Latest news

سعودی عرب کا قومی دن اورعمران خان کا دورہ

سعودی عرب کا قومی دن ہر سال 23ستمبر کو منایا جاتا ہے۔ یہ دن 1932ءمیں پیش آنے والے ان واقعات کی یاد کو تازہ کرتا ہے جب مملکت سعودی عرب کے بانی شاہ عبدالعزیز بن عبدالرحمن آل سعودنے ایک بکھرے ہوئے ملک کو متحد کیا اور اسلامی اصولوں پر مبنی ایک متحدہ مملکت کے قیام کا اعلان کیا۔ پندرہ جنوری 1902میں شاہ عبدالعزیز نے دارالحکومت ریاض کو واگزار کروایا اور اپنے ورثے کو دوبارہ حاصل کرنے میں کامیاب ہو گئے جس کی بدولت علاقے میں آل سعود کی حکمرانی واپس آئی۔ اس مملکت کے بانی نے آئندہ 31سال پوری یکسوئی کے ساتھ منتشر و شورش زدہ مملکت کو متحد کرنے میں صرف کر دیے۔

شاہ عبدالعزیز 1953میں اس دار فانی سے رخصت ہو گئے۔ انہوںنے اپنی عمر کے آخری دو عشرے ایک جدید اور پرامن ملک کی بنیادیں رکھنے میں صرف کئے۔ بانی مملکت کے نظریات ان کے بعد مسند نشیں ہونے والوں میں منتقل ہوئے اور وہ بھی پوری ایمانداری کے ساتھ اپنے بزرگ کے نقش قدم پر چلے تاکہ ملک کو ترقی یافتہ بنایا جائے۔ اس عمل میں ہر احتیاط کارفرما رہی کہ عقیدے کے اصولوں سے انحراف نہ کیا جائے۔ شاہ سعود نے سب سے پہلے 1953سے 1964ءتک زمام اقتدار سنبھالی۔

ان کے بعد شاہ فیصل شہید 1964سے 1975ءتک برسراقتدار رہے جن کے بعد شاہ خالد آئے جو 1982میں وفات پاگئے۔ ان کے زمانے میں تیل کی آمدنی کی خردمندی سے استعمال کر کے مملکت نے تمام جہتوں میں نمایاں ترقی کی جس سے اس کی معیشت مضبوط ہو گئی اور اقوام عالم میں اس کا اپنا جائز مقام حاصل ہوا۔ 1982ءسے لیکر 2005ءتک زمام اقتدار شاہ فہد بن عبدالعزیزکے ہاتھ میں رہی۔ یکم اگست 2005ءکو شاہ فہد کی وفات پر حکمران خاندان اور عوام نے ولی عہد شہزادہ عبداللہ بن عبدالعزیز کو سعودی عرب کا چھٹا بادشاہ خادم الحرمین شریفین اور وزیر اعظم بنانے کا عہد کیا۔سعودی عرب کی خارجہ پالیسی جغرافیائی، تاریخی، مذہبی، اقتصادی، امن و سلامتی، سیاسی اصولوں اور حقائق پر مبنی ہے۔

اس کی تشکیل میں سب سے اچھی ہمسائیگی کی پالیسی، دوسرے ملکوں کے داخلی امور میں عدم مداخلت، خلیجی ممالک اور جزیرہ عرب کے ساتھ تعلقات کو مستحکم تر کرنا، عرب اور اسلامی ملکوں کے مفاد عامہ کی خاطر ان سے تعلقات کو مضبوط کرنا، ان کے مسائل کی وکالت کرنا، غیر وابستگی کی پالیسی اپنانا، دوست ممالک کے ساتھ تعاون کے تعلقات قائم کرنا اور عالمی و علاقائی تنظیموں میں مﺅثر کردار ادا کرنا شامل ہے۔
سرزمین حرمین شریفین کی وجہ سے سعودی عرب پوری دنیا کے مسلمانوں کا دینی مرکز سمجھا جاتا ہے۔ مسجد الحرام، مدینہ منورہ میں مسجد نبوی اور حج کے مقدس مقامات کے خادم ہونے پر سعودی حکام کو یقینی طور پر فخر محسوس ہوتا ہے کیونکہ زائرین عمرہ اور حجاج کرام کی خدمت کرنا واقعتا ایک اعزاز ہے۔

مقدس مقامات کی دیکھ بھال اور ترقی کیلئے مملکت کی کاوشیں شاہ عبدالعزیز کے دور سے لیکر اب تک کئی گنا ہو چکی ہیں۔ حرمین شریفین اور مقدس مقامات میں متعدد توسیعی منصوبے مکمل ہو چکے ہیں۔

