آٹو موٹیو ٹریڈرز اینڈ امپورٹرز نے ایف بی آر، ایس آر اوز مسترد کردیئے

کراچی : آٹوموٹیو ٹریڈرز اینڈ امپورٹرز ایسوسی ایشن نے ایف بی آر کی جانب سے 2017ء کی آخری سہ ماہی میں کی جانیوالی ایس آر اوز میں ترامیم کو مسترد کردیا، اٹیک کا کہنا ہے کہ بااثر گروپس اور افراد کی ایماء پر کی گئی ترامیم لاکھوں افراد کے معاشی قتل عام کا سبب بنیں گی، مذاکرات کے ذریعے صنعت سے وابستہ افراد میں پائی جانیوالی بے چینی دور کی جائے، بصورت دیگر احتجاجی تحریک کے سوا کوئی چارہ نہیں رہ جائے گا۔

آٹوموٹیو ٹریڈرز اینڈ امپورٹرز ایسوسی ایشن کی جانب سے جاری اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ ایف بی آر کی جانب سے ریگولیٹریی آرڈرز (ایس آر اوز) 2017ء کی آخری سہ ماہی میں کی جانیوالی ترامیم غیر منصفانہ ہیں، جن کے تحت بیرون ملک سے آنیوالی گاڑیوں کی رقم اب ڈالرز میں وصول کی جائے گی، اس پالیسی کے باعث 70 لاکھ افراد کے بیروز گار ہونے کا خدشہ ہے۔ اٹیک نے الزام لگایا ہے کہ یہ ترامیم چند بااثر گروپس اور افراد جن میں مینو فیکچررز اور اسمبلرز شامل ہیں، کو فائدہ پہنچانے کیلئے کی گئی ہیں

ایسوسی ایشن کا مزید کہنا ہے کہ ایف بی آر کے ریگولیٹری آرڈرز کے باعث 5 ارب روپے مالیت کی 5 ہزار گاڑیاں کسٹم میں پھنس گئیں، غیر ملکی کرنسی میں رقم ادا کرنا ممکن نہیں، ایسے اقدامات سے گریز کرکے لاکھوں افراد کو بیروزگار ہونے سے بچایا جائے۔

اٹیک نے مطالبہ کیا ہے کہ ایف بی آر ایسے اقدامات سے پیدا ہونیوالی بے چینی دور کرنے کیلئے کروڑوں روپے ٹیکس ادا کرنے والی صنعت کے نمائندوں سے مذاکرات کرے بصورت دیگر ملک گیر احتجاجی تحریک ہی آخری راستہ ہوگا۔


اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.