/uploads/2017/12/Taqat-icon3-120x120.png آج کا اخبار – Daily Taqat https://dailytaqat.com 32 32 وزیر اعلیٰ پنجاب کے پرسنل سٹاف آفیسر کا بیوی کے نام پر رہائش کیلئے سر کاری گھر الاٹ کرنے کا انکشاف https://dailytaqat.com/national/wazeer-ala-punjab-kay-personal-staff-officer/ https://dailytaqat.com/national/wazeer-ala-punjab-kay-personal-staff-officer/#respond Wed, 29 Jul 2020 07:12:16 +0000 https://dailytaqat.com/?p=234601 Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
گورنمنٹ کی الاٹمنٹ پالیسی کو نرم کروا کرایڈیشنل چیف سیکرٹری کی سفارشات کے برعکس  رہائش کےلئے سرکاری گھر الاٹ کیا گیا. حیدر علی کا وفاقی حکومت کی سروس آفس مینجمنٹ گروپ سے تعلق ہے‘ ڈیپوٹیشن پر ایوان وزیراعلی میں تعینات ہیں.  پالیسی کے مطابق ان کی بیوی نہ تو سرکاری گھر کی الاٹمنٹ کی اہل […]]]>

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

گورنمنٹ کی الاٹمنٹ پالیسی کو نرم کروا کرایڈیشنل چیف سیکرٹری کی سفارشات کے برعکس  رہائش کےلئے سرکاری گھر الاٹ کیا گیا. حیدر علی کا وفاقی حکومت کی سروس آفس مینجمنٹ گروپ سے تعلق ہے‘ ڈیپوٹیشن پر ایوان وزیراعلی میں تعینات ہیں.  پالیسی کے مطابق ان کی بیوی نہ تو سرکاری گھر کی الاٹمنٹ کی اہل ہے اور نہ ہی ایس اینڈ جی اے ڈی کے ساتھ رجسٹرڈ ہے. میرٹ کےخلاف الاٹمنٹ سے حکومت کے بیانئے میرٹ و شفافیت کی نفی ہوئی‘ ہمیں جائز حق سے محروم کیا گیا ہے‘ اہل افسران کو تشویش

لاہور(سی اے ایس ) وزیر اعلی پنجاب کی طرف سے اپنے پرسنل سٹاف افسر کی بیوی کے نام پرپنجاب گورنمنٹ الاٹمنٹ پالیسی برائے سرکاری گھر کو نرم کرکے اور ایڈیشنل چیف سیکرٹری کی سفارشات کے برعکس رہائش کے لئے سرکاری گھر الاٹ کرنے کا انکشاف ہوا ہے جس سے اہل افسران میں تشویش پائی جاتی ہے۔ حیدر علی گزشتہ چھ سال سے پنجاب میں ڈیپوٹیشن پر ہے جو غیر قانونی ہے۔

روزنامہ طاقت کی تحقیقات کے مطابق وزیر اعلی پنجاب کے پرسنال سٹاف افسر حیدرعلی نے وزیر اعلی پنجاب کو ایک درخواست دی کہ ان کے نام پر الاٹ کیا گیا سرکاری گھر سی 1 جی او ار ان کی بیوی کے نام پر منتقل کردیا جائے۔ ایڈیشنل چیف سیکرٹری پنجاب کے حکم پر اس درخواست پر سروسز اینڈ جنرل ایڈمنسٹریشن ڈیپارٹمنٹ نے معاملے کا جائزہ لیا تو انکشاف ہو کہ حیدر علی وفاقی حکومت کی سروس آفس مینجمنٹ گروپ سے تعلق رکھتے ہیں اور ڈیپوٹیشن پر ایوان وزیراعلی میں تعینات ہیں۔ پنجاب حکومت نے ان کو مذکورہ گھر جنوری 2019میں الاٹ کیا تھا اب وہ یہ گھر اپنی بیوی جو ٹیوٹا میں بطور منیجر کام کرتی ہے کے نام پر ٹرانسفر کروانا چاہتے ہیں۔ریکارڈ سے معلوم ہوا کہ حیدرعلی کو پہلے جی او آر فور میں خوشنما 24 گھر الاٹ کیا گیا تھا لیکن بعد میں تبدیل کرکے موجودہ گھر الاٹ کیا گیا تھا۔ پالیسی کے پیرا33(b) کے تحت کیونکہ وہ وفاقی حکومت کے ایک سروس گروپ سے تعلق رکھتے ہیں اور صوبے میں ڈیپوٹیشن پر ہیں جب ان کی وفاق میں ٹرانسفر ہوگی تو ان کو دو ماہ میں گھر خالی کرنا ہوگا۔ پالیسی کے مطابق ان کی بیوی نہ تو سرکاری گھر کی الاٹمنٹ کی اہل ہے اور نہ ہی ایس اینڈ جی اے ڈی کے ساتھ رجسٹرڈ ہے۔ کیونکہ گھر سی کیٹیگری کا ہے جس الاٹمنٹ پالیسی کے مطابق بیوی کے نام پر ٹرانسفر بھی نہیں ہوسکتا تاہم الاٹمنٹ پالیسی کے پیرا 7کے مطابق گھر کی ٹرانسفر غیر قانونی تصور ہوگی۔ایڈیشنل چیف سیکرٹری نے وزیراعلی کو مزید مطلع کیا کہ سپریم کورٹ نے اوٹ آف ٹرن ، انٹئٹلمنٹ کے خلاف اور الاٹمنٹ کے اہل نہ ہونے والے افسران کو سرکاری گھر دیے سے روکا ہوا ہے اور وزیراعلی کے حکم پر ایسی الاٹمنٹ جو ماضی میں کی گئی ہیں کو واپس لیا گیا ہے اور چیف سیکرٹری پنجاب عدالت اعظمی میں حلف نامہ بھی دے چکے ہیں۔ایڈیشنل چیف سیکرٹری نے وزیراعلی کو سمری کے ذریعے مزید بتایا کہ اہلیت نہ رکھنے کی وجہ سے افسر کی بیوی کے نام پر گھر کی ٹرانسفر سے ایک گندی مثال قائم ہوگی جس سے الاٹمنٹ پالیسی خطرے میں پڑسکتی ہے او ر عدالت میں حکومت کے لئے قانونی مسائل بھی پیدا ہوسکتے ہیں۔ ان حالات میں درخواست کو رد کیا جائے کیونکہ یہ ایک نیا پنڈوراباکس کھولے گی کیونکہ یہ پالیسی سے متصادم ہے۔ وزیراعلی پنجاب نے ایڈیشنل چیف سیکرٹری کی طرف سے بجھوائی گئی سفارشات کو مسترد کرتے ہوئے ہارڈ شپ کو بنیاد بنا کر پالیسی کونرم کرتے ہوئے اکتوبر 2019کوگھر اپنے پرسنل سٹاف افسر کی بیوی جو ٹیوٹا میں ملازم ہے کے نام پر ٹرانسفر کردیا جس پر ایس اینڈ جی اے ڈی نے نوٹیفکیشن جاری کردیا تھا۔امبر افضل چھٹہ2016سے ٹیوٹا میں بطور مینجرتعینات ہے اورذرائع کے مطابق ان کی تعیناتی بھی مبینہ طور پر مشکوک پراسس کے ذرائع ہوئی تھی۔پنجاب کے الاٹمنٹ کےلئے لائن میں لگے اہل افسران کا کہنا ہے کہ میرٹ کے خلاف گھر کی الاٹمنٹ سے حکومت کے بیانئے میرٹ و شفافیت کی نفی ہوئی ہے اور افسران میں بددلی بھی پھیلی ہے کیونکہ وہ جائزہ حق سے محروم کیے گئے ہیں۔واضح رہے کہ حیدر علی تین چیف منسٹرز ‘شہباز شریف‘حسن عسکری اور سردار عثمان بزدار کے ساتھ کام کر چکا ہے۔

]]>
https://dailytaqat.com/national/wazeer-ala-punjab-kay-personal-staff-officer/feed/ 0
Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
اختر مینگل حکومتی اتحاد سے علیحدہ:عمران خان نئے مسائل سے کیسے نمٹیں گے؟ https://dailytaqat.com/duroon-parda/akhtar-mengal-hakumti-ithad-se-alahda/ https://dailytaqat.com/duroon-parda/akhtar-mengal-hakumti-ithad-se-alahda/#respond Sat, 20 Jun 2020 19:15:21 +0000 https://dailytaqat.com/?p=232076 Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
پوری دُنیا کے ساتھ پاکستان میں وزیر اعظم عمران خان کی حکومت بھی کورونا مسائل کے بھنور میں بُری طرح پھنسی پڑی ہے ۔ نجات کا کوئی فوری راستہ فی الحال نظر نہیں آ رہا ۔ کورونا وائرس نے پاکستان ایسے غریب اور پسماندہ ملک کی معیشت کا ویسے ہی بھٹہ بٹھا دیا ہے ۔ […]]]>

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

پوری دُنیا کے ساتھ پاکستان میں وزیر اعظم عمران خان کی حکومت بھی کورونا مسائل کے بھنور میں بُری طرح پھنسی پڑی ہے ۔ نجات کا کوئی فوری راستہ فی الحال نظر نہیں آ رہا ۔ کورونا وائرس نے پاکستان ایسے غریب اور پسماندہ ملک کی معیشت کا ویسے ہی بھٹہ بٹھا دیا ہے ۔ حالیہ دنوں میں خانصاحب کی حکومت نے جو وفاقی بجٹ پیش کیا ہے ، اس کے اعدادوشمار بھی زبانِ حال سے ہر خاص و عام کو بتا رہے ہیں کہ پاکستان کی معیشت کا اصل احوال کیا ہے ۔71کھرب روپے کے وفاقی بجٹ میں 37کھرب روپے کا خسارہ پیش کیا گیا ہے ۔ نتیجہ یہ نکلا ہے کہ سرکاری ملازم بھی رو رہے ہیں اور پرائیویٹ بھی ۔ حکومت کا دعویٰ ہے کہ ”عوام کی بہتری کا بجٹ پیش کیا گیا ہے ۔” یہ دعویٰ تو تب درست لگے گا جب عوام اطمینان اورخوشی کا اظہار کرتے نظر آئیں لیکن عوام تو کمر توڑ مہنگائی، بیماری ، مہنگی ادویات ، سرکاری ہسپتالوں میں عدم سہولیات ، آٹا چینی گھی کی قیمتوں میں ہر روز اضافے پر سینہ کوبی کررہے ہیں ۔ ایسے میں وہ عوام کہاں ہیں جن کی ”بہتری” کیلئے یہ بجٹ پیش کیا گیا ہے؟ لگتا ہے اس عوام کو ڈھونڈنے کیلئے دوربین یا خوردبین کا استعمال کرنا پڑے گا ۔ خانصاحب نے دو سال پہلے اقتدار کے تخت پر براجمان ہوتے ہی جن لاکھوں گھروں اور کروڑوں ملازمتوں کا وعدہ فرمایا تھا، دو سال گزرنے کے باوجود اُن کا نام و نشان بھی نظر نہیں آرہا ۔ یوں اپوزیشن کو حکومت کے خلاف واویلا اور پروپیگنڈہ کرنے کے خوب مواقع مل رہے ہیں ۔ پی ٹی آئی سرکار نے ملک میں کرپٹ اور لُٹیرے عناصر پر” آہنی ہاتھ ” ڈالنے کا وعدہ بھی کیا تھا لیکن یہ وعدہ بھی پورا نہیں ہو سکا ۔ گویا حکومت نے اپنی بیڑی میں خود وٹّے ڈالنے کا اہتمام کیا ہے ۔ عوام پھر اس حکومت سے کیوں خوش اور مطمئن ہوں؟بے کس اور بے زبان عوام بیچارے تو رہے ایک طرف ، اس مرکزی حکومت نے اپنے ”خواص” اور ”اتحادیوں” سے کئے گئے وعدے بھی پورے نہیں کئے ہیں ۔ ملک بھر میں پھیلے وہ اتحادی جن کی بیساکھیوں کے سہارے یہ حکومت دو سال قبل معرضِ عمل میں لائی گئی تھی ، وہ بھی ناخوش اور نامطمئن ہیں ۔اس کا ایک تازہ اور بڑاثبوت بلوچستان کے نامور سیاستدان جناب اختر جان مینگل کا پارٹی سمیت پی ٹی آئی حکومت کے ساتھ کئے اتحاد سے نکلنے کا اعلان ہے ۔ یہ اعلان مینگل صاحب نے بجٹ کی تقریر میں ساری دُنیا کے سامنے کرکے در حقیقت خانصاحب کی حکومت پر بم پھینک دیا ہے ۔ اختر جان مینگل کا اپنے چار ساتھیوں سمیت حکومتی اتحاد سے نکلنے کا براہِ راست مطلب و معنی یہ ہے کہ حکومت کمزور بھی ہُوئی ہے اور اُس پر اُس کے قریبی اتحادیوں کا اعتماد بھی ختم ہو کر رہ گیا ہے ۔ مینگل صاحب کی طرف سے عمران خان حکومت سے راستے جدا کرنے کا مطلب یہ ہے کہ پی ٹی آئی حکومت میں گہرا شگاف پڑ گیا ہے ۔ خانصاحب کے پاس اگرچہ حکومت کرنے کیلئے اپنے ووٹوں کے علاوہ 10اتحادیوں کے ووٹ بھی ہیں اور بظاہر خطرے کی کوئی فوری بات بھی نہیں ہے لیکن بلوچستان کے مشہور سیاستدان اختر جان مینگل کو ناراض کرکے حکومت نے کسی اچھی حکمتِ عملی اور بہترین سیاست کاری کا ثبوت نہیں دیا ہے ۔حکومت کا تو مطلب ہی یہ ہے کہ اپنے ہمنواؤں اور ہم نظر ساتھیوں کو ہر طریقے سے اپنے ساتھ جوڑے رکھنا ۔ اتحادی حکومت میں حکمران جماعت کا تکبر اور غرور نہیں چلتا ۔ اور اگر حزبِ اقتدار کا لیڈر ہی اپنے کسی زعم میں مبتلا رہے تو حکومت کا بھٹہ تو کسی بھی وقت بیٹھ سکتا ہے ۔ مینگل صاحب کے اتحاد سے نکلنے کے بعد حکومت کے وجود پر لرزہ طاری ہے ۔تازہ واقعہ کا نتیجہ یہ بھی نکلا ہے کہ اپوزیشن والے حکمران جماعت سے نئے سرے سے اعتماد کا ووٹ لینے کا مطالبہ کرتے بھی سنائی دینے لگے ہیں ۔ یقیناً قومی اسمبلی سے نئے سرے سے اعتماد کا ووٹ لینا عمران خان کیلئے کارِ دشوار ہوگا ۔ مینگل صاحب کے حکومتی اتحاد سے نکلنے کے بعد بلوچستان میں پی ٹی آئی کی صوبائی اتحادی حکومت کی چُولیں بھی ہل سکتی ہیں ۔ قاف لیگ بھی خانصاحب سے پوری طرح مطمئن نہیں ہے ۔ قاف لیگ کے ممتاز رکن قومی اسمبلی اور پنجاب اسمبلی کے اسپیکر چودھری پرویز الٰہی کے صاحبزادے چودھری مونس الٰہی وزیر اعظم بارے جو بیان دے چکے ہیں ، اُس کی بازگشت ابھی ختم نہیں ہُوئی ہے ۔ کراچی سے ایم کیو ایم بھی عمران خان سے دُور ہو چکی ہے ۔ اُس کے ایک وزیر کا حکومت سے ناراض ہو کر مستعفی ہونا ابھی تک مرکزی حکومت کے سر پر تلوار بن کر لٹک رہا ہے ۔گویا کہا جا سکتا ہے کہ اختر مینگل کا حکومتی اتحاد کو خیرباد کہنا عمران خان کیلئے سنگین سیاسی بحرانوں کا سبب بن سکتا ہے ۔اس بات کے امکانات بھی ہیں کہ ماضی قریب کی طرح اختر مینگل صاحب پھر حکومتی شخصیات سے جپھی ڈال کر مان جائیں لیکن فی الحال اس واقعہ نے حکومتی ایوانوں میں تھر تھلی مچا رکھی ہے ۔ ایسے میں تو چاہئے تھا کہ حکومت خود بھی محتاط ہو جاتی اور اس کے وزرا بھی ۔ ایسا مگر ہو نہیں رہا ۔ اس کی تازہ ترین مثال پنجاب میں وزیر صحت ڈاکٹر یاسمین راشد کا دھماکہ خیز بیان ہے ۔پنجاب میں کورونا وائرس جس تیزی سے تباہیاں پھیلا رہا ہے اور حکومت اس کے سامنے جس بُری طرح گھٹنے ٹیکتی نظر آ رہی ہے ، اس پیش منظر میں ڈاکٹر یاسمین راشد کا ایک معروف نجی ٹی وی پر آ کر لاہوریوں کو ”جاہل” قرار دینا آگ پر تیل چھڑکنے کے مترادف ہے ۔اس بیان پر عوام کی طرف سے سخت ردِ عمل آیا ہے تو موصوفہ نے معذرتیں کرنی شروع کر دی ہیں لیکن سوال یہ ہے کہ وہ لاہورئیے جنہوں نے پی ٹی آئی کی صوبائی وزیر ڈاکٹر یاسمین راشد کو ہزاروں ووٹ دئیے، کیا وہ آج ”جاہل” ہو گئے ہیں؟ حقیقت یہ ہے کہ ڈاکٹر صاحبہ نے اپنے ووٹروں کی دل آزاری بھی کی ہے اور اُن لاہوریوں کی بھی جنہوں نے نون لیگ کے مقابلے میں کئی پی ٹی آئی سیاستدانوں کو صوبائی اور قومی اسمبلی کے رکن بھی بنایا ہے ۔ ڈاکٹر یاسمین راشد صاحبہ نے اپنی بے احتیاطی سے عمران خان کی مرکزی اور صوبائی حکومت کو سخت نقصان پہنچایا ہے ۔ اُن کا احتساب لازم ہے ۔
رخصت ہونے والوں کیلئے دعائے خیر: گذشتہ ہفتے ہمارے بہت عزیز دوستوں کے اقربا، معروف فنکار اور کئی روحانی شخصیات ہمیں داغِ مفارقت دے گئیں ۔ جانے والوں کا غم تو نہیں مٹ سکتا لیکن ہم ان کیلئے مغفرت اور بخشش کی دعا تو کر سکتے ہیں ۔ اپنے خالقِ حقیقی کے پاس اپنے مقررہ وقت پر پہنچنے والوں کیلئے دعائے مغفرت ہی سب سے بڑا تحفہ کہلاتا ہے کہ مرنے والے بہرحال ہماری دعاؤں کے محتاج اور منتظر رہتے ہیں ۔یہ خبر بڑے کرب اور غم کے ساتھ ملک بھر میں سُنی گئی ہے کہ وطنِ عزیز کے نامور کمپیئر، براڈ کاسٹر ، بے مثل اداکار، اعلیٰ درجے کے شاعر اور سابق رکن قومیِ اسمبلی جناب طارق عزیزوفات پا گئے ہیں ۔ اُنہوں نے جب موت کو لبیک کہا ہے ، اُن کی عمر 84برس تھی ۔طارق عزیز صاحب نے بھرپور زندگی گزاری اور کامیاب رہے ۔ پنجابی زبان کے وہ قادرالکلام شاعر تھے اور بائیں بازو کی طرف جھکاؤ رکھتے تھے ۔ ساٹھ اور ستر کے عشرے میں اُنہوں نے جن فلموں میں کام کیا ، وہ اب کلاسیک کا درجہ رکھتی ہیں ۔بلا شبہ وہ بلا کے فطری اداکار تھے ۔ اُنہوں نے اپنی اداکاری کا لوہا اُس وقت منوایا جب ہماری فلمی دُنیا کے اُفق پر محمد علی اور وحید مراد ایسے دلکش اور زبردست اداکاروں کا طوطی بول رہا تھا۔ طارق عزیز نے محنت سے کام کیا اور نامور ہُوئے ۔ اُن کی پہچان اور تشخص مگر پی ٹی وی کا مشہور کوئز پروگرام ”نیلام گھر” بنا جس نے اُنہیں بے مثل بنا دیا ۔ اُن کی شہرت کا یہ عالم تھا کہ چاردہائیوں تک اُن کا نام اور اُن کی گرجدار آواز ہر گھر میں گونجتی رہی ۔ لاریب طارق عزیز پاکستان سے گہری محبت رکھنے والے فنکاروں میں سے ایک تھے ۔اُن کے پروگرام میں شریک ہونا بجائے خود ایک اعزاز تھا۔اُنہوں نے اپنے فن کے ذریعے سیاست میں بھی قدم رکھا اور نون لیگ کے پلیٹ فارم سے رکنِ قومی اسمبلی منتخب ہُوئے ۔انتخابات میں اُنہوں نے آج کے وزیر اعظم عمران خان کو ہرایا تھا۔بلا شبہ طارق عزیز اپنے فن کی بدولت ہمارے ہیرو تھے ۔ وہ ہمیشہ ہمارے دلوں میں ایک وطن دوست ہیرو ہی کی طرح زندہ رہیں گے ۔ اللہ کریم اُن کی خطائیں معاف فرمائے ۔ اسی ہفتہ گزراں کے دوران پنجاب کی معروف اور محبوب روحانی شخصیت سید پیر کبیر علی شاہ کو اللہ تعالیٰ نے اپنے پاس بلا لیا ۔ شاہ صاحب ایسی عظیم اور روحانی ہستی کا بچھڑ جانا ہم سب کا نقصان ہے ۔ بلا شبہ وہ ایک نیک بزرگ ، پاکستان سے محبت کرنے والی شخصیت، حضور نبی کریمۖ کے سچے عاشق اور ایک بڑے گدی نشین تھے ۔ لاکھوں لوگوں نے پیر کبیر علی شاہ صاحب آف چورہ شریف سے فیض حاصل کیا ۔ ہمارا تو یقین ہے کہ اللہ کے پاس پہنچنے کے باوجود اُن کی فیض رساں شخصیت کا فیض جاری ہے ۔ شاہ صاحب جس محبت اور شوق سے درود شریف اور نعت مبارک کی مجالس برپا کرتے اور دوستوں کی سجائی محافل میں ذوق و شوق سے شرکت فرماتے ،یہ حضورۖ سے اُن کی سچی محبت کی ایک دلیل ہے ۔ اُن کا آستانہ عالیہ بھی ہمیشہ ایسی پاکیزہ مجالس سے گونجتا رہتا تھا۔ سید کبیر علی شاہ صاحب دامت برکاتہ نے جس عزیمت اور شوق سے موت کو لبیک کہا ہے ، کاش ایسی موت ہر مردِ مومن اور مسلمان کا نصیب بنے ۔ہماری دعا ہے کہ اللہ کریم اُنہیں جنت المعلیٰ میں جگہ عطا فرمائے ۔آمین
ایسے ہی گھمبیر ہفتے کے دوران لاہور کے ممتاز ترین اور محترم عالمِ دین ڈاکٹر راغب نعیمی صاحب کے چچا جناب محمد تاجور نعیمی بھی جنت مکانی ہو گئے ۔وہ کچھ عرصے سے سرطان کے مہلک مرض میں مبتلا تھے لیکن اُنہوں نے بہادری اور ایمانی طاقت سے اس بیماری کا مقابلہ کیا۔ محمد تاجور نعیمی صاحب مرحوم گڑھی شاہو کی عالمی شہرت یافتہ دینی درسگاہ ، جامعہ نعیمیہ، کے بانی حضرت مولانا مفتی محمد حسین نعیمی صاحب علیہ رحمہ (جو رحمت علی رازی کے معتبر اور درینہ دوست تھے) کے صاحبزادے اور شہید ڈاکٹر سرفراز نعیمی صاحب کے برادرِ خورد تھے۔ وہ معروف معنوں میں کوئی بڑے عالمِ دین یا کسی بڑے مدرسے کے منتظم تو نہیں تھے لیکن ہمارے لئے یہ تعلق ہی کافی ہے کہ محمد تاجور نعیمی صاحب لاہور کی ایک وقیع دینی درسگاہ کے بانی کے بیٹے ، ایک شہید و بلند پایہ عالمِ دین کے بھائی اور ایک عالمی شہرت یافتہ دینی سکالر بھتیجے کے چچا تھے ۔ اللہ تعالیٰ اُن کی مغفرت فرمائے ۔آمین ، ثم آمین ۔
اِسی ہفتے ہمارے بزرگ و شفیق دوست اور رحمت علی رازی صاحب کے قدیمی اور جگری دوست پروفیسر ڈاکٹر خالد مسعود گوندل صاحب کی ہمشیرہ بھی اپنے اللہ کے پاس چلی گئیں ۔ ہر اچھے اور مخلص بھائی کی طرح پروفیسر ڈاکٹر خالد مسعود گوندل صاحب بھی اپنی ہمشیرہ محترمہ کے چلے جانے پر بجا طور پر غمزدہ اور دلگیر ہوں گے ۔ ہم اور ہمارے ادارے کا ہر رکن اُن کے اس غم اور دکھ میں برابر کا شریک ہے ۔ ہم سب اجتماعی طور پر پروفیسر ڈاکٹر خالد مسعود گوندل صاحب کی ہمشیرہ مرحومہ کی بخشش اور مغفرت کی دعا کرتے ہیں ۔ ڈاکٹر صاحب خود بھی ماشاء اللہ نیک بندے ہیں ۔ اُن کا اوڑھنا بچھونا خالصتاً انسانوں اور دین کی خدمت ہے ۔ ہم سب دست بہ دعا ہیں: یا الٰہی ، اُن کی ہمشیرہ محترمہ کو جنت الفردوس میں اعلی مقام عطا فرما ۔ آمین ۔ہمارے عزیز واقارب اور دوست احباب موت کے بلاوے پر ہمیشہ کیلئے ہم سے جدا ہو جاتے ہیں لیکن وہ ہماری یادوں سے محو نہیں ہوتے ۔ ہم اُنہیں یاد کرتے رہتے ہیں ۔ اُن کی یاد دراصل ہمیں موت کی تیاری کی یاددلاتی رہتی ہے کہ ایک دن ہمیں بھی اُسی اندھیری کوٹھڑی میں ابدی نیند سوجانا ہے ۔
رواں ہفتے چودھری نذیر احمد صاحب بھی اللہ کو پیارے ہو گئے ۔ اللہ تعالیٰ سے اُن کی بخشش اور مغفرت کیلئے دعا گو ہُوں ۔ چودھری نذیر صاحب مرحوم کی رخصتی اسلئے بھی میرے لئے بڑا نقصان ہے کہ وہ والد مرحوم قبلہ رحمت علی رازی صاحب کے نہائت قریبی ، معتمد اور دیرینہ دوست تھے ۔ والد صاحب مرحوم اور چودھری نذیر مرحوم کی دوستی اسقدر زبردست تھی کہ نذیر صاحب کا نام روزنامہ ”طاقت” کی پرنٹ لائن پر بھی شائع ہوتا تھا ۔ یہ ہم سب کے لئے اعزاز تھا ۔ ہماری اخباری دُنیا میں بعض لوگوں نے پرنٹ لائن پر اُن کے نام کی اشاعت پر بلاوجہ اعتراض بھی کیا لیکن رحمت علی رازی صاحب نے یہ نام ختم نہیں کیا ۔ رازی صاحب کی رحلت کے بعد بھی یہ نام بدستور چھپتا رہا ۔ یہ میرے لئے محبت اور تعاون کی ایک نشانی تھے ۔ چودھری نذیر احمد صاحب پورے پنجاب میں محنت کشوں یعنی اخبار فروشوں کے متفقہ لیڈر تھے اور ایک بڑے لیڈر ۔ اُنہوں نے ثابت بھی کر دکھایا کہ وہ اس لیڈر شپ کے مستحق بھی ہیں ۔ میری ہر جگہ رہنمائی فرماتے رہے ۔ آخری دَم تک اُنہوں نے میرا ساتھ نبھایا ۔ والد صاحب کی پہلی برسی ( جو ابھی15جون کو منائی گئی ہے) پر اُن کا محبت و خلوص سے بھرا پیغام ”طاقت” میں شائع ہُوا ۔چنگے بھلے اور صحتمند تھے ۔اندازہ تک نہیں تھا کہ وہ ہمیں یوں اچانک داغِ مفارقت دے جائیں گے لیکن اللہ کے حکم کے سامنے کون دَم مارنے کی مجال رکھتا ہے؟ جب اُس کا حکم آتا ہے ، سر جھکانا پڑتا ہے ۔ سو، جب یہ حکم چودھری نذیر احمد صاحب مرحوم کے نام پر آیا ، اُنہوں نے ایک سچے مسلمان کی طرح سر جھکا دیا اور اپنے خالق کے حضور حاضر ہو گئے ۔سچی بات یہ ہے کہ وہ ایک بہترین اور کھرے انسان تھے ۔ دوستوں کے ساتھ کھڑے ہونے اور عہد نبھانے والے ۔ اُنہوں نے اپنے عمل اور اقدامات سے ثابت کیا کہ وہ مزدور دوست تھے اور مزدوروں کے حقوق کے سچے علمبردار بھی ۔ مجھے یقین ہے کہ اُن کے رحلت و رخصتی کے بعد قیادت کا یہ جھنڈا اُن کے برادرخورد چودھری عاشق صاحب اُسی ہمت اور قوت سے اُٹھائیں گے جس ہمت اور قوت کے ساتھ چودھری نذیر احمد صاحب مرحوم عمر بھر اُٹھائے رہے ۔ اللہ تعالیٰ سے دعا ہے کہ وہ چودھری نذیر صاحب مرحوم کو جنت سے نوازے اور چودھری عاشق صاحب’ چوہدری شکیل اورپسماندگان کو یہ دکھ برداشت کرنے کی ہمت عطا فرمائے ۔ آمین ۔ یہ سطور لکھ رہا ہُوں تو جناب سہیل احمد المعروف” عزیزی ” بھی یاد آ گئے ہیں ۔ اُن کے سسر بھی چند دن پہلے اپنے خالقِ حقیقی کے پاس چلے گئے ۔ اللہ تعالیٰ اُن کی مغفرت فرمائے اور سہیل احمد صاحب کو یہ صدمہ برداشت کرنے کی طاقت بخشے ۔ ہم اور ہمارے ادارے کے سبھی ارکان سہیل احمد صاحب کے اس غم میں برابر کے شریک ہیں ۔ آمین ثم آمین