وقت کے ساتھ ساتھ سعودی حکومتوں نے مسجد الحرام، مسجد نبوی، منیٰ ، عرفات اور مزدلفہ میں توسیع اور ترقی کے کئی منصوبے مکمل کئے ہیں جن میں شاہ عبداللہ بن عبدالعزیز کا 19اگست 2011سے شروع کیا گیا مسجد الحرام کا عظیم الشان تاریخی توسیعی منصوبہ خاص طور پر قابل ذکر ہے۔ اس توسیع کے بعد یہاں 25لاکھ مزید نمازیوںکی گنجائش پیدا ہو گئی ہے۔ اس توسیع کے مرکزی دروازے کا نام باب شاہ عبداللہ رکھا گیا ہے۔یہ توسیعی منصوبہ مسجد الحرام کے شمال اور شمال مغرب میں واقع چار لاکھ مربع میٹر اراضی پر محیط ہو گا۔ اس میں مطاف کی توسیع بھی شامل ہے جبکہ تمام نئی عمارتیں ایئر کنڈیشنڈ ہوں گی۔

یہ عظیم تر توسیعی منصوبہ بنیادی ضروریات کی تمامتر خدمات، سازوسامان بالخصوص صفائی ، امن وامان کے جدید نظام اور پینے کے پانی کے فواروں جیسی سہولیات سے مزین ہے۔ اسی طرح شاہ عبداللہ بن عبدالعزیز کی جانب سے مسجد نبوی کی توسیع کے احکامات صادر فرمائے جس سے مسجد نبوی میں مزید 16لاکھ نمازیوں کی گنجائش پیدا ہوئی ہے ۔ شاہ عبداللہ بن عبدالعزیزکی جانب سے شروع کئے گئے ان توسیعی منصوبوں پر شاہ سلمان بن عبدالعزیز کے دور اقتدار میں بہت کام ہوا اور یہ توسیعی منصوبے پایہ تکمیل کو پہنچے ہیں۔ سعودی عرب کا دستور قرآن و سنت ہے‘ تمام آئینی قوانین انہی دو مصادر سے اخذ کئے گئے ہیں۔ یہاں نظام حکومت بادشاہت ہے جس میں بادشاہ اور وزراءکی کونسل انتظامی اور مقننہ کے اختیارات رکھتی ہے۔

مملکت شوریٰ کی ذمہ داری ہے کہ وہ کسی بھی معاملے پر اپنی رائے دے۔ برادر اسلامی ملک میں اسلام قانونی نظام اور حکومت کی بنیاد ہے۔

عربی اس مملکت کی قومی زبان ہے جبکہ شہری علاقوں میں انگریزی بھی بڑے پیمانے پر بولی جاتی ہے۔ سعودی عرب مشرق وسطیٰ اور شمالی افریقہ میں سب سے بڑی آزاد منڈی کی معیشت ہے جو عرب جی ڈی پی کے پچیس فیصد حصہ پر مشتمل ہے۔

مملکت کا جغرافیائی محل وقوع اسے یورپ، ایشیا اور افریقہ کی درآمدی منڈیوں تک رسائی فراہم کرتا ہے۔ یہ ایک مسلسل پھیلتی ہوئی منڈی ہے جس میں آبادی 3.5فیصد سالانہ کی شرح سے بڑھ رہی ہے اور یہ مضبوط قوت خرید رکھتی ہے۔

سعودی عر ب میں سرمایہ کاری کا ماحول لبرل اوپن مارکیٹ اور پرائیویٹ انٹر پرائزز پالیسی کی روایات کا عکاس ہے اور اس کا نیا بیرونی سرمایہ کاری کا قانون ، کاروباری اور رئیل اسٹیٹ کی سو فیصد ملکیت کی اجازت دیتا ہے۔ مملکت سیاسی اور معاشی استحکام کے ایک متاثر کن ریکارڈ رکھنے کے ساتھ ساتھ عالمی سطح کا ایک جدید ترین بنیادی ڈھانچہ رکھتی ہے۔سعودی عرب کے پاس دنیا کے سب سے زیادہ تیل کے ذخائر موجود ہیں(جو پچیس فیصدبنتے ہیں)۔

مملکت کو دوسرے قدرتی وسائل بھی عطا ہوئے ہیںجن میں صنعتی خام مال اور پاکسائیٹ، لائم سٹون، جپسم، فاسفیٹ اور آئرن جیسے معدنیات کی بڑی مقدار شامل ہے۔ یہاں نہ تو فارن ایکسچینج پر کوئی پابندی ہے اور نہ ہی کیپیٹل اور منافع کی واپسی پر لہٰذا اس کی کرنسی بہت مضبوط ہے اور کمپنیوں کو سو فیصد منافع واپسی کی اجازت ہے۔

