Latest news

مولانا کا آزادی مارچ اور دھرنااور کچھ حقائق

کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کریں،مفاہمت کا کوئی امکان نہیں ،دھرنا کی تاریخ آگے بڑھانے کے مطالبہ کو مسترد کرتے ہیں اب یہ جنگ حکومت کے خاتمہ کے ساتھ ہی ختم ہو گی روکا گیا تو سارا ملک جام کر دیں گے،معاشی صورتحال بد تر،بد حالی اور قومی یکجہتی کا فقدان ،ملک کا ہر طبقہ پریشان، فیکٹریاں کارخانے بند،سفارت کاری ناکام،سی پیک رک گیا،حکمران کشمیر فروش ہیں ،کشمیرکا سودا کیا گیا یہ حکمران عالمی سازش کا شکار اور حصہ ہیں مولانا کو ماضی میں یہ سب نظر کیوں نہیں آیا؟مولانا طاہر اشرفی نے کہامولانااقتدار سے محرومی پر حواس باختہ ہیں ،مولانا عبدالقوی نے پیش گوئی کی ہے کہ مولانا27اکتوبر کو بیرون ملک ہوں زردد عمامہ پہن کر تحفظ ناموس رسالت پر چندہ مانگنا بہت بڑی نحوست ہے ساری دنیا میں تحفظ ختم نبوت کا کیس لڑ نے والے کے خلاف مفاداتی جنگ پر پاکستان کے علماءانہیں تنہا نہیں چھوڑیں گے ،JUIF کے رہنما کہتے ہیںقائد اعظم نے بھی مذہب کا کارڈ کھیلا، عجب تماشہ مولانا کو قائد اعظم سے ملا دیا گیا نہوں نے دو قومی نظریہ پر وطن حاصل کیا، سیاسی مفاد کے حصول کے لئے ختم نبوت کا نام استعمال کرنا شرمناک اور بد قسمتی ہے، مولانا کو وہ وقت یاد نہیں جب تحریک لبیک نے اسلام آباد سمیت ملک بھر میں مظاہرے کئے تب کیا ہوا تھا ؟قادیانیوں کے حوالے سے آئین کے ساتھ چھیڑ خوانی کرنے والے کون تھے؟کیا تحریک لبیک کا وہ سب کرنا جھوٹ ،فراڈ اور دکانداری تھی ؟مولانا کو یہ بھی یاد نہیں کہ گذشتہ کئی دہائیوں سے عوام کو پیسنے والوں کا انہوں نے ہمیشہ ساتھ دیا ، بے نظیر بھٹو کے خلاف(عورت ) کی حکمرانی پر فتویٰ دیا مگر مفادات بھی انہی سے حاصل کئے ،مولانا فضل الرحمان کا نظریہ کیا ہے ؟ایک سیاسی اوپر سے عالم دین پھر کرپٹ زدہ ٹولے کا ساتھی کیسے؟ آخر مولانا کو کیا مجبوری ہے ؟یہی بات ہر ایک کی سمجھ سے باہر ہے ،وہ چاہتے ہیں؟ ان کی منشا و مراد کیا ہے؟وہ عمران کو ہٹا کر خود تو وزیر اعظم بننے سے رہے وہ لانا کسے چاہتے ہیں ؟دوسروں کو کٹھ پتلی کہنے والے خود کیوں کٹھ پتلی بن بیٹھے ہیں،یہ الگ بات ہے کہ پی ٹی آئی حکومت نے عوامی سطع پر عوام کا کچومر نکال کر رکھ دیا ہے مگر اس کا متبادل مولانا فضل الرحمان کا ایجنڈا ہی ہے ؟ ذرہ تصور کریں جس ملک کی فوج جسے یہ خلائی مخلوق کے نام سے نوازتے ہیں کسی عالمی سازش کا حصہ بن جائے تو وہاں عالم کیا ہو گا؟ مگر ہماری فوج تو دنیا کی بہترین افواج میں سے ایک ہیں ،بڑے سے بڑے دشمن کے دانت کھٹے کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے،ایسے الزامات نہ صرف شرمناک ہیں بلکہ عالمی سطع پر جگ ہنسائی بھی ،مقبوضہ کشمیر قیامت کا سماں ،عالمی حالات کا تقاضا تو یہ ہے کہ ہم یکجا ہوں مگر کہتے ہیں حکومت نے کشمیر فروخت کر دیا ہے ذرہ بتائیں تو سہی کیسے؟سیاسی لیڈران اپنی اپنی لڑائی لڑیں جو بھی آیا وہ عوام میں سے ہو گا نہ عوام کا خیر خواہ ہو گا مگر مذہب اور وہ بھی ناموس رسالت جیسے حساس ترین معاملے پر سیاسی دکانداری شرمناک ہے،کبھی عالمی سازش،کبھی سلیکٹید ،قوم کو ڈرے بغیر اس کی تفصیل سے آگاہ کیا جائے ،کبھی دھرنا جمہوریت کے لئے خطرہ کبھی جمہوریت کی بقا کے لئے ضروری ،عمران خان کی گورنس پر الراقم کو بھی شدید تحفظات ہیں ویسے ہی مفاد پرست اور لوٹ مار ٹولے پر بھی ،ابھی کافی دن پڑے ہیں دیکھو کیا کیا گل کھلائے جاتے ہیں۔


اپنی راہےکااظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.