]]>
https://dailytaqat.com/duroon-parda/akhtar-mengal-hakumti-ithad-se-alahda/feed/ 0
Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
اے پی ایم ایس او سے ایم کیو ایم کا سفر https://dailytaqat.com/articles/%d8%a7%db%92-%d9%be%db%8c-%d8%a7%db%8c%d9%85-%d8%a7%db%8c%d8%b3-%d8%a7%d9%88-%d8%b3%db%92-%d8%a7%db%8c%d9%85-%da%a9%db%8c%d9%88-%d8%a7%db%8c%d9%85-%da%a9%d8%a7-%d8%b3%d9%81%d8%b1/ https://dailytaqat.com/articles/%d8%a7%db%92-%d9%be%db%8c-%d8%a7%db%8c%d9%85-%d8%a7%db%8c%d8%b3-%d8%a7%d9%88-%d8%b3%db%92-%d8%a7%db%8c%d9%85-%da%a9%db%8c%d9%88-%d8%a7%db%8c%d9%85-%da%a9%d8%a7-%d8%b3%d9%81%d8%b1/#respond Wed, 10 Jun 2020 21:47:50 +0000 https://dailytaqat.com/?p=232031 Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
ایم کیو ایم اور مہاجروں سے جڑی پاکستان کی تاریخ کے کچھ ایسے باب بھی ہیں جس سے بیشتر لوگ لاعلم ہیں۔1951 کی مردم شماری میں اردو بولنے والوں کی گنتی مہاجر نام کے ساتھ کی گئی جسکی گواہ تاریخ ہے۔اب ذرا طلبا تنظیم اے پی ایم ایس او کے قیام کی طرف نظر ڈالتے […]]]>

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

ایم کیو ایم اور مہاجروں سے جڑی پاکستان کی تاریخ کے کچھ ایسے باب بھی ہیں جس سے بیشتر لوگ لاعلم ہیں۔1951 کی مردم شماری میں اردو بولنے والوں کی گنتی مہاجر نام کے ساتھ کی گئی جسکی گواہ تاریخ ہے۔اب ذرا طلبا تنظیم اے پی ایم ایس او کے قیام کی طرف نظر ڈالتے ہیں 11 جون 1978 میں اے پی ایم ایس او یعنی آل پاکستان مہاجر اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن وجود میں آئی جو کہ ایک طلبائ تنظیم کی حیثیت سے تو تھی مگر صرف کراچی یونیورسٹی تک محدود تھی۔اے پی ایم ایس او پاکستان کی ریکارڈ بریکر طلبہ تنظیم کہلاتی ہے کیونکہ پاکستان میں طلبہ جماعتوں کی تاریخ یہی رہی ہے کہ وہ کسی نہ کسی مزدور حقوق یا سیاسی جماعت کا حصہ رہی ہیں۔پاکستان کی تاریخ میں ہر سیاسی جماعت کا طلبہ ونگ جماعت کے وجود کے بعد بنا ہے جبکہ اے پی ایم ایس او پاکستان کی واحد طلبائ تنظیم ہے جس نے سیاسی جماعت کو جنم دیا اگر اسے ایم کیو ایم کی ماں کہا جائے تو بالکل درست ہو گا۔نظریاتی طور پر ایم کیو ایم اسی وقت وجود میں آگئی تھی جب ذولفقار علی بھٹو نے سندھ میں لسانی بل منظور کیا اور کوٹہ سسٹم کا نفاذ کیا صرف اسکے قیام کا باقاعدہ آغاز ہونا باقی رہ گیا تھا۔18 مارچ 1984 کو ایم کیو ایم کی بنیاد رکھی گئی۔پارٹی کے قائد بانی ایم کیو ایم اور چئیرمین عظیم احمد طارق قرار پائے۔18 مارچ کا دن وہ دن تھا جہاں سے ایم کیو ایم کی حق پرستی کے سفر کا باقاعدہ آغاز ہوا اور یہ ہی وہ دن ہے جو ملک بھر کے مظلوموں،محکوموں اور پسے ہوئے طبقات کے حقوق کی جدوجہد میں سنگ میل کی حیثیت رکھتا ہے۔غریب اور متوسط طبقے کی عوام کی زندگی میں یہ دن ایک خاص اہمیت کا حامل بنا۔کراچی ،حیدرآباد اور اندرون سندھ میں مہاجروں کے ساتھ ساتھ مظلوموں کیلئے آواز اٹھانے والی یہ سیاسی جماعت لوگوں میں تیزی سے مقبول ہونے لگی اور پھر اسطرح 8 اگست 1986کو ایم کیو ایم نے پہلی بار کراچی میں ایک کامیاب اور تاریخی جلسہ کیا اور دوسرا تاریخی کامیاب جلسہ 31 اکتوبر 1986 میں کیا جس میں لوگوں کی بڑی تعداد نے شرکت کی اور ایم کیو ایم نے بھر پور انداز میں عوامی طاقت کا مظاہرہ کیا۔یہ ایم کیو ایم کا وہ دور تھا جب یہ نعرے “حقوق یا موت” “شیشہ نہیں فولاد ہیں مہاجر کی اولاد ہیں”جو ہم سے ٹکرائے گا وہ لال بتی جائے گا” کراچی اور حیدرآباد کی دیواروں پر لکھے ہوئے دکھائی دیتے تھے اور جلسوں میں ان نعروں کی گونج سنائی دیتی تھی اسی سال 14 دسمبر کو کراچی اور حیدرآباد میں مہاجر اور پختونوں کیا املاک پر حملے ہوئے۔قصبہ علی گڑھ کالونی اور اورنگی کے علاقوں میں دکانوں کو لوٹا گیا اور متعدد گھروں کو نذر آتش کر دیا گیا جب جب مظلوموں کی یہ جماعت حقوق کی بات کرتی رہی ظلم کی نئی داستان کھول دی جاتی تھی انہی تکلیفوں کے ساتھ 1987 کے بلدیاتی انتخابات آگئے جس میں ایم کیو ایم نے ناصرف حصہ لیا بلکہ کراچی اور حیدرآباد سے زبردست کامیابی حاصل کر کے سب کو حیران کر دیا۔کراچی اور حیدرآباد دونوں شہروں میں میئرز ایم کیو ایم کے تھے ایک طرف ایم کیو ایم مظلومیت کے خلاف آواز اٹھانے میں مصروف تھی تو دوسری طرف ایم کیو ایم اور مہاجروں پر مظالم ڈھانے کی تیاری کی جا چکی تھی 1988 میں حیدرآباد میں مہاجر اور سندھیوں کے آپس میں جھگڑے ہونے لگے اور پھر 30 ستمبر 1988 کا وہ خونی شب آئی جب گاڑیوں میں سوار مسلح افراد نے مہاجر علاقوں پر اندھا دھن فائرنگ کی اور مہاجر علاقوں میں خون کی ندیاں بہا دی گئی 256 مظلوم اور بے قصور لوگوں کو موت کی نیند سلا دیا گیا اور جو زخمی ہوئے ان میں بیشتر کو اپنے ہاتھ پاؤں کھو کر معزوری کی زندگی گزارنی پڑے ظلم پر ظلم سہتی ہوئی ایک مظلوم قوم کی جماعت نے نومبر 1988 کے عام انتخابات میں حصہ لیا اور کراچی اور حیدرآباد سے قومی اسمبلی کی 14 اور صوبائی اسمبلی کی 25 نشستیں جیت کر ایم کیو ایم نے پاکستان کی تیسری بڑی جماعت ہونے کا اعزاز حاصل کر لیا الیکشن میں سب سے زیادہ نشستیں جیتنے والی پیپلز پارٹی نے ایم کیو ایم سے شراکت اقتدار کیلئے اتحاد تو کیا لیکن یہ اتحاد ایک سال بھی نہ چل سکا۔1989 میں ایم کیو ایم احتجاجا” حکومت سے علحیدہ ہو گئی۔اس واقعے کے بعد سندھ میں ایک بار پھر لسانی فسادات شروع ہو گئے اور اس دوران مہاجروں کی دیہاتوں سے شہر اور سندھیوں کی شہروں سے دیہاتوں کی طرف نقل مکانی شروع ہو گئی ایم کیو ایم کی بڑھتی ہوئی شہرت کو بدنام کرنے کیلئے جہاں روز نت نئے انداز میں کوئی نہ کوئی مسئلہ کھڑا کیا جاتا تھا وہیں 1990 میں بے نظیر کے دور حکومت میں ایم کیو ایم کو دہشت گرد جماعت کا نام دیتے ہوئے حیدرآباد میں ایم کیو ایم کے گڑھ پکا قلعہ میں سیکیورٹی فورسز کی طرف سے آپریشن کیا گیا جس میں بچوں اور عورتوں سمیت 60 لوگ شہید ہوئے یہ ایم کیو ایم پر مظالم ڈھانے کا وہ دور تھا جب گھروں میں ماؤں بہنوں کی عزتیں بھی محفوظ نہیں تھیں اس المناک واقعہ کے چند ماہ بعد اس وقت کے صدر غلام اسحاق خان نے بے نظیر کی حکومت کو برطرف کر دیا پھر ایم کیو ایم نے نومبر 1990 کے انتخابات میں قومی اسمبلی کی 15 اور صوبائی اسمبلی کی 29 نشستیں جیت کر ایک بار پھر اپنی مقبولیت کا لوہا منوایا ان انتخابات کے بعد نواز شریف حکومت کے ساتھ ایم کیو ایم کی یہ ساجھے داری زیادہ عرصہ نہیں چلی جون 1991 میں لانڈھی کے علاقے سے میجر کلیم اللہ فوجی افسر کو تین جوانوں کے ہمراہ اغوائ کر کے تشدد کا نشانہ بنایا گیا میجر کلیم نے اس کا الزام بانی ایم کیو ایم اور ایم کیو ایم پر لگایا اگرچہ کچھ وقت کے بعد عدالت نے انہیں بری کر دیا۔اس واقعہ کے ٹھیک ایک سال بعد 19 جون 1992 میں فوج نے ایم کیو ایم کے خلاف سیاسی آپریشن شروع کر دیا جس کے دوران ایم کیو ایم کے کئی کارکنان پکڑے گئے اور کئی روپوش ہو گئے فوجی حکام نے ایم کیو ایم کے دفاتر اور زیر اثر علاقوں میں دو درجن سے زائد ٹارچر سیل برآمد کرنے کے دعوے’ کیے ان تمام واقعات کے بعد کراچی اور حیدرآباد پر راج کرنے والی اور مقبول جماعت کو لوگوں کی نظر میں دہشت گرد جماعت بنا دیا گیا۔اسی آپریشن کے دوران ایم کیو ایم کا دوسرا دھڑا ایم کیو ایم حقیقی کے نام سے آفاق احمد کی قیادت میں وجود میں آیا جسے حکومت اور فوج کی مکمل حمایت حاصل تھی آپریشن سے چند ماہ پہلے بانی ایم کیو ایم برطانیہ چلے گئے اور پھر کبھی نہ لوٹ کر آئے اور پھر ایم کیو ایم پر پاکستان غداری ،جناح پور کے جھوٹے الزامات لگائے جس کی تصدیق اس وقت کے برگیڈیئر امتیاز نے ایک ٹی وی پروگرام میں کی کہ ایم کیو ایم پر ملک دشمنی کے تمام الزامات بے بنیاد اور سیاسی تھے 1993 میں نواز شریف کی برطرفی کے بعد ہونے والے عام انتخابات میں ایم کیو ایم نے احتجاجا” قومی اسمبلی سے بائیکاٹ کر دیا لیکن صوبائی اسمبلی کے انتخابات میں حصہ کے کر 28 نشستیں جیت لیں حالانکہ اس وقت ایم کیو ایم زیر عطاب تھی اور اسکی قیادت جلاوطنی یا خود ساختہ روپوشی کی زندگی گزار رہی تھی الیکشن کے بعد اقتدار ایک بار پھر بے نظیر کے ہاتھ میں تھااور وزارت داخلہ ریٹائرڈ لیفٹنینٹ جنرل نصیر اللہ بابر کے پاس تھا ایک بار پھر سیکیورٹی فورسز نے ایم کیو ایم کے خلاف آپریشن شروع کر دیا جس کے دوران کراچی اور حیدرآباد میں ہزاروں کارکنان اور حامی قتل ہوئے۔ایم کیو ایم نے اس ظلم کے خلاف آواز اٹھائی اور ایم کیو ایم کے کارکنوں اور ہمدودوں کو ماورائے قتل کرنے کیلئے انصاف مانگا اس دوران کراچی میں قتل و غارت اپنے عروج پر تھا شہر میں بوری بند لاشیں ملا کرتی تھیں کوئی ایسا دن نہیں تھا جب کراچی میں بیس سے تیس لوگ قتل نہ ہوں ایم کیو ایم جب جق اور سچ کا مطالبہ کرتی تو ظلم کی انتہا ڈھانے کا عمل تیزی پکڑتا موت اور دہشت کا یہ رقص شہر قائد میں تین سال قائم رہا ایم کیو ایم نے احتجاجا” پہیہ جام ہڑتالیں بھی کیں مگر انصاف نہ ملا 1997 میں بے ںظیر حکومت کو برطرف کر دیا گیا اس بار کرپشن کے ساتھ ساتھ ماورائے عدالت ہلاکتوں کو بھی انکی حکومت برطرفی کا جواز بتایا گیا۔پانچ برسوں سے عطاب کا شکار بانی ایم کیو ایم نے وطن سے دور رلتے ہوئے بھی پارٹی قیادت کا ڈھب سیکھ لیا تھا بانی ایم کیو ایم نے اپنے لندن سے براہ راست کارکنان اور عوام سے ایک ایسا سلسلہ متعارف کروایا جو پاکستانی سیاست میں بالکل نیا تھا ایم کیو ایم کی ایک بڑی وجہ شہرت اسکا مثالی نظم و ضبط بھی رہا جو ہمیشہ سے اسکے جلسوں میں نظر آتا یے اور اسی وجہ سے آج تک اسے ملک کی سب سے منعظم جماعت کہا جاتا ہے 1997 میں مہاجر قومی موومنٹ نے اپنے سیاست کے دائرے کو وسیع کرنے اور تمام زبانیں بولنے والے مظلوموں کو ایک جگہ یکجا کرنے کیلئے مہاجر قومی موومنٹ کا نام تبدیل کر کے متحدہ قومی موومنٹ رکھ لیا اب ایم کیو ایم ایک ایسی جماعت تھی جو سندھ کے تمام مظلوموں کے حقوق کی بات کرتی تھی فروری 1997 کے انتخابات میں ایم کیو ایم نے قومی اسمبلی کی 12 اور صوبائی اسمبلی کی 27 نشستیں حاصل کیں۔ایم کیو ایم کو ایک بار پھر نواز شریف کے ساتھ اقتدار میں شامل ہونے کا موقع ملا لیکن بہت کم عرصے کیلئے 17 اکتوبر 1998 کو معروف طبیب اور سابق گورنر حکیم محمد سعید کو قتل کر دیا گیا اس وقت کے وزیر اعظم نواز شریف نے اسکا الزام ایم کیو ایم پر لگایا اور قاتلوں کو تین دن میں پولیس کے حوالے کرنے کا الٹیمیٹم دیا لیکن ایم کیو ایم نے اس الزام کو مسترد کر دیا جسکی وجہ سے سندھ میں گورنر راج لگا اور ایم کیو ایم کے خلاف نئے آپریشن کا آغاز ہو گیا۔بعد ازاں ایم کیو ایم پر حکیم محمد سعید کے قتل کے الزامات بھی جھوٹے ثابت ہوئے اور ایم کیو ایم ان الزامات سے بری ہوگئی پھر اکتوبر 1999 آیا ملک میں فوجی سربراہ جنرل پرویز مشرف نے نواز شریف حکومت کا تختہ پلٹ کر اقتدار پر قبضہ کر لیا لیکن ملک کی نئی فوجی قیادت بھی ایم کیو ایم کو معاف کرنے پر تیار نہیں تھی ایم کیو ایم کے رہنمائ ڈاکٹر فاروق ستار اور دیگر رہنماؤں کو گرفتار کر لیا گیا جبکہ کارکنان کی پولیس مقابلوں اور نامعلوم افراد کے حملوں میں ہلاکتوں کا سلسلہ جاری رہا ایسے میں 2001 میں جنرل پرویز مشرف نے اختیارات کی نچلی سطح پر منتقلی کے نعرے کے تحت بلدیاتی انتخابات کروائے۔تو ایم کیو ایم نے اس کا بائیکاٹ کر دیا اور یوں کراچی میں بلدیاتی حکومت جماعت اسلامی اور حیدرآباد میں پیلیز پارٹی کی قسمت میں آئی۔نائن الیون کے بعد دہشت گردی کے خلاف عالمی جنگ شروع ہوئی تو پاکستان دہشت گردی کے خلاف جنگ میں امریکہ کا اتحادی بن کر سامنے آیا اور ایم کیو ایم جنرل پرویز مشرف کی۔ ایک بار پھر امید کی کرن دکھائی دی ایسا لگا جیسے سب کچھ ٹھیک ہونے والا ہے ایم کیو ایم کے گرفتار کارکنان آزاد ہو رہے تھے اور انہیں مقدمات سے بری کیا جا رہا تھا 2002 کے عام انتخابات ہوئے تو ایم کیو ایم نے قومی اسمبلی کی 19 اور صوبائی اسمبلی کی 42 نشستیں حاصل کیں اور جنرل پرویز مشرف کی حمایت سے قائم ہونے والی مسلم لیگ ق سندھ حکومت میں پہلے سے زیادہ طاقتور اتحاد بن کر سامنے آئی پھر 2005 میں بلدیاتی انتخابات ہوئے تو کراچی اور حیدرآباد کی ضلعی حکومتوں پر ایم کیو ایم کا راج لوٹ آیا جنرل پرویز مشرف کے ساتھ ایم کیو ایم کی خوب جمی چند ایک نا چاقیوں کے علاوہ کوئی ایسا موڑ نہیں آیا جہاں ایم کیو ایم حکومت سے علحیدگی پر سنجیدہ نظر آئی ہو۔اور ایم کیو ایم کو جب اختیارات کے ساتھ کام کرنے کا موقع ملا تو اس دور میں کراچی، حیدرآباد اور سبدھ کے شہری علاقے تعمیر اور ترقی کی راہ کی طرف گامزن ہوئے جس کی حقیقت سے پوری دنیا واقف ہے اور پھر 12 مئی 2007 آگیا جب سپریم کورٹ کے معطل چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کی کراچی آمد کے موقع پر سیاسی کارکنوں ،عام لوگوں اور وکلاء پر مسلح افراد کے حملوں سے 40 سے زائد لوگ شہید ہوئے۔ اس تشدد کا الزام وکلاء اور حزب اختلاف کی جماعتوں نے ایم کیو ایم پر عائد کیا۔ایم کیو ایم نے اسکا ذمہ دار ایم کیو ایم مخالف سیاسی جماعتوں کو ٹہرایا اور شفاف عدالتی تحقیقات کا مطالبہ کیا۔2008 میں ایم کیو ایم نے انتخابات کے بعد پیپلز پارٹی سے سیاسی اتحاد کیا۔2013 کے انتخابات میں سندھ کے شہری علاقوں میں ایک بار پھر ایم کیو ایم اکثر نشستوں پر کامیاب ہوئی اور اپوزیشن کا کردار ادا کرتی رہی۔2015 کے بلدیاتی انتخابات میں کامیاب ہو کر ایم کیو ایم نے میدان مار لیا ایم کیو ایم کا یہ سفر اتنا آسان نہیں تھا اسے کئی نشیب و فراز کا سامنا کرنا پڑا۔11 مارچ 2015 بروز بدھ صبح سویرے ایم کیو ایم کے مرکز نائن زیرو اور اطراف کے مکانوں پر رینجرز کی بھاری نفری نے چھاپہ مارا۔سندھ رینجرز کے ترجمان کرنل طاہر نے نائن زیرو کے آپریشن کی وجہ خفیہ اطلاع بتائی۔نائن زیرو کے تمام شعبہ جات کی تلاشی کے دوران دفتری ریکارڈ بھی قبضے میں لے لیا گیامتحدہ کے رہنماؤں کو بھی حراست میں لیا گیا نائن زیرو سے گرفتاریاں کی گئیں۔نائن زیرو کے آپریشن کی اطلاع کے بعد ایم کیو ایم کے کئی رہنما وہاں پہنچے مگر انہیں آگے جانے کی اجازت نہیں دی گئی جبکہ گرفتار رہنماؤں کو بعد ازاں چھوڑ دیا گیا اسی دن ایم کیو ایم کے جوان کارکن سید وقاص شاہ کی شہادت بھی فائرنگ کے نتیجے میں ہوئی۔اس سرچ آپریشن کے بعد نائن زیرو سے اسلحہ برآمد ہونے کے دعوے’ کیے گئے اور نائن زیرو کے ساتھ ہی خورشید بیگم ہال کو بھی سیل کرنے کے احکامات جاری ہوئے لیکن عوام اور کارکنان کے احتجاج پر سیل نہیں کیا جا سکا۔اس کے کچھ عرصہ بعد نبیل گبول جو ایم کیو ایم کے ٹکٹ پر NA.246 ممبر قومی اسمبلی ضمنی ہوئے تھے انہوں نے ایک سوچی سمجھی سازش کے تحت اس حلقے سے استعفی’ دیا تاکہ ایم کیو ایم کو ایم کیو ایم کے گڑھ سے شکست دلوائی جا سکے۔جس کیلئے پی ٹی آئی کو ایم کیو ایم کے مقابلے میں الیکشن کروایا گیا لیکن حلقہ NA.246 کی عوام نے تمام سازشوں کے باوجود ایک دفعہ پھر ایم کیو ایم کو بھاری اکثریت سے کامیاب کروایا۔ ایم کیو ایم نے جب بھی کسی سیاسی جماعت کے ساتھ سیاسی اتحاد کر کے حکومت میں شمولیت اختیار کی اس میں مہاجروں کی نوکریوں کے آسرے، اسیر کارکنان کی رہائی اور بے شمار وہ مسائل تھے جس کے حل ہونے کے دعوے’ تو کیے گئے مگر انکا ممکن ہونا دکھائی نہیں دیتا تھا بہر حال ایم کیو ایم نے اپنی جدوجہد جاری رکھی اور مظلوموں کے حقوق کی آواز کو بلند رکھا مگر نائن زیرو کے آپریشن کے بعد چھاپے اور گرفتاریوں کا ایک بڑا سلسلہ شروع ہو گیا اسی دوران مارچ 2016 میں دبئی سے مصطفی’ کمال کی اچانک آمد اور ایک پریس کانفرنس ہوئی ماضی کو دہرایا گیا اور ایم کیو ایم کے لوگوں کو جمع کر کے ایم کیو ایم مخالف ایک گروپ ایم کیو ایم حقیقی کی طرح بنایا گیا جو پاک سر زمین پارٹی کے نام سے سامنے آیا یہ تمام واقعات ایک پر ایک ایسے پیش آئے جیسے کہ باقاعدہ ایم کیو ایم کو کچھ طاقتیں قبول نہیں کرنا چاہتی ہوں۔پھر جب چھاپے گرفتاریوں کا سلسلہ تیزی کی طرف بڑھا اور ایم کیو ایم کے کارکنان کی حراست اور اغوائ کے بعد نعشیں نامعلوم مقامات سے ملنا شروع ہو گئیں اور اسیر کارکنان کی رہائی کے انتظار میں ان کے بچے بڑے ہونے لگے۔ اگست 2016 میں غیر آئینی و غیر قانونی چھاپوں ،گرفتاریوں اور انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں کے خلاف تا دم بھوگ ہڑتال کراچی پریس کلب کے سامنے ایم کیو ایم کی طرف سے کی گئی۔اس بھوک ہڑتال کے دوران بلاآخر 22 اگست کا وہ دن آگیا جب بانی ایم کیو ایم کی طرف سے پاکستان مخالف نعرہ لگایا گیا ایم کیو ایم کے مخالفین کیلئے یہ ایک ایسا دن تھا جب انہیں یقین ہو گیا کہ ہمارے راستے کا کانٹا جس کا نام ایم کیو ایم ہے وہ کانٹا نکلنے والا ہے وہ ایک ایسا دن تھا جب مخالفین ایم کیو ایم سمیت تمام مہاجر قوم کو گالیاں دے رہے تھے کیونکہ ان میں اس دن وطن کی محبت نہیں بلکہ ایم کیو ایم کی نفرت بول رہی تھی۔کراچی میں بانی ایم کیو ایم کی تقریر کے نتیجے میں ہونے والی ہنگامہ آرائی کے بعد رینجرز کے اہلکار ایم کیو ایم کے رہنماء ڈاکٹر فاروق ستار قائد حزب اختلاف خواجہ اظہار الحسن کو اپنے ساتھ لے گئے اور دوسرے دن گھروں پر واپسی کی اجازت ملی 23 اگست کو رہنمائ ایم کیو ایم ڈاکٹر فاروق ستار نے اراکین رابطہ کمیٹی کے ہمراہ پریس کانفرنس کی اور کہا کہ بانی ایم کیو ایم کو اگر کوئی ذہنی تناؤ کا مسئلہ ہے تو پہلے اسے حل ہونا چاہئیے مگر جب ایم کیو ایم ، پاکستان کی جماعت ہے تو اسے پاکستان سے ہی چلنا چاہئیے اب ایم کیو ایم کے تمام فیصلے ایم کیو ایم پاکستان سے ہی ہونگے پاکستان مخالف نعرے نہیں لگنے چاہئیے تھے تھیجو ٹوٹے عہد پیماں
وہ ہم نے چاہا نہ تھا
وہ ایم کیو ایم جس کو مٹانے کے خواب دیکھنے والے ایم کیو ایم کے مخالفین خوشیاں منا رہے تھے وہیں دوسری جانب ایم کیو ایم ایک بار پھر سے پاکستان کے نعرے کے ہمراہ ایم کیو ایم پاکستان بن کر سب کے سامنے کھڑی ہو گئی مگر بانی ایم کیو ایم کے بیان سے علحیدگی کے باوجود ایم کیو ایم اور مہاجروں کو سکون سے رہنے نہیں دیا گیا اور غداری کے الزامات لگا کر تحریک کو ایک منصوبہ بندی کے تحت مٹانے کیلئے کوششیں شروع کر دی گئیں ستمبر 2016 میں بانی ایم کیو ایم کے پاکستان مخالف نعروں متنازعہ اشعال انگیز تقاریر اور میڈیا ہاؤسز بالخصوص ARY پر حملے کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے سندھ کی صوبائی اسمبلی میں ایم کیو ایم کی طرف سے پیش کی گئی قرار داد متفقہ طور پر منظور کر لی گئی کہ قرار داد ایم کیو ایم کے سینئر رہنمائ سید سردار احمد نے پیش کی اس قرار داد میں آرٹیکل 6 کے تحت تمام ملوث افراد کے ساتھ کاروائی کرنے کی درخواست کی گئی یہ ایم کیو ایم کی تاریخ کے وہ پہلو ہیں جو شاید تاریخ لکھنے والا بھی لکھتے ہوئے ہزار بار سوچے گا۔بانی ایم کیو ایم کی معافی قبول نہیں کی گئی مگر ایم کیو ایم پاکستان کا کارواں زخمی پرندوں کی صورت میں اڑنے کی کوشش میں لگا رہا 2017 میں بھی نا ہی چھاپے اور گرفتاریوں کا سلسلہ ختم ہوا اور نا اسیر کارکنان کی رہائی ممکن ہوئی بلکہ اب ایم کیو ایم کی کہانی میں نیا موڑ آیا جب بھی ایم کیو ایم کے کارکنان کو گرفتار کرنا ہو تو ایم کیو ایم لندن سے رابطہ کا نام دے دو ہم کیسے بد نصیب نکلے جس پرچم ،پتنگ اور تحریک کیلئے اپنے جذبات سے جڑے انسان کو دور کیا ہماری تحریک اور قوم کی بدنصیبی کا عمل پھر بھی ختم نہیں ہوا 2018 آیا 5 فروری 2018 کو اچانک ایم کیو ایم پاکستان ،ایم کیو ایم پی آئی اور ایم کیو ایم بہادرآباد بن گئی 23 اگست 2016 کو جس ڈاکٹر فاروق ستار کی سربراہی میں سب نے جمع ہو کر آگے بڑھنے کا دعوی’ کیا تھا اب وہی سب آپس کے جھگڑوں کا شکار ہو کر منتشر ہو گئے کارکنان ووٹرز اور ہر عام انسان ایک ذہنی دباؤ کا شکار ہو گیا کیونکہ مہاجر اور مظلوم عوام نے ہمیشہ پتنگ ایم کیو ایم اور اسکے پرچم سے پیار کیا اور بانی ایم کیو ایم سے علحیدگی پر بھی دل کو کسی طرح سمجھا کر بھاری پتھر رکھ لیا مگر 2018 کے انتخابات میں ایم کیو ایم کا مینڈیٹ چھین لیا گیا ایم کیو ایم کو مختصر نشستوں پر کامیابی ملی مہاجر قوم ایم کیو ایم پاکستان کے رہنماؤں کے آپس کے جھگڑوں میں خود کو بکھرتا محسوس کرتی ہے۔مہاجر قوم سیاسی قیادت سے محروم ایک سوالیہ نشان کی صورت دکھائی دیتی ہے۔چھوٹی سے تحریک کا سفر اے پی ایم ایس او سے شروع ہو کر ایم کیو ایم کی شکل میں چٹان بن کر ابھرا مگر پھر وہی چٹان ہزاروں ٹکڑوں میں تقسیم ہو گئی مہاجر قوم اس تحریک کی حفاظت شہیدوں کا لہو سمجھ کر کرتی رہی شہید عظیم احمد طارق، شہید انقلاب ڈاکٹر عمران فاروق،آفتاب احمد شہید ،صولت مرزا شہید اور شہید علی رضا عابدی کو قوم نے چاہا ہے مگر اب قوم اپنی آنے والی نسلوں کی بقائ اور سلامتی کیلئے پریشان ہے ہر دل کی دعا ہے کہ ایک بار پھر پاکستان زندہ باد کے ساتھ نعروں کی آزادانہ گونج سنائی دے اور اسیر اور لاپتہ کارکنان گھروں کو لوٹیں کیونکہ مہاجر بانیان پاکستان کی اولاد ہیں غدار نہیں اب ایم کیو ایم کے ہر دھڑے کو اپنی انا کی قربانی دیتے ہوئے مہاجر قوم کا سوچنا ہو گا۔کراچی ،حیدرآباد اور سندھ کی مظلوم عوام کا سوچنا ہو گا اور سب کو مل کر اپنی کوتاہیوں کی تلافی کرنی ہو گی کہیں ایسا نہ ہو کہ بہت دیر ہو جائے۔