مملکت کے تمام شعبوں میں افرادی قوت کے اخراجات بہت کم ہیں۔ سعودی عرب کی جانب سے خادم الحرمین شریفین شاہ سلمان بن عبدالعزیز کی زیر صدارت کابینہ کے اجلاس کے بعد ویژن 2030کا اعلان کیا گیا ہے جس کے اصل محرک سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان ہیں۔

اس منصوبے کے تحت سعودی معیشت بتدریج تیل کی بجائے صنعت و تجارت کے دوسرے شعبوں پر استوار کی جائے گی۔

سعودی معیشت کی ترقی میں نجی و غیرملکی سرمایہ کاری کی حوصلہ افزائی کی جائے گی اور تیل کی آمدن پر انحصار کم سے کم کردیا جائے گا۔

انھوں نے اس ویژن کے خدوخال بتاتے ہوئے کہا کہ اس کے تحت سرکاری اثاثوں کو فروخت کیا جائے گا۔ٹیکسوں کی شرح بڑھائی جائے گی اور اخراجات میں کمی کی جائے گی۔اس کے علاوہ سعودی عرب کے زرمبادلہ کے ذخائر کے انتظام میں بھی جوہری تبدیلی لائی جائے گی۔نجی شعبے کے لیے قومی معیشت کی ترقی میں زیادہ کردار ادا کرنے کے مواقع پیدا کئے جائیں گے۔

سعودی ویژن 2030کے اعلان پر پوری دنیا کی طرف سے ان کے اس فیصلہ کی تحسین کی جارہی ہے۔ بین الاقوامی ماہرین کا کہنا ہے کہ آنے والے دنوں میں سعودی معیشت اور زیادہ مضبوط ہو گی۔ سعودی ترقی ایک متوازی ترقی ہونے کے ساتھ ساتھ اسلامی تعلیمات و اقدار جیسی تمام جہات کو اپنے اندر سموئے ہوئے ہے۔

اس طرح مملکت کے لئے مادی راحت اور اقتصادی کارکردگی مذہبی، روحانی اور اخلاقی اقدار کے امتزاج کے ساتھ ممکن ہو سکی ہے۔
سعودی عرب کے پاکستان سے تعلقات ہمیشہ بہت مضبوط و مستحکم رہے ہیں۔کلمہ طیبہ کی بنیاد پر قائم ان رشتوں میں کوئی کمزوری نہیں آئی بلکہ دن بدن ان میںاضافہ ہی ہوا ہے۔ سعودی عرب کا قومی دن دنیا بھر کی طرح پاکستان میں بھی انتہائی تزک و احتشام سے منایا جاتا ہے۔

امسال بھی اس دن کی مناسبت سے مسلم خطوں و ملکوں میں امن و سلامتی کیلئے خصوصی دعائیں کی جائیں گی۔ سفارت خانوں میں خاص طور پر ہر سال پروگراموں کا انعقاد کیا جاتا ہے۔

پاکستان کے سعودی عرب سے تعلقات چونکہ شروع دن سے انتہائی مضبوط اور مستحکم رہے ہیں اس لئے وطن عزیز پاکستان کا ہر شہری چاہے وہ کسی بھی مکتبہ فکر اور شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والا کیوں نہ ہو سرزمین حرمین الشریفین کیلئے ہمیشہ دل کی اتھاہ گہرائیوں سے دعائیں کرتا ہے اور سعودی عرب کا نام سنتے ہی محبت، اخوت اور ایثارو قربانی کا جذبہ اس کے دل میں جاگزیں ہونے لگتا ہے۔پاک سعودی تعلقات اگرچہ ابتدا سے ہی خوشگوار رہے ہیں لیکن شاہ فیصل کے دور میں ان تعلقات کو بہت زیادہ فروغ ملاانہوں نے پاکستان سے تعلقات بڑھانے اور صرف دونوں ملکوں کو قریب کرنے کیلئے ہی نہیں پوری امت مسلمہ کے اتحاد کیلئے زبردست کوششیں کیں جس پر دنیا بھر کے مسلمان انہیں قدر کی نگاہ سے دیکھتے ہیں اورسبھی مسلم حکمرانوں کو ان جیسا کردار ادا کرنے میں کوشاں دیکھنا چاہتے ہیں۔

سعودی عرب ان چند ممالک میں سے ایک ہے جس نے ہمیشہ مسئلہ کشمیرسمیت تمام معاملات پر کھل کر پاکستان کے مﺅقف کی تائید و حمایت کی ہے ۔ 1965ءکی پاک بھارت جنگ کے دوران سعودی عرب نے پاکستان کی وسیع پیمانے پر مدد کی ۔

اپریل 1966ءمیں شاہ فیصل نے پہلی مرتبہ پاکستان کا دورہ کیا(جاری ہے)


اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.