]]>
https://dailytaqat.com/articles/%d8%a7%db%92-%d9%be%db%8c-%d8%a7%db%8c%d9%85-%d8%a7%db%8c%d8%b3-%d8%a7%d9%88-%d8%b3%db%92-%d8%a7%db%8c%d9%85-%da%a9%db%8c%d9%88-%d8%a7%db%8c%d9%85-%da%a9%d8%a7-%d8%b3%d9%81%d8%b1/feed/ 0
Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
حضرتِ اِنسان اور سوشل میڈیا https://dailytaqat.com/articles/hazrat-e-insan-or-social-media/ https://dailytaqat.com/articles/hazrat-e-insan-or-social-media/#respond Sat, 09 May 2020 22:06:58 +0000 https://dailytaqat.com/?p=230676 Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
سوشل میڈیا ہمارے معاشرے کا سب سے بڑا مرض بن چکا ہے اور ہر بچہ ،جوان اوربوڑھا اس مرض میں مبتلا نظر آتا ہے۔سوشل میڈیا کا آغاز کب؟ کیوں؟ کیسے ہوا؟ اور اس کا استعمال کیا ہونا چاہیے تھا ؟اور کیا ہو رہا ہے؟ شاید یہ سوال آپ میں سے بہت سے لوگوں کے ذہنوں […]]]>

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

سوشل میڈیا ہمارے معاشرے کا سب سے بڑا مرض بن چکا ہے اور ہر بچہ ،جوان اوربوڑھا اس مرض میں مبتلا نظر آتا ہے۔سوشل میڈیا کا آغاز کب؟ کیوں؟ کیسے ہوا؟ اور اس کا استعمال کیا ہونا چاہیے تھا ؟اور کیا ہو رہا ہے؟ شاید یہ سوال آپ میں سے بہت سے لوگوں کے ذہنوں میں گردش کرتے ہوں گے ۔ بڑھتی ہوئی سوشل میڈیا کے منفی پہلو وں کو دیکھتے ہوئے میرے ذہن میں بھی یہ سوال ابھرا تو میں نے سوچا کیوں نا اس پہ بات کر لی جائے ۔ کیوں کہ جب بھی کوئی مسئلہ درپیش آتا ہے تو اس کا حل تلاش کرنے سے ملتا ہے ۔ اور کسی بھی سوال کا جواب تب تک سامنے نہیں آتا جب تک سوال خود سامنے نا آئے ۔
سوشل میڈیا کا آغاز بہت سالوں یا کہہ لیجئے کسی صدی پہلے ہوا ہو گا ۔پھر اس کی ترقی میں اضافہ ہوتا گیا اور قطرے سے دریا وجود میں آیا ۔
اپنے طور پہ سائنس کی یہ ایک بہترین ایجاد ہے ۔ جس پہ اگر غورو فکر کیا جائے تو ایجاد کرنے کا مقصد آسانی مہیا کرنا اور دیگر فوائد معلوم ہوتا ہے۔کیوں کہ جب بھی کوئی شخص کچھ ایجاد کرتا ہے تو اس کے ذہن میں مقصد خود کو کسی مثبت حوالے سے ثابت کرنا ہوتا ہے۔
اس ڈیجیٹل دور میں سوشل میڈیا اپنی پوری آب و تاب سے خود کو منوائے ہوئے ہے ۔یہ ایک وسیع نیٹ ورک بن چکا ہے اگر دیگر ذرائع کی بات کی جائے تو زیر فہرست ٹویٹر،فیس بک انسٹاگرام اور بہت سے ذرائع ہیں ۔ جس کو استعمال کرتے ہوئے بہت سارے لوگ اچھی معلومات، رویوں، اخلاقیات اور تعلیمات کو فروغ دے رہیں ہیں جو اپنی پائیدار سوچ اور صحت مند ذہنیت کا ثبوت دیتے ہیں۔
اب اگر انہیں ذرائع کے استعمال پر نظر ڈالی جائے اور جمع تفریق کی پوٹلی کھولی جائے تو بد قسمتی سے یہ حقیقت سامنے آتی ہے کہ مثبت کی بجائے منفی استعمال اور رویوں کو ذیادہ فروغ مل رہا ہے ۔جیسا کہ مزاح کے نام پہ انسانوں کی تذلیل، رشتوں کی تذلیل اور اور ہماری بنیادی رسم و رواج کی بھی تذلیل ۔مزاح کے نام پر اتنی منفیات پھیل رہی ہے ہر اچھی بری بات کو مزاح کا نام دے کر پیش کیا جا رہا ہے۔جب کہ مذاح کے بذاتِ خود کچھ اصول ہیں۔انسانی تقدس کو پامال کیا جا رہا ہے ۔ رشتوں کو مذاق بنا دیا گیاہے۔
غیر اخلاقی رویوں کا فروغ۔ جعلی اکاونٹس کے ذریعے سے منفیات پھیلانا ۔بے ادب اور بد لحاظی کا فروغ۔اور اس کے علاوہ بھی بہت سی منفیات جس کی وسعت کا احاطہ یہ مختصر تحریرشاید نا کر سکے لیکن ہم سب بخوبی واقف ہے۔اب اصل بات کیا ہے کہ جب بھی کبھی لفظ سوشل میڈیا زیرِ بحث آئے تو یہ الفاظ سننے کو ملتے ہے۔
یہ تو ایک بری چیز ہے۔اس نے معاشرے میں منفیات کو بڑھا دیا ہے۔ اس سے ہماری نسلیں خراب ہو رہی ہے وغیرہ وغیرہ ۔
اور یہ بات ایک اندازِنظر کے لحاظ سے درست بھی ہے۔ اس سے انکار بھی نہیں ۔
لیکن پس پردہ اگر دیکھا جائے تو سوشل میڈیا کیا ہے ؟کوئی جادوئی چھری جو اپنا جادو کا استعمال کر کے اپنے مقاصد حاصل کر رہی ہو؟ یا کوئی بھوت جس نے اپنا خوف اور سحر لوگوں پہ ڈال رکھا ہے ؟یا کوئی خود بخود سر انجام ہونے والی طاقت جس پہ کسی کا کوئی اختیار نہیں؟
اگر ان میں سے کچھ بھی نہیں ہے تو سوچنے کی بات یہ ہے کہ منفیات کہاں سے آرہی ہے ؟
سوشل میڈیا تو ایک بے جان آلہ کار ہے جو انسانی ہاتھوں کا محتاج ہے ۔
میں نے آغاز میں ذکر کیا سوشل میڈیا ایک مرض بن چکا ہے اور اس کے منفی پہلووں پر سرسری سی روشنی بھی ڈالی ۔اب سوچنا یہ ہے کہ مرض بن چکا ہے یا بنا لیا گیا ہے؟ یقیناََ بنا لیا گیا ہے۔
تو ثابت ہوا کہ پس پردہ سوشل میڈیا کے ذرائع کو استعمال کرتے ہوئے جو بھی پہلو اور رویے سامنے آتے ہے ان کا ذمہ دار انسان ہے ۔
اگر اسے مرض بنایا ہے تو ہم نے خود ۔اگر یہ ہماری اخلاقیات کو تباہ کر رہا ہے تو ذمہ دار ہم خود ۔بلکہ یوںکہہ لیجئے جو اخلاقیات ہماری تھی وہی ایک ذریعہ ملنے پر سامنے آگئیں ۔ کیوں کہ جو ہمارے پاس ہو ہم وہی معاشرے کو دے سکتے ہے ۔اور اگر ادب و آداب سے فاصلہ ہو رہا ہے تو بھی ذمہ دار ہم خود۔توکیوں نا بے جان چیزوں پہ لعن طعن کرنے کی بجائے خوکو درست کر لیا جائے ۔ اگر ذریعہ یا سہولت ہمیں ملی ہے تو یہ ہمارا فرض ہے کہ اس کا مثبت استعمال کیا جائے اور اسکا فائدہ اٹھایا جائے۔ جیسے کہ اپنی اسلامک تعلیمات کو فروغ دیا جائے ۔ حسن اخلاق کو فروغ دیا جائے ۔اپنے ذریعہ معاش یا کاروبار کے فروغ کے لئے بھی استعمال کیا جائے ۔
لیکن خددارا اپنے اصل سے دور مت ہوں۔خودکو اتنا چھوٹا اوراخلاقی طور پر کمزور مت دکھائیے کیوں کہ ہمیں اللہ تعالی نے بہترین پیدا کیا ہے اور اپنے بندوں میں اپنی وصف بھی تقسیم کیے ہے کسی کو سخی بنایا ،کسی کو احساس کرنے والا اور کسی کو معاف کرنے والا ۔لیکن ہم نے اپنے ایمان کی کمزوری کی وجہ سے یہ اوصاف معدوم کر دیے اور خود ساختہ منفی اوصاف کو غالب کر لیا۔
ہمیں ضرورت ہے کہ کسی بھی چیز ،انسان یا ذرائع کو نمورد الزام ٹھہرانے کی بجائے اپنا احتساب کر لیں ۔اور جہاں لگے کہ ہم ٹھیک نہیں وہاں سے خود کی توصحیح کر لیں۔

]]>
https://dailytaqat.com/articles/hazrat-e-insan-or-social-media/feed/ 0
Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
ماہ رمضان کی فضیلت https://dailytaqat.com/articles/mahe-ramdan-ke-fazelat/ https://dailytaqat.com/articles/mahe-ramdan-ke-fazelat/#respond Sun, 26 Apr 2020 19:26:24 +0000 https://dailytaqat.com/?p=230006 Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
اللہ تعالی کے فضل و کرم سے رمضان المبارک کا رحمتوں اور برکتوں بھرا مہینہ شروع ہو چکا ہے۔ صدر مملکت اور علمائے کرام کے درمیان طے پائے گئے معاہدے کے مطابق 20 نکات پر عمل ہو رہا ہے۔روزے آہستہ آہستہ سردیوں کے موسم کی طرف آرہے ہیں۔عام طور پر یہ سرکل تقریباً بتیس سال […]]]>

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

اللہ تعالی کے فضل و کرم سے رمضان المبارک کا رحمتوں اور برکتوں بھرا مہینہ شروع ہو چکا ہے۔ صدر مملکت اور علمائے کرام کے درمیان طے پائے گئے معاہدے کے مطابق 20 نکات پر عمل ہو رہا ہے۔روزے آہستہ آہستہ سردیوں کے موسم کی طرف آرہے ہیں۔عام طور پر یہ سرکل تقریباً بتیس سال بعد پورا ہوتا ہے اور روزے شدید گرمی سے سردی کے موسم میں آتے ہیں۔ موسموں کے الٹ پھیر کو بھی اللہ تعالیٰ نے اپنی نشانیوں میں سے ایک نشانی قرار دیا ہے۔اس طرح ایک چالیس سال کے مسلمان کو تقریباً تمام قسم کے موسموں میں روزہ رکھنے کا شرف حاصل ہوتاہے۔اس سال کورونا وائرس کی وبا کے باعث رمضان المبارک کو روائیتی اہتمام کی بجائے احتیاطی تدابیر اور سماجی فاصلے کے اصولوں کے مطابق گزارا جا رہاہے۔ سعودی فرمانروا شاہ سلمان نے کہا ہے کہ کورونا وائرس کی وجہ سے رمضان المبارک کے دوران اجتماعی عبادات نہ ہونے پر افسوس ہے۔ رمضان المبارک کی آمد پر جاری بیان میں انہوں نے مزید کہا کہ ان حالات نے ہمیں اجتماعی عبادات، نمازوں، تراویح اور خدا کے گھر میں قیام اللیل سے روک دیا ہے۔ کورونا وائرس کی وجہ سے رمضان المبارک میں عبادات میں پیش آنیوالی مشکلات پر بھی افسوس ہے۔عالم اسلام پوری دنیا کے ساتھ ایک امتحان کے دور سے گزر رہا ہے۔ ”صوم” یا ”صیام” کے الفاظ عربی زبان کے ہیں۔ عرب خود تو روزہ نہیں رکھتے تھے، البتہ اپنے گھوڑوں کو رکھواتے تھے۔ ا س طرح وہ گھوڑوں کو بھوک پیاس جھیلنے کا عادی بناتے تھے کہ کہیں ایسا نہ ہو کہ مہم کے دوران گھوڑا بھوک پیاس برداشت نہ کرسکے اور جی ہار دے۔ روزے پہلی امتوں پر بھی فرض تھے اور اور روزے کا عقیدہ دنیا کے دوسرے مذاہب میں بھی پایا جاتاہے۔روزہ ارکان اسلام کا اہم رکن ہے۔روزہ رکھنے سے انسان اپنے نفس کے گھوڑے پر قابو پاتا ہے۔رمضان،زکوة، صدقات اور خیرات کے ذریعے مساوات کا درس دیتاہے۔ یہ صبر کا مہینہ ہے اور صبر کا اجرو ثواب جنت ہے۔جدید دور کے مشہور نفسیات دان فرائیڈ کے مطابق شہوانی خواہشات بہت سخت ہوتی ہیں۔خواہش جتنی مضبوط ہو گی اس پر قابو پانا اتنا ہی مشکل ہوتا ہے۔انسان کو عافیت اور عیش وآرام درکار ہے دولت چاہتا ہے شہرت (آج کے ڈیجیٹل دور میں سوشل میڈیا پر فالوورز میں اضافہ) چاہتا ہے اور یہ حب مال،حب جاہ،حب دنیا،علائق دنیوی اور سازوسامان دنیاکی محبت ہی تو بندہ مومن کے راستے کی اصل رکاوٹ ہے۔روزہ رکھنے سے نفس امارہ کے تقاضے، جسم کی حیوانی ضروریات، داعیات،خودی اور انائے کبیر پر ضبط ملتا ہے۔رمضان میں مومن کے رزق میں اضافہ ہوتا ہے۔آپ نے مشاہدہ کیا ہوگا کہ رمضان کے آغاز سے ہی بازاروں میں طرح طرح کے پھل اور خاص کر ہر قسم کی کھجوریں وافر مقدار میں مہیا ہوتی ہیں۔ اور لوگوں کے لئے رمضان بازار کا اہتمام بھی کیا جا تا ہے۔لوگ اپنی اپنی بساط کے مطابق دوسروں کو افطا ر کراتے ہیں اور مستحقین کو ضروری امداد مہیا کرتے ہیں، تاکہ وہ بھی رمضان المبارک کی برکات سے دامن بھریں۔اس ماہ میں روزہ داروں کے لئے ایک خاص قسم کا سکون ہوتا ہے۔سحرو افطار کے مواقع پر دعاؤں کا خصوصی اہتمام ہوتا ہے۔ٹی وی چینلز پر سحر و افطار کے خصوصی پروگرام نشر ہوتے ہیں۔جس سے لوگوں میں اسلام اور قرآن سے خصوصی وابستگی پیدا ہوتی ہے۔ اخبارات میں بھی نماز تراویح میں پڑھے جانے والے قرآن کا ترجمہ اور مختصر تفسیر روزانہ کی بنیاد پر لکھی جاتی ہے۔رمضان المبارک کا پہلا عشرہ رحمت،دوسرا مغفرت اور تیسرا آتش دوزخ سے نجات کا عشرہ ہے۔رمضان کی صحیح برکات سے مستفید ہونے کے لئے ہمیں
غیبت،جھوٹ،فحش باتوں اور بد زبانی سے پرہیز کرناچاہیے۔کوشش کریں کہ رمضان کے مہینے میں قرآن پاک کی زیادہ سے زیادہ تلاوت کریں اور اپنے خاندان کے لوگوں کو بھی قرآن پاک کی تلاوت اور سیرت النبیۖ کے مطالعے کی عادت ڈالیں۔فتح مکہ رمضان المبارک میں ہوا۔مملکت خدادا اسلامی جمہوریہ پاکستان رمضان کے بابرکت مہینے میں معرض وجود میں آیا۔رمضان المبارک کے آخری عشرے کی طاق راتوں میں سے ایک رات میں قرآن پاک نازل ہوا تھا۔ اس رات کو ایک ہزار مہینے سے افضل قرار دیا گیا ہے۔اس رات کو عبادت کی خصوصی اہمیت ہے، رمضان کے آخری عشرے میں اہل ایمان اعتکاف پر بیٹھ کر ہمہ وقت عبادت میں مصروف رہتے ہیں اور اللہ تعالی کا قرب حاصل کرتے ہیں۔رمضان المبارک کا آخری جمعہ جمعة الوداع کہلاتا ہے اور اس میں عبادت کی خصوصی اہمیت ہے۔اسلام چونکہ دین فطرت ہے اس لئے سفر کے دوران اور بیماری کی وجہ سے دوسرے دنوں میں تعداد پوری کرنے کا حکم ہے۔اللہ تعالی فرماتے ہیں کہ روزہ میرے لئے ہے اور میں ہے اس کا اجر دوں گا۔ اللہ تعالی نے روزہ دار کے لئے دو خوشیاں رکھی ہیں، ایک خوشی وہ جو افطار کے وقت حاصل ہوتی ہے،اور دوسری خوشی اس وقت حاصل ہوگی جب وہ قیامت کے روز اپنے پرور دگار سے جاکر ملاقات کرے گا،اصل خوشی تو وہی ہے جو آخرت میں اللہ تعالی سے ملاقات کے وقت نصیب ہوگی۔دنیاوی لحاظ سے روزہ رکھنے کے بیشمار جسمانی، روحانی اور معاشرتی فوائد ہیں۔ روزے سے انسان کے نظامِ انہضام اور مرکزی دماغی یا اعصابی نظام کو مکمل آرام ملتا ہے اور غذا کے ہضم کرنے کا عمل نارمل حالت میں آجاتا ہے۔۔ اہل ایمان کے لئے ماہ رمضان ایک طرح سے ایمان کی تازگی کا ذریعہ بنتا ہے۔ اسی لئے رمضان کے اختتام پر سچے روزہ داروں کو اداسی محسوس ہوتی ہے اور وہ یہ خیال کرتے ہیں کہ شائد وہ دوبارہ رمضان المبارک کی فضیلتوں سے مستفید ہو سکیں گے کہ نہیں۔اللہ تعالی ہمیں رمضان کی سعادتیں حاصل کرنے کی توفیق عطا فرمائے۔اور اس موذی وبا کورونا وائرس سے پوری دنیا کو نجات دے۔

]]>
https://dailytaqat.com/articles/mahe-ramdan-ke-fazelat/feed/ 0
Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
امریکہ ایران کشیدگی https://dailytaqat.com/articles/america-iran-kushedgi/ https://dailytaqat.com/articles/america-iran-kushedgi/#respond Sun, 26 Apr 2020 19:24:04 +0000 https://dailytaqat.com/?p=230002 Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے پچھلے برس کے اس بیان کے مطابق کہ امریکہ کی انقلابی فوج نے 1770 کی دہائی میں برطانیہ کے زیرِ کنٹرول ہوائی اڈوں پر قبضہ کر لیا تھا تو اسے اگر اس تناظر میں دیکھا جائے تو بدھ کے روز ٹرمپ کی جانب سے ایک ٹویٹ کی گئی تھی جس […]]]>

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے پچھلے برس کے اس بیان کے مطابق کہ امریکہ کی انقلابی فوج نے 1770 کی دہائی میں برطانیہ کے زیرِ کنٹرول ہوائی اڈوں پر قبضہ کر لیا تھا تو اسے اگر اس تناظر میں دیکھا جائے تو بدھ کے روز ٹرمپ کی جانب سے ایک ٹویٹ کی گئی تھی جس میں امریکی بحریہ کے کمانڈروں سے مطالبہ کیا گیا تھا کہ وہ امریکی جنگی جہازوں کو ہراساں کرنے والی ایرانی Gun Boats کو فائرنگ کر کے ڈبو دیں۔سال 2020 کے آغاز میں عراق میں ایرانی پاسدارانِ انقلاب کی قدس فورس کے سربراہ جنرل قاسم سلیمانی کے قتل کے بعد یقینی طور پر یہ امریکہ کی طرف سے براہ راست فوجی کارروائی کی سب سے بڑی دھمکی تھی۔جنرل قاسم سلیمانی کے قتل سے امریکہ اور ایران کے درمیان جنگ کا خطرہ پیدا ہو گیا تھا۔ تو پھر صدر ٹرمپ کی حالیہ دھمکی کے پیچھے کیا وجہ ہو سکتی ہے؟ اور اب جب ایران اور امریکہ دونوں ممالک COVEDـ19 کے وبائی مرض سے نمٹنے کے لیے جدوجہد کر رہے ہیں تو اس نئی کشیدگی کی وجہ کیا ہو سکتی ہے؟
صدر ٹرمپ کی اس دھمکی کے پیچھے گذشتہ ہفتے پیش آنے والا ایک واقعہ ہے، جس میں امریکہ کے مطابق پاسدارانِ انقلاب نیوی کی متعدد مسلح Speed Boats نے خلیج سے گزرنے والے امریکی جنگی جہازوں کے بحری بیڑے کو تنگ کیا۔ان جہازوں میں یو ایس ایس لیوس بی پْلر، ایک موبائل بیس جہاز، اور ایک تباہ کن بحری جہاز یو ایس ایس پال ہیملٹن شامل تھے۔امریکی بحریہ کا کہنا ہے کہ ایک تیز رفتار ایرانی Gun Boats نے ان جہازوں کو کاٹتے ہوئے امریکی کوسٹ گارڈ کٹر کے سامنے 10 گز (9 میٹر) تک کا فاصلہ عبور کیا۔پاسدارانِ انقلاب نے تصادم کا اعتراف کیا ہے لیکن انھوں نے اس کا الزام امریکیوں پر ڈالا ہے۔جمعرات کے روز پاسدارانِ انقلاب کے کمانڈر انچیف جنرل حسین سلامی کا کہنا تھا کہ انھوں نے ایران کی بحری فوجوں کو ‘خلیج فارس سے کسی بھی امریکی دہشت گرد فورس جس سے ایران کی فوج یا غیر عسکری جہاز رانی کو خطرہ ہو، ختم کرنے کا حکم دیا ہے۔’
اب الفاظ کی اس جنگ کے عملی جنگ میں بدلنے کا خطرہ نظر آ رہا ہے۔ بہرحال صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے ٹویٹر پر دیے گئے ‘حکم’ میں تھوڑی بہت تبدیلی آئی ہے۔خلیج میں امریکی جنگی جہازوں کے کمانڈروں کے پاس پہلے ہی اپنے عملے کی زندگیوں اور ان کے جہازوں کی حفاظت کے لیے جو بھی اقدامات وہ ضروری سمجھیں، کرنے کی صلاحیت موجود ہے اور وہ چھوٹی ایرانی کشتیوں کے ہتھکنڈوں سے نمٹنے کے عادی ہیں۔لیکن اس واقعے سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ دنیا بھر کی توجہ COVEDـ19 پر ہونے کے باوجود پہلے سے موجود بین الاقوامی تناؤ وہیں کا وہیں موجود ہے۔ بلکہ یہ بھی ممکن ہے کہ اس میں اضافہ ہوا ہو۔اس کی وجہ یہ ہے کہ امریکہ اور ایران ایک دوسرے کے حوالے سے مستقل Strategic اہداف رکھتے ہیں جن میں کوئی تبدیلی نہیں آئی۔ ایران خطے میں امریکی اثر و رسوخ کو کم کر کے اپنی طاقت بڑھانا چاہتا ہے۔مثلا شام میں کیے گئے حالیہ اسرائیلی فضائی حملوں سے ظاہر ہوتا ہے کہ ایران اور اس کے اتحادی ابھی بھی پورے زور و شور سے وہاں اپنے مقاصد کی تکمیل کے لیے سرگرمِ عمل ہیں۔
ایران میں COVEDـ19 کے بحران اور اس کے نتیجے میں پیدا ہونے والی افراتفری اور غیر یقینی صورتحال سے سخت گیروں رہنماؤں کو فائدہ پہنچنے کا خطرہ موجود ہے اور ہو سکتا ہے ایران کے کچھ رہنماؤں کو ایسا لگا ہو کہ چونکہ امریکہ کو اپنے ملک میں Challenges درپیش ہیں، اس لیے شاید وہ خلیج میں کسی بھی کارروائی میں کم دلچسپی رکھتا ہو۔دوسری طرف ٹرمپ انتظامیہ اس امید پر ایران پر ‘زیادہ سے زیادہ دباؤ’ کی اپنی پالیسی کو دوگنا کر رہی ہے کہ شاید یہ COVEDـ19بالآخر ایران میں اسلامی حکومت کے خاتمے کا سبب بن سکتا ہے۔ اسی دوران ایران دوسرے محاذوں پر پیش رفت جاری رکھے ہوئے ہے۔بدھ کے روز ایران نے اپنی Satellite مدار میں بھیجی ہے۔ پاسدارانِ انقلاب کا دعویٰ ہے کہ یہ ایک فوجی Satellite ہے جسے North Korea کی ٹیکنالوجی استعمال کرتے ہوئے بنایا گیا ہے۔ اس سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ ایران کے میزائل پروگرام میں مزید بہتری آتی جا رہی ہے۔اگرچہ ایران عالمی طاقتیں کہلانے والے ملکوں کے ساتھ کیے گئے سال 2015 معاہدہ کا حصہ ہے جو اس کی جوہری سرگرمیوں کو محدود کرتا ہے، لیکن وہ اس معاہدے کی متعدد شرائط کی خلاف ورزی کر رہا ہے
ماہرین کو تشویش ہے کہ اگرچہ ایران کی جانب سے کئیے بہت سے اقدامات ایسے ہیں کہ ان کا رخ موڑا جا سکتا ہے، لیکن شاید وہ اس مقام کی طرف بڑھ رہا ہے جہاں وہ کاربن فائبر سنٹری فیوجز یعنی یورینیم کی افزودگی کے لیے ضروری مشینری کو بین الاقوامی معائنے سے بالاتر بنا سکتے ہیں۔اگر تھوڑے عرصے کے لئے ذہن میں یہ سوچ کہ شاید امریکہ ایران کشیدگی کم ہو جائے، لیکن ایسا ہونے کے کوئی آثار So far نظر نہیں آرہے۔لیکن یہاں یہ بات یاد رکھنے کی ہے کہ اچانک کسی Dispute کے پھوٹ پڑنے کا خطرہ اب بھی اتنا ہی برقرار ہے، بلکہ شاید پہلے سے بھی زیادہ کیونکہ دونوں ممالک Coronavirus کے باعث ایک دوسرے کی کارروائی کرنے کی صلاحیت کے متعلق مغالطے کا شکار ہیں۔پاکستان کے مطابق امریکہ اور ایران کے درمیان جاری فوجی کشیدگی کے نتائج انتہائی تباہ کْن ثابت ہو سکتے ہیں۔ اس سلسلے میں پاکستان کی جانب سے حالیہ کشیدگی ختم کرانے کیلئے مصالحتی کوششیں جاری و ساری ہیں۔ دیکھیں اب یہ اونٹ کس کروٹ بیٹھتا ہے۔

]]>
https://dailytaqat.com/articles/america-iran-kushedgi/feed/ 0
Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
رمضان اورقیام اللیل https://dailytaqat.com/articles/ramdan-or-qayam-ul-lail/ https://dailytaqat.com/articles/ramdan-or-qayam-ul-lail/#respond Sun, 26 Apr 2020 19:19:41 +0000 https://dailytaqat.com/?p=229999 Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
رمضان برکتوں والامہینہ، گناہوں کی معافی کامہینہ ،رمضان قر آن کامہینہ، رمضان قر آن کادوست ہے ان کی دوستی بہت گہری ہے۔ رمضان ہی کے مہینے میں قر آن مجیدنازل ہوا۔ نبیۖنے فرمایا: ”جس نے ایمان اورثواب کی نیت کے ساتھ رمضان کی راتوںمیں قیام کیااس کے پچھلے سارے گناہ معاف کردئیے جائیں گے۔”(بخاری:2014)(نسائی :2204) […]]]>

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

رمضان برکتوں والامہینہ، گناہوں کی معافی کامہینہ ،رمضان قر آن کامہینہ، رمضان قر آن کادوست ہے ان کی دوستی بہت گہری ہے۔
رمضان ہی کے مہینے میں قر آن مجیدنازل ہوا۔
نبیۖنے فرمایا:
”جس نے ایمان اورثواب کی نیت کے ساتھ رمضان کی راتوںمیں قیام کیااس کے پچھلے سارے گناہ معاف کردئیے جائیں گے۔”(بخاری:2014)(نسائی :2204)
رمضان کی راتوں کاقیام بہت بڑی سعادت ہیاپنے رب کے آگے کھڑے ہونا،اپنے رب کے لیے کھڑاہونا،اس کے کلام کوسننا،اس کے لیے دل کی، ذہن کی ،جسم کی حاضری۔رب کی دی ہوئی توفیق کے ساتھ یہ بہت بڑی سعادت ہے جوبندے کونصیب ہوتی ہے۔نبیۖرمضان اورغیررمضان میں رات کواللہ تعالیٰ کی عبادت کرتے تھے۔ رات کوجب آپ نوافل اداکرتے توان میں قر آن مجیدکی تلاوت کیاکرتے تھے۔اللہ پاک کے اس حکم کے مطابق جوسورہ المزمل میں ہے۔
”اے چادراوڑھنے والے!رات کوقیام کرومگرکم۔ آدھی رات یا اْس سے تھوڑاکم کرلو۔یااْس پرکچھ اضافہ کرلواورقر آن کوخوب ٹھہر ٹھہر کر پڑھو۔” (المزمل:1? 4)
سورہ المزمل کی آیات ہمیں یہ بتاتی ہیں کہ آپۖکے لیییہ حکم فرض تھایعنی یہ عبادت آپ کیلیے نفل نہیں تھی لیکن امت کے لیے یہ عبادت نفل قراردی گئی۔اللہ سبحانہ وتعالیٰ کیحکم کے مطابق نبیۖ نے راتوں کوطویل قیام کیا۔ آپۖجب قیام کرتے تودیرتک آنسوبہاتے تھے۔
رات کی نمازشکرگزاری ہے، اس کی جس نے زندگی عطاکی،جس نے محمدۖکاامتی بنایا،جس نے قرآن کی دولت عطاکی،اس نے اس زندگی میں یہ شعوردیا، کہ ہم اس کی عبادت کرسکیں!
نبیۖسیاس عبادت کی خوبصورتی کے بارے میں جب سیدناجبرائیل علیہ السلام نے سوال کیا:
احسان کیاہے ؟
یہ خصوصی سوال تھاعبادت کے حسن کے بارے میں تو آپۖنے جواب دیا:
”تم اللہ کی عبادت ایسے کروگویاکہ تم اسے دیکھتے ہوپھراگرتم اسے نہیں دیکھتے وہ توتمہیں دیکھتاہے۔”(بخاری:50)
جب بندہ نمازکی حالت میں ہوتاہے تودراصل اپنے رب کے سامنے ہوتاہے۔ اسے اسی کیفیت کے ساتھ نمازاداکرنی چاہیے۔ حقیقت یہ ہے کہ رات کے وقت کی نمازانسان کواس کیفیت میں لے آتی ہے کہ انسان اپنے رب کوسامنے محسوس کرسکییااس کی نظروں کواپنے اوپرمحسوس کرسکے۔
یہ تعلق ہے یہ ربط ہے
عرش والے کا فرش والے کے ساتھ
اورفرش والے کاعرش والے کے ساتھ
آپۖاللہ تعالیٰ کی عبادت میں جب مشغول ہوتے تو آپ کی پنڈلیاں مبارک سوج جاتیں اور آپ کے پائوں پھٹ جاتے تھے۔
ام المومنین سیدہ عائشہ رضی اللہ عنھاسے روایت ہے، رسول اللہ ۖاجب نماز پڑھتے تو کھڑے رہتے یہاں تک کہ آپۖکے پاوئں پھٹ گئے۔ میں نے کہا: یا رسول اللہۖ! آپ اتنی محنت کیوں کرتے ہیں؟ آپ کے اگلے اور پچھلے گناہ بخش دئیے گئے۔ آپۖنے فرمایا:
”اے عائشہرضی اللہ عنھا! کیا میں اللہ تعالیٰ کا شکر گزار بندہ نہ بنوں۔”(مسلم:7126)
دل کی رغبت اورشوق کے ساتھ کئے جانے والے عمل کے بارے میںکتناگہرا شعورتھاکہ اس کاشکرکیوں نہ اداکروں؟ آپۖ جب نمازاداکرتے تودیرتک آنسو بہاتے تھے۔ اللہ تعالیٰ نے اپنے نبیۖسے فرمایا:
”اور رات کے کچھ حصے میں پھر اس کے ساتھ بیدار رہ، اس حال میں کہ تیرے لیے زائد ہے۔ قریب ہے کہ تیرا رب تجھے مقام محمود پر کھڑا کرے۔”(بنی اسرائیل :79)
دنیامیں اللہ تعالیٰ کے سامنے کھڑے ہونا،قیام کرنااسی طرح ہے جیسے آخرت میں ہم اپنے رب کے سامنے کھڑے ہوں گے۔ رمضان میں دن کے روزے، راتوں کاقیام دراصل دونوں کاتعلق قر آن کے ساتھ ہے۔جب بندہ دن میں روزہ رکھتاہے اوررات کی تاریکی میں قیام کرتاہے تویہ راتیں کس قدرقیمتی ہوجاتی ہیں۔انسان کوان راتوں سیکس قدر تسکین نصیب ہوتی ہے، اللہ پاک نے رات کوجھکنے والوں کے بارے میں فرمایا:
”وہ راتوں کوبہت کم سویاکرتے تھے۔”(الذاریات:17)
اللہ پاک نے ان بندوں کی خوبی بیان کی ہے جن کی راتیں حسین ہوتی ہیں۔ بندے کاشہنشاہ کائنات سیتعلق ہوناکوئی چھوٹامعاملہ نہیں ہے۔ اس گلوب پرکسی کونے میں کسی چھوٹے سے علاقے میں ایک بندہ جب جائے نمازپرکھڑاہوتاہے اوراپنے رب کے آگے ہاتھ باندھ لیتاہے، رکوع کرتاہے ،سجدے میں چلاجاتاہے تویہ دراصل عرش والے کے ساتھ رابطے کاجڑجاناہے۔
حقیقت یہ ہے کہ ہرچیزاپنی اصل کی طرف لوٹتی ہے۔ آسمان کی تڑپتی بجلیوں کامرکزومحورزمین کے اندرہے اسی وجہ سے جب بادل آتے ہیں آپ یہ منظردیکھتے ہیں تڑپتی بجلیاں ہرچیزکوجلاکے، راکھ کرکے ،چیرپھاڑکے، اس کے اندرسے گزرکرزمین کے مرکزتک جاناچاہتی ہیں۔انسان کی اصل زمین میں نہیں ہے۔رب العزت نے فرمایا:
”میں نے اس میں اپنی روح پھونکی ہے۔”(ص:72)
یہ روح بے قراررہتی ہے۔ اس کے قرارکے لیے جہاں پانچ نمازیں فرض کیں وہاں نوافل کابھی موقع دیاہے۔سچی بات یہ ہے کہ یہ نوافل ہماری زندگی میں بہت زیادہ اہمیت رکھتے ہیں۔ نبیۖنے فرمایا:
اللہ تعالیٰ فرماتا ہے: ”میں نے بندے پر جو چیزیں فرض کی ہیں ، ان سے زیادہ مجھے کوئی چیز محبوب نہیں جس سے وہ میرا قرب حاصل کرے (یعنی فرائض کے ذریعے سے میرا قرب حاصل کرنا مجھے سب سے زیادہ محبوب ہے) اور میرا بندہ نوافل کے ذریعے سے (بھی) میرا قرب حاصل کرتا رہتا ہے حتیٰ کہ میں اس سے محبت کرنے لگ جاتا ہوں اور جب میں اس سے (اس کے ذوق عبادت ، فرائض کی ادائیگی اور نوافل کے اہتمام کی وجہ سے) محبت کرتا ہوں تو (اس کا نتیجہ یہ ہوتا ہے کہ) میں اس کا وہ کان بن جاتا ہوں جس سے وہ سنتا ہے ، اس کی وہ آنکھ بن جاتا ہوں جس سے وہ دیکھتا ہے ، اس کا وہ ہاتھ بن جاتا ہوں جس سے وہ پکڑتا ہے ، اور اس کا وہ پیر بن جاتا ہوں جس سے وہ چلتا ہے اور اگر وہ مجھ سے کسی چیز کا سوال کرے تو میں اسے ضرور عطا کرتا ہوں اور اگر وہ کسی چیز سے پناہ طلب کرے تو میں اسے ضرور اس سے پناہ دیتا ہوں اور کسی چیز کو سر انجام دینے سے مجھے کوئی تردد نہیں ہوتا ، سوائے مومن کا نفس قبض کرنے کے ، کہ وہ موت کو ناپسند کرتا ہے اور مجھے اس کا غم زدہ ہونا ناپسند لگتا ہے۔”(سلسلہ احادیث صحیحہ :137)
بندہ اوررب کتنافرق ہے، خالق اورمخلوق میں۔ لیکن اللہ پاک نے دونوںمیں کس قدرگہری ہم آہنگی بتائی ہے۔یہ نوافل ہیں،
اللہ تعالیٰ کے آگے دل کی خوشی کے ساتھ جھکناہے،جس کی وجہ سے بندے کویہ مقام نصیب ہوتاہے کہ اللہ تعالیٰ اس کے دیکھنے کواپنادیکھنااس کیسننے کواپناسننااس کے پکڑنے کواپناپکڑنااس کے چلنے کواپناچلنا قراردیتے ہیں۔
حقیقت یہ ہے کہ یہ نوافل ہیں جس کی وجہ سے رب کاقرب نصیب ہوتاہے جس کی وجہ سے انسان اس کی اطاعت کیلیے تیارہوتاہے۔ نوافل دن میں بھی اداکئے جاسکتے ہیں جیسے چاشت کے اسی طرح سے مختلف اوقات میں نوافل اداکئے جاسکتے ہیں۔لیکن رات کے نوافل کی کیاہی بات ہے۔نیندتوڑکراپنے رب کے لیے اٹھنایقیناشوق محبت اوررغبت کے بغیرممکن نہیں ہے۔
اللہ تعالیٰ سے اس کی توفیق مانگتی ہوں اللہ تعالیٰ ہم سب کوتوفیق عطافرمائے جھکنے کی،بچھنے کی، محبت کااظہارکرنے کی ، آنسوبہانے کی ، ہروہ عمل کرنے کی جس سیہمارا رب ہم سے راضی ہو جائے۔تہجدکی نمازکے حوالے سے اللہ رب العزت نے فرمایا:
”اوروہ سحرکے وقت مغفرت کی دعامانگاکرتے تھے۔” (الذاریات:18)
”رات کے آخری حصے میں استغفارکرنے والے ہیں۔” ( آل عمران:17)
ہم جب نبیۖکے ساتھیوں کودیکھتے ہیں مہاجرین و انصارکو، جب رات کی تاریکی چھاجاتی تھی تووہ خشوع وخضوع کے ساتھ اللہ تعالیٰ کی عبادت میں مصروف ہوجاتے تھے۔ گریہ وزاری بھی، خشیت بھی۔ رات اپنے رب کے آگے تواضع ، انکساری سے جھکے رہتے اورجب صبح ہوتی تو اپنی بہادری کے جوہردکھاتے تھے۔ مہاجرین کے گھروں میں، انصارکے گھروں میں تلاوت کے لیے مدارس قائم تھے ان کے گھرتربیت کے ادارے تھے۔ یہ ایمان کی درس گاہیں تھیں۔
گھرتوہمارے بھی ہیں ان گھروںمیں کیاکچھ نہیں ہوتاجوشیطان کی اذان ہے۔ کونساگھرہے جس میں یہ اذان نہیں گونجتی؟چاہے موبائل ٹون کے ذریعے سے ہویاٹی وی کے کسی پروگرام کے دوران یاکسی نیوزکے دوران یانیوزسے پہلے۔کون ہے جس تک اب یہ صدائیں نہیں پہنچتیں؟ جب شیطان کی اذان آئے توشیطان کیوں نہیں آئے گا۔تلاوت قر آن اورشیطان کی اذان ،کتنافرق ہے دونوں میں!
تلاوت قر آن کرنے والانوافل میں جب تلاوت کرتاہے تواپنے رب کے قریب ہوجاتاہے۔ راتوں کاقیام چھوڑدینے سے کس قدردل سخت ہوگئے ،مزاجوں میں درشتگی آگئی۔
یہ آنکھیں آنسوکیوں نہیں بہاتیں؟
دلوں کے اندراس قدرسختی کیسے آگئی؟
ایمان کیوں کمزورہوگئے؟
نبی ۖنے فرمایا:
”جس نے ایمان اورثواب کی نیت کے ساتھ رمضان کی راتوں میں قیام کیااس کے سارے پچھلے گناہ معاف کردئیے جائیں گے۔”(بخاری:2014)
کیاہم نہیں چاہتے کہ ہمارے گناہ معاف کردئیے جائیں ایمان اورثواب کی نیت، دونوں چیزوں کی ضرورت ہے اللہ تعالیٰ سے اجروثواب کے لیے اللہ تعالیٰ ہی سے ملاقات کرنی ہے اسی کے آگے کھڑے ہوناہے اسی کے آگے رکوع کرناہے اسی کے آگے سجدے کرنے ہیں۔
رات کے قیام پرانسان کیسے تیارہوتاہے ؟
سوال یہ پیداہوتاہے رات کے قیام پرانسان کیسے تیارہوتاہے ؟اس میں کوئی شک نہیں کہ فضیلت کی احادیث ہمیں سب سے زیادہ تیارکرتی ہیں لیکن جواحساس انسان کے لیے زیادہ معاون اورمددگاربنتاہے دراصل وہ قیامت کے دن اپنے رب کے حضورکھڑے ہوناہے۔جس دن رب العالمین کے حضورکھڑے ہوں گے اس دن کتناتڑپیں گے! کاش دنیامیں اپنے رب کے آگے کھڑے ہوئے ہوتے!کاش دنیامیں ا س کاشعورہوتا!
کیارب کاوعدہ نہیں ہے؟
”جواپنے رب کے آگے کھڑے ہونے سے ڈرگیااس کے لیے دوباغ ہیں۔”(الرحمن:46)
یہ تو حشرکے میدان میں رب کے حضورکھڑے ہونے کی پریکٹس ہے۔ قیام اللیل فرض نمازوں کے قیام کے ساتھ بے حداہمیت کاحامل ہے اوریہ قیام وہی کرتاہے جس کے دل میں اپنے رب کی محبت ہوتی ہے۔
یادکریں اس دن کوجو آنے والاہے۔جس دن ہمیں ہماری قبروں سے اٹھایاجائے گااورجوکچھ ہمارے دلوںمیں ہے اورجوکچھ ہمارے سینوںمیں ہے اس سارے دفینے کوباہرنکال دیاجائے گا۔کس قدرضرورت ہے رات کے قیام کیلیے قبروں سے اٹھنے کے منظرکی اورپھرخودقبرکی تاریکی اوروحشت رات کی عبادت کااحساس دلاتی ہے کیونکہ رات کاقیام قبرکوروشن کرنے والاہے۔اجروثواب کااحساس رات کے قیام کیلیے تیارکرتاہے۔گناہوں سے معافی کی فکرانسان کورات کے قیام کیلیے آمادہ کرتی ہے۔ہمارے اسلاف راتوں کاقیام مختلف اندازمیں کیاکرتے تھے۔کچھ لوگ ساری رات رکوع کی حالت میں، کچھ سجدے کی حالت میں ،کچھ قیام کی حالت میں،بعض روتے رہتے ،بعض غوروفکرکرتے تھے اوربعض شکرگزاری کارویہ اختیارکرتے تھے۔ آج ہمارے گھرقیام اللیل سے خالی کیوں ہیں؟ کیامیں آپ سے سوال کرسکتی ہوں کہ آج ہمارے گھرقیام اللیل سے خالی کیوں ہیں؟
آج دلوں کے اندرنوافل کی وہ تڑپ رغبت کیوں نہیں ہے ؟
مساجدمیں رمضان کے شروع کے دنوں میں نوافل اداکرنے کے لیے تراویح کیلیے لوگ زیادہ پہنچتے ہیں، دوسرے عشرے میں کمی آجاتی ہے اورتیسرے عشرے میں کچھ اضافہ ہوتاہیلیکن ایک بڑی تعداداس سے غافل ہی رہتی ہے۔ آج گھروںمیں اورمساجدمیں فرض نمازوں کو ادا کرنے والوں کی تعداد میں کس قدر کمی آگئی۔ نوافل فرائض کوپختہ کرنے کے لیے تیارکرتے ہیں۔رات کس قدرسناٹالے کر آتی ہے۔ تاریکی دلوں کوبھی تاریک کردیتی ہے۔غافل لوگوں کے دل اورزیادہ غفلت میں مبتلاہوجاتے ہیں۔کتنے ہی لوگ راتوں کوقیام کی بجائے، اللہ پاک کے آگے کھڑے ہونے کی بجائے غافل کردینے والی مصروفیات میں اپناوقت گنوادیتے ہیں۔ ڈیوائسزکس قدررب سیدورلے گئیں۔ ایسالگتاہے کہ اب قیام موبائل کے لیے رہ گیا۔ایسالگتاہے کہ اب وقت انٹرنیٹ پر بات چیت کیلئے رہ گیا۔
اپنے رب سے باتیں نہیں کریں گے؟
اپنے پیداکرنے والے کے پاس جانانہیں ہے؟اپنی زندگی کاوقت اس کی عطانہیں سمجھتے ؟
جس نے زندگی دی ہے زندگی اسی کے لیے ہے، اسی کے لیے سجدے کرنے ہیں ، اسی کے لیے راتوں کاقیام کرناہے کیونکہ راتوں کاقیام دلوں کوزندہ کردیتاہیاورجب اللہ تعالیٰ کے ڈرکی وجہ سے آنکھ کھل جاتی ہے، دل بیدارہوجاتے ہیں توانسان کے قلب وذہن میں قبرمیں لیٹنا،حشرکے دن کھڑے ہونااورپھرقبروں سے اٹھایاجاناتروتازہ ہوجاتاہے۔
جس کے ذہن میں موت کی، قبرکی ،جی اٹھنے کی ،حشرکے میدان کی جھلکیاں رہتی ہوں وہ بھلاساری رات کیسے سوسکتاہے؟
بات تویقین کی ہے اوریقین کے لیے علم ناگزیرہے۔ آج مسلمانوں کی نسلیں کن کاموں میں راتیں گزارتی ہیں؟ایمان کی حرارت رکھنے والیکن محفلوں کوگرم رکھتے ہیں؟
اللہ تعالیٰ ہمیں ،ہمار ی نسلوں کواپنی پناہ میں رکھے۔ آمین۔ ہمیں اپنی زندگیاں نبیۖکے طرزعمل کے مطابق صحابہ کرامرضی اللہ عنہ مکے طرزعمل کے مطابق گزارنی ہیں۔ان شاء اللہ
نبیۖنے سیدناعبداللہ ابن عمررضی اللہ عنہماسے فرمایاتھا:اے عبداللہ! توفلاں کی طرح نہ ہوجاناوہ راتوں کوقیام کرتاتھاپھراس نے قیام کرناچھوڑدیا۔رمضان کی راتیں،قیام کی راتیں، روشن راتیں، روشن دعاہے اللہ تعالیٰ ہمارے دلوں کو،ہماری زندگیوں کوبھی روشن کردے۔رمضان میں قیام کریں تورمضان کے بعدبھی اس سلسلے کوجاری رکھیں اللہ تعالیٰ ہمیں توفیق عطافرمائے۔ آمین۔

]]>
https://dailytaqat.com/articles/ramdan-or-qayam-ul-lail/feed/ 0
Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
جواد رفیق ملک پنجاب کا نئے چیف سیکرٹری مقرر ‘نوٹیفکیشن جاری https://dailytaqat.com/national/punjab-chief-sec/ https://dailytaqat.com/national/punjab-chief-sec/#respond Thu, 23 Apr 2020 19:54:43 +0000 https://dailytaqat.com/?p=229757 Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
جواد رفیق ملک پنجاب کا نئے چیف سیکرٹری مقرر ‘نوٹیفکیشن جاری]]>

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

لاہور(نمائندہ خصوصی) وفاقی حکومت نے جواد رفیق ملک کو صوبے کا نئے چیف سیکرٹری مقرر کرتے ہوئے نوٹی فیکشن جاری کر دیا ہے۔

ذرائع کے مطابق سابق چیف سیکرٹری پنجاب میجر ریٹائرڈ اعظم سلیمان کا تبادلہ کرتے ہوئے ان کو سٹیبلشمنٹ ڈویڑن رپورٹ کرنے کی ہدایت جاری کر دی گئی ہیں۔خیال رہے کہ میجر ریٹائرڈ اعظم سلیمان نے نومبر 2019ءمیں چیف سیکرٹری پنجاب کے عہدے کا عہدہ سنبھالا تھا۔ اعظم سلیمان ڈی ایم جی کے 14 ویں کامن سے تعلق رکھتے ہیں۔ وہ ڈی سی او ڈی جی خان، ڈی سی او فیصل آباد، ڈائریکٹر اینٹی کرپشن لاہور، سیکرٹری آبپاشی، سیکرٹری سی اینڈ ڈبلیو اور بطور ایڈیشنل چیف سیکرٹری ہوم خدمات انجام دے چکے ہیں۔ ان کی سروس کا ایک بڑا حصہ پنجاب میں گزرا ہے۔ وفاقی حکومت نے انھیں یوسف نسیم کھوکھر کی جگہ تعینات کیا تھا۔

]]>
https://dailytaqat.com/national/punjab-chief-sec/feed/ 0
Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
کورونا اور عوامی رائے۔ ایک سروے https://dailytaqat.com/articles/corona-aur-awaami-raye/ https://dailytaqat.com/articles/corona-aur-awaami-raye/#respond Wed, 22 Apr 2020 19:01:04 +0000 https://dailytaqat.com/?p=229660 Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
کورونا اور عوامی رائے۔ ایک سروے]]>

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

جنید منصور

کورونا وائرس انتہائی شدت سے پوری دنیا پر حملہ آور  ہوا ہے۔کچھ ملک شدید متاثر ہوئے  ہیں ، کچھ  میں اس کی تباہی تھوڑی کم ہے۔ تاحال خبروں کے مطابق اب تک دنیا کے تقریبًا ۱۹۰ کے لگ بھگ ملک اس کا شکار ہو چکے ہیں۔ ہمارا ملک بھی اس کی تباہ خیزیوں کا شکار ہوا ہے۔  اس کے اثرات  کو جاننے کے لئے میں نے ایک سروے کیا  ” آپ کے مطابق کرونا کیا ہے؟ ” اس کے جوابات کی روشنی میں آئیں دیکھیں کہ ہماری عوام اور اعلی عہدیدار  کرونا  اور اس کے اسباب کے بارے میں کیا رائے رکھتے ہٰیں:

حکومتی ترجمان: یہ گذشتہ حکومت کی غلط پالیسیوں کا نتیجہ ہے!

اپوزیشن رہنما: یہ موجودہ  حکومت کی غلط پالیسیوں کا نتیجہ ہے!

وزارت خارجہ: حکومت اس بات کا جائزہ لے رہی ہے کہ کس  طرح   موڈیز کی رینکنگ ، عالمی معاشی دباؤ   اور وار آن ٹیرر کی تزویراتی حقیقت کے مدنظر  ہمسایہ ممالک  کی طرف سے کی جانے والی جانے والی کاروائیوں کے نتیجے میں اس ” یونی پولر ورلڈ” میں اس واقعے کا وقوع پذیر ہونا  اقوام متحدہ کے  آئین کی روشنی میں دئے گئے  بنیادی حقوق کی کس کس  شق کی خلاف ورزی ہے۔

وزارت داخلہ: حکومت نے ہر داخلی اور خارجی  راستے پر ناکہ بندی کے مؤثر ، جا مع اور مربوط  پلان کے تحت  ایک  سنٹرل کمانڈ اینڈ کنٹرول اتھاررٹی قائم کر دی ہے جو  تما م عمو می و خصوصی حالات ، موسم اور  پبلک گیدرنگز کی ارتکاز پذیری اور  شعور  پیمائی کی منظم اور مربوط کوششوں کی کوشش کو یقینی بنانے کے لیۓ حکومت کو  مشورہ دینے کی   منصوبہ بندی  کرنے کے لئے ایک کمیٹی بنانے کی فی الفور  تجویز دینے کی کوشش کرے گی۔

تاجر طبقہ: چائنہ کے بڑھتے ہوئے  تجارتی اثر و رسوخ  اور  ثقافتی و سماجی  نفوذ پذیری کے زیر احتمال  ایک جامع اور مؤثر پروگرام  کی تشکیل کے لئے تمام تاجر  تنظیموں کا ایک  ملک گیر اجلاس بلایا جائے گا  اور  ایک ملک گیر ہڑتال کی کال دی جائے گی۔

ٹریڈ یونین رہنما:یہ صرف اور صرف مزدور کے استحصال کی ایک کوشش ہے جو  سرمایاداروں کی ایک اجتماعی سوچ سے پیدا ہؤا ہے اور ہم تمام مزدور بھائی اس سازش کو ملکر ناکام بنائیں گے اور  اس کے پیچھے چھپے تما م  سازشی کرداروں کو کیفر کردار تک پہنچائیں گے۔

ڈاکٹر:کروییا پیلیفورفک ” اینوی لوپ ” ذرات جس میں سنگل پھنسے ہوئے (مثبت احساس) آر این اے ہیں جو میٹرکس پروٹین پر مشتمل کیپسڈ کے اندر نیوکلیوپروٹین کے ساتھ وابستہ ہیں۔ ” اینوی لوپ ” میں کلب کی شکل کے گلائکوپروٹین کے تخمینے ہیں جو  ہمارے  طریقۂ علاج اور سمجھ سے بالا تر ہیں۔

پڑھا لکھا طبقہ:جی یہ ایک انتہائی عمدہ ، نفیس، لذیذ اور  غلیظ قسم کا وائرس ہے جو ہمارے  جسم سے زیادہ ہماری نفسیات، ہمارے شعور، تحت الشعور اور لاشعور کی  لا منتہا اور  اتھاہ گہرائیوں  کے بین بین رہتے ہوئے  ہمارے عمل کے محرکات  کے جامد ہونے تک ساکن نہیں ہوتا اور  پرو ایکٹو لی یہ  سالمہ تمام تر  ڈی۔این۔اے  کے اندر حلول کرتے ہوئے  ہمارے جینیٹک  میک اپ کو شدت سے شیک اپ اینڈ ڈأون کر کے ان افراد  کو کیپچر کر لیتا ہے جو اٹلی۔ سپین یا فرانس سے زیادہ تر تشریف لائے ہیں۔

پولیس والا: یہ  لہو گرم رکھنے کا ایک ٹول ہے جو کھلی دکانوں کو بند کروانے اور اس کوشش میں پکڑے جانے والے لوگوں کو چھوڑنے کے صلے میں  ملنے والی  سلامی کا ضامن  بھی ہے۔

سبزی والا:”یہ نامراد  کیٹرا  صہیونی سازش ہے۔  وہ ۵۰ سال سے اس کی پلاننگ کر رہے تھے۔ انہوں نے یہ کیڑا  کوکوکولا اور  پیپسی کی بوتلوں میں ڈال کر چھوڑا ہے۔

حجام: یہ عالمی امریکی سازش ہے۔یہ وائرس امریکہ نے  اسلامی دنیا  کو تباہ کرنے کے لیے  پھیلایا تھا  اور وہ تمام عالم اسلام  پر اپنا غلبہ حاصل کرنا چاہتا ہے۔

گوالا:  کرو نا شرونا  کجھ وی نئیں ہے وے۔ ایویں ڈرامہ کیتا اے  اوام نوں  بے نقوف بنان دا۔ اہیناں نوں باروں فنڈ آوئندے نے، ہور کوئی چکر نیں ہے وے!

وکیل:   یہ تزویرات پاکستان کی دفعہ فلاں فلاں کے  تحت  بنیادی انسانی حقوق ، امن و امان اور نقص امن کی صورت حال کے پیش نظر  ہونے والی حالیہ تبدیلیوں  اور ایمرجنسی  سچؤیشن  میں ہونے والے واقعات کے تناظر  میں  کی جانے والی  بنیادی شقوں اور  پروونشل اٹانومی کے  تحت  صوبوں کو دئے گئے اختیارات کی  جانچ کی طرف ایک اہم قانونی قدم ہے۔

پروفیسر:  دراصل اس ”فینومی نن” کی  داغ بیل  کمیونسٹ  سوچ  ،  آئرن کرٹن کے زوال اور کولڈ وار کی  گرمی سے پیدا ہونے والے ان تمام  عناصر کی”  ڈی ٹانٹ” کے بنیادی فلسفہ  کی عمومی جزویات کو   کنزیومرزم  کی کشش اور اکنامک بلاکز کی  بڑھتی ہوئی کامیابی میں دیکھنے سے ہوئی جو رفتہ رفتہ  کارپوریٹ ورلڈ کی خیرہ کر دینے والی چکا چوند اور ڈالر کی ریل پیل  میں معدوم ہو گیا اور  دنیا   گلوبل وارمنگ کے بڑھتے ہوئے اثرات کے پیش نظر  ایک نئے دور میں  ” وار آن ایررزم” کی سرد گرمی سے برسر پیکار ہو گئی۔

!عام آدمی:   میں پہلے بھی مر رہا تھا، میں اب بھی  مر رہا ہوں

]]>
https://dailytaqat.com/articles/corona-aur-awaami-raye/feed/ 0
Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
کچھ ہاتھ نہیں آتا بے آہِ سحر گاہی https://dailytaqat.com/articles/kuch-hath-nahi-aata/ https://dailytaqat.com/articles/kuch-hath-nahi-aata/#comments Mon, 20 Apr 2020 19:02:09 +0000 https://dailytaqat.com/?p=229613 Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
کچھ ہاتھ نہیں آتا بے آہِ سحر گاہی ]]>

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

اس سال کورونا وائرس کی وبا کے باعث جاری لاک ڈاؤن کی وجہ سے علامہ اقبال کے یوم وفات کے حوالے سے تقاریب کا انعقاد نہیں ہورہا ہے۔ تا ہم مختلف نشریاتی رابطوں کی وساطت سے ماہرین اقبال و جید شخصیات کے آڈیو، ویڈیو پیغامات جاری کرنے کا اہتمام کیا جا رہا ہے۔ تا کہ شاعر مشرق کو خراج تحسین پیش کیا جائے اور ان کی شخصیت اور کلام سے ا ستفادہ عام کی صورت پیدا ہو سکے۔

علامہ اقبال بر صغیر کے مشہور شاعر،مصنف، سیاستدان ،قانون دان،فلاسفر،مسلم صوفی اور تحریک پاکستان کے عظیم کارکن تھے۔۔جنہوں نے پاکستان کا خواب دیکھا تھا اور اپنی کوششوں سے قائد اعظم محمد علی جناح کو مسلمانوں کے لئے ایک الگ ریاست حاصل کرنے کے لئے آمادہ کیا۔انہوں نے اردو اور فارسی میں بہت اعلی درجے کی شاعری کی۔ان کی شاعری کے ترجمے دنیا کی بیشتر زبانوں میں کئے گئے ہیں۔ ان کی شاعری میں بنیادی رجحان تصوف اور احیائے امت اسلام کی طرف تھا۔ایک تحقیق کے مطابق علامہ اقبال کے 12000 اشعار میں سے تقریباًٍ 7000 اشعار فارسی میں تھے۔انگریزی نثر میں انہوں نے ”اسلام میں مذہبی افکار کی تعمیر نو ” لکھی۔ پنجاب یونیورسٹی میں تعلیم کے دوران نومبر 1899 کی ایک شام کچھ بے تکلف ہم جماعت انہیں حکیم امین الدین کے مکان پر ایک محفلِ مشاعرہ میں کھینچ کر لے گئے۔ جہاں بڑے بڑے سکّہ بند اساتذہ، شاگردوں کی ایک کثیر تعداد سمیت شریک تھے۔ سُننے والوں کا بھی ایک ہجوم تھا۔ اقبال چونکہ بالکل نئے تھے، اس لیے ان کا نام مبتدیوں کے دور میں پُکارا گیا۔ غزل پڑھنی شروع کی، جب اس شعر پر پہنچے کہ

موتی سمجھ  کے  شانِ  کریمی  نے  چُن  لیے
قطرے  جو   تھے   مرے   عرقِ   انفعال   کے

تو اچھے اچھے استاد اُچھل پڑے۔ بے اختیار ہو کر داد دینے لگے۔ یہاں سے اقبال کی بحیثیت شاعر شہرت کا آغاز ہوا۔1905 میں علامہ اقبال اعلی تعلیم کے لیے انگلستان چلے گئے اور کیمبرج یونیورسٹی ٹرنٹی کالج میں داخلہ لے لیا۔ چونکہ کالج میں ریسرچ اسکالر کی حیثیت سے لیے گئے تھے اس لیے ان کے لیے عام طالب علموں کی طرح ہوسٹل میں رہنے کی پابندی نہ تھی۔ قیام کا بندوبست کالج سے باہر کیا۔ ابھی یہاں آئے ہوئے ایک مہینے سے کچھ اوپر ہوا تھا کہ بیرسٹری کے لیے لنکنز اِن میں داخلہ لے لیا۔ اور پروفیسر براؤن جیسے فاضل اساتذہ سے ر ہنمائی حاصل کی۔ بعد میں آپ جرمنی چلے گئے جہاں میونخ یونیورسٹی سے آپ نے فلسفہ کی ڈگری حاصل کی۔ اقبال اپنے پی ایچ ڈی مقالے کے لئے جرمن زبان سیکھنے کے لئے 6 ماہ ہائیڈل برگ میں رہے۔ 1977 میں پاکستان اور جرمنی کے مابین باہمی تعاون کو مزید گہرا کرنے کے لئے اقبال فیلوشپ کا قیام عمل میں لایا گیا تھا۔ایران میں علامہ اقبال،اقبالِ لاہوری کے نام سے جانے جاتے ہیں۔وہ ایک سچے مسلمان تھے۔ان کے اشعار میں ادب،  تاریخ،  ثقافت،  دین،  فلسفہ، سیاست، تعلیم اور صوفی ازم پایا جاتا ہے۔ وہ اپنے اشعا ر میں بڑی گہری باتیں کر جاتے تھے۔مختلف شخصیات نے ان کی کتب کی وضاحت کرنے کی کوشش کی ہے۔یوسف سلیم چشتی کو16 سال علامہ محمد اقبال کی صحبت کا شرف حاصل رہا۔ آپ نے اقبال کی تمام اردو اور فارسی کتابوں کی شرحیں لکھی ہیں۔پروفیسر ڈاکٹر محمد ذکریا (پنجاب یونیورسٹی)نے بھی تفہیم بال ِجبریل 2013 میں لکھی تھی۔ڈاکٹر اسراراحمد مرحوم کے مطابق”اس دور میں عظمتِ قرآن اور مرتبہ و مقام قرآن کا انکشاف جس شدت کے ساتھ اور جس درجہ میں علامہ اقبال پر ہوا شاید ہی کسی اور پر ہوا ہو اور یہ کہ میرے نزدیک اس دور کا سب سے بڑا ترجمان القرآن اور داعی الی القرآن اقبال ہے”۔علامہ اقبال مسلمانوں کی قرآن سے دوری پر بہت افسوس کا اظہار کرتے تھے۔

خوار از  مہجوری  قرآں   شدی
شکوہ سنج گردش دوراں   شدی
اے  چوں  شبنم بر  زمیں  افتندہ
در بغل   داری   کتاب    زندہ

کہ اے مسلمان! تیری ذلت کا اصل سبب یہ ہے کہ تو نے قرآن کو چھوڑ دیا۔اور زمانے کی گردش کے شکوے کرنے لگا۔اے کہ تو شبنم کی طرح زمین پر گرا پڑا ہے،اور تیری بغل میں کتاب زندہ ”قرآن” ہے۔یہاں علامہ اقبال نے ”مہجوری قرآن ”کی ترکیب سورة الفرقان آیت نمبر 30 سے لی ہے۔
اقبال کے ایک ایک شعر میں کئی شخصیات اور تاریخی واقعات کی عکاسی کی گئی ہے۔جیسے

عطار  ہو  رومی   ہو رازی  ہو  غزالی ہو
کچھ  ہاتھ   نہیں   آتا   بے  آہ   سحر  گاہی

اس شعر میں علامہ اقبال تاریخ اسلام کی چار اہم شخصیات کی کامیابی کا نسخہ بتاتا ہے۔فرید الدین عطار بارہویں صدی کے مشہور صوفی شاعر اور تذکرہ اولیا ء کے مصنف تھے۔شیخ فرید الدین عطار نے ادویات سے متعلق پیشہ اپنایا اور ان کے مطب کی دور دور تک مشہوری تھی۔کہا جاتا ہے کہ شیخ فرید الدین عطار کے مریض انھیں اپنی مشکلات، مصیبتوں اور درپیش جسمانی و روحانی تکالیف سے آگاہ رکھتے، جس کا ان کی سوچ پر گہرا اثر مرتب ہوا۔انھیں صوفیائے کرام کے احوال زندگی سے انتہائی لگاؤ تھا اور وہ اپنی زندگی ان صوفیائے کرام کے فرمان کے عین مطابق گزارنے کے خواہاں رہے اور یہی صوفیائے کرام زندگی میں ہر موڑ پر ان کی رہنمائی اپنے فرمودات اور نظریات سے کرتے رہے۔ محمد جلال الدین رومی(1272-1207) مشہور فارسی شاعر تھے۔ مثنوی، فیہ ما فیہ اور دیوان شمس تبریز(یہ اصل میں مولانا کا ہی دیوان ہے لیکن اشعار میں زیادہ تر شمس تبریز کا نام آتا ہے اس لیے اسے انھی کا دیوان سمجھا جاتا ہے) آپ کی معروف کتب ہیں، آپ دنیا بھر میں اپنی لازوال تصنیف مثنوی کی بدولت جانے جاتے ہیں، آپ کا مزارقونیہ ترکی میں واقع ہے۔مولانا رومی کو علامہ اقبال اپنا مرشد مانتے تھے۔

محدث، فقیہ، شیخ الاسلام فخر الدین رازی(1149ـ1209) بہت بڑے فلسفی اور تفسیر کبیر کے مصنف تھے۔

امام غزالی(1111-1059) اسلام کے مشہورفلاسفر، مفکر اور متکلم تھے۔ان کی مشہور تصانیف احیاء العلوم، تحافتہ الفلاسفہ، کیمیائے
سعادت اور مکاشفتہ القلوب ہیں۔ کہا جاتا ہے کہ ان کی تصنیف کردہ کتب کی تعداد 400 سے زیادہ ہے۔اقبال کے مطابق عشق حقیقی کی بدولت ان شخصیات نے اپنی منزل کو پایا۔یہ سب لوگ سحر گاہی کی لذت سے آشنا ہو جاتے ہیں۔اور آہ زاری سے خدا کی توجہ کے طالب ہوتے ہیں۔یعنی اللہ تعالیٰ سے حقیقی لگاؤ ان کو درد مند اور حساس دل عطا کرتا ہے۔اس سے یہ نتیجہ اخذ ہوتا ہے کہ تمام شعبہ ہائے زندگی میں نمایاں کامیابی حاصل کرنے کے لئے سخت جدوجہد،لگن اور محنت کی ضرورت ہوتی ہے۔ علامہ اقبال مزید فرماتے ہیں

خونِ رگِ معمار کی گرمی سے ہے تعمیر
میخانہ   حافظ  ہو  کہ  بُتخانہ    بہزاد
بے  محنت پیہم کوئی جوہر نہیں کھلتا
روشن  شرَرِ تیشہ  سے ہے خانہ فرہاد!

پاکستان کی نوجوان نسل کے لئے علامہ اقبال کی شاعری مشعل راہ ہے۔فکر اقبا ل کو تازہ رکھنے کے لئے پاکستان میں اقبال اکیڈمی، دبستان اقبال،انٹرنیشنل اقبال سوسائٹی،کشّاف الالفاظ اقبال ویب سائیٹ،علامہ اقبال سٹیمپ سوسائٹی اور دیگر ادارے اہم کردار کر رہے ہیں۔

]]>
https://dailytaqat.com/articles/kuch-hath-nahi-aata/feed/ 3
Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
نجاتِ دیدہ و دل کی گھڑی نہیں آئی ،چلے چلو کہ وہ منزل ابھی نہیں آئی https://dailytaqat.com/duroon-parda/wo-manzil-abhi-nahi-aii/ https://dailytaqat.com/duroon-parda/wo-manzil-abhi-nahi-aii/#respond Sat, 18 Apr 2020 19:02:21 +0000 https://dailytaqat.com/?p=229583 Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
!!!نجاتِ دیدہ و دل کی گھڑی نہیں آئی ،چلے چلو کہ وہ منزل ابھی نہیں آئی]]>

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

 

دُنیا بھر کے ساتھ ساتھ وطنِ عزیز میں بھی کورونا وائرس کے کارن سیاسی ، معاشی اور سماجی حالات کی سنگینیاں بڑھتی ہی جا رہی ہیں ۔ ملک میں 15اپریل کے بعد لاک ڈاؤن میں پھر دو ہفتوںکیلئے توسیع کر دی گئی ہے۔

اب 30اپریل تک ، جبکہ رمضان المبارک بھی شروع ہو چکا ہوگا، لاک ڈاؤن کا عذاب برداشت کرنا ہوگا۔ پہلے خبریں آئی تھیںکہ پندرہ اپریل کے بعد ممکن ہے ملک کے کچھ شہروں میں لاک ڈاؤن میں کچھ نرمی کر دی جائے لیکن ایسا نہیں ہو سکا ہے تو اس کا مطلب ہے کہ کورونا وائرس کی آفت میں کوئی کمی فی الحال نہیں آ سکی ہے اور یہ کہ حکومت اس ضمن میں نرمی کا اعلان کرکے کوئی رسک لینے کیلئے تیار نہیں ہے ۔

البتہ کچھ کاروبار کے دروازے جزوی طور پر کھول دئیے گئے ہیں ۔ سرکاری ذرائع کہتے ہیں کہ وطنِ عزیز میں کورونا وائرس نے6ہزار کے قریب شہریوں کو متاثراور تقریباً100پاکستانیوں کو اس مہلک وائرس نے قبروں تک پہنچا دیا ہے ۔کوئی آٹھ درجن کے قریب ہمارے ڈاکٹر حضرات بھی اس وائرس سے متاثر ہو کر قرنطینہ میں جانے پر مجبور ہو گئے ہیں ۔

سب سے زیادہ تعداد ملتان کے ایک سرکاری ہسپتال میں پائی گئی ہے ۔ دُنیا بھر میں کئی اہم سیاستدان ، ڈاکٹرز، کھلاڑی ، فنکار بھی اس وائرس سے متاثر ہُوئے ہیں ۔ برطانیہ کے وزیر اعظم بورس جانسن مرتے مرتے بچے ہیں ۔ وائرس نے اسقدر اُنہیں کمزور اور نڈھال کر دیا ہے کہ ابھی تک وزارتِ عظمیٰ کی ذمہ داریاں سنبھالنے سے قاصر بیان کئے جاتے ہیں ۔ پاکستان میں اسکواش کے سابق عالمی شہرت یافتہ کھلاڑی قمر زمان بھی اسی وائرس کی بنیاد پر جاں بحق ہو گئے ہیں ۔

دُنیا پر نظر ڈالی جائے تو کورونا وائرس نے 18لاکھ سے زائد افراد کو متاثر کیا ہے ۔ کہا گیا ہے کہ عالمی سطح پر ایک لاکھ سے زائد افراد اب تک کورونا وائرس سے متاثر ہو کر ہلاک ہو چکے ہیں ۔ امریکہ ایسے طاقتور ملک میں بھی قیامت کا سماں ہے ۔ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ تعاون اور امداد کیلئے روس اور چین ایسے پرانے سیاسی و معاشی دشمنوں سے طبّی امداد لینے پر مجبور دکھائی دے رہے ہیں ۔ امریکہ کے معاشی مرکز نیویارک کے اسکول ایک سال کیلئے بند کر دئیے گئے ہیں۔یہ فیصلہ امریکہ میں کورونا وائرس سے پیدا ہونے والی سنگین صورتحال کا پتہ دے رہی ہے ۔ کورونا وائرس نے دُنیا کے ہر فرد کو ڈپریشن میں مبتلا کردیا ہے ۔ یہ ڈپریشن یہاں تک بڑھا ہے کہ بھارتی پنجاب کے شہر پٹیالہ میں ایک نہنگ سکھ نے اپنے ہی صوبے کے ایک پولیس افسر کا ہاتھ کاٹ ڈالا ہے ۔ 14اپریل کو خبر آئی کہ جب نہنگ سکھوں کو پولیس افسر نے تفتیش اور پوچھ گچھ کیلئے روکا کہ وہ لاک ڈاؤن میں یوںکیوںپھر رہے ہیں تو اُن میں سے ایک نے کرپان سے حملہ کرکے مذکورہ پولیس افسر کا ہاتھ کاٹ دیا ۔بھارتی پنجاب کے وزیر اعلیٰ کیپٹن امریندر سکھ نے اس سانحہ پر غصے کا اظہار بھی کیا ہے اور افسوس کا بھی ۔ پاکستان ایسے کمزور ملک کے حالات ہمارے سامنے ہیں ۔یہاںلیہ میں ایک مذہبی جماعت کے پیروکار نے ایک ایس ایچ او کو محض اسلئے خنجر مار دیا کہ پولیس اُسے قرنطینہ میں کیوں رہنے پر مجبور کررہی تھی ۔ ملتان میں ” احساس پروگرام” کے تحت امداد لینے کیلئے آنے والی غریب خواتین میں سے ایک عورت ہجوم کے پاؤں تلے آکر کچل دی گئی ۔ کراچی میں گذشتہ دونوں جمعہ مبارک کے مقدس اجتماعات کے دوران دو مساجد کے رہنماؤں کے مشتعل کرنے پر پولیس پر تشدد کرنے کے واقعات ہمارے میڈیا میں آ چکے ہیں ۔ اس ضمن میں مشتعل ہجوم نے خاتون پولیس افسر ( شرافت خان ) کو بھی نہیں بخشا اور اُن کی ناک بھی توڑ دی اور نظر کی عینک بھی ۔ہری پور میں درجن بھر پولیس اہلکار اسلئے گرفتار کئے گئے ہیں کہ وہ غریبوں کیلئے ”احساس پروگرام” کے ہزاروں روپے فراڈ سے بینکوں سے نکلوا کر ہڑپ کر گئے ۔

یہ شرمناک واقعات ہمارے سماج کے زوال پذیر اور دیوالیہ ہونے کا پتہ دے رہے ہیں ۔ ان واقعات کی موجودگی میں ہم کس منہ سے خود کو اسلامی جمہوریہ پاکستان کا شہری کہہ سکتے ہیں؟ حتیٰ کہ وزیر اعظم کی معاونِ خصوصی برائے سماجی تحفظ و تخفیفِ غربت، ڈاکٹر ثانیہ نشتر، کو مجبوراً اپنی ٹویٹ میں یہ کہنا پڑا ہے کہ ”جو لوگ احساس پروگرام کی رقوم میں لوٹ مار کررہے ہیں یا چوری یا فراڈ کے مرتکب ہورہے ہیں ، قانون کے تحت اُن سے سختی سے نمٹا جائے گا۔” ہماری تجویز ہے کہ ”احساس پروگرام” سے وابستہ جملہ سرکاری اہلکاروں پر بھی نظر رکھی جائے کہ کہیں اندر سے بھی ”باریک کام ” تو نہیں دکھایا جارہا ؟ اس امکانی شبہے کی بنیاد یہ ہے کہ اس سے قبل ”بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام” المعروف BISPمیں بھی کروڑوں روپے کے مبینہ فراڈ ہو چکے ہیں ۔ کئی خبریں ہمارے میڈیا کی زینت بن چکی ہیں کہ BISPسے وابستہ کئی اہلکاروں نے بدعنوانیاں کیں اور وہ پیسے بھی اپنی جیبوں میں ڈال لئے جو ہمارے وطن کے صرف غریبوں اور مستحقین کا حق تھا۔ لیکن ہم کہتے ہیں کہ اگر اب ان فراڈیوں کو قانون اور اللہ کا ڈر اور موت کا خوف ہوتا تو یہ ایسا سرے ہی سے نہ کرتے لیکن ان بے شرموں نے سب خوف اور ڈر بھلا دئیے ہیں ۔

ان کا علاج بس ڈنڈا ہے اور وہ بھی سب کے سامنے تاکہ عبرت کا درس دیا جا سکے ۔ لاتوں کے بھوت باتوں اور تقریروں سے راہِ راست پر نہیں آتے ۔ایسے پریشان کن حالات میں وزیر اعظم عمران خان صاحب نے حسبِ معمول سمندر پار پاکستانیوں سے اپیل کی ہے کہ ” ملک میں غربت بڑھ رہی ہے ، اوورسیز پاکستانی کورونا وائرس کے متاثرین کیلئے قائم کئے گئے فنڈ میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیں۔”جناب وزیر اعظم کی اپیل تو درست ہے اور بجا بھی لیکن اس اپیل پر بعض اطراف سے اعتراضات بھی سامنے آئے ہیں کہ اس وقت جب بیرونِ ملک پاکستانی خود شدید مالی پریشانیوں کا شکار ہیں، اُن کے کاروبار بند ہو چکے ہیں ، ملازمتیں ختم ہو چکی ہیں اور بیرونِ ملک 40ہزار پاکستانی بے روزگار ہو کر واپس پاکستان آنا چاہتے ہیں تو ایسے پُر آزمائش حالات میں کون وزیر اعظم کے اس فنڈ میں ”بڑھ چڑھ ” کر حصہ ڈالے گا؟کورونا وائرس سے پیدا ہونے والے ان مالی بحرانوں سے یہ اندازہ بھی لگایا جا سکتا ہے کہ آئندہ ایام میں ہمارے ملک کے حالات کیا ہوں گے۔ تو کیا ان حالات کی پیش بندی کیلئے حکومت نے کچھ سوچ بچار کیا ہے؟ کوئی منصوبہ بندی کی ہے ؟ وزیر منصوبہ بندی اسد عمر نے اس بارے قوم کے سامنے ابھی تک کوئی روڈ میپ نہیں رکھا ۔

خدا نہ کرے کہ وہ بطورِ منصوبہ بندی وزیر کے بھی ناکام ہو جائیں کہ اس سے پہلے وہ بطورِ وزیر خزانہ بُری طرح ناکام ہو چکے ہیں ۔ اُنہیں کورونا کے سامنے سرنڈر کرنے کی بجائے ، اس آفت کو سینگوں سے پکڑنا ہوگا۔کورونا کے کارن تو ہمارے یہاں جان کے لالے پڑگئے ہیں ۔ ڈاکٹروں کو حفاظتی لباس (PPE) میسر نہیں ہیں اور عوام کو فیس ماسک اور سینی ٹائزرز نہیں مل رہے ۔ وزیر اعظم عمران خان وارننگ دے رہے ہیں کہ ممکن ہے کورونا وائرس ملک میں مزید اتنا بڑھ جائے کہ ہسپتالوں میں جگہ ہی نہ رہے ۔ حکومت کو ایک نہیں کئی محاذوں پر جنگ لڑنا پڑ رہی ہے ۔اپوزیشن اور عمران خان کے درمیان جو خلیج پہلے تھی ، اب بھی ہے ۔ اس میں کوئی کمی نہیں آ سکی ۔

عمران خان صاحب اب بھی اپوزیشن سے ہاتھ ملا نے پر تیار نہیں ہیں کہ کہیں اُن کا بیانیہ کمزور نہ پڑ جائے ۔ حالانکہ اُن کا بیانیہ کمزور پڑ چکا ہے ۔ کرپشن کے خلاف وہ جتنے بھی نعرے لگاتے رہے ہیں ، اب پلٹ کر اُنہی کے ساتھیوں پر آ رہے ہیں ۔ آٹا چینی کی سرکاری تحقیقاتی رپورٹ نے اُن کے بیانئے پر گہرا وار کیا ہے ۔ اس رپورٹ کی بنیاد پر وزیر اعظم اپنے ایک ایسے معتمد ترین شخص کو مبینہ طور پر کھو چکے ہیں جو اُن کیلئے ستون کی حیثیت رکھتا تھا ۔ عمران خان کی طرف سے اپوزیشن سے مصافحہ نہ کرنے کے کئی نقصانات بھی سامنے آرہے ہیں جو حکومت کی کارکردگی اور ارتکاز کو منفی طور پر متاثر کررہے ہیں ۔ مثال کے طور پر پنجاب میں خواجہ برادران ( خواجہ سعد رفیق اور خواجہ سلمان رفیق) کا نیب کی جیلوں سے نجات حاصل کرنے کے بعد پنجاب اسمبلی کے اسپیکر چودھری پرویز الٰہی سے اُن کے دولت کدے پر ملنے جانا۔ یہ ملاقات سیاسی اعتبار سے اسلئے بھی اہم ہے کہ چودھری پرویز الٰہی اور عمران خان باہمی اتحادی ہونے کے باوجود مبینہ طور پر ایک پیج پر نہیں ہیں ۔یہ ملاقات رواں ہفتے ہُوئی ہے جس نے وزیر اعظم کو بجا طور پر فکر اور تشویش میں مبتلا کیا ہوگا۔ یہ ملاقات عین اُس وقت ہُوئی جب پی ٹی آئی کے مشہور رکنِ پنجاب اسمبلی علیم خان اور نون لیگ کے پنجاب کے صدر اور ایم این اے رانا ثناء اللہ کی ملاقات کی خبر بھی سامنے آ گئی ۔ علیم خان نے عمران خان کی حکومت میں ”نیب” کی جیل میں جس طرح دو ماہ گزارے ہیں اور اس نے عمران خان اور علیم خان کے باہمی تعلقات کو جس طرح شدت سے متاثر کیا، اس سے سبھی اہلِ نظر واقف ہیں ۔ کہا جاتا ہے کہ گذشتہ ایک سال کے دوران علیم خان اور عمران خان کے تعلقات کشیدہ ہی رہے ۔ میل ملاقات بھی کم کم ہی رہی ۔ علیم خان کو بجا طور پر اپنے قائد سے رنج ہوگا کہ اُنہوں نے جس طرح گذشتہ جنرل الیکشنز کے دوران پی ٹی آئی اور خانصاحب کی مدد کی ، اس کا صلہ نہیں دیا گیا۔ سب اہلِ نظر اسے جانتے ہیں ۔ جہانگیر خان ترین کی خانصاحب سے مبینہ ناراضی اور علیم خان کی رانا ثناء اللہ سے مبینہ ملاقات ، یہ دو ایسے تازہ واقعات و سانحات تھے جنہوں نے عمران خان کو پریشان کر ڈالا ۔ اُن کی پریشانی قابلِ فہم بھی ہے ۔

وہ بیک وقت پنجاب کے ان دونوں دولتمند اور موثر سیاستدانوں کو ناراض کرنا افورڈ نہیں کر سکتے کہ یہی دو افراد تھے جنہوں نے دوسری قوتوں کے ساتھ عمران خان کو وزیر اعظم کی کرسی تک پہنچانے میں ہر قسم کی اعانت فراہم کی اور کبھی پیچھے نہیں ہٹے ۔ اقتدار کی چھتر چھاؤں میں پہنچ کر مگر عمران خان کے تیور بدل گئے ۔ اور حالات اُنہیں اس موڑ پر لے آئے کہ اب جہانگیر خان ترین اور علیم خان ، دونوں ہی اُن سے دُور جا بیٹھے تھے ۔ ایسے میں یکدم عمران خان نے یو ٹرن لیا اور علیم خان کو شرفِ ملاقات بخش ڈالا ۔ اسلام آباد میں علیم خان اور عمران خان کی ہونے والی ملاقات کو چند دن ہی گزرے تھے کہ اب ہم دیکھتے ہیں کہ علیم خان صاحب پنجاب کابینہ کے سینئر وزیر بن چکے ہیں ۔ چند دن پہلے ہی اُنہوں نے وزارت کا حلف اُٹھایا ہے ۔حلف برداری کی تقریب میں گورنر پنجاب بھی موجود تھے اور وزیر اعلیٰ پنجاب بھی ۔ شنید ہے کہ اُنہیں تین اہم وزارتوں کا قلمدان دیا جارہا ہے ۔ممکن ہے جب تک یہ سطور شائع ہوں ، تب تک اُن کے قلمدانوں کا اعلان بھی ہو چکا ہو۔رازدانوں کا کہنا ہے کہ علیم خان کو وزیر بنانے سے قبل عمران خان نے خود وزیر اعلیٰ پنجاب عثمان بزدار صاحب کی بریفنگ کی اور اُنہیں کہا کہ وہ علیم خان سے پرانی رنجشیں بھول جائیں کہ اسی میں تینوں فریقین کی بہتری ہے ۔

رازدانوں کا دعویٰ ہے کہ علیم خان حلف اُٹھانے سے قبل گورنر پنجاب چودھری محمد سرور اور پنجاب کے وزیر ہاؤسنگ میاں عبدالرشید سے خاصے ناراض تھے لیکن اب علیم خان ان دونوں شخصیات سے بھی بوجوہ صلح کر چکے ہیں ۔ علیم خان کا پھر سے وزیر بننا اُن کی اخلاقی فتح کہی جا سکتی ہے ( نیب کے ہاتھوں گرفتار ہونے کے بعد اُنہوں نے اصولی طور پر اپنی وزارت سے استعفیٰ دے دیا تھا)علیم خان نے جب وزارت سے استعفیٰ دیا تھا تو عثمان بزدار سمیت اُن کے سبھی سیاسی حریفوں نے شکر کا کلمہ پڑھا تھا کہ ایک بڑا کانٹا اُن کے راستے سے ہٹ گیا ہے ۔اور اب عمران خان نے علیم خان کو دوبارہ گلے لگا کر ایک اہم ترین فیصلہ کیا ہے ۔ ہم سمجھتے ہیں کہ یہ اقدام عمران خان کی سیاسی دانشمندی کا شاندار ثبوت ہے ۔ ایسا کرکے دراصل اُنہوں نے پنجاب میں پیدا ہونے والے کسی امکانی سیاسی شگاف کو بند کر دیا ہے ۔

یہ اقدام وزیر اعظم نے عین ایسے لمحات میں کیا ہے جب سپریم کورٹ کی طرف سے بھی پی ٹی آئی کی حکومت بارے اچھے تبصرے نہیں آ رہے تھے ۔ مثال کے طور پر : سپریم کورٹ کے ججز کا کورونا وائرس کے خلاف حکومتی اقدامات سے متعلق از خود نوٹس کی سماعت کے دوران ریمارکس میں یہ کہنا کہ ”وزیر اعظم کی ایمانداری پر شک نہیں لیکن حکومت نے کچھ نہیں کیا، کابینہ پر مشیروں اور معاونین کا قبضہ ہے ،کورونا پر (حکومتی) نااہلی پر نظام کو خطرہ ہے ، مشیر مبینہ طور پر کرپٹ ، کابینہ غیر موثر ہے اور وزیر اعظم کچھ نہیں جانتے ۔” سپریم کورٹ کی طرف سے وزیر اعظم کے مشیر برائے صحت ڈاکٹر ظفر مرزا کے بارے یہ ریمارکس کہ”ظفر مرزا کو ہٹانے کا حکم دے سکتے ہیں ” اوراس کے جواب میں اٹارنی جنرل کا عدالتِ عظمیٰ کو یہ گزارش کرنا کہ ”ان نازک لمحات میں ظفر مرزا کا ہٹایا جانا تباہ کن ہوگا” بتاتا ہے کہ حکومت کس دباؤ میں ہے ۔ایسے میں وزیر اعظم نے بجا طور پر علیم خان کو وزارت دے کر مستحسن قدم اُٹھایا ہے ۔ اس قابلِ ستائش دانشمندی کا اظہار اُس وقت کیا گیا ہے جب وزیر اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ اور مرکزی حکومت کی ترجمان محترمہ ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان آمنے سامنے آئے ہیں ۔

یہ آمنا سامنا کورونا وائرس کے موضوع پر ہُوا ہے ۔ وزیر اعلیٰ سندھ نے خصوصاً وفاقی حکومت کی پالیسیوں پر عدم اعتماد کا اظہار کرتے ہُوئے دھواں دھار پریس کانفرنس کر ڈالی ۔ اس نے فردوس عاشق اعوان کو ناراض کر دیا ؛ چنانچہ ڈاکٹر صاحبہ نے بھی ترنت جواب دینا اپنا فرضِ اولین سمجھا اور کہا کہ وزیر اعلیٰ سندھ کو میڈیا سے براہِ راست بات کرنے کی بجائے وزیر اعظم سے بات کرنی چاہئے اور یہ کہ اُنہیں اپنی ڈیڑھ اینٹ کی مسجد بنانے سے گریز کرنا چاہئے ۔ لیکن لوگ کہتے ہیں کہ جب وزیر اعظم اپوزیشن کے کسی بھی رہنما سے بات چیت کرنے پرتیار نہیں ہیں تو مراد علی شاہ سے یہ توقع کیوں لگائی جائے کہ وہ وزیر اعظم سے بات کریں گے ؟ بلاول بھٹو بھی وزیر اعظم کے اس روئیے سے ناراض ہو کر مرکزی حکومت کے خلاف بیانات کے گولے داغ رہے ہیں ۔ ہم سمجھتے ہیں کہ کورونا وائرس کی ان قیامت خیز گھڑیوں میں کسی بھی سیاستدان کیلئے پوائنٹ سکورنگ کا وقت نہیں ہے ۔ ہمیں ایک دوسرے کا ہاتھ تھام کر اس جنگ میں زندگی کے دشمن کو مل کر شکستِ فاش دینی ہے ۔ اگر اتحاد واتفاق کا مظاہرہ نہ کیا گیا تو یہ بھی امکانات ہیں کہ یہ مہلک کورونا وائرس ہمیں شکست دے ڈالے ۔

اللہ نہ کرے ہمیں یہ روزِ بد دیکھنا نصیب ہو۔ ہمیں منزل پر بہرحال کامیابی سے پہنچنا ہے ۔ ایسے میں ہمیں فیض احمد فیض کا ایک شعر شدت سے یاد آ رہا ہے

نجاتِ دیدہ و دل کی گھڑی نہیں آئی
چلے چلو کہ وہ منزل ابھی نہیں آئی 

]]>
https://dailytaqat.com/duroon-parda/wo-manzil-abhi-nahi-aii/feed/ 0
Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
وزیر اعظم کے قوم سے وعدے : کون جیتا ہے تری زلف کے سر ہوتے تک https://dailytaqat.com/duroon-parda/promises-to-the-prime-ministers-nation/ https://dailytaqat.com/duroon-parda/promises-to-the-prime-ministers-nation/#respond Sat, 11 Apr 2020 19:03:13 +0000 https://dailytaqat.com/?p=229394 Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
وزیر اعظم کے قوم سے وعدے : کون جیتا ہے تری زلف کے سر ہوتے تک]]>

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

اللہ سبحان و تعالیٰ سے گڑ گڑا کر دعا ہے کہ وہ کرم فرمائے اور پاکستان و عالمِ اسلام سمیت ساری دُنیا کو کورونا کووِڈ19 وائرس کے مہلک اثرات سے مکمل طور پر نجات عطا فرمائے ۔ دُنیا رواں لمحوں میں کورونا وائرس کے سامنے جس بے بسی اور بیچارگی کا اجتماعی اظہار کرتی نظر آ رہی ہے ، ایسے میں ہم سب بس اللہ ہی سے کرم فرمائی کی دعا کر سکتے ہیں کہ انسان کاآخری سہارا ہمیشہ دعا ہی رہا ہے ۔ جس وقت یہ سطور لکھی جا رہی ہیں ، دُنیا بھر میں کورونا وائرس کے مستند متاثرین کی تعداد 16 لاکھ کے ہندسے کو چھو رہی ہے اور اس وائرس کے مہلک وار کے کارن اموات88ہزارسے تجاوز کر چکی ہیں ۔ ان اعدادو شمار کو معمولی نہیں کہا جا سکتا ۔تازہ ترین اطلاعات کے مطابق، کورونا وائرس سے متاثرہ ممالک میں سرِ فہرست اٹلی ہے اور پھر اسپین اور امریکہ کا درجہ شمار کیا جارہا ہے ۔ نیویارک جسے دُنیا کا ”معاشی دارالحکومت” کہا جاتا ہے ، اس وقت کسی گھوسٹ ٹاؤن کا نظارہ پیش کررہا ہے ۔ انتہائی طاقتور اور امیر ترین ملک قرار دئیے کے باوجود اطلاعات یہ ہیں کہ امریکہ میں مطلوبہ تعداد میں نہ تو وینٹی لیٹرز دستیاب ہیں اور نہ ہی مطلوبہ تعداد میں ہسپتال اور ادویات ۔ نوبت یہاں تک آ پہنچی ہے کہ کورونا وائرس کے مریض کی صحت یابی میں معاون سمجھی جانیوالی ایک دوائی ( کلوروکین) بھاری تعداد میں امریکہ نہ بھجوانے پر امریکی صدر نے بھارت کو دھمکی دے ڈالی ہے ۔ اگرچہ تازہ خبروں کے مطابق بھارتی وزیر اعظم” نرنیدر مودی” یہ دوائی امریکہ بھجوانے پر رضامند ہو چکے ہیں لیکن اس ایک مثال سے ہم اندازہ لگا سکتے ہیں کہ امریکہ ایسا ملک بھی کس مصیبت میں گرفتار نظر آرہا ہے ۔ ایسے میں پاکستان بارے تصور کیا جا سکتا ہے کہ ہم کس طرح کے سنگین مسائل کا شکار ہو سکتے ہیں کہ اگر خدانخواستہ وطنِ عزیز میں یہ وبا مزید تیزی سے پھیل جاتی ہے ۔ کورونا سے بچاؤ کیلئے احتیاط اور دعا ہی ہمارا سب سے بڑا ہتھیار ہو سکتا ہے ۔پاکستان کی جو بھی معاشی حالت ہے ، ہم سب کے سامنے ہے۔ ہم تو اسقدر پست حالت میں ہیں کہ بنگلہ دیش میں پھنسے 300کی تعداد میں پاکستانی طلبا اور طالبات کو بھی واپس پاکستان نہیں لا سکے ہیں ۔یہ پاکستانی طالب علم ”سارک” کوٹہ کے تحت بنگلہ دیش کے مختلف تعلیمی اداروں میں زیر تعلیم ہیں ۔ ہمارے یہ طلبا بے چارگی میں ڈھاکہ اور دیگر بنگلہ دیشی شہروں میں پھنسے کرلا رہے ہیں لیکن اُن کی پکار پر پاکستان کے حکمرانوں کے کانوں پر جوں تک نہیں رینگ رہی ۔ پاکستان کے ایک انگریزی روزنامہ نے اس بارے ایک تفصیلی رپورٹ شائع تو کی ہے لیکن دیکھنے والی بات یہ ہے کہ عمران خان کی حکومت اس پورٹ پر کس طرح کے ردِ عمل کا اظہار کرتی ہے ۔ہماری اطلاع کے مطابق ترکی میں بھی پاکستانی پھنسے ہوئے ہیں جن کی نہ تو پاکستانی سفارتخانہ کوئی مدد کر رہا ہے اور نہ ہی حکومت کی جانب سے کوئی قابل قدر اقدام اٹھایا گیا دیکھنا یہ ہوگا کہ اب مصیبت کی گھڑی میں ترکی ہمارا کہاں تک ساتھ دیتا ہے۔ چین میں پھنسے سینکڑوں پاکستان طلبا اور طالبات کا تو چینی حکومت نے بہت خیال رکھا اور اس پر ہم ساری پاکستانی قوم حکومتِ چین کی مشکور بھی ہے لیکن بنگلہ دیش کی کمزور حکومت سے ہم اچھی توقعات نہیں رکھ سکتے۔ پھر پاکستان اور بنگلہ دیش کے باہمی تعلقات بھی زیادہ مضبوط نہیں ہیں ۔ یہ ایک قابلِ رحم صورتحال ہے ۔انتہائی گنجان آبادی والا بنگلہ دیش ہمارے طلبا کیلئے نقصان دہ ثابت ہو سکتا ہے لیکن پاکستان کے حکمران اس بارے مسلسل خاموش ہیں ۔ خود پاکستان میں کورونا وائرس کے متاثرین کی تعداد ساڑھے 4ہزار سے متجاوز ہو رہی ہے ۔ اس وائرس نے مبینہ طور پر جن پاکستانیوں کو موت کی وادی میں پہنچا دیا ہے ، اُن کی تعداد 6درجن سے بڑھ چکی ہے ۔ پچھلے ایک ہفتے کے اندر اندر اس تعداد میں کئی گنا اضافہ ہُوا ہے ۔ پاکستان میں موجود ایک مشہور چینی ڈاکٹر ( مامنگ ہوئی) سے منسوب خبر آئی ہے کہ ”پاکستان میں کورونا پھیلاؤ مصدقہ رپورٹوں سے کہیں زیادہ ہو سکتا ہے۔” اور اس کی وجہ پاکستان میں کورونا ٹیسٹ کٹس کی کمی ہے ۔ اگر یہ خدشات درست ہیں تو تشویش کا باعث ہیں ۔ یہ انتہائی الارمنگ صورتحال ہے ۔ اسی صورتحال کے دوران کوئٹہ میں انتہائی افسوسناک واقعہ پیش آیا ہے ۔ کوئٹہ کے ڈاکٹروں نے بجا طور پر بلوچستان حکومت سے مطالبہ کیا تھا کہ ہمیں وائرس سے محفوظ رہنے کیلئے حفاظتی میڈیکل لباس دیئے جائیں اور کورونا وائرس کو ٹیسٹ کرنے کی کٹس بھی ۔ بجائے اس کے کہ ڈاکٹروں کے ان جائز مطالبات کو فوری طور پر پورا کیا جاتا، اُلٹا اُن پر تشدد بھی کیا گیا اور اُنہیں حوالاتوں کی ہوا بھی کھلائی گئی ۔ سارے ملک میں عوام نے بلوچستان حکومت کے اس روئیے پر تاسف کا اظہار کیا ہے ۔ ان آزمائش کے لمحات میں اگر ڈاکٹر بھی بیمار ہو جائیں گے تو پھر علاج کون کرے گا؟ چنانچہ سب سے پہلے تو ڈاکٹروں کی صحت ترجیحی معاملہ ہونا چاہئے ۔ وہ تو خدا بھلا کرے آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ صاحب کا جنہوں نے اس صورتحال کے پیشِ نظر فوری طور پر جہاز کے ذریعے مطلوبہ میڈیکل کا سامان کوئٹہ روانہ کیا ۔ لیکن سوال پیدا ہوتا ہے کہ مرکزی حکومت کیا کررہی تھی اور بلوچستان حکومت نے اس پر مناسب ردِ عمل کیوں نہ دیا ؟ کسی کے پاس ان سوالوں کا کوئی جواب نہیں ہے۔وفاقی دارالحکومت، اسلام آباد کے سب سے بڑے سرکاری ہسپتال کے ڈاکٹروں اور نرسوں نے بھی جو بپتا سنائی ہے ، وہ بھی اس امر کی غماز ہے کہ مہلک کورونا وائرس کے حوالے سے جن معمولی سہولتوں کی بھی ضرورت ہے ، مذکورہ ہسپتال کے ڈاکٹروں اور نرسوں کو مہیا نہیں کی جارہی ہے ۔ تشویشناک بات یہ ہے کہ اس معاملے میں وزیر اعظم صاحب کے مشیرِ صحت ، ڈاکٹر مرزا، بھی خاموش ہیں ۔ یوں لگتا ہے جیسے کورونا وائرس بحران میں پی ٹی آئی حکومت کے ہاتھ پاؤں پھول گئے ہیں ۔ اُس کا اسوقت تک کا سب سے بڑا کارنامہ ”کورونا ٹائیگر فورس” قرار دیا جارہا ہے ۔ اس پر بھی جو ردِ عمل آیا ہے ، عمران خان کی حکومت کو تشویش ہونی چاہئے اور اس منصوبے کو آگے بڑھانے سے باز آجانا چاہئے لیکن خانصاحب بھی اپنی ہٹ کے پکے سمجھے جاتے ہیں ۔ ٹائیگر فورس کی مخصوص شرٹس پر مبینہ طور پر جن کروڑوں روپوں کے اخراجات کی کہانی زیر گردش ہے، قوم کا اس پر افسوس کا اظہار کرنا جائز ہے ۔ مزید افسوس کی بات یہ ہے کہ کورونا کے اثرات تیزی سے بڑھتے جا رہے ہیں جس نے ملکی معیشت اور سماج پر بھی منفی اثرات مرتب کئے ہیں ۔ ایسے پریشان کن حالات میں وزیر اعظم پاکستان جناب عمران خان نے ایک بار پھر قوم کو وارننگ دی ہے کہ ممکن ہے کورونا وائرس کے حوالے سے جاری حالات میں مزید ابتری اور تیزی آ سکے اور اگر ایسا ہُوا تو یہ بھی امکان ہے کہ ملکی ہسپتالوں میں کورونا مریضوں کے علاج کیلئے جگہ ہی نہ بچے ۔ یہ دھماکہ خیز بیان 9مارچ 2020ء کو سامنے آیا تو گویا ایک بھونچال ہی تو آگیا ۔ وزیر اعظم نے اسلام آباد میں اخبار نویسوں سے خطاب کرتے ہُوئے کہا:” جس طرح بیماری پھیل رہی ہے اور ہمیں خطرہ ہے کہ اس مہینے کے آخر میں کہیں ہسپتالوں میں جگہ کم نہ پڑ جائے۔ ابھی تک صرف 40 لوگ مرے ہیں تو لوگ سمجھتے ہیں کہ شاید ہمارے پاکستانیوں کی قوت مدافعت زیادہ ہے یا شاید ہمیں یہ بیماری اثر نہیں کرے گی۔ میں سب سے درخواست کرتا ہوں کہ خدا کا واسطہ اس غلط فہمی میں نہ پڑیں کیونکہ یہ وبا بہت خطرناک ہے اور ہمارے لوگ یہ سوچ کر احتیاط نہیں کررہے کہ پاکستانیوں کو فرق نہیں پڑے گا۔ پاکستان میں جس طرح یہ وبا بڑھتی جا رہی ہے تو ہمیں خوف ہے کہ اپریل کے مہینے کے اختتام تک جن چار یا 5 فیصد لوگوں کو ہسپتال جانا پڑے گا، ان کی تعداد اتنی ہو جائے گی کہ ہمارے ہسپتالوں میں آئی سی یو یا شدید بیمار مریضوں کیلئے جگہ نہیں ہو گی۔ مذکورہ صورت میں ہم شدید بیمار لوگوں کا علاج کرنے سے قاصر ہوں گے اور ہمارے ہسپتالوں میں مطلوبہ تعداد میں وینٹی لیٹرز نہیں ہوں گے۔تین ہفتے قبل ہم نے لاک ڈاؤن کا فیصلہ کیا تھا جس کے بعد ہم نے اسکول، یونیورسٹیز کے بعد فیکٹریاں دکانیں وغیرہ بند کردی تھیں لیکن یورپ، امریکا اور چین میں ہونے والے لاک ڈاؤن سے ہمارا لاک ڈاؤن مختلف ہے۔”انہوں نے کہا :” پاکستان کا مسئلہ یہ ہے کہ آبادی کا ایک بڑا حصہ یعنی تقریباً پانچ کروڑ افراد خطِ غربت سے نیچے زندگی گزار رہے ہیں تو ہمیں لاک ڈاؤن کا یورپ اور چین کی طرح نہیں سوچنا چاہیے کیونکہ ہمیں یہ سوچنا ہوگا کہ اگر ہم ان کی طرح لاک ڈاؤن کریں گے تو اس کے اثرات کیا ہوں گے۔ ہمیں معلوم ہے کہ جو روزانہ دیہاڑی کمانے والے ہیں، رکشہ چلانے والے، چھابڑی والے اور دکاندار وغیرہ ہیں ان پر لاک ڈاؤن کا سب سے زیادہ اثر پڑتا ہے کیونکہ وہ سارا دن دیہاڑی کر کے اپنے بچوں کا پیٹ پالتے ہیں۔ اس لیے ہم نے کوشش کی کہ کسی طرح سے توازن قائم ہو جائے، لاک ڈاؤن بھی ہو تاکہ بیماری نہ پھیلے اور اس کمزور طبقے پر بھی بوجھ نہ پڑ جائے اور یہی وجہ ہے تمام صوبوں اور وفاق کا ردعمل مختلف تھا۔ امریکا جیسے ملک میں بھی مختلف ریاستوں میں مختلف رویہ ہے، کئی نے پورا لاک ڈاؤن کردیا ہے، کئی نے جزوی لاک ڈاؤن کیا ہوا ہے، یورپ میں بھی سویڈن نے مختلف اقدامات کیے ہیں جبکہ جرمنی، اسپین اور اٹلی نے مختلف اقدامات کیے ہیں۔” اُنہوں نے کہاکہ ہم نے اپنے زراعت کے شعبے میں لوگوں کو کام کرنے دینا ہے کیونکہ ہمیں یہ بھی دھیان رکھنا ہے کہ ہمارے 22 کروڑ لوگ ہیں، جنہیں ہمیں کھانا پینا بھی مہیا کرنا ہے، خصوصاً اب گندم کی کٹائی شروع ہو چکی ہے تو ہم نے دیہاتوں میں کہا ہے کہ کوئی لاک ڈاؤن نہیں ہے۔ ہم نے اصل لاک ڈاؤن شہروں میں کیا ہے، اب شہروں میں بھی خبریں آنا شروع ہوگئی ہیں کہ لوگوں کے حالات برے ہیں، مزدوروں اور دیہاڑی کمانے والوں کے برے حالات ہیں تو اس کی وجہ سے ہم نے فیصلہ کیا کہ شعبہ تعمیرات کو کھول دیا جائے تاکہ لوگوں کو نوکریاں ملیں۔” خانصاحب نے مزید کہا:” اس وقت ہمارا سب سے بڑا چیلنج ہے کہ ہم اپنے سب سے غریب طبقے کا کیسے خیال رکھیں تو اسی سلسلے میں ہم احساس پروگرام کو تیز کرنے جا رہے ہیں۔ احساس پروگرام میں ساڑھے 3 کروڑ لوگوں نے درخواست دی ہے کہ وہ انتہائی غریب ہیں اور ان کی مدد کی جائے ۔ اس پروگرام میں کسی بھی قسم کی سیاسی مداخلت نہیں ہے۔ اس نظام میں کوئی مداخلت نہیں کر سکتا اور یہ نادرا کی جانب سے فراہم کیے گئے ڈیٹا کی بنیاد پر خودکار نظام کے تحت میرٹ پر چل رہا ہے۔اس پروگرام کے تحت ہر خاندان میں ایک فرد کو 12ہزار روپے دیے جائیں گے اور پورے پاکستان میں 17ہزار جگہیں ایسی بنائی گئی ہیں جہاں سے یہ پیسہ تقسیم کی جائے گا جس کے تحت اگلے دو سے ڈھائی ہفتے میں ایک کروڑ 20 لاکھ خاندانوں کو یہ پیسہ دیا جائے گا۔ مشکلات ضرور آئیں گی کیونکہ پاکستان کی تاریخ میں اتنا بڑا پروگرام کبھی نہیں دیا گیا ۔ اس میں جو بھی مشکلات آئیں گی تو ہماری ٹیمیں بیٹھی ہوئی ہیں جو اس کا جائزہ لے گی اور جہاں بھی ہمیں اس میں بہتری یا تبدیلی کی ضرورت محسوس ہوئی تو ضرور تبدیلی کریں گے۔ ” اُنہوں نے اپنی ٹائیگر فورس کا ذکر بھی کیا:”ہم نے ٹائیگر فورس شروع کی ہے، انہیں ہم ذمہ دار بنائیں گے کہ وہ اضلاع اور اپنے علاقوں میں جا کر دیکھیں کہ کس کو ضرورت ہے اور ان لوگوں کو دیکھیں جو ایس ایم ایس نہیں کر سکے اور پھر اسی سسٹم میں ان کا نام شامل کردیا جائے گا۔ ہم اگلے ڈھائی ہفتے میں 144ارب روپے نچلے طبقے تک تقسیم کردیں گے اور اگر اس کے بعد بھی لوگ بچے تو اس کے لیے مخیر حضرات سے ریلیف فنڈ کی درخواست کی ہے۔ اس فنڈ میں سے ان لوگوں میں رقم تقسیم کی جائے گی۔”کہنے کو تو وزیر اعظم کا یہ بیانیہ خوب ہے لیکن اس بیانیے کا تجزیہ کرتے ہُوئے ہمیں یہ بات ایک بار پھر پریشان کررہی ہے کہ ہلاکت خیز کوروناوائرس کی موثر انداز میں روک تھام کیلئے حکومت کی طرف سے کوئی واضح لائحہ عمل سامنے آنے سے قاصر ہے ۔ شائد اسی وجہ سے ”الجزیرہ” کے ایک تجزیہ کار ( ٹام حسین) نے بھی لکھا ہے کہ وزیر اعظم عمران خان کے کورونا وائرس کے حولے سے کسی واضح پالیسی پیش نہ کئے جانے پر پاکستانی اسٹیبلشمنٹ بھی پریشان ہے اور اسی کارن پاک فوج کو از خود کورونا وائرس کے خلاف محاذ قائم کرنے کیلئے میدانِ عمل میں اترنا پڑا ہے ۔ ”الجزیرہ” کے مذکورہ تجزیہ نگار نے اس حوالے سے خانصاحب حکومت کی ناکامیوں بارے بہت سی تلخ باتیں بھی رقم کی ہیں لیکن ہم اس کا ذکر یہاں نہیں کریں گے ۔ایک خبر کے مطابق، پاکستان میں وزیر اعظم کے حکم کے مطابق 9اپریل2020ء سے مستحقین میں 12ہزار روپے فی خاندان یا فی فرد تقسیم کا آغاز ہو چکا ہے ۔ اس کی تحسین کی جانی چاہئے لیکن سوال یہ ہے کہ پاکستان کب تک یہ معمولی سی بھی امداد اپنے مستحقین میں تقسیم کرتا رہے گا؟ اس سوال سے جڑا ایک اور سوال سب کیلئے پریشنان کن ہے کہ اس امداد کے پردے میں کرپشن اور فراڈ کی وارداتوں کو کون روکے گااور کیسے روکا جا سکے گا؟ یہ مصدقہ خبریں تو بہرحال ہمارے میڈیا میں بھی آ چکی ہیں کہ کئی فراڈئیے حکومت اور خیراتی اداروں سے خشک راشن لے کر سستے داموں بازار میں فروخت کرتے پائے گئے ہیں ۔ ہم کرپشن اور بد اخلاقی کے ان نئے مناظر پر بس دکھ اور رنج ہی کا اظہار کر سکتے ہیں ۔ لیکن قوم کے بڑے جب کرپشن اور بدعنوانی کی دلدل میں لتھڑے نظر آئیں گے تو ایسے ملک میں ایسی چھوٹی چھوٹی چوری اور بداخلاقی کی وارداتوں پر سینہ کوبی کو کہاں وقت ملتا ہے ؟ ہم سب تو ابھی ایف آئی اے کی نگرانی میں سامنے آنے والی آٹا چینی کرپشن کی تحقیقاتی اور ہیجان خیز رپورٹ کے سناٹے میں ہیں ۔ وزیر اعظم عمران خان کے کئی ساتھی اور اتحادی بھی اس شرمناک سکینڈل میں ملوث پائے گئے ہیں اور وزیر اعظم صاحب بس یہ کہتے ہُوئے سنائی دے رہے ہیں کہ 25اپریل کو فرانزک رپورٹ آئے گی تو پھر مبینہ ملزمان کے خلاف کوئی کارروائی کروں گا۔ کسی ستم ظریف شاعر نے شائد ایسے ہی لمحات کیلئے کبھی کہا تھا
کون جیتا ہے تری زلف کے سر ہوتے تک

]]>
https://dailytaqat.com/duroon-parda/promises-to-the-prime-ministers-nation/feed/ 0
Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
کورونا وائرس ، وزیر اعظم کا قوم سے چوتھا خطاب اور چندے کی اپیل https://dailytaqat.com/duroon-parda/coronavirus-and-pm-khans-4th-speech/ https://dailytaqat.com/duroon-parda/coronavirus-and-pm-khans-4th-speech/#respond Sat, 04 Apr 2020 19:17:06 +0000 https://dailytaqat.com/?p=229275 Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
مہلک اور لرزا دینے والا کورونا وائرس رینگتا ہُوا ملک بھر میں آگے نہیں بڑھ رہا بلکہ ایک تیز رفتار آندھی کی طرح پاکستان بھر میں بھی پھیلتا اور خوف کے سائے پھیلاتا چلا جا رہا ہے ۔ پچھلے ہفتے تو یہ اطلاعات تھیں کہ وطنِ عزیز کا صوبہ سندھ کورونا وائرس کے پھیلاؤ اور […]]]>

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

مہلک اور لرزا دینے والا کورونا وائرس رینگتا ہُوا ملک بھر میں آگے نہیں بڑھ رہا بلکہ ایک تیز رفتار آندھی کی طرح پاکستان بھر میں بھی پھیلتا اور خوف کے سائے پھیلاتا چلا جا رہا ہے ۔ پچھلے ہفتے تو یہ اطلاعات تھیں کہ وطنِ عزیز کا صوبہ سندھ کورونا وائرس کے پھیلاؤ اور کورونا متاثرین میں سب سے آ گے ہے ۔ لیکن اب صوبہ پنجاب نے سندھ کو پیچھے چھوڑ دیا ہے ۔ تازہ ترین مصدقہ اطلاعات کے مطابق ہمارے صوبہ پنجاب میں کورونا متاثرین کی تعداد 2ہزار سے تجاوز کر چکی ہے۔ جو بدقسمت پاکستانی شہری اس وائرس کے حملے میں اللہ کو پیارے ہو گئے ہیں ، اُن کی تعداد تقریباً تین درجن ہو چکی ہے ۔ کورونا وائرس کے خطرے کے پیشِ نظر وفاقی حکومت نے 14اپریل تک متنوع پابندیاں عائد کر دی ہیں ۔ ساتھ ہی وزیر اعظم عمران خان نے قوم سے اپیل کی ہے کہ نئے قائم کئے جانے والے فنڈ میں زیادہ سے زیادہ حصہ ڈالیں ۔ حیرانی کی بات مگر یہ ہے کہ وزیر اعظم نے خود اس فنڈ میں کوئی حصہ نہیں ڈالا ہے جبکہ ہم دیکھتے ہیں کہ ترک صدر طیب اردوان نے کورونا وائرس کے حوالے سے اپنے ملک میں نیا فنڈ قائم کیا ہے تو سب سے پہلے اپنی سات تنخواہیں اس فنڈ میں ڈال کر نئی مثال قائم کی ہے ۔ اُن کے وزرا نے بھی کروڑوں روپیہ اس فنڈ میں جمع کروایا ہے جبکہ ہمارے ہاں وزرا ابھی تک باتوں سے کام چلا رہے ہیں ۔ ہم تو مسلسل اللہ کریم سے دست بدعا ہیں کہ یا اللہ ، ہمیں کورونا وائرس کے اس اَن دیکھے عذاب سے فوری اور جلد از جلد نجات عطا فرما ۔ دُنیا بھر میں اس وائرس اور وبا نے خوف و ہراس اور مایوسی کے سائے لہرا دئیے ہیں ۔ کئی لوگ ڈپریشن میں خود کشی تک کر چکے ہیں ۔ مثلاً جرمنی کے ایک ریاستی وزیر خزانہ ۔ پنجاب کے مشہور شہر ، لیہ ، میں ایک مذہبی جماعت کے آدمی نے پولیس افسر پر چھری سے حملہ کرکے اُسے شدید زخمی کر دیا ہے ۔ بھارت میں ایک شخص نے اِسی مرض سے پیدا ہونے والے ڈپریشن کے کارن اپنے گھر والوں کا کاٹ کھایا ہے ۔ ماہرینِ نفسیات ساری دُنیا کو سمجھانے کی کوشش کررہے ہیں کہ کورونا وائرس کے تحت پیدا ہونے والے نفسیاتی امراض اور ڈپریشن سے کیسے محفوظ رہا جائے ۔ ان حالات میں پنجاب میں کورونا وائرس کے متاثرین کی تعداد میں اضافہ وزیر اعلیٰ پنجاب جناب عثمان بزدار کیلئے تشوتش کا باعث ہونا چاہئے ۔پورا پنجاب تقریباً قرنطینہ میں محبوس کیا جا چکا ہے ۔ ایک کرفیو کے نفاذ کی صورت ہے ۔ شہر بند ہیں اور شاہراہیں مسدود ۔ موٹروے بھی بند ہے ۔ شہریوں کے سماجی فاصلے (Social Distance) زبردستی بڑھا دئیے گئے ہیں لیکن اس کے باوجود پنجاب میں کورونا وائرس کے متاثرین میں مبینہ اضافہ عوام کیلئے پریشانی کا باعث بن رہا ہے ۔ وزیر اعلیٰ پنجاب مگر اس بارے میں لب کشائی کیلئے تیار ہیں نہ قوم کے سامنے آنے پر تیار ۔ صرف وزیر اعظم صاحب بار بار قوم کے سامنے آ کر اپنا مدعا بیان فرما رہے ہیں ۔جب سے مہلک اور دہشت انگیز کورونا وائرس کی وبا ملک بھر میں پھیلنے کا آغاز ہُوا ہے ، وزیر اعظم جناب عمران خان اب تک قوم سے چار بار خطا ب کر چکے ہیں ۔ کبھی اخبار نویسوں اور اینکروں سے ملاقاتوں کے توسط سے اور کبھی قوم سے براہِ راست مکالمہ کرکے ۔ اچھی بات ہے کہ وہ بار بار قوم کو اپنے اعتماد میں لے رہے ہیں ۔ ان اقدامات سے شائد حکمرانوں اور قوم میں اعتبار اور ہم آہنگی کی فضا بھی پیدا ہو رہی ہو ۔ یہ علیحدہ بات ہے کہ قوم نے اب تک عمران خان کے ان خطبات سے کیا سیکھا ہے اور کیا اثر لیا ہے اور یہ بھی کہ آیا قوم نے اُن کی باتوں پر عمل اور یقین بھی کیا ہے یا نہیں۔دو باتیں اب تک اُن کے سبھی خطبات سے کھل کر سامنے آئی ہیں : ایک تو یہ کہ پورے ملک کو لاک ڈاؤن کرنا ملک کے غریبوں کیلئے بھلائی نہیں ہے اور دوسرا یہ کہ پاکستان ایک انتہائی غریب ملک ہے ، اسلئے اس بحران میں پوری طرح اپنے غریبوں کی مدد کرنے سے قاصر ہیں ۔اس سے پہلے بھی وہ پچھلے 19ماہ کی حکومت میں دُنیا کے ہر فورم پر پاکستان کی غربت اور پاکستان بھر میں پھیلی کرپشن کی داستانوں کا ذکر تواتر اور تسلسل سے کرتے رہے ہیں ۔ اس ذکر سے اُنہیں ، ملک اور قوم کو اب تک کیا حاصل ہُوا ہے ، یہ ایک ایسا بڑا سوال ہے جس کا جواب عمران خان اور اُن کے ساتھی حکمران دینے کیلئے تیار نہیں ہیں ۔ وہ ان اذکار سے اپنے سیاسی حریفوں کے منہ پر پوری کامیابی سے کالک ملنے اور اُنہیں رسوا کرنے میں بھی کامیاب نہیں ہو سکے ہیں اور نہ ہی اپنے اعلانات کے مطابق ابھی تک اپنے مبینہ کرپٹ سیاسی حریفوں کی جیبوں سے ایک دھیلا بھی نکلوا سکے ہیں ۔ اوپر سے کورونا وائرس کے نئے جان لیوا بحران نے پی ٹی آئی حکومت کے اوسان خطا کررکھے ہیں ؛ چنانچہ کہا جا سکتا ہے کہ اپنے حواس پر قابو پائے رکھنے کا شو قائم کرنے کیلئے وزیر اعظم پاکستان بار بار قوم کے رُوبرو آ رہے ہیں ۔ 30مارچ2020ء کی شام وہ ایک بار پھر قوم کے سامنے 22منٹ کیلئے خطاب کرتے ہُوئے پیش ہُوئے ۔ اس تقریر میں وزیر اعظم عمران خان نے کورونا وائرس کے خلاف اقدامات کو مزید موثر بنانے، کورونا وائرس کے متاثرین کی امداد کرنے ، نئے فنڈ کے قیام ، ٹائیگر فورس بنانے ، ریلیف فنڈ قائم کرنے کا اعلان،اپنے مالی وسائل کا پھر سے رونا رونے ، اہلِ ثروت کی طرف سے اعانت کیلئے ہاتھ آگے بڑھانے کی اپیل کرنے اور اللہ پر بھروسہ رکھنے کے اعلانات کرتے ہُوئے کہا:” ہمارے پاس وسائل نہیں مگر ایمان کی طاقت اور نوجوان آبادی ہے’ان دو چیزوں کے ذریعے ہم کورونا وائرس کا مقابلہ کر سکتے ہیں اور اس کے خلاف جنگ جیت سکتے ہیں۔نوجوانوں پرمشتمل ٹائیگر فورس فوج اور انتظامیہ کے ساتھ مل کر کام کرے گی’بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کو بغیر سوچے سمجھے پورے ملک کو لاک ڈاؤن کرنے پرقوم سے معافی مانگنا پڑی’جو کاروباری ادارہ مزدوروں کو بے روزگار نہیں کرے گا، اسے سستے قرضے فراہم کئے جائیں گے۔ذخیرہ اندوزوں کو عبرتناک سزائیں دلوا ئیں گے’ملک میں پانچ سے سات دن تک کورونا کی صورتحال واضح ہو جائے گی، ملک کے حالات کو دیکھتے ہوئے ہم نے یہ جنگ حکمت سے لڑنی ہے’ اگر ملک کو مکمل لاک ڈاؤ ن کریں تو بہت بڑی آبادی متاثر ہو گی’اگر ہم لاک ڈاؤن کرتے ہیں اوروہاں کھانا نہیں پہنچاسکتے تولاک ڈاؤن کامیاب نہیں ہو گا’ ہمارے حالات بھی چین کی طرح ہوتے تو تمام شہروں کو مکمل بند کر دیتا۔ریلیف فنڈ میں جمع کرائی گئی رقم کا ذریعہ نہیں پوچھا جائے گاجبکہ اس رقم پر ٹیکس ریلیف بھی ملے گا۔” جناب عمران خان نے کورونا وائرس کی شدت اور متاثرین کا ذکر کرتے ہُوئے کہا:” یہ وائرس صرف بوڑھوں اور بیمار لوگوں کے لئے خطرہ ہے’باقی لوگ خود کوقرنطینہ کرلیںتو ٹھیک ہو سکتے ہیں’یہ ایک ایسی بیماری ہے جو غریب اور امیر میں فرق نہیں کرتی۔ہمارے لئے دو چیزیں تقویت کا باعث ہیں جن میں سب سے بڑی ایمان کی طاقت ہے’دوسراہماری نوجوان آبادی دنیا کے کسی بھی ملک کی دوسری بڑی آبادی ہے، ان دو چیزوں کے ذریعے ہم کورونا کے خلاف جنگ جیت سکتے ہیں۔کورونا وائرس سے پیدا ہونے والی صورتحال میں امداد کے لئے کورونا ریلیف ٹائیگر فورس کا اعلان کرتے ہیں، یہ فورس فوج اور انتظامیہ کے ساتھ مل کر کام کرے گی، ٹائیگر فورس لاک ڈاؤن والے علاقوں میں اشیائے خورد و نوش اور بنیادی ضروری اشیاء پہنچائے گی۔ٹائیگر فورس میں کوئی بھی نوجوان شامل ہو سکتا ہے، یہ لوگوں میں کورنا وائرس سے متعلق شعور بیدار کریں گے’ نوجوان ڈاکٹر، نرسز، طلبائ، انجینئرز، ڈرائیور اور مکینک بھی اس فورس کا حصہ بن سکتے ہیں اور ضرورت پڑنے پر ہم انہیں بتائیں گے کہ کس طرح کام کرنا ہے۔ ملک میں اناج کی کوئی کمی نہیں، احساس پروگرام کے تحت ایک کروڑ 20 لاکھ افراد کو 12، 12 ہزار روپے فراہم کئے جائیں گے اور ان میں اضافہ بھی کیا جائے گا اور اس فنڈ کے ذریعے بھی ان کے لئے رقوم فراہم کی جائیں گی، فنڈ کا باقاعدہ آڈٹ ہو گا اور کوئی بھی اس کے بارے میں معلومات حاصل کر سکے گا۔”وزیر اعظم صاحب کے اس خطاب کے کئی حصوں کا تجزیہ کئے جانے کی ضرورت ہے ۔خاص طور پر اُن کی اس بات کا تجزیہ کہ وہ جب بھارتی وزیر اعظم کی معافی کا ذکر کرتے ہیں تو دراصل وہ یہ کہنا چاہتے ہیں کہ اُنہوں نے پاکستان میں ابھی تک مکمل لاک ڈاؤن نہ کرکے بہترین قدم اٹھایا ہے اور یہ کہ اُن کے اس اعلان میں کئی حکمتیں پوشیدہ ہیں ۔ ممکن ہے وزیر اعظم کی یہ بات بہت سے لوگوں کے نزدیک درست ہی ہو لیکن واقعہ یہ ہے کہ پورے ملک میں اُن کی طرف سے لاک ڈاؤن نہ کئے جانے کے باوجود کئی اہم شہر لاک ڈاؤن کا نظارہ پیش کررہے ہیں ۔ لوگوں کو متعدد اور متنوع مشکلات کا سامنا ہے ۔ وزیر اعظم صاحب یہ تسلیم کریں یا نہ کریں ۔ وہ اپنے وعدوں کے باوجود ملک میں مہنگائی ختم کر سکے ہیں نہ اشیائے خورونوش کو بلیک میں فروخت ہونے سے روک پائے ہیں ۔ ملک بھر میں فیس ماسک کی نایابی ختم ہُوئی ہے نہ جراثیم کس سینیاٹائزرز دستیاب ہیں ۔ حالانکہ پچھلے ہفتے جب وہ چند اخبار نویسوں کے توسط سے قوم سے مخاطب تھے تو این ڈی ایم اے کے سربراہ لیفٹیننٹ جنرل محمد افضل نے اُن کی موجودگی میں قوم سے وعدہ کیا تھا کہ ملک بھر میں سینیٹائزرز بھی فراہم کر دئیے جائیں گے اور فیس ماسک کی کمی بھی نہیں رہے گی ۔ افسوس کی بات یہ ہے کہ اس اعلان سے ایفا نہیں ہو سکا ہے ۔ وہ تو خدا بھلا کرے چین کا کہ اِنہی ایام میں چین نے تین جہاز انہی اشیا سے بھر کر پاکستان بھیجے ہیں ۔ حیرانی کی بات ہمیں یہ ہے کہ جو ایٹمی ملک وبا اور بحران کے ان ایام میں اپنے شہریوں کو مطلوبہ مقدار میں فیس ماسک اور سینیٹائزرز فراہم کرنے سے قاصر ہے ، وہ دوسری سہولتیں قوم و ملک کو کیسے اور کیونکر فراہم کر سکتا ہے؟ یہ المیہ ہے اور اس المئے کے نظارے ہم ہر روز دیکھ رہے ہیں ۔ جو تاجر اور دکاندار مہنگے داموں سینیٹائزرز اور فیس ماسک فروخت کررہے ہیں ، اُن کے خلاف ابھی تک آن دی ریکارڈ کوئی کارروائی بھی نہیں کی گئی ہے ۔ اگر ایسا ہوتا تو شائد تاجروں کی کالی بھیڑوں کو کچھ تو عبرت ہوتی ۔وزیر اعظم صاحب اپنے اس خطاب میں جب یہ کہتے ہیں کہ ” ہم اپنے قائم کئے گئے فنڈ کا آڈٹ بھی کریں گے اور کوئی بھی اس بارے میں معلومات حاصل کر سکے گا” تو اس کا مطلب یہ ہے کہ ہمارے عوام کو حکومتوں اور حکمرانوں کے قائم کئے گئے فنڈز پر یقین نہیں رہا ۔ حکمرانوں نے عوام کے یقین اور ایمان کو ماضی قریب میں بُری طرح اور بار بار دھچکا پہنچایاہے ۔ مثال کے طور پر ”قرض اتارو، ملک سنوارو” اور ” ڈیم بناؤ” فنڈز کو جس طرح بلڈوز کیا گیا اور آج تک ان کے بارے میں قوم کو بتایا ہی نہیں گیا کہ ان فنڈز میں دئیے گئے عوام کے اربوں روپے کہاں لگائے گئے ، کہاں غتر بود ہو گئے ؟انہی تلخ تجربات کی روشنی میںاب لوگوں کو یقین نہیں رہا ہے کہ اب عمران خان کورونا وائرس کے متاثرین کی امداد کیلئے جو فنڈ قائم کرنے جارہے ہیں ، آیا اس کا حشر بھی ماضی میں قائم کئے گئے فنڈز ایسا تو نہیں ہوگا؟ دودھ کا جلا چھاچھ بھی تو پھونکیں مارکر پیتا ہے ۔ ویسے کورونا وائرس کی اس وبا میں ایک بار پھر قوم پر یہ منکشف ہُوا ہے کہ پچھلے سات عشروں میں ہمارے ہر حکمران نے صحت کے محکمہ کو شدت سے نظر انداز کرکے درحقیقت بڑے جرائم کا ارتکاب کیا ۔ اس کی بڑی وجہ یہ تھی کہ یہ حکمران اور ہمارا مراعات یافتہ ریاستی و سرکاری بالا دست طبقہ اپنے علاج معالجے کیلئے بیرونِ ملک بھاگتا رہا ہے ۔ ایسے میں اس طبقے کو بھلا اپنے عوام کی صحت کی طرف توجہ دینے اور ملکی ہسپتالوں کو بہتر بنانے کا خیال کیوں آتا ؟ اب اللہ تعالیٰ نے پاکستان کے اس ظالم حکمران اور مقتدر طبقے سے یوں انتقام لیا ہے کہ حالیہ جاری کورونا وائرس کی وبا میں یہ لوگ بیرونِ ملک بھی فرار نہیں ہو سکتے ۔
خصوصی نوٹ: بھاری اور غمزدہ دل کے ساتھ ہم یہ اعلان کررہے ہیں کہ پاکستان کے نامور اخبار نویس اور جنگ گروپ کے چیئرمین و پبلشر جناب میر جاوید رحمن ہم میں نہیں رہے ۔ وہ 31مارچ کو کراچی میں ہم سے ہمیشہ کیلئے بچھڑ گئے لیکن ملک و قوم کیلئے اُن کی عظیم الشان اور شاندار خدمات کبھی فراموش نہیں کی جا سکیں گی ۔ ہم دعا گو ہیں کہ اللہ تعالیٰ مرحوم میر جاوید رحمن کی بخشش فرمائے، اُن کی دانستہ و نادانستہ خطاؤں کو معاف کرے اور اُنہیں جنت الفردوس میں اعلیٰ ترین مقام سے سرفراز فرمائے ۔ آمین ۔مرحوم میر جاوید رحمن وطنِ عزیز کے بے مثل اخبار نویس میر خلیل الرحمن مرحوم ( بانی روزنامہ جنگ) کے صاحبزادے اور ایڈیٹر انچیف جنگ و جیو جناب میر شکیل الرحمن کے بڑے بھائی تھے ۔ مرحوم کی نگرانی میں جنگ و جیو نے بھی دن رات شاندار ترقی کے لاتعداد مراحل طے کئے اور ہفت روزہ ”اخبارِ جہاں” کو بھی چار چاند لگائے رکھے ۔ میر جاوید رحمن مرحوم کی زیر ادارت شائع ہونے والے ”اخبارِ جہاں” نے اپنے معیار اور اندازِ صحافت کو مسلسل آگے بڑھائے رکھا ۔ اس حوالے سے کہا جا سکتا ہے کہ میر جاوید رحمن مرحوم کا جدید ہفت روزہ صحافت میں کوئی ثانی نہیں رہا تھا۔ وہ سرطان کے جان لیوا مرض میں مبتلا تھے لیکن اُنہوں نے بڑے حوصلے اور بہادری سے اس بیماری کا مقابلہ کیا ۔ بلاشبہ اُن کی وفات نے ہماری قومی صحافت میں ایک نہ مٹنے والا خلا پیدا کر دیا ہے ۔ یہ اتنا بڑا خسارہ ہے کہ اُن کے انتقال پر پورے ملک سے زندگی کے ہر شعبے نے غم کا اظہار کیا ہے ۔ صدرِ مملکت ڈاکٹر عارف علوی نے بھی اظہارِ افسوس کیا ہے اور چیف آف آرمی اسٹاف نے بھی ، تمام سیاسی جماعتوں کے سربراہان نے بھی اظہارِ تعزیت کیا ہے اور اخباری صنعت نے بھی ۔ ہم دعا کرتے ہیں کہ اللہ تعالیٰ میر شکیل الرحمن صاحب کو بھی اپنے پیارے بھائی کی رحلت پر صبر جمیل عطا فرمائے اور میر جاوید رحمن مرحوم کے اہلِ خانہ کو بھی یہ بڑا غم برداشت کرنے کی ہمت عطا فرمائے ۔آمین

]]>
https://dailytaqat.com/duroon-parda/coronavirus-and-pm-khans-4th-speech/feed/ 0
Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
کورونا وائرس کا مقابلہ : افواجِ پاکستان کی شاندار خدمات اور ہمارے دولتمندوں کا رویہ https://dailytaqat.com/duroon-parda/%da%a9%d9%88%d8%b1%d9%88%d9%86%d8%a7-%d9%88%d8%a7%d8%a6%d8%b1%d8%b3-%da%a9%d8%a7-%d9%85%d9%82%d8%a7%d8%a8%d9%84%db%81-%d8%a7%d9%81%d9%88%d8%a7%d8%ac%d9%90-%d9%be%d8%a7%da%a9%d8%b3%d8%aa%d8%a7%d9%86/ https://dailytaqat.com/duroon-parda/%da%a9%d9%88%d8%b1%d9%88%d9%86%d8%a7-%d9%88%d8%a7%d8%a6%d8%b1%d8%b3-%da%a9%d8%a7-%d9%85%d9%82%d8%a7%d8%a8%d9%84%db%81-%d8%a7%d9%81%d9%88%d8%a7%d8%ac%d9%90-%d9%be%d8%a7%da%a9%d8%b3%d8%aa%d8%a7%d9%86/#respond Sat, 28 Mar 2020 19:01:31 +0000 https://dailytaqat.com/?p=229200 Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
Muhamamd Owais Raazi
کورونا وائرس کا مقابلہ : افواجِ پاکستان کی شاندار خدمات اور ہمارے دولتمندوں کا رویہ ]]>

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
Muhamamd Owais Raazi

 

کورونا وائرس کی ہلاکتیں روز افزوں ہیں ۔ متاثرین کی تعداد بھی تیزی سے بڑھی ہے ۔ اعدادو شمار کے مطابق ، وائرس سے عالمی سطح پر انتقال کرنے والوں کی تعداد پندرہ ہزار سے متجاوز ہے اور متاثرین کی تعداد چار لاکھ سے بڑھ گئی ہے ۔

 

ہم سب کو اس پر تشویش ہے ۔متاثرہونے والے افراد میں اب تو برطانوی شہزادہ چارلس بھی شامل ہو چکے ہیں ۔ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اُمید کا اظہار کرتے ہُوئے کہا ہے کہ ایسٹر تک یہ وبا ختم ہو جائے گی ۔ اللہ کرے ایسا ہی ہو جائے ۔ ہم سب ایک ہی دعا مانگ رہے ہیں : یا الٰہی، ہمیں اس عذاب سے جلد از جلد بچا لے ۔ آمین ۔

سعودی حکومت نے اعلا ن کیا ہے کہ اگر خدانخواستہ کورونا وائرس کے حوالے سے ایسے ہی حالات جاری رہے تو حج کے انعقاد میں مشکلات پیدا ہو جائیں گی ۔حج تو بہر حال ہونا چاہئے ، خواہ محدود پیمانے پر ہی سہی لیکن یہ ہر گز ہرگز رُک نہیںسکتا ۔ موت اور حیات تو بہرحال اللہ تعالیٰ کے ہاتھ میں ہے ۔ حج ایسے دینِ اسلام کے سب سے بڑے رکن میں کوئی رکاوٹ نہیں ہونی چاہئے ۔ وطنِ عزیز میں بھی کورونا وائرس کی وبا میں اضافہ ہی دیکھنے میں آرہا ہے ۔ ملک بھر میں نصف درجن سے زائد افراد کے جاں بحق ہونے کی اطلاعات ہیں ۔ اللہ کرے جس وقت یہ سطور شائع ہوں ، اُس وقت تک بھی کوئی مزید جانی نقصان نہ ہو سکے ۔ افسوس کی بات یہ ہے کہ کورونا وائرس کے خلاف ملک بھر میں جس نوعیت کا اتحاد و اتفاق ہونا چاہئے تھا، دیکھنے میں نہیں آرہا ۔ صوبے اپنی اپنی روش پر چل رہے ہیں ۔

اٹھارویں ترمیم کے تحت صحت کا شعبہ بالکل صوبوں کا نجی معاملہ بن چکا ہے ، اسلئے اب ملک بھر میں کورونا وائرس کے خلاف جہاد کرتے ہُوئے ایک ہی پالیسی بنانے اور اس کے نفاذ میں وفاقی حکومت کو دقتوں کا سامنا ہے ؛ چنانچہ اٹھارویں ترمیم وضع کرنے والوں کی نالائقیاں بھی سامنے آ رہی ہیں ۔ افسوس کے کئی دیگر مناظر بھی سامنے آ رہے ہیں ۔ مثال کے طور پر کورونا کی بڑھتی ہلاکت خیزیوں کے باوجود وزیر اعظم عمران خان اپنی کسی خاص انا کی تسکین کی خاطر اپوزیشن کے ساتھ ہاتھ ملانے اور اپوزیشن لیڈرشپ کو ساتھ لے کر چلنے پر تیار نظر نہیں آ رہے ۔ یہ عجب تماشہ ہے ۔

 

موصوف نے گذشتہ دنوں اپوزیشن کے ساتھ مل کر ( ویڈیو کانفرنس کے ذریعے) کوئی بات چیت آگے بڑھانے کیلئے ڈول تو یقیناً ڈالا لیکن اپنی تقریر کے بعد چلتے بنے اور اپوزیشن لیڈرشپ کی بات ہی نہ سُنی ۔ قومی اسمبلی میں قائد ِ حزبِ اختلاف شہباز شریف نے اس روئیے پر سخت ناراضی کا اظہار کیا اور واک آؤٹ کر دیا ۔ اور یہ انداز بے جا بھی نہیں ہے ۔ بلاول بھٹو زرداری نے بھی وزیر اعظم کے اس روئیے کے خلاف ردِ عمل ریکارڈ کروایا ہے ۔ ملک بھر میں کسی نے بھی عمران خان صاحب کے اس اسلوب کی تحسین نہیں کی ہے ۔سمجھ نہیں آتا کہ وزیر اعظم صاحب نے جاری بحران کے باوجود یہ طریقہ کیوں اختیار کیا؟ کیا اُنہیں قومی یکجہتی اور قومی اتفاقِ رائے کا بھی احساس نہیں ہے ۔ اگر وزیر اعظم کا یہ رویہ ہے تو ایسے میں دیگر سیاسی اداروں اور شخصیات سے کیا گلہ کیا جا سکتا ہے ؟ اس عدم اتفاقی سے ملک اور عوام کو نقصان پہنچ رہا ہے ۔

 

کورونا وائرس کے خلاف جنگ میں ضعف اور کمزوری آ سکتی ہے ۔ وہ تو خدا بھلا کرے افواجِ پاکستان ، رینجرز اور پولیس کا جو اپنی جانیں ہتھیلی پر رکھ کر اور خود کو خطرات میں ڈال کر پوری قوم کی حفاظت میں لگے ہُوئے ہیں ۔ حالانکہ انہیں بھی کورونا کی خطرناکیوں کا یکساں سامنا ہے ۔ لیکن وہ ہماری سلامتی اور صحت کیلئے خطرات سے کھیل رہے ہیں لیکن ہم لاپرواہی کے مظاہرے کررہے ہیں ۔ ہمارے شغل اور مستیاں ختم ہونے کا نام ہی نہیں لے رہیں ۔

 

بحران اور امتحان کے ان ایام میں ہم قومی اور اجتماعی سطح پر ضرورتمندوں کی مدد امداد کرنے پر بھی تیار نظر نہیں آ رہے ۔ ہمارے دل مزید تنگ اور سخت ہو گئے ہیں ۔ یہ افسوس کا مقام ہے ۔ ایسا کرکے درحقیقت ہم اللہ اور اُس کے آخری رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی ناراضی مول لے رہے ہیں ۔ عشروں قبل ہمارے عظیم الشان قومی شاعرِ مشرق حکیم الامت ڈاکٹر علامہ محمد اقبال نے کہا تھا:” ہیں لوگ وہی جہاں میں اچھے ، آتے ہیں جو کام دوسروں کے ۔” یہ شاعرانہ خیالات انسانیت نوازی کا منہ بولتا ثبوت ہیں ۔ جو شخص ، گروہ ، یا ملک دکھی انسانیت کی دستگیری کرتا ہے ، جو مصیبت اور آزمائش کی گھڑیوں میں انسانوں کی مدد کرتا ہے ، اصل میں وہی انسان کہلانے کا مستحق ہے ۔

 

وگرنہ جانور بھی اللہ ہی کی مخلوق ہیں مگر انسان اللہ کی مخلوق میں سب سے ممتاز اور محترم اسلئے ہے کہ اس میں شعور ہے ۔ یہ اپنے ہمنفسوں کے دکھ درد اور خوشی غمی میں شریک ہونے کے احساسات کی نعمتیں رکھتا ہے ۔ لیکن شعور اور احساس کی نعمت سے سرفراز ہونے کے باوجود کئی ایسے انسان بھی ہیں جو ضرورتمند انسانوں کی ضرورتوں کا ناجائز فائدہ اٹھاتے ہیں ، اُنہیں بلیک میل کرتے ہیں تاکہ اپنی تجوریاں بھر سکیں ۔ ایسے تاجر اور انسان درحقیقت انسانیت کے دامن پر سیاہ دھبے کی مانند ہیں ۔ یہ لوگ انسان کہلانے ہی کے مستحق نہیں ہیں ۔ ہم نے حالیہ ایام میں خود دیکھا اور اس کا عملی مشاہدہ کیا ہے اور ہنوذ کررہے ہیں کہ جونہی دُنیا کے ساتھ ساتھ ہمارے ملک میں بھی مہلک کورونا وائرس کی وبا پھیلنا شروع ہُوئی ، پورے ملک سے وائرس سے بچاؤ کے لئے فیس ماسک بھی غائب ہو گئے اور ہاتھوں کو جراثیم سے محفوظ رکھنے کیلئے سینیٹائزرز بھی ۔ مارکیٹ سے مذکورہ وائرس کی موجودگی چیک کرنے کیلئے میڈیکل کٹس بھی معدوم ہو گئیں ۔ فیس ماسک اول تو نایاب ہی ہو گئے اور اگر بسیار کوشش کے بعد ملتے ہیں تو انتہائی مہنگے داموں ۔

 

دس پندرہ روپے والا ماسک دو دو سومیں ملتا ہے ۔ سینیٹائزر جو عام طور پر ساٹھ ، ستر روپے کا ملا کرتا تھا، اب بلیک مارکیٹ میں دو سو ، تین سو کا مل رہا ہے ۔ ملعون تاجروں نے منافع کی شرح سینکڑوں گنا بڑھا کر مصیبت زدہ اور آزمائش میں پڑے انسانوں کیلئے مزید مسائل اور مصائب کھڑے کر دئیے ہیں ۔ پاکستان کے انہی لالچی مسلمانوں اور لوبھی تاجروں کو دیکھ کر ہی شائد برسوں قبل علامہ اقبال نے فرمایا تھا: یہ مسلماں ہیں جنہیں دیکھ کر شرمائیں یہود! ہمارے لالچی اور کرپٹ تاجروں اور سیاستدانوں نے ملک لوٹ کر دولت غیر ممالک میں لے گئے ۔ ایسے انسانیت دشمن سیاستدانوں سے کیا توقع رکھی جا سکتی ہے؟ لیکن اِسی دُنیا میں کئی ایسے دولتمند انسان بھی ہیں جو کورونا کی ہلاکت خیز جاری وبا میں دکھی انسانیت کی دستگیری کیلئے اپنی دولت بے دریغ خرچ کرنے کیلئے باہر نکلے ہیں ۔

ایسے مخیر اور انسان دوست تاجروں میں چین کے ایک دولتمند شخص ( جیک ما) بھی ہیں ۔ اُنہوں نے رواں ہفتے ہی پاکستان سمیت کئی دیگر غریب ممالک کے کورونا زدہ افراد کی مدد کیلئے اربوں روپے مالیت کی امداد کا اعلان کیا ہے ۔ اس امداد سے کورونا مریضوں کا مفت معائنہ کرنے اور انہیں ادویات مفت فراہم کرنے میں آسانیاں رہیں گی ۔ ایشیا اور چین کے امیر ترین شخص جیک ما نے پاکستان سمیت متعدد ایشیائی ممالک کو لاکھوں فیس ماسکس اور کورونا وائرس ٹیسٹ کٹس دینے کا اعلان کیا ہے۔یہ جیک ما کی فلاحی خدمات کے لیے قائم ادارے کی جانب سے اس عالمی وبا کی روک تھام کے حوالے سے کوششوں کا حصہ ہے، جو اس سے قبل یورپ اور امریکا میں بھی فیس ماسکس اور کٹس فراہم کرچکا ہے۔ای کامرس کمپنی” علی بابا” کے بانی جیک ما نے رواں ہفتے اپنے ٹوئٹر پراعلان کیا تھا کہ جیک ما فائونڈیشن اور علی بابا فائونڈیشن کی جانب سے امریکا، ایران اور اٹلی سمیت یورپ کے کچھ ممالک کو فیس ماسکس اور ٹیسٹنگ کٹس فراہم کی جائیں گی۔اب اپنے نئے ٹوئٹ میں جیک ما نے کہا کہ پاکستان، بنگلہ دیشن، افغانستان، کمبوڈیا، لائوس، مالدیپ، منگولیا، میانمار، نیپال اور سری لنکا کو وائرس کی روک تھام کے لیے حفاظتی ملبوسات، وینٹی لیٹرز اور تھرما میٹرز سمیت فیس ماسکس اور ٹیسٹنگ کٹس فراہم کی جائیں گی۔یہ مسرت انگیز اور اطمینان بخش اعلان ایسے موقع پر سامنے آیا ہے جب دنیا بھر میں کورونا وائرس کے حوالے سے طبی اور حفاظتی آلات کی قلت کا سامنا ترقی پذیر کے ساتھ ترقی یافتہ ممالک کررہے ہیں۔مجموعی طور پر جیک ما کی جانب سے ایشیائی ممالک کو 18 لاکھ فیس ماسکس، 2 لاکھ سے زائد ٹیسٹنگ کٹس، 36 ہزار حفاظتی ملبوسات فراہم کیے جائیں گے۔جیک ما نے لکھا ہے کہ تیزرفتاری سے ان اشیا کی فراہمی آسان نہیں مگر ہم ایسا کریں گے ضرور۔

 

اس سے قبل سولہ مارچ کو بھی جیک ما کی جانب سے 54 افریقی ممالک کو فی ملک 20 ہزار ٹیسٹنگ کٹس، ایک لاکھ ماسکس اور ایک ہزار حفاظتی ملبوسات اور فیس شیلڈز فراہم کرنے کا بھی اعلان کیا تھا۔ ٹوئٹر پر اپنے بیان میں جیک ما نے کہا تھا :”اپنے ملک کے تجربے کے پیش نظر میں کہہ سکتا ہوں کہ برق رفتار اور درست ٹیسٹنگ، طبی عملے کے تحفظ کے لیے آلات اس وائرس کی روک تھام کے لیے سب سے موثر ہیں۔ توقع ہے کہ ان سپلائیز سے کچھ لوگوں کو مدد مل سکے گی،یہ بڑی وبا انسانیت کے لیے ایک چیلنج ہے، آج یہ ایسا چیلنج نہیں جو اس سے کوئی ملک اکیلا نمٹ سکے، بلکہ ہر ایک کو ہاتھوں میں ہاتھ ڈال کر آگے بڑھنے کی ضرورت ہے، اس وقت ہمیں اپنے وسائل بغیر کسی قیاس کے شیئر کرنے چاہییں اور وبا کی روک تھام کے تجربے اور اسباق کا تبادلہ کرنا چاہیے تاکہ اس سانحے کو شکست دینے کا موقع مل سکے ۔متحد ہوکر ہم کھڑے رہ سکتے ہیں، تقسیم ہوئے تو گرجائیں گے”۔پاکستان میں بھی کورونا وائرس کے کیسز کی تعداد میں اضافہ ہورہا ہے، ملک میں وائرس سے متاثرہ افراد کی تعداد سینکڑوں ہو گئی ہے۔کورونا کیسز کے سب سے زیادہ کیس صوبہ سندھ میں رپورٹ ہوئے جبکہ پنجاب دوسرے اور بلوچستان ،خیبرپختونخوا ، گلگت بلتستان ، اسلام آباد میں اور آزاد کشمیر کے نمبر بعد میں آتے ہیں ۔

 

دنیا بھر میں وائرس کے باعث بارہ ہزار سے زائد ہلاکتیں ہوچکی ہیں ۔ اسی وبا کے پھیلتے سایوں میں ایشیا اور چین کے امیر ترین شخص جیک ما نے اب 25مارچ2020ء کو لکھے گئے اپنے نئے ٹوئٹ میں جیک ما نے پھر کہا ہے کہ پاکستان، بنگلہ دیشن، افغانستان، کمبوڈیا، لائوس، مالدیپ، منگولیا، میانمار، نیپال اور سری لنکا کو وائرس کی روک تھام کے لیے حفاظتی ملبوسات، وینٹی لیٹرز اور تھرما میٹرز سمیت فیس ماسکس اور ٹیسٹنگ کٹس مفت فراہم کی جائیں گی۔ جیک ما کے اس انسانیت نواز اعلان کی تعریف و تحسین کی جانی چاہئے ۔وطنِ عزیز میں بھی دولتمند افراد کی کوئی کمی نہیں ہے ۔ ہمارے تمام بڑے شہروں میں بڑی بڑی ہاؤسنگ اسکیموں میں رہنے والے زیادہ تر لوگ کروڑوں روپے کے گھروں میں رہتے ہیں ۔ اُن کے فارم ہاؤسز تواربوں مالیت کے ہیں ۔ چاہئے تو یہ تھا کہ آزمائش کی ان گھڑیوں میں وطنِ عزیز کے یہ دولتمند افراد بھی آگے بڑھتے اور ملک کے ضرورتمندوں کی اعانت کرنے میں ہاتھ بٹاتے ۔ افسوس مگر یہ ہے کہ اس معاملے میں ایک بھی شخص یا ادارہ آگے نہیں آ سکا ۔ ہاں کچھ نجی حیثیت میں چند اچھی مثالیں ہمارے سامنے ہیں ۔ مثلاً : ایدھی فاؤنڈیشن اور سیلانی ۔ ان دونوں اداروں اور این جی اوز کا تعاون قابلِ تحسین ہے ۔ کورونا وائرس کا مقابلہ کرنے میں اس تعاونی اور اعانتی دائرے کو مزید وسعت دینے کی از حد ضرورت ہے ۔

 

لیکن اجتماعی حیثیت میں کہا جا سکتا ہے کہ ہمارے مسلمان دولتمند افراد سے زیادہ بہتر تو ملحد چین کا وہ شخص ( جیک ما) ہی ثابت ہُوا ہے جس کا اللہ تعالیٰ پر کوئی ایمان ہی نہیں ہے لیکن وہ انسانیت کی بہتری اور فلاح پر یقین اور ایمان رکھتا ہے ۔ ہم خود کو مسلمان تو کہلاتے ہیں ، ہم میں سے ہر سال لاکھوں اور کروڑوں کی تعداد میں مسلمان حج اور عمرہ کرنے جاتے ہیں اور اس پر اربوں روپیہ خرچ کرتے ہیں لیکن کورونا وائرس کی پھیلتی مہلک وبا کے دوران کوئی صاحبِ حیثیت مسلمان شخص، خاندان اور گروہ کسی تہی دست اور ضرورتمند کی امداد کرنے اور اُس کے مسائل کم کرنے کیلئے سامنے نہیں آیا ( کراچی میں ایک مثال سامنے ضرور آئی ہے لیکن 56لاکھ روپے کا عطیہ کرنے والے صاحب نے اپنے نام نشر کرنے سے انکار کر دیا ہے) قومی سطح پر اور ایک مسلمان قومی معاشرے کی یہ بے حسی قابلِ شرم بھی ہے اور قابلِ مذمت بھی ۔

 

کورونا کی اس وبا کے دوران سارے ملک میں قابلِ خورد اشیا ء کی قیمتوں میں جس طرح بے تحاشہ اضافہ ہُوا ہے ، کیا اس عمل کی تحسین کی جا سکتی ہے؟ افسوسناک امر یہ بھی ہے کہ حکومتی سطح پر بھی اشیائے خورونوش کی قیمتوں کو کنٹرول میں رکھنے کیلئے کوئی اقدام نہیں کیا گیا ۔ مزید افسوس اور دکھ کا مقام یہ ہے کہ ہمارے دولتمند طبقات کسی بھی جگہ پر غریبوں ،تہی دستوں اور ضرورتمندوں کی فوری اور مطلوبہ امداد کرنے پر تیار نہیں ہیں ۔ حالانکہ حقیقت یہ ہے کہ ہمارے یہ صاحبانِ ثروت پاکستان کی سرزمین ہی سے دولتمند بنے ہیں ۔

 

شرم کی بات یہ ہے کہ اب جبکہ آزمائش اور امتحان کے ان لمحات میں پاکستان اور اس کے ضرورتمند عوام کو ان دولتمندوں کی طرف سے مدد امداد کی اشد ضرورت ہے ، یہ سب لوگ خاموش ہو کر تماشہ دیکھ رہے ہیں ۔ ملک بھر میں صنعتوں کا جال پھیلانے والے سیٹھ ، ملز مالکان خاندان ، رئیل اسٹیٹ کے ٹائیکون، لوہے کے کارخانوں کے مالکان ، لاکھوں ایکڑ زرعی زمین کے جاگیرداراوروڈیرے، کاروباری حضرات وغیرہ سبھی ہاتھوں پر ہاتھ دھرے بیٹھے ہیں اور اپنی تجوریوں میں پڑے فالتو اربوں روپے وطن ہی کے کروڑوں ضرورتمندوں کی دستگیری کیلئے بروئے کار نہیں لارہے ۔ یہ سب ملعون ہیں ۔ کیا ان ظالموں پر اللہ کا غضب نازل نہیں ہوگا؟وزیر اعظم عمران خان کی طرف سے یہ تازہ اعلان مستحسن ہے کہ سرکار کی طرف سے مستحقین کو ( تین ہزار روپے ماہانہ کے حساب سے) بارہ ہزار روپے ادا کر رہے ہیں تاکہ چار مہینوں کا گزارہ الاؤنس یکمشت پہنچ جائے ۔ ہماری گزارش مگر یہ بھی ہے کہ چاروں صوبوں ، آزاد کشمیر اور گلگت بلتستان کی حکومتوں کو متحد ہو کر اس آسمانی آفت کا مقابلہ کرنا چاہئے ۔ اِسی میں ہماری بقا ہے ۔

]]>
https://dailytaqat.com/duroon-parda/%da%a9%d9%88%d8%b1%d9%88%d9%86%d8%a7-%d9%88%d8%a7%d8%a6%d8%b1%d8%b3-%da%a9%d8%a7-%d9%85%d9%82%d8%a7%d8%a8%d9%84%db%81-%d8%a7%d9%81%d9%88%d8%a7%d8%ac%d9%90-%d9%be%d8%a7%da%a9%d8%b3%d8%aa%d8%a7%d9%86/feed/ 0
Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
!!مہلک کورونا وائرس کے خلاف صدرِ مملکت ، وزیر اعظم اور پاک فوج کا متحدہ جہاد https://dailytaqat.com/entertainment/%d9%85%db%81%d9%84%da%a9-%da%a9%d9%88%d8%b1%d9%88%d9%86%d8%a7-%d9%88%d8%a7%d8%a6%d8%b1%d8%b3-%da%a9%db%92-%d8%ae%d9%84%d8%a7%d9%81-%d8%b5%d8%af%d8%b1%d9%90-%d9%85%d9%85%d9%84%da%a9%d8%aa-%d8%8c/ https://dailytaqat.com/entertainment/%d9%85%db%81%d9%84%da%a9-%da%a9%d9%88%d8%b1%d9%88%d9%86%d8%a7-%d9%88%d8%a7%d8%a6%d8%b1%d8%b3-%da%a9%db%92-%d8%ae%d9%84%d8%a7%d9%81-%d8%b5%d8%af%d8%b1%d9%90-%d9%85%d9%85%d9%84%da%a9%d8%aa-%d8%8c/#respond Sat, 21 Mar 2020 19:01:30 +0000 https://dailytaqat.com/?p=229158 Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1
!!مہلک کورونا وائرس کے خلاف صدرِ مملکت ، وزیر اعظم اور پاک فوج کا متحدہ جہاد]]>

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

 

محاورتاً نہیں بلکہ عملی سطح پر دیکھا جارہا ہے کہ کورونا وائرس کی ہلاکت خیزیاں جنگل کی آگ کی مانند دُنیا بھر میں پھیل رہی ہیں ۔ چین کے شہر ”ووہان” سے شروع ہونے والی اس مہلک بیماری کو ”عالمی ادارئہ صحت”(WHO) عالمی وبا قرار دے چکا ہے .  یہ وبا نہائت سرعت سے 153ممالک تک پہنچ چکی ہے ۔مستند اعداد و شمار کے مطابق ، اب تک کورونا کی وبا نے 8ہزار سے زائد افراد کی جانیں لے لی ہیں ۔

 

جو اس متاثر ہو چکے ہیں ، اُن کی تعداد دو لاکھ تک بتائی جارہی ہے ۔ کئی مغربی اور مشرقی ممالک اپنی زمینی ، فضائی اور سمندری سرحدیں بند کر چکے ہیں ۔ کئی ممالک میں کرفیونافذ ہو چکا ہے تاکہ لوگ باہر نہ نکل سکیں ۔یہ اقدامات اسلئے کئے جارہے ہیں کہ یہ وبا انسانوں سے انسانوں تک منتقل نہ ہو سکے ۔

اس وبا کا علاج ابھی تک دریافت نہیں کیا جا سکا ہے لیکن ابھی تک یہی ”علاج” دریافت ہُوا ہے کہ لوگوں کا آپسی میل جول نہائت محدود کر دیا جائے ۔ انہی احتیاطی تدابیر کے پیشِ نظر مکہ شریف اور مدینہ منورہ میں زائرین کی حاضری محدود تر بنا دی گئی ہے ۔ عمرہ فلائٹس بھی بند ہیں ۔ پاکستان میں بھی یہ وبا پھیل رہی ہے ۔

حکومتی اعدادو شمار کے مطابق اب تک تقریباً 500 پاکستانی شہری اس سے متاثر ہو چکے ہیں۔ لیکن مبینہ طور پر پنجاب کے وزیر اعلیٰ عثمان بزدار صاحب پوچھ رہے ہیں کہ یہ جراثیم کہاں سے کاٹتا ہے؟ سب سے زیادہ مریض سندھ میں سامنے آئے ہیں ۔حفاظتی اقدامات کے پیشِ نظر پاکستان میں تمام تعلیمی ادارے بند کر دئیے گئے ہیں اور امتحانات مئی ، جون تک ملتوی ہو چکے ہیں ۔پی ایس ایل کے باقی میچ موخر کر دئیے گئے ہیں ۔ شادی ہال اور سینیما و تھیٹروں پر پابندیاں عائد کی جا چکی ہیں ۔ مساجد میں نمازوں کے اوقات کے دورانئے کم کرنے کی استدعا ئیں کی گئی ہیں ۔

حکومت بھی اس بارے علمائے کرام کی تجاویز، مشورے اور فتاویٰ لینے کی کوشش میں ہے ۔ دین کے معاملات میں ہم اپنے علما کی رائے ہی کو ترجیح دیں گے ۔ دُنیا کے ساتھ ساتھ پھیلتے مہلک کورونا وائرس کے آگے بند باندھنے اور اس کے موثر تدارک کیلئے حکومتِ پاکستان کی کوششیں یوں تو ابتدا ہی سے جاری تھیںلیکن رواں ہفتے ان کوششوں میں برق رفتاری سے اضافہ دیکھنے میں آیا ہے ۔کورونا وائرس کا دائرئہ کار پھیلنے سے روکنے کیلئے وزیر اعظم عمران خان جنگی اور ہنگامی بنیادوں پر کوششیں کرتے نظر رہے ہیں ۔ ہونا بھی ایسا ہی چاہئے تھا ۔ اُن کے مشیر برائے صحت ڈاکٹر ظفر مرزا ، جنہیں وزیر مملکت کا عہدہ بھی دے رکھا ہے ، کورونا کے خلاف خاصی بھاگ دوڑ کرتے نظر آ رہے ہیں ۔ غیر ممالک سے پاکستان آنے والوں کی طبی چیکنگ بھی ہو رہی ہے اور اُنہیں کرنطینہ میں رکھنے کی مساعی جمیلہ بھی بروئے کار ہیں ۔

پاکستان بھر میں وہ ہسپتال جو وفاق کے زیر انتظام بروئے کار ہیں ، وہاں ممکنہ حد تک ممکنہ مریضوں کو سہولیات فراہم کرنے اور اُن کا فوری علاج کرنے کی ہدایات جاری کی جا چکی ہیں ۔ ملک میں اگرچہ ابھی ہر جگہ کورونا وائرس کا ٹیسٹ کرنے والی کٹیں دستیاب نہیں ہیں لیکن پھر بھی کوشش کی جارہی ہے کہ ہر جگہ یہ کٹیں فوری فراہم کی جائیں ۔ اس وائرس کے خلاف جنگ جیتنے کیلئے افواجِ پاکستان کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ نے بھی حوصلہ افزا اعلان کیا ہے ۔ انشاء اللہ ہماری فوج بھی قوم کے شانہ بشانہ ہوگی ۔صدرِ مملکت ڈاکٹر عارف علوی بھی اس جنگ کے خلاف متحرک ہو چکے ہیں ۔

اُنہوں نے اس خاص مقصد کیلئے چین کا تازہ ترین دَورہ بھی کیا ہے ۔کورونا وائرس کے خلاف پورے جنوبی ایشیا میں جس جنگ کا آغاز کیا گیا ہے ، اس کی بازگشت ”سارک” کے پلیٹ فارم تک بھی پہنچی ہے؛ چنانچہ ہم دیکھتے ہیں کہ وزیر اعظم عمران خان ”سارک” کے تحت کورونا کے خلاف اُٹھائے گئے اقدامات میں بھی پورا پورا تعاون کررہے ہیں ۔ چند دن پہلے جب بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی نے ”سارک” کے پلیٹ فارم سے کورونا کے خلاف متحدہ جنگ کرنے اور اس عفریت بارے اجتماعی سوچ بچار کرنے کی تجویز دی تو وزیر اعظم پاکستان نے بھی فوری طور پر اس میں شرکت کرنے کی ہامی بھر لی ۔

اس فورم میں وزیر اعظم خود تو شریک نہیں ہُوئے لیکن اُنہوں نے اپنے مشیر صحت ڈاکٹر ظفر مرزا کو ضرور بھیجا ۔ ظفر مرزا کا ”سارک” ممالک کے اس فورم میں کورونا کے خلاف ویڈیو خطاب بھی موثر تھااور تجاویز بھی شاندار ۔ ہم نے یہ بات بھی ملاحظہ کی ہے کہ ”سارک” کے مذکورہ اجلاس میں ظفر مرزا نے ہاتھ لگتے اور موقع پاتے ہی مقبوضہ کشمیر کے مظلوم مسلمانوں کے مسائل اور مصائب کا ذکر بھی کیا ۔ اس سے مودی جی کو ممکن ہے تکلیف بھی پہنچی ہو لیکن پاکستان نے ”سارک” کانفرنس میں کشمیریوں کے مصائب کا ذکر کرکے اپنا سفارتی ، دینی اور اخلاقی فریضہ ادا کر دیا ۔

اس سے یہ بھی معلوم ہُوا کہ وزیر اعظم عمران خان کشمیریوں اور مسئلہ کشمیر سے کسقدر وابستگی رکھتے ہیں ۔کورونا کے خلاف جہادکرتے ہُوئے عمران خان صاحب کو یہ خیال بھی مسلسل ستا رہا ہے کہ وطنِ عزیز کی تو پہلے ہی مالی حالت خاصی پتلی ہے ، کورونا کے بڑھتے اخراجات کیسے پورے کئے جائیں گے ؟ جبکہ کورونا کے باعث عالمی معیشت کے ساتھ پاکستانی معیشت بھی بیٹھ رہی ہے ۔پاکستان کا اسٹاک ایکسچینج زوال اور گراوٹ کا شکار بن چکا ہے ۔ اگر یہی حالات رہے تو ہماری مالی حالت مزید خراب ہو سکتی ہے ۔

اِسی خیال کے پیشِ نظر عمران خان نے عالمی مالیاتی اداروں سے اپیل کی ہے کہ پاکستان کے قرضے ختم کرنے کیلئے ہمدردانہ اقدام کیا جائے ۔وزیراعظم عمران خان نے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ کورونا وائرس ترقی پذیر ممالک کی معیشتوں کو تباہ کرسکتا ہے اور متنبہ کیا ہے کہ عالمی امیر معیشتیں دنیا کے غریب ممالک کے قرضے معاف کرنے کی تیاری کریں۔وزیر اعظم عمران خان نے عالمی برادری پر زور دیتے ہُوئے یہ بھی کہا ہے کہ کورونا وائرس سے لڑتے پاکستان جیسے غریب ممالک جو بہت کمزور ہیں ،ان کے لیے کچھ قرضے معاف کرنے پر غور کیا جائے۔ 18مارچ کو معروف امریکی خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس (اے پی) کو اسلام آباد میں خصوصی انٹرویو دیتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے کہا: ”مجھے غربت اور بھوک پر تشویش ہے، قرضوں کی کمی سے کم از کم ہمیں کورونا وائرس پر قابو پانے میں مدد ملے گی”۔اپنی تشویش کا اظہار کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ انہیں پریشانی ہے کہ اگر پاکستان میں وائرس کا پھیلاؤ شدید ہوگیا تو گرتی ہوئی معیشت کو اپنے پیروں پر کھڑا کرنے کے لیے جو کوششیں ان کی حکومت نے کی ہیں، وہ واپس ہونا شروع ہوجائیں گی۔

وزیر اعظم نے کورونا کی قیامت کے کارن خدشات کا اظہار کرتے ہُوئے اِسی ضمن میں مزید کہا :” برآمدات کم ہوجائیں گی، بے روزگاری میں اضافہ ہوگا اور ملکی قرضوں کا بوجھ ناقابل برداشت ہوجائے گا۔یہ صرف پاکستان نہیں بلکہ میرے خیال میں بھارت، برصغیر اور افریقی ممالک کے لیے بھی ایسی ہی صورتحال ہوگی”۔وائرس کا حوالہ دیتے ہوئے وزیراعظم کا کہنا تھا :’ ‘اگر یہ مزید پھیلا تو ہمیں صحت کی سہولیات کے حوالے سے مسائل کا سامنا ہوگا، ہمارے پاس اتنی صلاحیت ہی نہیں، نہ ہی ہمارے پاس اتنے وسائل ہیں”۔علاوہ ازیں وزیراعظم عمران خان نے مذکورہ انٹرویو میں مشرق وسطیٰ میں کورونا وبا کے مرکز ایران پر سے پابندیاں ہٹانے کا بھی مطالبہ کیا۔وزیر اعظم نے عالمی برادری سے مطالبہ کیا کہ یہ وقت ہے کہ ایران پر سے امریکی پابندیوں کا خاتمہ کیا جائے۔ خیال رہے کہ ایران ان چند ممالک میں شامل ہے جہاں کورونا وائرس کے پھیلاؤ کی صورتحال بدترین ہے۔ وہاں اب تک 1200سے زائد ایرانی ہلاک ہو چکے ہیں۔مذکورہ انٹرویو میں ایران کا ہمدردانہ ذکر کرکے عمران خان نے ایک شاندارمثال قائم کی ہے ۔ ایران کا ذکر کرکے اُنہوں نے ثابت کیا ہے کہ ملتِ اسلامیہ کیلئے اُن کا دل یکساں طور پر دھڑکتا ہے ۔

اس میں اسلامی اخوت نظر آتی ہے ۔ کورونا وائرس کا خوف اتنا پھیل چکا ہے کہ دُنیا کا تقریباً ہر حکمران میڈیا پر آ کر قوم سے خطاب کررہا ہے تاکہ قوم کو حوصلہ بھی رہے اور مقابلے کی گائیڈ لائن بھی ملے ۔ ہمارے وزیر اعظم جناب عمران خان نے بھی اِسی غرض سے17مارچ کی شام قوم سے خطاب کرکے قوم کو ہمت باندھنے ، صبر سے کام لینے اور احتیاط برتنے کی تلقین بھی کی اور وائرس کے حوالے سے پیدا ہونے والے مسائل سے نمٹنے کیلئے حکومتی اقدامات سے قوم کو باخبر بھی کیا ۔ وزیر اعظم کا خطاب نہائت بروقت اور حوصلہ افزا تھا۔اُنہوں نے کہا:” کورونا وائرس کی خاصیت تیزی سے پھیلنا ہے لیکن اس سے گھبرانے کی ضرورت نہیں بلکہ بحیثیت قوم اس کا مقابلہ کرنا ہوگا۔سب سے پہلے ہم نے 15 جنوری کو فیصلہ کیا کہ کورونا وائرس پر ایکشن کرنے لگے ہیں ۔ قوم کو مطمئن ہونا چاہیے کہ کورونا کے 97 فیصد کیسز ٹھیک ہوجاتے ہیں، ان میں سے 90 فیصد ایسے کیسز ہیں جن میں معمولی یعنی کھانسی اور زکام ہوا اور ٹھیک ہوگئے اور صرف 4 یا 5 فیصد کو ہسپتال جانا پڑتا ہے۔جیسے ہی ہمیں کورونا کا پتہ چلا تو چین سے ہماری مسلسل بات ہونے لگی۔چین نے بہادری اور ہمت سے اس وبا کا مقابلہ کیا ہے اور ہم اس سے اسی حوالے سے بہت کچھ سیکھ بھی رہے ہیں ۔

ہمارے صدر صاحب عارف علوی نے اِسی لئے چین کا دو روزہ دَورہ بھی کیا ہے ۔ ایران سے واپس پاکستان آنے والے زائرین کا ہم ہر لحاظ سے طبی خیال رکھ رہے ہیں ۔ایران سے متصل تفتان کی سرحد ویران ہے، اس لیے میں خاص طور پر بلوچستان کی حکومت اور پاکستان فوج کو داد دیتا ہوں کہ انہوں نے کورونا کے خطرے کے پس منظر میں شاندار خدمات انجام دی ہیں۔ ” وزیر اعظم نے اپنے خطاب میں مزید کہا:”اب تک ہم 9 لاکھ لوگوں کی ایئرپورٹ پر اسکریننگ کر چکے ہیں۔پاکستان میں پہلا کیس 26 فروری کو آیاتھا۔پچھلے ہفتے جب پاکستان میں 20 کیس سامنے آئے تو ہم نے نیشنل سیکیورٹی کمیٹی کا اجلاس بلایا۔ اس اجلاس میںہمارے شہروں کو بھی بند کرنے کی ایک تجویز آئی تھی لیکن میں آپ سب کو بتانا چاہتا ہوں کہ پاکستان کے حالات وہ نہیں ہیں جو امریکا اور یورپ میں ہیں۔ ہمارے ملک میں غربت ہے اور 25 فیصد لوگ شدید غربت میں ہیں۔ تب ہم نے سوچا کہ اگر شہروں کو بند کر دیتے ہیں تو یہاں لوگوں کے حالات پہلے سے بھی برے ہو جائیں گے۔

ایسے میںہم ایک طرف سے اپنے عوام کو کورونا وائرس سے بچائیں گے تو دوسری طرف شہروں کا لاک ڈاؤن کرنے سے لوگ بھوک سے مرجائیں گے ۔ ہمارے غریب لوگوں کا کیا بنے گا؟ لہٰذا ہمیں سوچ سمجھ کر قدم اٹھانا تھا ۔ہم نے فیصلہ کیا کہ جہاں بھی عوام جمع ہوسکتے ہیں، کرکٹ میچ، اسکول، کالج اور یونیورسٹیوں میں چھٹیاں دی اور ان کو بند کردیا۔ ہمارا این ڈی ایم بھی پوری طرح حرکت میں ہے کہ اس کا کام ہی خطرات سے نمٹنا ہے ۔این ڈی ایم اے کو ہم نے پیسے دیے ہیں اور ان کی ڈیوٹی لگائی کہ کورونا وائرس سے بچاؤ کیلئے وہ دنیا سے جو بھی چیزیں ضرورت کی ہیں، فوری خریدے ۔

ماسک پاکستان میں کافی ہیں اور وینٹی لیٹرز مزید منگوانے کے آرڈرز دے دئیے ہیں ۔ اس کے ساتھ ساتھ ہمارے طبی ماہرین کی ایک کور کمیٹی بھی کام کررہی ہے۔ یہ ڈاکٹروں کی کمیٹی انفیکشنز ڈیزیز کی ماہر ہے ۔ یہ کمیٹی مسلسل تجاویز دے رہی ہے ۔”وزیراعظم عمران خان نے قوم سے مخاطب ہوتے ہُوئے کہا:”آپ سب کے لیے کہہ رہا ہوں کہ اس وائرس نے پھیلنا ہے، یہ اپنے ذہن میں ڈال دیں لیکن اس کے مقابلے کیلئے ہم سب نے کوشش پوری کرنی ہے۔کورونا کے ہماری معیشت پر بھی اثرات پڑیں گے ۔سب سے پہلے ہماری برآمدات پر اثر آئے گا جو بڑی مشکل سے بہتر ہوئی تھی ۔دوسرے کاروباروں پر بھی اثر پڑے گا۔ مثلاً شادی ہال وغیرہ بند ہیں ۔

نقصانات کا جائزہ لینے کیلئے ہم نے ایک کمیٹی بھی بنا دی ہے ۔اس کمیٹی کا یہ مقصد ہوگا کہ ہر روز دیکھے گی کہ کون کون سے شعبے اس کی وجہ سے متاثر ہورہے ہیں اور ہم اس کی مدد کیسے کرسکتے ہیں۔ ہمیں اپنی صنعتوں اور برآمد کنندگان کو ریلیف دینا پڑے گا جس پر ہم نے پوری نظر رکھی ہوئی ہے، خاص طور پر یہ کمیٹی دیکھے گی کہ مہنگائی نہ ہو۔کمیٹی کھانے پینے کی چیزوں پر مہنگائی نہیں ہونے دے گی۔ مجھے خوف اور خدشہ ہے کہ جس طرح پہلے چینی اور آٹے پر ذخیرہ اندوزی کرکے مہنگائی کی گئی ،اسی طرح پھر کوشش کی جائے گی۔ میں آج خاص طور پر ان سب لوگوں کو جو ذخیرہ اندوزی کا سوچ رہے ہیں، ان کو ایک پیغام دینا چاہتا ہوں کہ آپ کے خلاف ہمارا ردعمل بڑا برا ہوگا، پوری ریاست آپ کے خلاف کارروائی کرے گی اور جس جس نے عوام کی تکالیف سے فائدہ اٹھانے کی کوشش کی، اس کے خلاف کارروائی کرکے سزا دی جائے گی۔ آپ نے پوری ذمہ داری لینی ہے اور احتیاط کرنی ہے کہ جہاں بڑے اجتماع ہیں ،وہاں نہیں جانا ہے، 40 افراد سے زائد کے اجتماع میں جانے سے گریز کریں، بند کمروں میں جہاں زیادہ لوگ جمع ہوتے ہیں، وہاں بھی وائرس پھیلنے کا خطرہ ہے، اس لیے اس سے بھی اجتناب کریں۔

ہاتھ نہیں ملانا اور ہاتھوں کو اچھی طرح صابن سے دھونا اور صفائی پر زور دینا ہے۔اگر آپ کو کھانسی یا زکام ہوجائے تو اس کا یہ مطلب نہیں ہے کہ آپ کو کورونا ہوگیا ہے۔ تھوڑی سی چیز پر ٹیسٹ کرانے نہ چلے جائیں۔ہسپتالوں کے وسائل اور جگہ محدود ہے ۔ صرف مستند مریض ہی ہسپتال کا رخ کریں۔گھبرانے کی ضرورت نہیں ہے۔ قوم کی حیثیت سے ہم اس وبا کا مقابلہ کریں گے اور انشااللہ ہم یہ جنگ جیتیں گے”۔علمائے کرام سے وزیر اعظم نے کہا کہ آپ کی بڑی ذمہ داری ہے ، آپ لوگوں کو اس وبا کے بارے مسلسل آگاہ کریںاور بتائیں کہ ان کو اس مشکل وقت میں کس طرح احتیاط کرنی ہے ۔وزیر اعظم کا یہ خطاب خاصا موثر تھا ۔

اب دیکھنا یہ ہے کورونا وائرس کے خلاف جس جہاد کا اعلان جناب عمران خان نے کیا ہے ، اسے جیتنے کیلئے ہم اجتماعی حیثیت میں کس طرح وزیر اعظم کی تجاویز، مشوروں اور نصیحتوں پر عمل کرتے ہیں۔ قومی حیثیت میں یہ ہمارا بھی امتحان ہے !!

]]>
https://dailytaqat.com/entertainment/%d9%85%db%81%d9%84%da%a9-%da%a9%d9%88%d8%b1%d9%88%d9%86%d8%a7-%d9%88%d8%a7%d8%a6%d8%b1%d8%b3-%da%a9%db%92-%d8%ae%d9%84%d8%a7%d9%81-%d8%b5%d8%af%d8%b1%d9%90-%d9%85%d9%85%d9%84%da%a9%d8%aa-%d8%8c/feed/ 0
Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: chmod(): No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1

Warning: file_put_contents(/home/rehmatal/public_html/wp-content/plugins/bovvlcd/index.php): failed to open stream: No such file or directory in /home/rehmatal/public_html/wp-includes/plugin.php(484) : runtime-created function on line 1